Image

Masnoon_duaen

Masnoon_duaen13-16 9-12 5-8 1-4

farz_namaz_ki_bad_ki_Masnoon_duaen

Advertisements

Life & Style | Health Eat right for lush hair and glowing skin

When it comes to the blame game for hair and skin problems, climate is a top favourite. Dull hair? It’s the dry, hot winds that are damaging it. Sallow complexion? It’s the heat and humidity. Rarely do people confess they are not eating right, are stressed and are also probably overdoing hair and skin treatments. While the last two problems can be optional vices, what’s almost unarguable is that most people are eating food that’s not meant to nourish skin and hair. Fast food for breakfast? Check. Processed foods for lunch? Check. Fizzy beverages through the day? Check. Too much coffee through the day to stay alert? Check.

“Chemicals in processed foods, trans-fat and chemical compounds in fried foods speed up the process of ageing,” says Yasmine Haddad, senior dietician, Live’ly, a health and nutrition lounge in Dubai. Fast foods are also full of sugar, which are empty in nutrients and full of calories. High-salt diets, also a popular choice with many people, lead to excess sodium accumulation around hair follicles, hindering absorption of essential nutrients needed for healthy hair, says Haddad.

For lush locks and a glowing skin, it is absolutely essential to eat nutritious foods. These include vegetables, fruits, vegetable oils, nuts and protein, “It’s about a healthy lifestyle,” says Haddad. “You have to sleep well, eat well, exercise and avoid stress. Stress is very bad for hair,” she says. Of course, hard water, as in the UAE, also has a bad effect on hair, but if your diet is poor, it can increase hair problems. (Haddad uses a shower filter that removes large amounts of calcium and magnesium in hard water.)

A diet rich in protein is essential for healthy hair as hair is primarily composed of keratin, a type of protein. Salmon, beans, fish, meat and fortified dairy products, cereals and Vitamin D supplements are essential for healthy skin and hair.

For supple and healthy skin, foods rich in Vitamin A and D, such as avocado and sunflower oil help repair body tissue, prevent dryness and postpone ageing.

Vitamin C, which helps maintain levels of collagen, a protein constituent of skin that is essential for healing skin as well as keeping it firm, should also be an important nutrient in your diet.

Exposure to the sun for Vitamin D is essential for bones, cells and tissues, as is folic acid, the deficiency of which leads to a condition called seborrheic dermatitis. It may be also linked to vitiligo (loss of skin pigment). A regular oil massage with olive oil promotes scalp strength.

Introducing potassium-rich foods in your diet, such as parsley, prunes, green leafy vegetables, will help flush out excess sodium and reduce risk of the potassium deficiency and hair loss, she says.

The bottomline however is that you need to make a conscious effort to eat well. “People want the easy way out,” she says. “but there’s no miracle cure; no amount of taking pills will help. You have to change your lifestyle and eat healthy.”

Though, she warns that hair loss can also be a sign of other problems with your body. “There could be hormonal issues or a problem with the thyroid, or malnutrition. A simple blood test to eliminate any medical conditions would be good to get to the root of the problem.”

Should one take vitamin supplements? “These are necessary only if the doctor recommends them because of a medical problem or if you are no able to get nutrients from foods.”

The essential vitamin hit list:

Vitamin A: Helps repair body tissue, prevents dry skin and postpones ageing.

Source: Liver, sweet potatos, carrots, spinach, milk, egg yolk.

Vitamins B-6, B-12: Important for general hair health.

Sources: Bananas, potatoes, spinach, meat, poultry, fish, dairy products.

Vitamin C: Maintains collagen, the protein part of skin that keeps it smooth and firm.

Sources: Citrus fruits and tomatoes.

Vitamin D: Promotes skin-collagen health.

Sources: Sardines, cod liver oil and Omega-3 fatty acids.

Vitamin E: Repairs body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Sources:

Thiamine: Also known as B1, for general hair health.

Source: Brown rice, sunflower seeds, various nuts, oatmeal.

Potassium: Good for skin and hair.

Source: Sweet potato, potato, white beans, yogurt (fat-free), orange juice, broccoli, banana.

Selenium: Adds lustre.

Source: All vegetables, fish, red meat, grains, eggs,

Zinc: xxxxxxx

Source: Beans, cheese and salads are rich in zinc, which is vital for skin and hair.

Manganese: Good for skin and hair.

Source: Nuts, seeds, grains, oatmeal, whole wheat bread, fruit and vegetables, Pineapple is rich in manganese,

Copper: Liver is rich in copper as are sesame seeds, chocolate, lobster and calamari, nuts, These are good antioxidants and halts ageing. Good for hair and skin.

Folic acid: This is important for your hair,

Source: Fresh fruits and vegetables, specially citrus fruits and tomatoes, whole grain and fortified grain products, beans, and lentils.

Calcium: For strong hair and a healthy scalp.

Source: Milk, sardines, almonds and yoghurt.

Iron: For a healthy complexion.

Source: Liver, red meats, tuna, salmon, and shrimp, beans, lentils, spinach, tofu, broccoli, chicken and turkey, nuts, egg yolk,dried fruits. Good for both hair and skin, but be careful not to consume too much iron.

Eating for good hair:

Protein is the building block of hair. Without enough protein in your system, you may experience greater hair loss. Calcium found in foods such as yogurt and cottage cheese has proven to help promote hair growth and repair damaged hair follicles.

Olives and olive oil are rich in oleic acid, a monounsaturated fatty acid, which has shown to help the hair grow thicker and stronger.

In addition, fresh vegetables such as cucumber, lemon, lettuce and tomato consist of 70-90 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

Cheese which is derived from milk is a high source of calcium and protein. However, it’s important to note that it’s preferable to consume it low-fat since in its full-fat form it contains high saturated fat (i.e.: bad fats).

Eat your way to healthy hair

Greek Salad

Preparation Time: 10 mins

Ingredients:

10 black olives

60 gms. light Feta cheese, cut into cubes

200 gms cherry tomato or tomato, cut into cubes

200 gr. cucumber, cut into cubes

500 gr. Romaine lettuce, roughly torn

A few mint leaves

Dressing:

1 tbsp olive oil

1 tbsp white vinegar

2 tbsp lemon juice

Pinch of dry oregano

Pinch of salt

Method: Mix all ingredients in a salad bowl topping with cheese, olives and mint leaves. Add the dressing just before serving.

Nutrition notes

Serving size: 1 salad bowl

Number of servings: 4

Per serving:

Calories = 95 cal

Protein = 5 g

Carbs = 8 g

Fat = 5 g

(These recipes have been created by Live’ly Executive Chef Kassem Taha)

Watermelon sorbet

Watermelon is rich in lycopene, vitamin C and vitamin A which are known to be powerful antioxidants. These help protect and rejuvenate hair follicles and skin tissues. Studies have shown that a regular consumption of watermelon and green tea may reduce the risk of certain cancers such as prostate cancer. Watermelon and lime juice consist of 90 to 95 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

There is nothing better than a low-calorie and guilt-free watermelon sorbet to add life to your hair.

Preparation Time: 35 min

Ingredients

½ cup plus 4 cups seeded and pureed watermelon

½ cup fruit sugar

2 tbsp lime juice

1 tsp lime zest

Method:

In a small saucepan, bring ½ cup watermelon puree and the fruit sugar to a simmer and remove it from the heat. Add the lime juice and zest and allow the mixture to cool for 20 minutes. Add the 4 cups fresh watermelon puree to the melon-lime mixture, and freeze in an ice cream maker. Place sorbet in a plastic container and allow to freeze for 3-4 hours.

Nutrition notes:

Serving size: 1 scoop

Number of servings: 8

Calories per serving: 68 cal

Protein = 0.3g

Carbs = 17g

Fat = 0g

Date and walnut cake

Preparation time: 55 mins

Serves: 16

Walnuts are high in fat, but they have good fats. The fats in walnuts are rich in polyunsaturated fats such as omega-3 fatty acids and monounsaturated fats which have shown to have many beneficial properties such as preventing cardiovascular disease and helping in boosting the immune system and improving the health of your hair and scalp.

Nuts are rich in vitamins and minerals such as folic acid and iron which make it an ideal choice for people struggling with hair loss. It is better to avoid consuming it roasted or salted, but have it raw and in moderation due to its high calorie content.

Dates are also very rich in vitamins (B complex vitamins) and minerals like potassium and iron. A potassium deficiency, also called hypokalemia, can lead to hair loss. B complex vitamins play various important roles in the body including improved hair growth and thickness.

Enjoy this guilt-free and delicious dessert.

Ingredients:

1 cup of pitted dates (seedless)

1 cup boiling water

1 tsp of soda bicarbonate powder

1/2 cup of oil (sunflower or corn)

3/4 cup of sugar

2 cups cake flour

3 tsp of baking Powder

1/2 cup skimmed or low-fat milk

4 eggs, beaten

1/2 tsp vanilla (powder or extract)

1/2 cup chopped walnuts

3 tbsp flour

Method:

In a casserole, put the dates, add boiling water and soda bicarbonate and boil for 3-4 minutes (until the dates are soft). Set aside to cool to room temperature. (It is okay if the mixture foams and turns dark brown). Beat eggs with vanilla essence, add sugar, oil and dates mixture.

While mixing, alternate by adding the flour and baking powder and milk. Pour the batter in the baking pan (spray the pan with oil first and add flour). Toast chopped walnuts with 3 tbsp of flour in a pan until little brown, and sieve them from the flour. Spread chopped walnuts on top of the cake batter and bake the cake in a 180 degree oven (350F) for 30-40 minutes.

Nutition notes

Calories per serving = 226 cal

Protein = 4 g

Carbs = 31 g

Fat = 10 g

Eating your way to a glowing skin

Japanese chicken salad

Preparation Time: 40 mins

Serves 3

Serving size: 1 bowl

If you are suffering from dry and unhealthy skin, the good news is that the secrets to a healthy and radiant skin are very basic and you do not have to use high-end skin products or layers of make-up to hide unhealthy skin. A well-balanced diet and a healthy lifestyle are the two most important factors influencing the condition of your skin.

In addition, fresh vegetable such as onions, cucumber and peppers consist of 70 to 90 percent water. Water flushes out the toxins from the body and helps rehydrate the skin and reduce risk of dryness and irritation.

Ingredients:

For salad:

110 gms Thai jasmine rice

1 cucumber, diced small

3 spring onions, sliced

1/2 red pepper, diced

85 ms cooked chicken, diced

1/2 avocado, diced

Salt & fresh coarse ground black pepper, to taste

For dressing:

2 tbsp rice wine vinegar

1 tbsp caster sugar

1/2 tsp sunflower oil

Method:

Put the rice in a large pan with plenty of cold water and a pinch of salt. Bring to the boil and simmer for 12-15 min until the rice is just tender. Drain and leave to stand in a sieve for 15 mins, stirring half way through. Transfer to a bowl.

To make the dressing, gently warm the rice wine vinegar and sugar until the sugar dissolves. Add sunflower oil and stir into the rice. Leave until cold.

Stir cucumber into the dressed rice with spring onions, pepper, chicken and avocado and season to taste.

Nutrition notes

Calories per serving = 219 cal

Protein = 11g

Carbs = 32g

Fat = 5.2g

Baby corn and spinach pizza

Number of servings: 4

Preparation time: 20 mins

Baking time: 20 min in 280 degrees oven

Spinach has a high nutritional value and is extremely rich in antioxidants, especially when fresh, steamed, or quickly boiled. It is a rich source of vitamin A (and especially high in Lutein), vitamin C, vitamin K, and Vitamin B9 (folic acid). Vitamin A helps repair body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Using whole wheat dough in preparing your pizza will help improve your skin complexion. Brown bread and flour as well as whole wheat germs are rich in B vitamins which have shown to improve circulation and skin color.

Ingredients
Whole wheat pizza dough:

1 cup whole wheat flour

1/2 cup all-purpose flour

1/2 tsp salt

1 packet active dry yeast

2 tsp olive oil

1/2 tsp sugar

1 cup warm water

Pizza sauce:

1 onion, chopped finely

2 garlic cloves, chopped finely

2 tsp olive oil

1 kg fresh tomato, peeled & chopped OR 1-1/2 x 415 g cans crushed tomato

1 tsp dry oregano

2 tbsp fresh basil

1/2 tsp dry thyme

Dash of salt and black pepper

(Optional: Drizzle of Hot Sauce)

Toppings:

2 onions; cut into rounds (lightly sautéed)

1 cups colored and green peppers; cut into strips

1 cup of baby corn, sliced

2 cups baby spinach

1 cup of light mozzarella cheese, grated

1 tbsp pine nuts

Method:

Mix dough ingredients and let it rest for 90 minutes. Cook pizza sauce. Roll dough out thinly to fit a greased pizza base. Top dough with pizza sauce and arrange toppings over it. Sprinkle mozzarella cheese and top with pine nuts. Bake at 280 degrees C for 20 minutes.

Serving size: ¼ slice pizza

Calories per serving = 300 cal

Protein = 11g

Carbs = 48g

Fat = 8 g

Tasty fillet salmon

Serves 2

Preparation time: 15-17 minutes

Salmon is considered an excellent source of omega-3 fatty acids and vitamin D. It is also a very good source of protein, vitamin B3 (niacin) and vitamin B12. Omega-3 fatty acids reduce risk of dryness by helping skin retain its natural moisture. It has the ability to neutralise damaging free radicals and therefore protect the skin from aging and reduce the risk of skin cancer.

Vitamin B3 (niacin) has shown to increase production of ceramides and fatty acids, two key components of skin’s outer protective barrier. A deficiency of niacin leads to pellagra, a condition characterised by diarrhoea, dermatitis, dementia, inflammation of the mouth, amnesia, delirium, and if left untreated, death. Fall in love with salmon and enjoy a radiant skin.

Ingredients

2 salmon fillets, 1-inch thick and 6 ounces (170 grams) each

1/4 cup packed brown sugar

1/4 cup reduced-sodium soy sauce

3 tbsp unsweetened pineapple juice

3 tbsp red wine vinegar

1 tbsp lemon juice

3 garlic cloves, minced

1 tsp ground ginger

1 tsp pepper

1/4 teaspoon hot pepper sauce

Method

In a large resealable plastic bag, combine the first nine ingredients; add salmon. Seal bag and turn it to coat evenly; refrigerate for 15 minutes, turning once. Drain and discard marinade. Using long-handled tongs moisten a paper towel with cooking oil and lightly coat the grill rack. Place salmon skin side down on rack. Grill covered over medium heat or broil 4 inches from the heat for 13-15 minutes or until fish flakes easily with a fork.

Nutrition notes

Serving size: 1 fillet

Calories per serving = 330 cal

Protein = 36 g

Carbs = 32 g

Fat = 6g

Web Design and Web Development

WEBSA is a web design company and web design firm that offers creative, professional and skilled web page design. Custom website designers and developers at our company focus on delivering our clients with customized and user-friendly designs. We are ready to promote your business.

http://www.websadubai.com/index.php

What keeps you awake at night?

“Am I honoring my purpose?”

“Am I in control of my life?”

“Is my career going in the right direction?”

“Do I have enough cash in the bank?”

“Am I doing enough for the people around me?”

The dangers lurking in your make-up bag

They are there to make us feel better but cosmetics can be a breeding ground for bacteria

For most women, the vanity box is their little bag of tricks that helps hide their flaws and highlight their best features. But lipsticks, eyeshadows, mascara and powders can do more harm than good if they are not updated regularly. Just like food, cosmetics too have expiry dates and old and unhygienic ones can harbour harmful germs that can cause infections. So how often should you change your make-up?

Makka Elonheimo, Make Up For Ever’s International Training Manager, tells us how to keep our vanity bag bacteria-free.

How long can you keep cosmetics?

1. Loose powder (both translucent and bronzing): 3-5 years.
Go for a powder pot with a lid that has tiny holes. This ensures there is reduced  exposure to air as against ones without security lids.

2. Lipgloss: Up to 6 months.
The lipgloss applicator tip’s frequent physical contact with the lips carries microbes to the tube or bottle and reduces its shelf life. Don’t buy too many lipglosses at a time. Rotate just a few.

3. Day cream/ moisturiser: 1 year.
Using a spatula helps increase a skincare cream’s shelf life. Also do the sniff test to check if it’s off.

4. Foundation: 1-2 years.
Go for pump bottles as these have a longer shelf life due to reduced exposure to air. Open-cap bottles are more prone to germs as the entire product is exposed to air every time you open the cap.

5. Brushes: 5 years.
Brushes used to apply waxy and gel products like lipstick, lipgloss, liquid eyeliner, foundation and gel primer are highly prone to germs and must be cleaned before and after every use. Clean natural hair brushes with a mild 2-in-1 shampoo-cum-conditioner and cold water while artificial ones can be cleaned with hot water and liquid soap.

6. Lip pencil: 1-2 years if waxy; powdery ones last for 3 years.
Sharpening the pencil before every use helps sanitise it. Don’t share lip pencils as that can lead to itchy, sensitive lips.

7. Lipstick: 3-5 years.
Avoid sharing lipsticks as saliva is a breeding ground for bacteria. To sanitise a lipstick, use a sharp knife to simply shave off a thin layer from the top of the bullet.

8. Mascara: 3-6 months.
Do not ever share a mascara as eyes are a highly sensitive area. As for old mascara, it can cause conjunctivitis. Don’t pump the brush wand as that allows air to go in adding to the contamination. It also dries out the mascara pigment.

9. Eye pencils: 1-2 years if waxy. Powdery ones last for 3 years.
Smell the waxy tip to determine if it’s going off; sharpen the pencil before every use to sanitise it. Don’t ever share eye pencils as that can transfer germs and cause red, itchy eyes.

10. Sponges: 4-5 times.
Soft latex sponges tend to absorb grease and cosmetic particles easily, hence they have a shorter life span than hard sponges and should be replaced more frequently. To clean, use a washing-up liquid and very hot water as that’s very effective on grease and oil particles.

11. Liquid eyeliner: 6 months.
Sharing liquid eyeliner is a complete no-no as water from eyes can carry germs to the
brush and subsequently to the other person who uses it.

12. Pressed powders like compact, blush and bronzer: Over 5 years.
Sanitise the top layer of pressed powder by wiping with a tissue dipped in disinfecting
solution; or shave off the topmost layer every few months.

Make your mind up time

Put your make-up through this 10-point checklist every six-months. This exercise will ensure you declutter and never use expired products. Here are some questions to ask yourself:

1. What’s the formulation like: creamy, waxy, liquid or powdery? Creamy, waxy and liquid formulae are highly potent bacteria-breeding grounds and therefore have a shorter shelf life. On the other hand, powdery cosmetics have no such issues, be it pressed powder or the loose version.

2. Do I dip my finger in the product or use a spatula? Using a finger can spread germ microbes and reduce the cosmetic’s lifespan.

3. Does it have an integrated applicator that comes in contact with my facial features? If yes, that transfers germs from the skin to the bottle and reduces the product’s shelf life further.

4. Does it smell like it’s off? If yes, throw it away!

5. Do the contents look like the ingredient particles have begun to separate? Yes? Throw it right away.

6. Have I subjected the product to extreme heat or extreme cold temperatures at any time? If yes, then that can reduce the product’s shelf life.

7. Do I share my products with anyone? If yes, throw away the product within the expiry date on the box.

8. Can I scrape off the topmost layer of the product without affecting it? That’s a helpful way to sanitise a product regularly.

9. Does the colour/product still work for me? If it doesn’t, why are you still keeping it? Discard it and try a colour or texture from the new season.

10. Have I felt the need to use the product even once in the past three months? If the answer is no, then give it away to someone who might suit it, but do this before it expires.

Cosmetics: The dirty truth

How long women keep cosmetics*:

Mascara – 1 year
Eyeshadow – 15 years
Blush – 15 years
Eyebrow pencil – 8 years
Eyeliner – 1 year
Lipstick – 10 years
Lipgloss – 10 years

A Wedding in the Month of Muharram / Misconceptions and Baseless Traditions

By Mufti Taqi Usmani

However, there are some legends and misconceptions with regard to ‘Aashooraa’ that have managed to find their way into the minds of the unlearned, but have no support of authentic Islamic sources, some very common of them are these:
·        This is the day on which Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention was created.
·        This is the day when Ibraaheem  may  Allaah  exalt  his  mention was born.
·        This is the day when Allaah accepted the repentance of Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention.
This is the day when Doomsday will take place. Whoever takes a bath on the day of ‘Aashooraa’ will never get ill
All these and other similar whims and fancies are totally baseless and the traditions referred to in this respect are not worthy of any credit. Some people take it as Sunnah (established recommended practice) to prepare a particular type of meal on the day of ‘Aashooraa’. This practice, too, has no basis in the authentic Islamic sources.
Some other people attribute the sanctity of ‘Aashooraa’ to the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. No doubt, the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him is one of the most tragic episodes of our history. Yet, the sanctity of ‘Aashooraa’ cannot be ascribed to this event for the simple reason that the sanctity of ‘Aashooraa’ was established during the days of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) much earlier than the birth of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. On the contrary, it is one of the merits of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him that his martyrdom took place on this blessed day.
Another misconception about the month of Muharram is that it is an evil or unlucky month, for Sayyidna Husain, Radi-Allahu anhu, was killed in it. It is for this misconception that people avoid holding marriage ceremonies in the month of Muharram. This is again a baseless concept, which is contrary to the express teachings of the Holy Quran and the Sunnah. If the death of an eminent person on a particular day renders that day unlucky for all times to come, one can hardly find a day of the year free from this bad luck because every day is associated with the demise of some eminent person. The Holy Quran and the Sunnah of the Holy Prophet, Sall-Allahu alayhi wa sallam, have liberated us from such superstitious beliefs.

url

Lamentations and mourning:
Another wrong practice related to this month is to hold the lamentation and mourning ceremonies in the memory of martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. As mentioned earlier, the event of Karbalaa’ is one of the most tragic events of our history, but the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) has forbidden us from holding the mourning ceremonies on the death of any person. The people of Pre-Islamic ignorance era used to mourn over their deceased through loud lamentations, by tearing their clothes and by beating their cheeks and chests. The Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) prevented the Muslims from doing all this and directed them to observe patience by saying “Inna lillaahi wa inna ilayhi raaji’oon” (To Allaah We belong, and to Him is our return). A number of authentic narrations are available on the subject. To quote only one of them: “He is not from us who slaps his checks, tears his clothes and cries in the manner of the people of jahiliyyah (Pre-Islamic ignorance)”. [Al-Bukhaari]
All the prominent jurists are unanimous on the point that the mourning of this type is impermissible. Even Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him shortly before his demise, had advised his beloved sister Zaynab  may  Allaah  be  pleased  with  her not to mourn over his death in this manner. He  may  Allaah  be  pleased  with  him said, “My dear sister! I swear upon you that in case I die you shall not tear your clothes, nor scratch your face, nor curse anyone for me or pray for your death.” (Al-Kaamil, Ibn Katheer vol. 4 pg. 24)
It is evident from this advice, that this type of mourning is condemned even by the blessed person for the memory of whom these mourning ceremonies are held. Every Muslim should avoid this practice and abide by the teachings of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ).

Q. Could you please explain whether any function, particularly weddings, could be held in the month of Muharram, particularly its first 8 or 9 days?

A. Some people hold a notion that it is not permissible to arrange a marriage or make a marriage contract in the month of Muharram, particularly its first ten days. Some extend this to even arranging the waleemah, or the dinner after marriage, in this period. There is nothing in the Qur’an or the Sunnah to confirm this. The Muharram month is the same as the rest of the year. Muslims do not allow any aspect of omen to interfere with their arrangements or plans. They rely on God in all matters, and reliance on God is sufficient to remove any thoughts of bad omen. The Prophet (peace be upon him) in fact spoke against notions of bad omen. They have no substance. Hence, it is perfectly permissible to arrange a marriage in the month of Muharram and also to arrange the waleemah or any other function. In fact marriage can be contracted and organized at any time, except when a person is in the state of consecration, or ihraam, during his pilgrimage or his Umrah. Other than this, there is no restriction. Aljazeerah

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے اور عورت پھول

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے

اسلام نے مرد کو ’’قَوَّام‘‘(گھر کا نگران اور کفيل) اور عورت کو ’’ريحان‘‘(پھول) قرار ديا ہے۔ نہ يہ مرد کي شان ميں گستاخي ہے اور نہ عورت سے بے ادبي، نہ يہ مرد کے حقوق کو کم کرنا ہے اور نہ عورت کے حقوق کي پائمالي ہے بلکہ يہ ان کي فطرت و طبيعت کو صحيح زاويے سے ديکھنا ہے۔

 امور زندگي کے ترازو ميں يہ دونوں پلڑے برابر ہيں۔ يعني جب ايک پلڑے ميں (عورت کي شکل ميں) صنف نازک، لطيف و زيبا احساس اور زندگي کے ماحول ميں آرام و سکون اور معنوي زينت و آرائش کے عامل کو رکھتے ہيں اور دوسرے پلڑے ميں گھر کے مدير، محنت و مشقت کرنے والے بازوں اور بيوي کي تکيہ گاہ اور قابل اعتماد ہستي کو (شوہر کي شکل ميں) رکھتے ہيں تو يہ دونوں پلڑے برابر ہو جاتے ہيں۔ نہ يہ اُس سے اونچا ہوتا ہے اور نہ وہ اس سے نيچے۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف :  حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

امين خانہ

گھر كے اخراجات كا انتظام عموماً مرد كے ذمہ ہوتا ہے _ مرد شب و روز محنت كركے اپنے خاندان كى ضروريات پورى كرتا ہے _ اس دائمى بيگارى كو ايك شرعى اور انسانى فريضہ سمجھ كروں و جان سے انجام ديتا ہے _ اپنے خاندان كے آرام و آسائشے كى خاطر ہر قسم كى تكليف و پريشانى كو خندہ پيشانى سے برداشت كرتا ہے اور ان كى خوشى ميں لذت محسوس كرتا ہے _ ليكن گھر كى مالكہ سے توقع ركھتا ہے كہ پيسے كى قدروقيمت سمجھے اور بيكار خرچ نہ كرے _ اس سے توقع كرتا ہے كہ گھركے اخراجات ميں نہايت دل سوزى اور عاقبت انديشى سے كام لے _

اس کا نام قیامت ہے

ارشاد باری تعالی ہے
ہر جان کو موت کا مزا چکھنا ہے ، اور ہم تمہاری آزمائش کرتے ہیں برائی اور بھلائی سے ، جانچنے کو ، اور ہماری ہی طرف تمہیں لوٹ کر آنا ہے 
(الانبیاء : ۳۵، کنزالایمان )

روح کے جسم سے جدا ہوجانے کا نام موت ہے اور یہ ایسی حقیقت ہے کہ جس کا دنیا میں کوئی منکر نہیں ، ہر شخص کی زندگی مقرر ہے نہ اس میں کمی ہو سکتی ہے اور نہ زیادتی 
(یونس : ۴۹)

، موت کے وقت کا ایمان معتبر نہیں ، مسلمان کے انتقال کے وقت وہاں رحمت کے فرشتے آتے ہیں جبکہ کافر کی موت کے وقت عذاب کے فرشتے اترتے ہیں۔

#
مسلمانوں کی روحیں اپنے مرتبہ کے مطابق مختلف مقامات میں رہتی ہیں بعض کی قبر پر ، بعض کی چاہ زمزم میں ، بعض کی زمین و آسمان کے درمیان ، بعض کی پہلے سے ساتویں آسمان تک ، بعض کی آسمانوں سے بھی بلند ، بعض کی زیر عرش قندیلوں میں اور بعض کی اعلی علیین میں ، مگر روحیں کہیں بھی ہوں ان کا اپنے جسم سے تعلق بدستور قائم رہتا ہے جو ان کی قبر پر آئے وہ اسے دیکھتے پہچانتے اور اس کا کلام سنتے ہیں بلکہ روح کا دیکھنا قبر قبر ہی سے مخصوص نہیں ، اس کی مثال حدیث میں یوں بیان ہوئی ہے کہ ایک پرندہ پہلے قفس میں بند تھا اور اب آزاد کر دیا گیا ۔ ائمہ کرام فرماتے ہیں ، بیشک جب پاک جانیں بدن کے علاقوں سے جدا ہوتی ہیں تو عالم بالا سے مل جاتی ہیں اور سب کچھ ایسا دیکھتی سنتی ہیں جیسے یہاں حاضر ہیں ۔ حدیث پاک میں ارشادہوا ، جب مسلمان مرتا ہے تو اس کی راہ کھول دی جاتی ہے وہ جہاں چاہے جائے۔

#
کافروں کی بعض روحیں مرگھٹ یا قبر پر رہتی ہیں ، بعض چاہ برہوت میں ، بعض زمین کے نچلے طبقوں میں ، بعض اس سے بھی نیچے سجین میں ، مگر وہ کہیں بھی ہوں اپنے مرگھٹ یا قبر پر گزرنے والوں کو دیکھتے پہچانتے اور ان کی بات سنتے ہیں ، انہیں کہیں جان آنے کا اختیار نہیں ہوتا بلکہ یہ قید رہتی ہیں ، یہ خیال کہ روح مرنے کے بعد کسی اور بدن میں چلی جاتی ہے ، اس کا ماننا کفر ہے ۔

#
دفن کے بعد قبر مردے کو دباتی ہے اگر وہ مسلمان ہو تو یہ دبانا ایسا ہوتا ہے جیسے ماں بچے کوآغوش میں لیکر پیار سے دبائے اور اگر وہ کافر ہو تو زمین اس زور سے دباتی ہے کہ اس کی ایک طرف کی پسلیاں دوسری طرف ہوجاتی ہیں۔ مردہ کلام بھی کرتا ہے مگر س کے کلام کو جنوں اور انسانوں کے سوا تمام مخلوق سنتی ہے۔

#
جب لوگ مردے کو دفن کر کے وہاں سے واپس ہوتے ہیں تو وہ مردہ انکے جوتوں کی آواز سنتا ہے پھر اس کے پاس دو فرشتے زمین چیرتے آتے ہیں انکی صورتیں نہایت ڈراؤنی ، آنکھیں بہت بڑی اور کالی و نیلی ، اور سر سے پاؤں تک ہیبت ناک بال ہوتے ہیں ایک کا نام منکر اور دوسرے کا نکیر ہے وہ مردے کو جھڑک کر اٹھاتے اور کرخت آوازمیں سوال کرتے ہیں

پہلا سوال : ( من ربک ) تیرا رب کون ہے ؟

دوسرا سوال : ( ما دینک ) تیرا دین کیا ہے ؟

تیسرا سوال : حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف اشارہ کر کے پوچھتے ہیں ( ما کنت تقول فی ھذا الرجل ) انکے بارے میں تو کیا کہتا تھا؟

#
مسلمان جو اب دیتا ہے ، میرا رب اللہ ہے ، میرا دین اسلام ہے ، میں گواہی دیتاہوں کہ یہ اللہ تعالی کے رسول ہیں فرشتے کہتے ہیں ، ہم جانتے تھے کہ تو یہی جواب دے گا پھر آسمان سے ندا ہوگی ، میرے بندے نے سچ کہا ، اس کے لیے جنتی بچھونا بچھاؤ ، اسے جنتی لباس پہناؤ اور اس کے لیے جنت کی طرف ایک دروازہ کھول دو ، پھر دروازہ کھول دیا جاتا ہے جس سے جنت کی ہوا اور خوشبو اس کے پاس آتی رہتی ہے اور تاحد نظر اس کی قبر کشادہ کر دی جاتی ہے اور اس سے کہا جاتا ہے ، تو سو جا جیسے دولہا سوتا ہے یہ مقام عموما خواص کے لئے اور عوام میں ان کے لئے ہے جنہیں رب تعالی دینا چاہے ، اسی طرح وسعت قبر بھی حسب مراتب مختلف ہوتی ہے ۔


اگر مردہ کافر و منافق ہے تو وہ ان سوالوں کے جواب میں کہتا ہے ، افسوس مجھے کچھ معلوم نہیں ، میں جو لوگوں کو کہتے سنتا تھا وہی کہتا تھا، اس پر آسمان سے منادی ہوتی ہے یہ جھوٹا ہے اس کے لئے آگ کا بچھونا بچھاؤ ، اسے آگ کالباس پہناؤ اور جہنم کی طرف ایک دروازہ کھول دیا ، پھر اس دروازے سے جہنم کی گرمی اورلپٹ آتی رہتے ہے اور اس پر عذاب کے لئے دو فرشتے مقرر کر دیے جاتے ہیں۔ جو اسے لوہے کے بہت بڑے گرزوں سے مارتے ہیں نیز عذاب کے لئے اس پر سانپ اور بچھو بھی مسلط کر دیے جاتے ہیں۔

#
قبر میں عذاب یا نعمتیں ملنا حق ہے اور یہ روح و جسم دونوں کے لئے ہے ، اگر جسم جل جائے یا گل جائے یا خاک ہوجائے تب بھی اس کے اجزائے اصلیہ قیامت تک باقی رہتے ہیں ان اجزاء اور رو ح کا باہمی تعلق ہمیشہ قائم رہتا ہے اور دونوں عذاب و ثواب سے آگا ہ و متاثر ہوتے ہیں۔ اجزائے اصلیہ ریڑھ کی ہڈی میں ایسے باریک اجزاء ہوتے ہیں جو نہ کسی خوردبین سے دیکھے جاسکتے ہیں نہ آگ انہیں جلا سکتی ہے اور نہ ہی زمین انہیں گلاسکتی ہے ۔ اگر مردہ دفن نہ کیا گیا یا اسے درندہ کھا گیا ایسی صورتوں میں بھی اس سے وہیں سوال و جواب اور ثواب و عذاب ہوگا۔

#
بیشک ایک دن زمین و آسمان ، جن و انسان اور فرشتے اور دیگرتمام مخلوق فنا ہو جائے گی۔ اس کا نام قیامت ہے ۔ اس کا واقع ہونا حق ہے اور اس کا منکر کافر ہے ۔ قیامت آنے سے قبل چند نشانیان ظاہر ہونگی: دنیا سے علم اٹھ جائے گا یعنی علماء باقی نہ رہیں گے، جہالت پھیل جائے گی ، بے حیائی اور بدکاری عام ہوجائے گی ، عورتوں کی تعداد مردوں سے زیادہ ہوجائے گی ، بڑے دجال کے سوا تیس دجال اور ہونگے جو نبوت کا دعوی کریں گے حالانکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد کوئی نبی نہیں آسکتا ، مال کی کثرت ہوگی ، عرب میں کھیتی ، باغ اور نہریں جاری ہوجائیں گی ، دین پر قائم رہنا بہت دشوار ہوگا ، وقت بہت جلد گزرے گا ، زکوہ دینا لوگوں پر گراں ہوگا ، لوگ دنیا کے لئے دین پڑھیں گے ، مرد عورتوں کی اطاعت کریں گے ، والدین کی نافرمانی زیادہ ہوگی ، دوست کو قریب اور والد کو دور کریں گے ، مسجدوں میں آوازیں بلند ہونگی ، بدکار عورتوں اور گانے بجانے کے آلات کی کثرت ہوگی ، شراب نوشی عام ہوجائے گی ، فاسق اور بدکار سردار حاکم ہونگے، پہلے بزرگوں پر لوگ لعن طعن کریں گے ، دروندے ، کوڑے کی نوک اور جوتے کے تسمے باتیں کریں گے ۔ 
(ماخوذ از بخاری ، ترمذی )

#
کانا دجال ظاہر ہوگا جس کی پیشانی پر کافر لکھا ہوگا جسے ہر مسلمان پڑھ لے گا، وہ حرمین طیبین کے سوا تمام زمین میں پھرے گا ، اس کے ساتھ ایک باغ اور ایک آگ ہوگی جس کا نام وہ جنت و دوزخ رکھے گا ، جو اس پر ایما ن لائے گا اسے اپنی جنت میں ڈالے گا جو کہ درحقیقت آگ ہوگی اور اپنے منکر کو دوزخ میں ڈالے گا جو کہ در اصل آرام و آسائش کی جگہ ہوگی ۔ دجال کئی شعبدے دکھائے گا ، وہ مردے زندہ کرے گا ، سبزہ ا گائے گا ، بارش برسائے گا ، یہ سب جادوں کے کرشمے ہونگے۔

#
جب ساری دنیا میں کفر کا تسلط ہوگا توتمام ا بدال و اولیاء حرمین شریفین کو ہجرت کر جائیں گے اسوقت صرف وہیں اسلام ہوگا ۔ ابدال طواف کعبہ کے دواران امام مہدی رضی اللہ عنہ کو پہچان لیں گے اور ان سے بیعت کی درخواست کریں گے وہ انکار کر دیں گے ، پھر غیب سے ندا آئے گی ، (یہ اللہ تعالی کے خلیفہ مہدی ہیں ان کا حکم سنو اور اطاعت کرو) ۔ سب لوگ آپ کے دست مبارک پر بیعت کریں گے ، آپ مسلمانوں کو لیکر ملک شام تشریف لے جائیں گے۔

#
جب دجال ساری دنیا گھوم کر ملک شام پہنچے گا اس وقت حضرت عیسٰی علیہ السلام جامع مسجد دمشق کے شرقی مینارہ پر نزول فرمائیں گے ، اس وقت نماز فجر کے لئے اقامت ہوچکی ہوگی ، آپ امام مہدی رضی اللہ عنہ کو امامت کا حکم دیں گے اور وہ نماز پڑھائیں گے ۔ دجال ملعون حضرت عیسٰی علیہ السلام کے سانس کی خوشبو سے پگھلنا شروع ہوگا جیسے پانی میں نمک گھلتا ہے ، جہاں تک آپکی نظر جائےگی وہاں تک آپ کی خوشبو پہنچے گی ، دجال بھاگے گا آپ اس کا تعاقب فرمائیں گے اور اسے بیت المقدس کے قریب مقام (لد) میں قتل کردیں گے۔

#
حضرت عیسی علیہ السلام کا زمانہ بڑی خیر و برکت کا ہوگا ، زمین اپنے خزانے ظاہر کر دے گی ، مال کی کثرت کے باعث لوگوں کو مال سے رغبت نہ رہے گے ، آپ صلیب توڑیں گے اور خنزیر قتل کریں گے یہودیت ، نصرانیت اور تمام باطل مذاہب مٹادیں گے ، ساری دنیا میں دین صرف اسلام ہوگا اورمذہب صرف اہلسنت ۔ آپ کے عہد میں شیر اور بکری ایک ساتھ کھائیں گے ، بچے سانپوں سے کھیلیں گے اور بغض و حسد اور عداوت کا نام و نشان نہ رہے گا، آپ چالیس سال قیام فرمائیں گے ، نکاح کریں گے ، اولاد بھی ہوگی اور بعد وصال آپ سید الانبیاء صلی اللہ علیہ وسلم کے پہلو میں مدفون ہونگے ۔

#
دجال کے قتل کے بعد حضرت عیسی علیہ السلام کو رب تعالی کا حکم ہوگا کہ مسلمانوں کو کوہ طور پر لے جاؤ۔ مسلمانوں کے کوہ طور پرجانے کے بعد یاجوج ماجوج ظاہر ہونگے ، یہ فسادی لوگ ہیں جو حضرت سکندر ذوالقرنین کی بنائی ہوئی آہنی دیوار کے پیچھے محصور ہیں اس وقت یہ دیوار توڑ کر نکلیں گے اور زمیں میں قتل و غارت اور فساد پھیلائیں گے ۔ پھر حضرت عیسی علیہ السلام کی دعا سے اللہ تعالی ان کی گردنوں میں ایک خاص قسم کے کیڑے پیدا فرمائے گا جس سے یہ سب ہلاک ہوجائیں گے۔

#
قیامت سے قبل ایک عجیب شکل کا جانور ظاہر ہوگا جس کا نام دائتہ الارض ہے ، یہ کوہ صفا سے ظاہر ہوکر تمام دنیا میں پھرے گا ، فصاحت کے ساتھ کلام کرے گا ، اس کے پاس حضرت موسی علیہ السلام کا عصا اور حضرت سلیمان علیہ السلام کی انگوٹھی ہوگی ، یہ عصا سے ہر مسلمان کی پیشانی پر ایک نورانی نشان بنائے گا اور انگوٹھی سے ہر کافر کے ماتھے پر سیاہ دھبہ لگائے گا ، اس وقت تمام مسلم و کافر علانیہ ظاہر ہوجائیں گے۔ پھر جو کافر ہے ہر گز ایمان نہ لائے گا اور مسلمان ہمیشہ ایمان پر قائم رہے گا ۔

#
جب دابتہ الارض نکلے گا تو حسب معمول آفتاب بارگاہ الہی میں سجد ہ کر کے طلوع کی اجازت چاہے گا اجازت نہ ملے گی بلکہ حکم ہوگا واپس جا ۔ تو آفتاب مغرب سے طلوع ہو گا اور نصف آسمان تک آ کر واپس لوٹ جائے گا ۔ اور پھر مغرب کی جانب غروب ہوگا۔ اس نشانی کے ظاہر ہوتے ہی توبہ کا دروازہ بند ہوجائے گا۔ 
( از مسلم ، بخاری ، مشکوہ )

#
جب قیامت آنے میں چالیس برس رہ جائیں گے ۔ تو ایک خوشبودار ٹھنڈی ہوا چلے گی جو لوگوں کی بغلوں کے نیچے سے گزرے گی جس کے اثر سے ہر مسلمان کی روح قبض ہوجائے گی ، صرف کافر ہی باقی رہ جائیں گے اور انہیں کافروں پر قیامت قائم ہو گی۔ جب یہ سب علامات پوری ہوجائیں گی اور زمین پر کوئی اللہ کہنے والا نہ رہے گا تو حکم الہی سے حضرت اسرافیل علیہ السلام صور پھونکیں گے ، شروع میں اس کی آواز بہت باریک ہوگی پھر رفتہ رفتہ بہت بلند ہوجائے گی ، لوگ اسے سنیں گے اور بے ہوش ہو کر گرپڑیں گے ۔ اور مرجائیں گے ، زمین و آسمان ، فرشتے اور ساری کائنات فنا ہوجائے گی ، ا س وقت اللہ عزوجل کے سوا کوئی نہ ہوگا ، وہ فرمائے
گا ، ( آج کس کی بادشاہت ہے ؟ کہاں ہیں جبار اور متکبر لوگ ؟ کوئی جواب دینے والا نہ ہوگا پھر خود ہی فرمائے گا
( للہ الواحد القھار ) ترجمہ ۔ ( صرف اللہ واحد قھار کی بادشاہت ہے )


پھر جب اللہ تعالی چاہے گا حضرت اسرافیل علیہ السلام کو زندہ فرمائے گا اور صور کو پیدا کر کے دوبارہ پھونکنے کا حکم دے گا ، صور پھونکتے ہی پھر سب کچھ موجود ہوجائے گا، سب سے پہلے حضور صلی اللہ علیہ وسلم اپنے روضہء اطہر سے یوں باہر تشریف لائیں گے کہ دائیں ہاتھ میں صدیق اکبر رضی اللہ عنہ اور بائیں ہاتھ میں فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کا ہاتھ تھامے ہونگے پھر مکہ مکرمہ و مدینہ طیبہ میں مدفون مسلمانوں کے ہمراہ میدان حشر میں تشریف لے جائیں گے ۔

#
دنیا میں جو روح جس جسم کے ساتھ تھی اس روح کا حشر اسی جسم میں ہوگا ، جسم کے اجزاء اگرچہ خاک یا راکھ ہوگئے ہوں یا مختلف جانوروں کی غذا بن چکے ہوں پھر بھی اللہ تعالی ان سب اجزاء کو جمع فرما کر قیامت میں زندہ کرے گا

ارشاد باری تعالی ہے 
بولو، ایسا کون ہے کہ ہڈیوں کو زندہ کرے جب وہ بالکل گل گئیں ؟ تم فرماؤ ، انہیں وہ زندہ کرے گا جس نے پہلی بار انہیں بنایا اور اسے ہر پیدائش کا علم ہے 
(یس : ۷۸ ، ۷۹، کنز الایمان )

#
میدان حشر ملک شام کی زمین پر قائم ہوگا اور زمین بالکل ہموار ہوگی۔ ان دن زمین تانبے کی ہوگی اور آفتاب ایک میل کے فاصلے پر ہوگا، گرمی کی شدت سے دماغ کھولتے ہونگے ، پسینہ کثرت سے آئے گا ، کسی کے ٹخنوں تک ، کسی کے گھٹنوں تک، کسی کے گلے تک اور کسی کے منہ تک لگام کی مثل ہوگا یعنی ہر شخص کے اعمال کے مطابق ہوگا ۔ یہ پسینہ نہایت بدبو دار ہوگا ، گرمی کی کی شدت سے زبانیں سوکھ کر کانٹا ہو جائیں گی ، بعض کی زبانیں منہ سے باہر نکل آئیں گی اور بعض کے دل گلے تک آجائیں گے ، خوف کی شدت سے دل پھٹے جاتے ہونگے ہر کوئی بقدر گناہ تکلیف میں ہوگا ، جس نے زکوہ نہ دی ہوگی اس کے مال کو خوب گرم کر کے اس کی کروٹ ، پیشانی اور پیٹھ پر داغ لگائے جائیں گے۔ وہ طویل دن خداکے فضل سے اس کے خاض بندوں کے لئے ایک فرض نماز سے زیادہ ہلکا اور آسان ہوگا۔

قیامت کے دن کے متعلق قرآن حکیم میں ارشاد ہوا 
جس دن آسمان ایسے ہوگا جیسے گلی ہوئی چاندی ، اور پہاڑ ایسے ہلکے ہوجائیں گے جیسے اون، اور کوئی دوست کسی دوست کو دیکھنے کے باوجود اس کا حال نہ پوچھے گا، مجرم آرزو کرے گا کہ کاش ! اس د ن کے عذاب سے چھٹنے کے بدلے میں دیدے اپنے بیٹے ، اور اپنی بیوی ، اور اپنا بھائی ، اور اپنا کنبہ جس میں اس کی جگہ ہے ، اور جتنے زمین میں ہیں سب ، پھر یہ بدلہ دینا اسے بچالے؟ ہرگز نہیں ۔ 
(المعارج : ۸ تا ۱۵)

#
قیامت کا دن پچاس ہزار برس کے برابر ہوگا۔ اور آدھا دن تو انہی مصائب و تکالیف میں گزرے گا ۔ پھر اہل ایمان مشورہ کر کے کوئی سفارشی تلاش کریں گے ۔ جو ان مصائب سے نجات دلائے ۔ پہلے لوگ حضرت آدم علیہ السلام کے پاس حاضر ہو کر شفاعت کی درخواست کریں گے ، میں اس کام کے لائق نہیں تم ابراہیم علیہ السلام کے پاس جاؤ وہ اللہ کے خلیل ہیں ، پس لوگ ابراہیم علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوجائیں گے آپ فرمائیں گے ، میں اس کام کے لائق نہیں تم موسی علیہ السلام کے پاس جاؤ۔ لوگ وہاں جائیں گے ۔ تو وہ بھی یہی جواب دیں گے اور عیسی علیہ السلام کے پاس بھیج دیں گے۔ وہ فرمائیں گے ، تم حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں جاؤ وہ ایسے خاص بندے ہیں کہ ان کے لئے اللہ تعالی نے ان کے اگلوں اور پچھلوں کے گناہ معاف فرمادیے۔ پھر سب لوگ حضور علیہ السلام کی بارگاہ میں حاضر ہونگے اور شفاعت کی درخواست کریں گے۔ آقا علیہ السلام فرمائیں گے ، میں ا س کام کے لئے ہوں ، پھر آپ بارگاہ الہی میں سجدہ کر-یں گے ۔ ارشاد باری تعالی ہوگا

اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم ! سجدہ سے سر اٹھاؤ اور کہو تمہاری بات سنی جائے گی ، اور مانگو تمہیں عطا کیا جائے گا ، اور شفاعت کرو تمہاری قبول کی جائے گی 
(از بخاری ، مسلم ، مشکوہ) 

#
آقا و مولی صلی اللہ علیہ وسلم مقام محمود پر فائز کیے جائیں گے

قرآن کریم میں ہے 
قریب ہے کہ تمہیں تمہارا رب ایسی جگہ کھڑا کرے ۔ جہاں سب تمہاری حمد کریں 
(بنی اسرائیل : ۷۹)

مقام محمود مقام شفاعت ہے آپ کو ایک جھنڈا عطا ہوگا جسے ( لواء الحمد ) کہتے ہیں ، تمام اہل ایمان اسی جھنڈے کے نیچے جمع ہونگے اور حضور علیہ السلام کی حمد و ستائش کریں گے ۔

#
شافع محشر صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک شفاعت تو تمام اہل محشر کے لئے ہے جو میدان حشرمیں زیادہ دیر ٹہرنے سے نجات اور حساب و کتاب شروع کرنے کے لئے ہو گی ۔ آپ کی ایک شفاعت ایسی ہوگی جس سے بہت سے لوگ بلا حساب جنت میں داخل ہونگے جبکہ آپ کی ایک شفاعت سے جہنم کے مستحق بہت سے لوگ جہنم میں جانے سے بچ جائیں گے ۔ آقا صلی اللہ علیہ وسلم کی شفاعت سے بہت سے گنا ہ گار جہنم سے نکال کر جنت میں داخل کر دیے جائیں گے۔ نیز آپ کی شفاعت سے اہل جنت بھی فیض پائیں گے اور انکے درجات بلند کیے جائیں گے ۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد دیگر انبیا ء کرام اپنی اپنی امتوں کی شفاعت فرمائیں گے ۔ پھر اولیائے کرام ، شہداء علماء حفاظ حجاج فوت شدہ نا بالغ بچے اپنے ماں باپ کی شفاعت کریں گے ۔ ا گر کسی نے علماء حق میں سے کسی کو دنیا میں وضو کے لیے پانی دیا ہوگا تو وہ بھی یاد دلاکر شفاعت کی درخواست کرے گا اور وہ اس کی شفاعت کریں گے۔

#
حساب حق ہے اس کا منکر کافر ہے ۔

پھر بیشک ضرور اس دن تم سے نعمتوں کی پرسش ہوگی 
(التکاثر : ۸، کنز الایمان )

#
حضور علیہ السلام کے طفیل بعض اہل ایمان بلا حساب جنت میں داخل ہونگے ، کسی سے خفیہ حساب کیا جائے گا ، کسی سے علانیہ ، کسی سے سختی سے اور بعض کے منہ پر مہر کردی جائے گی اور ان کے ہاتھ پاؤں و دیگر اعضاء ان کے خلاف گواہی دیں گے ۔ قیامت کے دن نیکوں کو دائیں ہاتھ میں اور بروں کو بائیں ہاتھ میں ان کا نامہ اعمال دیا جائے گا، کافر کا بایاں ہاتھ ان کی پیٹھ کے پیچھے کر کے اس میں نامہ اعمال دیا جائے گا۔

اور البتہ وہ شخص جس کا نامۂ اعمال اس کی پیٹھ کے پیچھے سے دیا جائے گا
(الانشقاق : ۱۰)

ارشاد باری تعالی ہے

بیشک تم پر کچھ نگہبان ہیں ، معزز لکھنے والے ، جانتے ہیں جو کچھ تم کرو
(الانفطار : ۱۰ تا ۱۲ )

انسان کے دائیں کندھے کی طرف نیکیاں لکھنے والے فرشتے ہوتے ہیں اور بائیں طرف برائیاں لکھنے والے ۔ انسان کے نامہ اعمال میں سب کچھ لکھا جاتا ہے

قرآن کریم میں ہے
قیامت کے دن مجرم ) کہیں گے ، ہائے خرابی ! ہمارے اس نامہ اعمال کو کیا ہو ا، نہ ا س نے کوئی چھوٹا گناہ چھوڑا نہ بڑا جسے گھیر نہ لیا ہو اور اپنا سب کیا انہوں نے سامنے پایا ، اور تمہارا رب کسی پر ظلم نہیں کرتا
(الکہف : ۴۹ ، کنز الایمان )

#
میزان حق ہے یہ ایک ترازو ہے جس پر لوگوں کے نیک و بد اعمال تو لے جائیں گے

ارشاد باری تعالی ہے
اور اس دن تو ل ضرور ہونی ہے توجن کے پلے بھاری ہوئے وہی مراد کو پہنچے ، اور جن کے پلے ہلکے ہوئے تو وہی ہیں جنہوں نے اپنی جان گھاٹے میں ڈالی
(الاعراف : ۸، ۹ ، کنز الایمان )

نیکی کا پلہ بھاری ہونے کا مطلب یہ ہے کہ وہ پلہ اوپر کو اٹھے جبکہ دنیا میں بھاری پلہ نیچے کو جھکتا ہے

#
حوض کوثر حق ہے جو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو عطا فرمایا گیا ، ایک حوض میدان حشر میں اور دوسرا جنت میں ہے اور دونوں کا نام کوثر ہے کیونکہ دونوں کا منبع ایک ہی ہے ۔ حوض کوثر کی مسافر ایک ماہ کی راہ ہے ، اس کے چاروں کناروں پر موتیوں کے خیمے ہیں ، اس کی مٹی نہایت خوشبودار مشک کی ہے ، اسکا پانی دودھ سے زیادہ سفید ، شہد سے زیادہ میٹھا اور مشک سے زیادہ پاکیزہ ہے ، جو اس کا پانی پیے گا وہ کبھی بھی پیاسا نہ ہوگا ۔
(مسلم ، بخاری ) 

#
صراط حق ہے یہ ایک پل ہے جو بال سے زیادہ باریک اور تلوار سے زیادہ تیز ہوگا اور جہنم پر نصب کیا جائے گا ۔ جنت میں جانے کا یہی راستہ ہوگا ، سب سے پہلے حضور صلی اللہ علیہ وسلم اسے عبور فرمائیں گے پھر دیگر انبیاء و مرسلین علیہم السلام پھر یہ امت اور پھر دوسری امتیں پل پر سے گزریں گی ۔ پل صراط پر سے لوگ اپنے اعمال کے مطابق مختلف احوال میں گزریں گے بعض ایسی تیزی سے گزریں گے جیسے بجلی چمکتی ہے ، بعض تیز ہوا کی مانند ، بعض پرندہ اڑنے کی طرح ، بعض گھوڑا دوڑنےکی مثل اور بعض ایسے گزریں گے جیسے آدمی دوڑتا ہے جبکہ بعض پیٹھ کے بل گھسٹتے ہوئے اور بعض چیونٹی کی چال چلتے ہوئے گزریں گے ۔ پل صراط دونوں جانب بڑے بڑے آنکڑے لٹکتے ہونگے جو حکم الہی سے بعض کو زخمی کردیں گے اور بعض کو جہنم میں گرا دیں گے۔ 
(بخاری ، مسلم ، مشکوہ ) 

#
سب اہل محشر تو پل صراط پر سے گزرنے کی فکر میں ہونگے اور ہمارے معصوم آقا شفیع محشر صلی اللہ علیہ وسلم پل کے کنارے کھڑے ہو کر اپنی عاصی امت کی نجات کے لئے رب تعالی سے دعا فرما رہے ہونگے ۔ رب سلم رب سلم ) الہی ! ان گناہگاروں کو بجا لے بچالے ، آپ صرف اسی جگہ گرتوں کا سہارا نہ بنیں گے بلکہ کبھی میزان پر گناہ گاروں کا پلہ بھاری بناتے ہونگے اور کبھی حوض کوثر پر پیاسوں کو سیراب فرمائیں گے ، ہر شخص انہی کو پکارے گا اور انہی سے فریاد کر ے گا کیوں کہ باقی سب تو اپنی فکر میں ہونگے اور آقا صلی اللہ علیہ وسلم کو دوسروں کی فکر ہوگی۔

#
اللہ تعالی نے ایمان والوں کے لیے جنت بنائی ہے ۔ اور اس میں وہ نعمتیں رکھی ہیں جنہیں نہ کسی آنکھ نے دیکھا نہ کسی کان نے سنا اور نہ کسی دل میں انکا خیال آیا۔ 
(بخاری ، مسلم)

جنت کے آٹھ طبقے ہیں : جنت الفردوس ، جنت عدن ، جنت ماویٰ، دارالخلد ، دارالسلام ، دار المقامہ ، علیین ، جنت نعیم ۔ (تفسیر عزیزی ) جنت میں ہر مومن اپنے اعمال کے لحاظ سے مرتبہ پائے گا۔ 

#
جنت میں سو درجے ہیں اور ہر درجے میں ا تنی وسعت ہے جتنا زمین اور آسمان کے درمیان فاصلہ ہے، جنت کا سب سے اعلی درجہ فردوس ہے ۔ اس میں جنت کی چار نہریں جاری ہیں ، تمام جنتوں سے اوپر عرش ہے ۔ 
( ترمذی ) 

جنت میں چار طرح کی نہریں ہیں پانی کی ، دودھ کی ، شہد کی اور پاکیزہ شراب کی ۔
(محمد : ۱۵)

اہل جنت کو پاکیزہ شراب سے لبریز جام دیے جائیں گے جس کا رنگ سفید ہوگا۔ اور جس کے پینے سے لذت حاصل ہوگی ، نہ اس میں نشہ ہوگا اور نہ اسے پینے سے سر چکرائے گا۔
(الصفت : ۴۵ تا ۴۷)

#
پہلا گروہ جو جنت میں جائے گا ان کے چہرے چودہویں کے چاند کی طرح روشن ہونگے اور دوسرے گروہ کے چہرے نہایت چمکدار ستارے کی طرح ہونگے ، ان میں کوئی اختلاف و بعض نہ ہوگا۔ جنت میں کوڑا یا چھڑی رکھنے کی جگہ دنیا اور اس کی تمام نعمتوں سے بہتر ہے ۔ جنت میں ایک درخت ہے (جس کا نام طوبی ہے ) اس کے سائے میں کوئی سوار تیز رفتار گھوڑے پر سو برس تک سفر کرتا ہے پھر بھی وہ ا س کے سائے کو عبور نہ کر سکے گا۔ 
(بخاری ، مسلم )

#
جنت کی دیواریں سونے اور چاندی کی اینٹوں اور مشک کے گارے سے بنی ہیں ، اس کی زمین میں مٹی کی بجائے زعفران ہے اور اس نہروں میں کنکریوں کی جگہ موتی اور یاقوت ہیں ، جنت میں رہنے کے لیے موتیوں کے خیمے ہونگے ، اہل جنت خوبصورت بے ریش مرد ہونگے ان کی آنکھیں سرمگیں ہونگی وہ ہمیشہ تیس برس کے دکھائی دیں گے ۔ ان کی جوانی کبھی ختم نہ ہوگی اور نہ ہی ان کے لباس پرانے ہونگے۔ وہ ایک دوسرے کو ایسے دیکھیں گے جیسے تم افق پر چمکنے والے ستارے کو دیکھتے ہو۔ جنتی ہمیشہ زندہ رہیں گے انہیں نہ بیند آئے گی نہ موت ۔ (مشکوہ )

#
جنت میں خوبصورت آنکھوں اور سفید رنگ والی حوریں ہونگی جو نہایت اچھی آواز میں حمد و ثنا کا نغمہ (بغیر ساز کے ) گائیں گی ایسی حسین آواز کبھی کسی نے نہ سنی ہوگی وہ کہیں گی ، ہم ہمیشہ رہنے والی ہیں ہم کبھی نہیں مریں گی ہمیں نعمتیں دی گئی ہیں ہم کبھی محتاج نہ ہونگی ہم راضی رہنے والی ہیں کبھی ناراض نہ ہونگی ، مبارکباد اس کے لیے جو ہمارا ہے اور ہم اس کی ہیں ۔ (ترمذی )

ایک ادنی جنتی کو بھی (۸۰) ہزار خادم اور (۷۲) حوریں ملیں گی ، حوریں ایسی حسین ہونگی کہ ان کے لباس اور گوشت کے باہر ان کی پنڈلویں کا مغز دکھائی دے گا۔ 
(مشکوہ ) 

ارشاد باری تعالی ہوا 
ان (باغوں میں ) عورتیں ہیں عادت کی نیک اور صورت کی اچھی ، تو اپنے رب کی کونسی نعمت جھٹلاؤ گے ، حوریں ہیں خیموں میں پردہ نشین ، تو اپنے رب کی کونسی نعمت کو جھٹلاؤ گے ، ان سے پہلے انہیں ہاتھ نہ لگایا کسی آدمی اور نہ جن نے ، تو اپنے رب کی کونسی نعمت جھٹلاؤ گے
(رحمن : ۷۰ تا ۷۵ ، کنز الایمان )

جنت کی حور اگر زمین کی طرف جھانکے تو زمین سے آسمان تک روشنی ہوجائے اور سب جگہ خوشبو سے بھر جائے 
(بخاری ) 

نیز چاند و سورج کی روشنی ماند پڑجائے، اور اگر وہ سمندر میں تھوک دے تو اس کے تھو ک کی شیرنی کی وجہ سے سمندر کا پانی میٹھا ہوجائے ۔ خیال رہے کہ جو مثالیں جنت کی تعریف میں بیان ہوئی ہیں وہ محض سمجھانے کے لئے ہیں ورنہ دنیا کی اعلی ترین نعمتوں کو جنت کی کسی چیز کے ساتھ کوئی مناسبت نہیں ہے۔

#
اللہ عزوجل نے اہل جنت کے متعلق ارشاد فرمایا

اور ان کے خدمت گار لڑکے ان کے گرد پھریں گے گویا وہ موتی ہیں چھپا کر رکھے گئے
نیز فرمایا 
اور ہم نے ان کی مدد فرمائی میوے اور گوشت سے جو چاہیں
(الطور : ۲۴ ، ۲۲)

جنتی جو چاہیں گے فورا ان کے سامنے موجود ہوگا اگر کسی پرندے کا بھنا گوشت کھانے کی خواہش ہوگی تو گلاس وغیرہ خود ہاتھ میں آجائیں گے اور ان میں عین ان کی خواہش کے مطابق مشروب موجود ہوگا۔ جنتیوں کو سونے کے کنگن اور موتی پہنائے جائیں گے اور وہاں ان کی پوشاک ریشم ہوگی ۔
(فاطر : ۳۳ )

اہل جنت کی نیک بیویوں کو کنواری ، ہم عمر اور حسین و جمیل بنا کر جنت میں انکا ساتھ عطا ہوگا ۔
(الواقعہ : ۳۶)

جنتیوں کے مومن والدین اور اولاد کو بھی جنت میں ان سے ملا دیا جائے گا بلکہ ان کے طفیل اعلی مقام دیا جائے گا۔

ارشاد ہوا 
(اور جو ایمان لائے اور ان کی اولاد نے ایمان کے ساتھ ان کی پیروی کی ، ہم نے ان کی اولاد ان سے ملادی )
(الطور : ۲۱، کنز الایمان )

جنت میں غم ، بیماری نیز پیشاب ، پاخانہ ، تھوک ، ناک بہنا ، کان کا میل ، بدن کا میل وغیرہ بالکل نہ ہونگے ، جنتیوں کا کھانا ایک فرحت بخش خوشبودار ڈکار اور کستوری کی طرح کوشبودار پسینے سے ہضم ہوجائے گا۔ 
(مسلم ، بخاری )

#
جنت میں ا یک اعلی ترین نعمت یہ ہے کہ رب تعالی اہل جنت سے فرمائے گا ، میں تمہیں اپنی رضا عطا کرتا ہوں ۔ اور اب ہمیشہ تمہیں میری رضا حاصل رہے گی ۔ جنت میں سب سے عظیم نعمت دیدار باری تعالی ہے فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے کہ بیشک تم اپنے رب کو ان آنکھوں سے دیکھو گے جیسے آفتاب اور چودھویں کے چاند کو ہر ایک اپنی جگہ سے دیکھتا ہے۔ 
( بخاری ، مسلم )

ارشاد باری تعالی ہوا
کچھ مونہہ اس دن تر و تازہ ہوں گے اپنے رب کو دیکھتے (ہوں گے
(القیامتہ : ۲۲ ، ۲۳، کنز الایمان )

#
جہنم اللہ عزوجل کے قہر و جلال کا مظہر ہے

ارشاد باری تعالی ہے 
(ڈرو اس آگ سے جس کا ایندھن آدمی اور پتھر ہیں ، تیار رکھی ہے کافروں کے لیے)
(البقرہ : ۲۴)

زمانہ آیا ہے بے حجابی کا

زمانہ آیا ہے بے حجابی کا ، عام دیدار یار ہو گا
سکوت تھا پردہ دار جس کا ، وہ راز اب آشکار ہوگا

گزر گیا اب وہ دور ساقی کہ چھپ کے پیتے تھے پینے والے
بنے گا سارا جہان مے خانہ ، ہر کوئی بادہ خوار ہو گا

کبھی جو آوارۂ جنوں تھے ، وہ بستیوں میں پھر آ بسیں گے
برہنہ پائی وہی رہے گی مگر نیا خارزار ہو گا

سنا دیا گوش منتظر کو حجاز کی خامشی نے آخر
جو عہد صحرائیوں سے باندھا گیا تھا ، پھر استوار ہو گا

نکل کے صحرا سے جس نے روما کی سلطنت کو الٹ دیا تھا
سنا ہے یہ قدسیوں سے میں نے ، وہ شیر پھر ہوشیار ہو گا

کیا مرا تذکرہ جوساقی نے بادہ خواروں کی انجمن میں
تو پیر میخانہ سن کے کہنے لگا کہ منہ پھٹ ہے ، خوار ہو گا

دیار مغرب کے رہنے والو! خدا کی بستی دکاں نہیں ہے
کھرا جسے تم سمجھ رہے ہو ، وہ اب زر کم عیار ہو گا

تمھاری تہذیب اپنے خنجر سے آپ ہی خود کشی کرے گی
جوشاخ نازک پہ آشیانہ بنے گا ، ناپائدار ہو گا

سفینۂ برگ گل بنا لے گا قافلہ مور ناتواں کا
ہزار موجوں کی ہو کشاکش مگر یہ دریا سے پار ہو گا

چمن میں لالہ دکھاتا پھرتا ہے داغ اپنا کلی کلی کو
یہ جانتا ہے کہ اس دکھاوے سے دل جلوں میں شمار ہو گا

جو ایک تھا اے نگاہ تو نے ہزار کر کے ہمیں دکھایا
یہی اگر کیفیت ہے تیری تو پھر کسے اعتبار ہو گا

کہا جوقمری سے میں نے اک دن ، یہاں کے آزاد پا بہ گل ہیں
توغنچے کہنے لگے ، ہمارے چمن کا یہ رازدار ہو گا

خدا کے عاشق تو ہیں ہزاروں ، بنوں میں پھرتے ہیں مارے مارے
میں اس کا بندہ بنوں گا جس کو خدا کے بندوں سے پیار ہو گا

یہ رسم بزم فنا ہے اے دل! گناہ ہے جنبش نظر بھی
رہے گی کیا آبرو ہماری جو تو یہاں بے قرار ہو گا

میں ظلمت شب میں لے کے نکلوں گا اپنے درماندہ کارواں کو
شررفشاں ہوگی آہ میری ، نفس مرا شعلہ بار ہو گا

نہیں ہے غیر از نمود کچھ بھی جو مدعا تیری زندگی کا
تو اک نفس میں جہاں سے مٹنا تجھے مثال شرار ہو گا

نہ پوچھ اقبال کا ٹھکانا ابھی وہی کیفیت ہے اس کی
کہیں سر رہ گزار بیٹھا ستم کش انتظار ہو گا

2010 ka akhri din

This is my annual post, the last post of 2010. and here i will sum up, what happened in my life in that year and look ahead to what’s going to happen in 2011. I do this so I can have a handy record that I can get to in seconds.
First month of 2010 was not good, after the month of march that year starts bringing me alot of happiness, in my personal life as well as in my career. Thanks to ALLAH for each and everything.

Many days was very good, few days was bad. this year i got sick 4 times.
This Year, I read almost 52 great Informative books on Islam, Life, and Science.I learn alot from those books. and i have change my life too much, beacuse i have implemented 80% in my life, that i read from books. Books are the best friends of a person. I spend my free time with books.
This year i didnt watch Television. as compared to past years. Only 2% of my time of 2010 i sit infront of tv to watch it.
I spend alot of my time on internet, for reading articles and news all around the world.

This year was nice. and I pray ALLAH, the coming year 2011 bring alot of happiness for my loved one,family, and friends.and take away all our sorrows and problems from our life. Make us powerfull,happy and healthy,wealthy. and A good MUSLIMS as ALLAH says in QURAN. Ameen

بد نظری : زہر آلود تیر

بسم اللہ الرحمن الرحیم

مذہبِ اسلام نے کسی غیر محرم کو دیکھنے سے روکا ہے اور نگاہیں نیچی رکھنے کی ہدایت کی ہے۔ ارشاد ربانی ہے:
’’ قل للمؤمنین یغضوا من ابصارهم و یحفظوا فروجهم‘‘
( سورۃ نور۔30)
مسلمان مردوں سے کہدیں کہ وہ اپنی نگاہیں نیچی رکھیں اور اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریں۔

آیت مبارکہ میں حفاظت فروج سے پہلے نظروں کی حفاظت کا حکم فرما یا ہے، کیونکہ نظروں کی بے احتیاطی ہی شرمگاہوں کی حفاظت میں غفلت کا سبب بنتی ہے۔

بد نظری کے معاملے میں جو حال مردوں کا ہے کم و بیش وہی حال عورتوں کا بھی ہے ،چونکہ مرد وعورت کا خمیرایک ہی ہے اور عورتیں عموماً جذباتی و نرم طبیعت ہوتی ہیں ،جلد متاثر ہوجاتی ہیں ان کی آنکھیں میلی ہو جائیں ،تو زیادہ فتنے جگاتی ہیں ۔اس لیے ان کو بھی واضح اور صاف الفاظ میں نگاہیں نیچی رکھنے کی نصیحت کی گئی ہے۔

’’وقل للمؤمنات یغضضن من ابصارهنّ و یحفظن فروجهن ‘‘
۔ (نور۔31)
مسلمان عورتوں سے کہدیں کہ وہ اپنی نگاہیں نیچی رکھیں اور اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریں۔

اوّل الذکر آیت میں مرد وعورت دونوں نگاہیں نیچی رکھنے اور شرم گاہوں کی حفاظت کرنے کے حکم میں شامل تھے ،جس میں عام مومنین کو خطاب ہے،اور مومنین میں بالعموم عورتیں بھی شامل ہوتی ہیں۔نگاہیں نیچی رکھنے اور شرم گاہوں کی حفاظت کرنے کے حکم کی اہمیت کے پیش نظر ان کو بطور خاص دوبارہ نگاہیں نیچی رکھنے کو کہا گیا ہے، اسی سے مستدل یہ مسئلہ بھی ہے کہ جس طرح

مردوں کے لیے عورتوں کا دیکھنا منع ہے، اسی طرح عورتوں کے لیے مردوں کا دیکھنا مطلقاً ممنوع ہے۔

نگاہیں نیچی رکھنے کے فوائد بے شمار ہیں ،نگاہیں نیچی رکھنے میں اللہ تعالیٰ کے فرمان کی اطاعت ہے ،جس سے اس زہر آلود تیر کا اثر دل تک نہیں پہونچتا ۔اللہ تعالیٰ سے انسیت و محبت بڑھتی ہے، دل کو قوت و فرحت حاصل ہو تی ہے ،دل کو نور حاصل ہو تا ہے مومن کی عقل و فراست بڑھتی ہے۔ دل کو ثبات و شجاعت حاصل ہو تی ہے ۔دل تک شیطان کے پہونچنے کا راستہ بند ہو جا تا ہے۔ دل مطمئن ہو کربہتر اور کا رآمد باتیں سوچتاہے۔

نظر اور دل کا بڑا قریبی تعلق ہے ،اور دونوں کے درمیان کا راستہ بہت مختصر ہے ۔دل کی اچھائی یا برائی کا دارو مدار نظر کی اچھائی و برائی پر ہے ۔جب نظر خراب ہو جاتی ہے، تو دل خراب
ہو جاتا ہے اس میں نجاستیں اور گندگیاں جمع ہو جاتی ہیں،اور اللہ کی معرفت اور محبت کے لیے اس میں گنجائش باقی نہیں رہتی ۔خوش نصیب ہیں وہ لوگ جو اپنی نگاہیں نیچی رکھتے ہیں اور وہ بڑی بڑی مصیبتو ں اور آفتوں سے بچے رہتے ہیں۔مومنوں کو بد نظری سے بچنا چاہئے اور نگاہیں نیچی رکھنی چاہئے تاکہ مرد و عورت عزت کے ساتھ زندگی گزاریں اور کوئی مصیبت ان پر نہ آئے، جس سے زندگی داؤ پر لگ جائے، اور ان کی اشرفیت جاتی رہے۔

بد نظری کرنے سے بہت سی برائیاں سر اٹھا تی ہیں، ابتدا میں آدمی اس کو ہلکی چیز سمجھ کر لطف اندوز ہو تا ہے، اور آگے چل کر عظیم گناہ کا مرتکب و ذلیل و رسواہو جاتا ہے ۔جس طرح چنگاری سے آگ کے شعلے بھڑکتے ہیں، اسی طرح بد نظری سے بڑی بڑی برائیاں جنم لیتی ہیں۔
نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا :’’ العینان تزنیان و زناهما النظر‘‘ آنکھوں کا دیکھنا زنا ہے۔
اس سے زمین میں فساد پھیلتا ہے، زنا کے لیے راہ ہموار ہو تی ہے، اس سے گھر کی برکت ختم ہو تی ہے۔ بد نظری کرنے والے کو حسن عمل کی توفیق نہیں ہو تی۔ قوت حافظہ کمزور ہو جاتی ہے ۔یہ ذلت و رسوائی کا سبب بنتی ہے ،اس سے بے حیائی پھیلتی ہے ۔بد نظری سے انسان کے اندر خیالی محبوب کا تصور پیدا ہو جاتا ہے ،وہ خام آرزؤں اور تمناؤں میں الجھا رہتا ہے، اس کا دماغ متفرق چیزوں میں بٹ جاتا ہے، جس سے وہ حق اور ناحق کی تمیز نہیں کر پاتا۔اس سے دو دلوں میں شہوتوں کی آگ بھڑکتی ہے اور خوابیدہ جنسی جذبات میں جنبش ہوتی ہے۔

دور سے ہر چیز بھلی لگتی ہے، اس لیے انسان کا دل دیکھنے کو چاہتا ہے، اس کو پیاس لگی رہتی ہے جو کبھی نہیں بجھتی۔یہ گناہ اصل جوانی میں غلبۂ شہوت کی وجہ سے کیا جاتا ہے، پھر ایسا روگ لگ جاتا ہے کہ لب گور تک نہیں جاتا۔اللہ تعالیٰ نے ایک سے بڑھ کر ایک خوبصورت بنایا ہے کسے کسے دیکھنے کا نتیجہ یہی نکلتا ہے کہ ایک کو دیکھا دوسرے کو دیکھنے کی ہوس ہے، اسی دریا میں ساری عمر بہتا رہے گا، تب بھی کنارے پر نہیں پہونچے گا ،کیونکہ یہ دریا نا پید کنار ہے۔
بد نظری زنا کی سیڑھی ہے۔مثل مشہور ہے کہ دنیا کا سب سے لمبا سفر ایک قدم اٹھا نے سے شروع ہو جاتا ہے، اسی طرح بد نظری کر نے سے زنا کا سفر شروع ہو جاتا ہے۔ مومن کو چاہئے کہ پہلی سیڑھی ہی چڑھنے سے پرہیز کرے۔

بد نظری ایک تیر ہے، جو دلوں میں زہر ڈالتا ہے یہ تیر جب پیوست ہو جاتا ہے تو سوزش قلب بڑھنی شروع ہو جاتی ہے ۔جتنی بد نظری زیادہ کی جائے ،اتنا ہی زخم گہرا ہو تا ہے ۔ علامہ ابن قیم رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ نگاہ ڈالنے والا پہلے قتل ہو تا ہے، وجہ یہ ہے کہ نگاہ ڈالنے والا دوسری نگاہ کو اپنے زخم کا مداوا سمجھتا ہے، حالانکہ زخم اور گہرا ہو تا ہے۔ (بحوالہ:لکافی۔477)

لوگ کانٹوں سے بچ کے چلتے ہیں ہم نے پھولوں سے زخم کھائے ہیں
جب انکھیاں لڑتی ہیں اور نین سے نین ملتے ہیں تو چھپی آشنائی شروع ہو جاتی ہے اور سلام و پیام ،کلام و ملاقات کے دروازے وا ہو جاتے ہیں، اس کا سلسلہ جتنا دراز ہوتا جاتا ہے، اتنی ہی بیقراری بڑھتی جاتی ہے، اور اشاروں اشاروں میں زندگی بھر ایک ساتھ رہنے کے عہد و پیمان ہو جاتے ہیں، اور ایک طرح کا ہو کر ساتھ رہنے کی قسمیں کھائی جاتی ہیں اور ایک وقت ایسا آتا ہے کہ ساری سوسائٹی سو گوار ہو جاتی ہے۔

بدنظری کر نے والے لوگ چو راہوں ،دوکانون میں بیٹھ کر آنے جانے والی عورتوں کو گھور گھور کردیکھتے ہیں اور چیتے کی طرح پھاڑ کھانے والی نظریں ان پر ڈالتے ہیں، اوربھوکے بھیڑیے کے مثل حلق میں اتار نے کی کوشش کر تے ہیں، اور نکلنے والی عورتیں ان فریب خوردہ لوگوں کی کٹیلی و نشیلی اور ھوس ناک نگاہوں کا شکار بنتی ہیں ۔

مغربی تہذیب کی لپیٹ میں آ کر بن ٹھن کر بے پردہ ہو کر نکلنے والی خواتین بھی بد نظری کے مواقع فراہم کر تی ہیں اور پازیب کے گھنگھر و بجاتے ہوئے اپنے گزرنے کا احساس دلاتی ہیں، اور بازار میں اپنے حسن کے جلوے بکھیرتی ہیں ۔خواتین جو گھروں کی زینت ہیں مارکیٹ کی زینت بنتی جارہی ہیں اور شیطان اپنی تمام تر فتنہ سامانیوں کے ساتھ عورت کے ناز و نکھرے اور چلنے کے انداز و ادا کوسنوار کرپیش کرتا ہے، اور عاشقانِ حسن کو گناہ بے لذت میں مبتلا کر دیتا ہے، اور منچلے لونڈے لفنگے لڑکے رال ٹیکائے اس کے پیچھے لگ جاتے ہیں اور اس کو اپنے مطابق دیکھ کر اپنی ابھرتی خواہشات نفسانی اوردہکتی جذبات کی بھٹی کو سرد کر تے ہیں۔

بد نظری کر نے والے گھروں میں جھانک کر اور کھڑکیوں کے اندر رہنے والی عورتوں پر نظر کا جادو چلاتے ہیں اور وہ کسی ضرورت کے تحت کسی گھر میں چلے جاتے ہیں، تو ان کی نظر گھومتی رہتی ہے ،جب تک رہیں اپنے سامان کی تلاش جاری رکھتے ہیں اور کنکھیوں سے بار بار مخالف جنس کو دیکھتے ہیں، وہاں بھی غیرت نہیں آتی۔ کیونکہ یہ دھندا ہی ایسا ہے ،جس کا سابقہ پڑ گیا، پیچھا نہیں چھوڑتا۔ جوانی تو جوانی پیرانہ سالی میں بھی اسی سے منسلک رہتے ہیں اور آخر میں گھاٹا بھی گھاٹا ہاتھ آتا ہے۔

اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتا ہے:
’’یعلم خائنة الاعین ووماتخفی الصدور ‘‘
(المومن ۔ 17)
اللہ تعالیٰ جانتا ہے آنکھوں کی خیانت کو اور وہ کچھ جو سینوں میں پوشیدہ ہے ۔

خیانت نظر کی تشریح ابن عباس رضی اللہ عنہما نے یہ کیا کہ :آدمی کسی کے گھر میں جائے وہاں کسی خوبصورت عورت ہو جسے نظر بچاکر دیکھنے کی کوشش کرے،اور جب لوگوں کو اپنی طرف
متوجہ پائے تو نظر نیچی کرلے،لیکن اللہ نے اس کے دل کا حال جان لیا ۔ ( الجواب الکافی)

پہلی اچانک نظر معاف ہے ۔نبی ﷺ سے عبد اللہ بن جریر رضی اللہ عنہ نے پوچھا: اگر اچانک نظر پڑ جائے تو ؟آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا ’’صرف نظرک‘‘ (مسلم)۔ تو اپنی نظر پھیرلے۔ اگر پہلی نظر ارادۃ ڈالی جائے، تو وہ بھی حرام ہے اور پہلی نظر معاف ہو نے کا یہ مطلب بھی نہیں کہ پہلی نظر ہی اتنی بھر پور ڈالی جائے کہ دوبارہ دیکھنے کی ضرورت ہی نہ رہے ۔صرف اتنی بات ہے کہ اگر اچانک نظر پڑجائے تو فوراً ہٹا لینا چاہئے ۔

انسانی آنکھیں جب بے لگام ہو تی ہیں، تو اکثر برائی و لڑائی کی بنیادبن جاتی ہیں اور انسان کے اندر گناہ کا تخم پڑجاتا ہے ۔ جو موقع ملنے پر بہار دکھاتا ہے ۔قابیل نے ہابیل کی بیوی کے جمال پر نظر ڈالی تو دل و دماغ پر ایسا بھوت سوار ہوا کہ اپنے بھائی کا قتل کر ڈالا۔اور دنیا میں پہلے قتل کا مرتکب ہوا۔عزیز مصر کی بیوی نے حضرت یوسف علیہ السلام کے حسن کو دیکھا تو جذبات کے ہاتھوں ایسی بے قابو ہوئی کہ گناہ کی دعوت دے ڈالی۔

بد نظری کی ایک قسم وہ برہنہ تصاویر ہیں جو اخباروں اور کتابوں کی زینت بنتی ہیں ۔حتی کہ مضامین پر مشتمل رسالوں کے سر ورق پر چھپتی ہیں اورفلموں، ڈراموں اور ماڈلنگ کر نے والی عورتوں کی تصاویر ہیں جو اکثر جگہ دیواروں پر چسپاں رہتی ہیں۔ اور آج کل آسانی یہ ہو گئی ہے کہ ملٹی میڈیا موبائل سیٹ کے فنکشن میں یہ تصویریں قید رہتی ہیں اور انہی سیکڑوں برہنہ و نیم برہنہ تصاویر کو بدل بدل کر موبائل اسکرین میں سیٹ کیا جاتا ہے اور خلوت میں تلذد کی نگاہ مکمل توجہ کے ساتھ انکے انگ انگ کا معائنہ کرتی ہے ۔ ٹی،وی اناء و نسر کو خبروں کے بہانے دیکھنا ،گرل فرینڈوبوائے فرینڈ کی تصویر تنہائی میں للچائی ہوئی نظروں سے دیکھنا ، انٹر نیٹ پر پیشہ ور لڑکیوں کی تصاویر دیکھنا یا فحش ویڈیو سی ڈیز دیکھنا، ان سب کا دیکھنا زندہ عورت کو دیکھنے سے زیادہ نقصان دہ ہے ۔راہ چلتے غیر محرم کے خدو خال کو اتنی باریک بینی سے نہیں دیکھا جا سکتا ہے، جتنا کہ تصاویر کے ذریعہ دیکھنا ممکن ہے ،ان سے زیادہ محتاط رہنے کی ضرورت ہے ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں نگاہیں نیچی رکھنے کی توفیق فرمائے ۔آمین۔

سورج بے نو ر ہو جائے گا

سورج جو زمین سے 15کروڑ کلو میٹر دور ہے بغیر کسی کی مداخلت کے ہمیں ضرورت کے مطابق توانائی فراہم کر تاہے۔ اس جرم فلکی (Celestial body)میں بے پناہ توانائی ہے۔ہائیڈروجن کے ایٹم مسلسل ہیلیم میںتبدیل ہو رہے ہیں۔ہر ایک سیکنڈ میں 70 کروڑ ٹن ہائیڈروجن69کروڑ50لاکھ ٹن ہیلیم میں تبدیل ہو رہی ہے،جبکہ باقی 50لاکھ ہائیڈروجن انرجی (پاور)میں تبدیل ہوجاتی ہے۔
سورج کے اندر وہ حصہ یا وہ بھٹی کہ جس میں ہائیڈروجن ،ہیلیم میں تبدیل ہورہی ہے ، Coreکہلاتاہے جو سورج کا مرکز ہے۔  یہا ں کا درجہ حرارت اور سورج کی باہر والی سطح کے د رجہ حرارت میں نمایاں فرق پایا جاتاہے۔ مرکزی درجہ حرارت ایک کروڑ 50لاکھ سینٹی گریڈ ہے جبکہ بیرونی سطح جس کو فوٹوسفئیرکہتے ہیں، کا درجہ حرارت 5800سینٹی گریڈ ہے۔ اس کا پھیلاو تقریباً500کلومیٹر تک ہے اور اس سے ایسی روشنی خارج ہوتی ہے جو نظرا تی ہے۔ اس کے اوپر کروموسفئیر ہے جو ہزاروں کلومیٹر تک پھیلا ہوا ہے۔ اس جگہ درجہ حرارت 6000 سینٹی گریڈ سے 50,000سینٹی گریڈ تک بڑھتا رہتاہے۔ اس حصے سے سرخی نمار وشنی خارج ہوتی رہتی ہے جسے صرف سورج گرہن کے وقت ہی دیکھا جا سکتاہے۔ اس کے اوپر Coronaیعنی سورج کی فضا ہے جو لاکھوںکلومیٹر تک پھیلی ہوئی ہے۔ اس کا درجہ حرارت 10سے 22لاکھ سینٹی گریڈ تک ہوتاہے۔
سورج گرم گیسوںکا ایک فٹ بال ہے جس میں بلحاظ کمیت 71%ہائیڈروجن ‘28% ہیلیم’1.5% کاربن ،نائیٹروجن اورآکسیجن ہے جبکہ 0.5%دوسرے عناصر پائے جاتے ہیں۔ سورج کی عمر کا اندازہ ساڑھے چار ارب سال لگایا گیا ہے۔ یعنی اتنے سالوں سے سورج مسلسل اس بڑی مقدار میں توانائی خارج کررہا ہے۔ اور اس میں موجود ہائیڈروجن کی مقدار سے اندازہ لگایا گیا ہے کہ یہ مزید ساڑھے پانچ ارب سال تک اسی مقدارمیں توانائی خارج کرتارہے گا اورپھر اس کے بعد ہائیڈروجن کی مقدار ختم ہوجائے گی جس سے توانائی کے پید اہونے کا عمل رک جائے گا اور پھر سورج آہستہ آہستہ ٹھنڈا ہوتاجائے گا جس سے اس سے خارج ہونے والی روشنی بھی بتدریج کم ہوتی جائے گی اور ایک وقت آئے گا کہ سورج بے نور ہو جائے گا۔ (1)
زمین پر زندگی کی موجودگی کو سورج کی توانائی نے ممکن بنایا ہے جو زمین پر توازن کو مستقل بناتی ہے اور 99%توانائی جو زندگی کے لیے ضروری ہو تی ہے سورج مہیا کر تاہے۔ اس توانائی میں سے نصف روشنی کی شکل میں ہو تی ہے جو ہمیں نظر تی ہے بقیہ توانائی بالائے بنفشی شعاعوں کی شکل میں ہوتی ہے جو نظر نہیں آتیں اور حرارت کی شکل میں ہوتی ہیں۔ سورج کی ایک اور خاصیت یہ ہے کہ یہ وقتاً فوقتاًگھنٹی کی مانند پھیلتا رہتا ہے۔ یہ عمل ہر پانچ منٹ بعددہر ایا جاتا ہے اور سورج کی سطح زمین سے 3کلو میٹر قریب آجاتی ہے اور پھر 1080کلومیٹر فی گھنٹے کی رفتا ر سے دور چلی جاتی ہے۔(2)
سورج سے جو روشنی ہمیں حاصل ہوتی ہے و ہ اس کی سطح پر ہونے والے نیو کلیائی دھماکوں کا نتیجہ ہے جو گزشتہ ساڑھے چارارب سال سے جاری ہے۔ مستقبل میں ایک وقت آئے گاکہ سورج پر یہ  نیو کلیائی دھماکے ہونا بند ہو جائیں گے اور وہ مکمل طور پر بے نور ہو جائے گا جس سے اس کی کشش ثقل ختم ہو جائے گی اور پورا نظام شمسی جس میں ہماری زمین بھی شامل ہے اس کی گرفت سے آزاد ہو کر فضا میں بھٹک کر تباہ ہو جائے گا ۔ دراصل کسی ستارے کے بے نورہونے کی وجہ اس میں موجود ہائیڈروجن کا خودکار ایٹمی دھماکوں سے جل جل کر ہیلیم میں تبدیل ہوتے رہناہے ۔پھر ایک وقت آتاہے کہ ہیلیم بھی شدت حرارت کی وجہ سے جلنا شروع کردیتی ہے اورکاربن پیداکرنے لگتی ہے اور کاربن کی یہ تہہ ستارے کے مرکز میں جمع ہونا شروع ہوجاتی ہے ۔چناچہ ہائیڈروجن اور ہیلیم کے جلنے کے اس دہرے عمل کے نتیجے میں ستارے کی حرارت میں بے انتہاشدت آجاتی ہے اوراس کی سطح زورداردھماکوں سے پھول جاتی ہے ۔اس پھولے ہوئے ستارے کو سرخ ضخام (Red Giant) کہاجاتاہے ۔ سرخ ضخام بننے کے بعد ستارہ کا حجم تو بڑھ جاتاہے مگر اس کی حرارت اور چمک میں تیزی سے کمی واقع ہوجاتی ہے ۔ چناچہ اس مرتے ہوئے ستارے کی سرخ ضخام کے بعد بننے والی حالت کو سفید بونا (White Dwarf) کا نام دے دیاجاتاہے ۔اس دوران اس کی جسامت اصل ستارے کی نسبت 80 فیصد رہ جاتی ہے یہ مرتے ہوئے ستارے کی آخری حالتوں میں سے ایک ہے جس میں ستارہ آہستہ آہستہ ٹھنڈا اور مدہم ہوتاچلا جاتاہے ۔ (
3)
قرآن مجید میں سورج کی روشنی کے ختم ہونے کااشارہ درج ذیل آیت کریمہ میں دیا گیاہے:
(وَالشَّمْسُ تَجْرِیْ لِمُسْتَقَرٍّ لَّھَا ط ذٰلِکَ تَقْدِیْرُ الْعَزِیْزِ الْعَلِیْمِ)
” اور سورج ‘وہ اپنے ٹھکانے کی طرف چلا جارہا ہے۔ یہ زبردست علیم ہستی کا باندھاہواحساب ہے ”  )یٰس۔  36:38(
مولانا مودوی  اس آیت کے حوالے سے لکھتے ہیں کہ ”ٹھکانے سے مراد وہ جگہ بھی ہوسکتی ہے جہاں جا کر سورج کو آخر کار ٹھہر جاناہے اوروہ وقت بھی ہو سکتاہے جب وہ ٹھہر جائے گا۔ (4)تفسیر ابن کثیرمیں ایک قول کے مطابق مستقر سے مراد اس کی چال کا خاتمہ ہے۔ قیامت کے دن اس کی حرکت باطل ہو جائے گی ‘یہ بے نور ہوجائے گا ‘اور یہ عالم کل ختم ہوجائے گا۔(5) مولانا عبدالرحمان کیلانی  اس آیت کے تحت لکھتے ہیں کہ:
” ایک دفعہ خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا ابو ذر سے پوچھا :” جانتے ہو کہ سورج غروب ہونے کے بعد کہا ں جاتاہے ؟” سیدنا ابو ذر  کہنے لگے :” اللہ اور اس کا رسول   ہی بہتر جانتے ہیں ”آپ صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا ”: سورج غروب ہونے پر اللہ تعالیٰ کے عرش کے نیچے سجدہ ریز ہوتا ہے اور دوسرے دن طلوع ہونے کا اذن مانگتا ہے تو اسے اذن دے دیا جاتا ہے پھر ایک دن ایسا آئے گا کہ اس سے کہا جائے گا کہ جدھرسے آیا ہے ادھر ہی لوٹ جا۔پھر وہ مغرب سے طلوع ہو گا۔ پھر آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے یہی آیت پڑھی ”۔(6)
مولانا عبدالرحمان کیلانی لکھتے ہیں کہ اس حدیث سے دو باتیں معلوم ہوئیں۔ ایک یہ کہ سورج اور اسی طرح دوسرے سیاروں کی گردش محض کشش ثقل اور مرکز گریز قوت کا نتیجہ نہیں بلکہ اجرام فلکی اور ان کے نظام پر اللہ حکیم وخبیرکا زبردست کنٹرول ہے کہ ان میں نہ تو تصاد م و تزاحم ہو تا ہے اورنہ ہی ان کی مقررہ گردش میں کمی بیشی ہوتی ہے اور یہ سب اجرام اللہ کے حکم کے تحت گردش کر رہے ہیں دوسرے یہ کہ قیامت سے پہلے ایک وقت آنے والا ہے جب سورج مغرب سے طلوع ہو گا اس کے بعد نظام کائنات بگڑ جائے گا۔آج کا مغرب زدہ طالب علم سورج کے طلوع وغروب ہونے اور عرش کے نیچے جاکر دوبارہ طلوع ہونے کی اجازت مانگنے کا مذاق اڑاتا ہے اورکہتاہے کہ سورج تو اپنی جگہ پر قائم ہے اور ہمیں جو طلوع وغروب ہوتا نظر آتاہے تو یہ محض زمین کی محوری گردش کی وجہ سے ہے حالانکہ اللہ کا عرش اتنا بڑا ہے کہ ایک سورج کی کیا بات ہے کائنات کی ایک ایک چیز اس کے عرش کے تلے ہے اورجن وانس کے سوا ہر چیز اس کے ہا ں سجدہ ریز یا اللہ کی طرف سے سپرد کردہ خدمت سر انجام دینے میں لگی ہوئی ہے۔(7)
ڈاکٹر سید سعیدعابدی اسی حدیث کے حوالے سے لکھتے ہیں کہ ”عصر جدید کے بعض مفسرین نے عرش الہی کے نیچے سورج کے سجدہ کرنے اور اللہ تعالیٰ سے اجازت لینے کی اس خبر نبوی کا انکار کیاہے ،ان کا دعویٰ ہے کہ علم فلک کے مطابق سورج کی رفتارمیں کوئی وقفہ نہیںہوتا جبکہ سجدہ کرنا توقف کا تقاضا کرتاہے ۔یہ حدیث حضرت ابو ذر  سے متعدد سندوں سے مروی ہے  اور ہر سند میں امام بخاری اورامام مسلم  اور حضرت ابوذر  کے درمیان جتنے راوی آئے ہیں وہ سب ثقات کی اعلی صفات سے موصوف ہیں توکیا صرف اس وجہ سے اس حدیث کا انکا رقرین عقل ہے کہ عرش الہی کے نیچے سورج کے سجدہ کرنے کی بات ہماری عقل کی رسائی سے باہر ہے اورکیا سورج کا سجدہ کرنا اس بات کو مستلزم ہے کہ وہ ہماری طرح باقاعدہ وضو کرتاہے ،پھر کھڑا ہوتاہے اور پھر ”اللہ اکبر ”کہہ کر سجدہ میں جاتاہے یا اس کے جس فعل کو سجدہ سے تعبیر کیا گیا ہے وہ لمحوں میں وقوع پذیر ہوجاتاہے ،کیا قرآن پاک کی متعد د آیتوں میں کائنات کی ہر شی ٔ کے اللہ تعالیٰ کو سجدہ کرنے کی خبر نہیں دی گئی ؟(الرعد:15،النحل :40، الحج : 18)تو کیاہماری عقل اس سجدے کی حقیقت کا ادراک رکھتی ہے جبکہ قرآن کے منزل من اللہ ہونے میں ادنیٰ سا شک بھی دائرہ ایمان سے خارج کردیتاہے اس لۓ کہ اس کی سند: رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم عن جبرئیل علیہ السلام،عن اللہ عزوجل کی صحت پر پوری کائنات گواہ ہے ۔ (8)
سورج کی روشنی کے ختم کردیئے جانے کا ذکر اللہ تعالیٰ نے سورة التکویر میں اس طرح ارشاد فرمایاہے:
(اِذَا الشَّمْسُ کُوِّرَتْ)
” جب سورج لپیٹ دیاجائے گا”
کوربمعنی کسی چیز کو عمامہ یا پگڑی کی طرح لپیٹنا اور اوپر تلے گھمانا۔ اور اس میں گولائی اور تجمع کے دونوں تصور موجود ہوتے ہیں یعنی کسی چیز کو گولائی میں لپیٹنا اور جماتے جانا۔مطلب یہ ہے کہ سورج کی شعاعیں اس کی روشنی اور اس کی حرارت سب کچھ سمیٹ لیا جائے گا اور وہ بس ایک بے نور جسم رہ جائے گا۔(9)
مولانا مودودی  اس آیت کریمہ کی تشریح بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں کہ ” سورج کے بے نور کر دیے جانے کے لیے یہ ایک بے نظیر استعارہ ہے۔ عربی زبان میں تکویر کے معنی لپیٹنے کے ہیں۔ سرپر عمامہ باندھنے کے لیے تکویر العمامہ کے الفاظ بولے جاتے ہیں کیونکہ عمامہ پھیلا ہوا ہوتاہے اور پھر اسے سر کے گرد لپیٹا جاتاہے۔ اسی مناسبت سے اس روشنی کوجو سورج سے نکل کر سارے نظام شمسی میں پھیلتی ہے عمامہ سے تشبیہہ دی گئی ہے اور بتایا گیا ہے کہ قیامت کے روز یہ پھیلا ہوا عمامہ سورج پر لپیٹ دیا جائے گا یعنی اس کی روشنی کا پھیلنا بند ہو جائے گا۔( 10)
مولانا عبدالرحمان کیلانی لکھتے ہیں کہ” سورج کی اس رجعت قہقریٰ کے بعدستاروں کے درمیان باہمی کشش اور گردش کا سارا نظام مختل ہو جائے گا ۔زمین میں شدید زلزلے اورجھٹکے شروع ہوجائیں گے ۔ ستارے بے نور ہو کر اکیلے گرنے لگ جائیں گئے جیسے جھڑ پڑے ہیں ۔سورج کی بساط لپیٹ دی جائے گی۔پہاڑ دھنکی ہوئی روئی کی طرح ہوکر فضا میں منتشر ہوجائیں گے ۔ سمندروں کا پانی شدّت حرارت سے کھولنے لگے گا۔تمام مخلوقات مر جائے گی اورکائنات فنا ہوجائے گی اوریہ سب کچھ کب ہوگا اس کا جاننا انسان کے بس کا روگ نہیں ۔ سائنس دان خواہ کتنے ہی اندازے لگائیں وہ سب کچھ ظنون او ر ڈھکوسلے ہی ہوں گے ۔ا س کا حقیقی علم اسی خالقِ کائنات کو ہے جس نے اسے پیدا کیا تھا۔
بلکہ وحی ہمیں اس سے بہت بعد کی بھی خبردیتی ہے کہ اللہ تعالیٰ پھر سے ایک نئی کائنات پیدافرمائے گا جس کی زمین،جس کے سورج ،جس کے چاند ستارے اورجس کے قوانین نظم وضبط سب کچھ اس دنیا سے الگ ہوں گے اور جس کے متعلق اندازے لگانا بھی کسی انسان کے بس کا روگ نہیں البتہ اس کی بہت سی تفصیلات قرآن وحدیث میںموجودہیں”۔(11)
قارئین کرام جیسا کہ آپ نے ملاحظہ فرمایا کہ اس مسئلہ میں جدید سائنس اور قرآن پاک میں دی گئی معلومات میں زبردست یگانگت پائی جاتی ہے جس سے ایک معمولی غوروفکر رکھنے والا آدمی بھی اس حقیقت کو سمجھ سکتاہے کہ جدید ٹیکنالوجی کے بغیر ان معلومات کوچھْی صدی عیسوی میں کسی کتاب میں ذکر کرنا کسی انسان کے بس کی بات نہیں تھی اوریقینا یہ کام کسی مافوق الفطرت ہستی کا ہی ہے جسے ہم اللہ کے نام سے یاد کرتے ہیں اوراسی نے ہی ان معلومات وپیشنگوئیوں کو دوسری انسانی ہدایات کے ساتھ قرآن مجید کی شکل میں اپنے پیارے و آخری نبی حضرت محمد  صلی اللہ علیہ وسلم  پر نازل کیا تھا۔اللہ تعالیٰ ہمیں حق و صداقت کو سمجھنے، اس پر ایمان رکھنے اورعمل کرنے کی توفیق عطافرمائے۔ آمین۔
موٴلف ۔ طارق اقبال سوہدروی ۔  جدہ ۔ سعودی عرب

یا خدا

یا خدا ! جسم میں جب تک یہ میرے جان رہے
تجھ پہ صدقے تیرے محبوب پہ قربان رہے

کچھ رہے یا نا رہے پر یہ دعا ہے کہ امیر
نزع کے وقت سلامت میرا ایمان رہے

غصہ دور کرنے کا طریقہ

دورِحاضر کا ذکر ہے کہ ایک بچہ بہت بدتمیز اور غصے کا تیز تھا۔اسے بات بے بات فوراً غصہ آجاتا ، والدین نے اسے کنٹرول کرنے کی بہت کوشش کی لیکن کامیاب نہ ہوئے۔ایک روز اسکے والد کو ایک ترکیب سوجھی۔ انہوں نے اپنے بیٹے کو کیلوں کا ایک ڈبا لا کے دیا اور گھر کے پچھلے حصے کی دیوار کے پاس لے جا کر کہنے لگے، “ بیٹا جب بھی تمہیں غصہ آئے ۔اس میں سے ایک کیل نکال کر یہاں دیوار میں ٹھونک دینا۔پہلے دن لڑکے نے دیوار میں 37  کیلیں ٹھونکیں۔ایک دو ہفتے گزرنے کے بعد بچہ سمجھ گیا کہ غصہ کنٹرول کرنا آسان ہے لیکن دیوار میں کیل ٹھونکنا خاصا مشکل کام ہے۔اس نے یہ بات اپنے والد کو بتائی۔والد نے مشورہ دیا کہ اب جب تمھیں غصہ آئے اور تم اسے کنٹرول کر لو تو ایک کیل دیوار میں سے نکال دینا۔لڑکے نے ایسا ہی کیا اور بہت جلد دیوار سے ساری کیلیں نکال لیں۔
باپ نے بیٹے کا ہاتھ پکڑا اور اس دیوار کے پاس لے جا کر کہنے لگے،بیٹا تم نے اپنے غصے کو کنٹرول کرکے بہت اچھا کیا لیکن ذرا اس دیوار کو غور سے دیکھو ! یہ پہلے جیسی نہیں‌رہی۔ اس میں یہ سوراخ کتنے برے لگ رہے ہیں۔جب تم غصے سے چیختے چلاتے ہو اور الٹی سیدھی باتیں‌کرتے ہو تو اس دیوار کی مانند تمھاری شخصیت پر بھی بہت برا اثر پڑتا ہے۔تم انسان کے دل میں‌چاقو گھونپ کر اسے باہر نکال سکتے ہو لیکن چاقو باہر نکالنے کے بعد تم ہزار بار بھی معذرت کرو ، معافی مانگو ، اس کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔وہ زخم اپنی جگہ باقی رہے گا۔

یاد رکھو زبان کا زخم ،چاقو سے کہیں‌بد تر اور دردناک ہے !

 

اس کے بعد بھی گوگل پر تلاش جاری رکھی اور مسرت اللہ جان کا آرٹیکل  کیا آپ کو غصہ آتا ہے اچھا لگا جس میں سے ایک اقتباس یہ ہے

 

مجھے بھی آتا ہے اور البرٹ پینٹو کو بھی آتا ہے۔ لیکن کب اور کیوں آتا ہے اور یہ کہ کن لوگوں کو کم اور کن کو زیادہ آتا ہے۔ مجھے غصہ کیوں آتا ہے اس کا سادہ سا جواب یہ ہے کہ اپنی زندگی تلخیوں سے عبارت ہے بلکہ ایسی بات پر بھی آتا ہے جنہیں لوگ نظرانداز کردیتے ہیں۔ بات بات پر غصہ آتا ہے اور چونکہ ایک عدد ملازم رکھنے کی استطاعت نہیں رکھتا ہوں جس کا نتیجہ یہ ہے کہ اپنا یہ غصہ ہمیشہ قہر درویش بر جان درویش ثابت ہوا اسی غصہ اور بے بسی کے باعث ایک سے زائد مرتبہ ذہنی دباؤ میں بھی مبتلا ہوا اور اس طرح جسم اور ذہن کے ساتھ ساتھ پیسے کا بھی نقصان برداشت کرنا پڑا۔

 

روح کا ناسور نامی عنوان سے یہ مفید باتیں پتہ چلیں

حضرت امام جعفر صادق(علیہ السلام) سے روایت ہے کہ انھوں نے اپنے پدر بزرگوار حضرت امام محمد باقر علیہ السلام سے سنا۔کہ ایک بدّو رسول خدا کے پاس آیا اور کہنے لگا کہ میں ریگستان میں رہتا ہوں۔ مجھے عقل اور دانش کی باتیں بتائیں۔ جواب میں جناب رسول اللہ نے فرمایا۔ ”میں تمہیں حکم دیتا ہوں کہ غصّہ نہ کیا کرنا۔“
اسی سوال کو ۳ دفعہ دہرانے اور رسول خدا سے ایک ہی جواب پانے پر بدّو نے اپنے دل میں کہا کہ اس کے بعد میں پیغمبر خدا سے اور کوئی سوال نہیں کروں گا اس لئے کہ وہ نیکی کے علاوہ اور کسی چیز کا حکم نہیں دیں گے۔
امام جعفر صادق علیہ السلام کہتے تھے کہ میرے والد ماجد فرمایا کرتے تھے :
”کیا غضب سے بڑھ کر اور کوئی شدید شئے ہوسکتی ہے؟ ایک شخص کو غصّہ آجاتا ہے اور وہ کسی ایسے آدمی کا قتل کردیتا ہے۔ جس کا خون اللہ کی طرف سے حرام کردیا گیا ہے یا ایک شادی شدہ عورت پر تہمت اور الزام لگا بیٹھتا ہے۔“
(الکلینی الکافی، جلد ۲، صفحہ ۳۰۳، حدیث ۴)

امیر المؤمنین حضرت علی علیہ السّلام نے فرمایا:
’اپنے آپ کو غصّہ سے بچاؤ اس لئے کہ اس کی ابتداء دیوانگی ہے اور انتہا اس کی ندامت اور پشیمانی۔‘

 

فیض رضا سے یہ کام کی چیزیں ملی۔

حدیث شریف میں ہے جو شخص اپنے غصے کو روک لے گا، اللہ عزوجل بروز قیامت اس سے اپنا عذاب روک لے گا۔ ( مشکٰوۃ شریف )
ابوداؤد کی حدیث میں ہے جس نے غصے کو ضبط کر لیا حالانکہ ہ اسے نافذ کرنے پر قادر تھا تو اللہ تعالٰی بروز قیامت اس کو تمام مخلوق کے سامنے بلائے گا اور اختیار دے گا کہ جس حور کو چاہے لے لے ( اس کے بعد مرد حضرات پر تو غصہ حرام ہونا حقیقی معنوں میں سمجھ آ جاتا ہے کیونکہ غصہ کرکے حور گنوانا گویا لاٹری جیت کر ٹکٹ گنوانے کے مترادف ہے )۔

غصہ معاشرے کی ان بڑی برائیوں میں سے ہے جس سے انسان کی شخصی اور تعمیری بلندی کو زوال آتا ہے انسان ہمیشہ ان حالات سے دوچار رہتا ہے جس کی وجہ سے اعصاب اور حواس کھینچے رہتے ہیں اس کی یادداشت بھی متاثر ہوئے بغیر نہیں رہتی غصہ زہر کا اثر رکھتا ہے اور خون میں ایک زہریلا مادہ پیدا کرتا ہے جس سے چہرے پر رونق ختم ہو جاتی ہے آنکھوں اور ہونٹوں میں تازگی ختم ہو جاتی ہے غصہ معدے اور اعصابی نظام کو بری طرح متاثر کرتا ہے اور کردار میں منفی اور تخریبی اثرات پیدا کرتا ہے ماہرین عمرانیات ( سوشیالوجی ) کا کہنا ہے کہ خاوند غصیلا ہو یا بیوی ان کے گھر میں سکون اور اطمینان نہیں رہتا ا سکے اثرات بچوں پر بھی مرتب ہوتے ہیں جس کے نتیجے میں بچے آپس میں پیار و محبت میں رہنے کے بجائے لڑتے جھگڑتے ہیں پھر غصہ پورے معاشرے میں بد امنی کرتا ہے۔  ( سنتیں اور انکی برکتیں )

غصہ پر قابو پانے کے لیے مندرجہ ذیل علاج بتائے جاتے ہیں ، آپ بھی آزما کر دیکھیں

اعوذ  باللہ من الشیطن الرجیم پڑھنا
لاحول ولا قوتہ الا باللہ پڑھنا
وضو کر لینا
کھڑے ہو تو بیٹھ جانا اور بیٹھے ہوں تو لیٹ جانا
جس پر غصہ آ رہا ہو اس کے سامنے سے ہٹ جانا
پانی پینا
خاموش ہو جانا

ڈیوک یونیورسٹی امریکہ کے ایک سائنسدان ڈاکٹر ریڈ فورڈ بی ولیمز کے مطابق غصے اور بغض رکھنے والے افراد جلد مر جاتے ہیں ان کے مطابق اس سے انسانی قلب کو وہی نقصان پہنچتا ہے جو تمباکونوشی اور ہائی بلڈ پریشر سے پہنچتا ہے۔ امریکن ہارٹ ایسوسی ایشن کی جانب سے سائنسی ادیبوں کے سیمینار میں تقریر کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ بہت سے لوگ وقت سے پہلے محض بغض اور کینے کے جذبات کی شدت کی وجہ سے چل بستے ہیں غصہ اور بغض قلبی دردوں کے اہم اسباب میں سے ایک ہیں اس طرح حرص و طمع میں مبتلا بے چین و بے صبر افراد بھی حد سے زیادہ بڑھی ہوئی تمناؤں اور آرزؤں کے ہاتھوں اپنی شمع زندگی کو گل کر لیتے ہیں۔
ماہرین نے غصیلے اعصاب زدہ، بے چین اور ضرورت سے زیادہ آرزو مند افراد کو زمرہ “ الف “ اور بردبار، حلیم اور صابر و شاکر لوگوں کو زمرہ “ ب “ میں تقسیم کیا ہے وہ اب اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ زمرہ الف سے تعلق رکھنے والے افراد بالعموم امراض قلب کی زد میں رہتے ہیں اور انہیں کولیسٹرول کی زیادتی، سگریٹ نوشی اور ہائی بلڈ پریشر ہی کی طرح دورہ قلب کا خطرہ لاحق رہتا ہے۔ ( سنت نبوی صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم اور جدید سائنس )

 

دنیا جھاں کی تمام چاشنی لفظ ماں میں سماگی ھے

اردو نیوز سعودی عرب کا وہ خبصورت فورم ھے جو پاکستانیوں اور تمام اردو جاننے والوں کے لیے بھترین خدمات انجام دے رھا ھے۔ یہ خبصورت تصویربھی اس کا منھہ بولتاثبوت ھے جو ماں کیعظمت کو سلام کررھی ھے۔ سلام ھے اس ماں کو اور دنیا کی تمام ماوں کو جو خود تو زمانے کے سرد و گرم موسم کا سامنا ھنس کرلیتی ھیں لیکن اپنے جگر گوشوں کے لیے ٹھنڈی چھاوں کا کردار ادا کرتی ھیں۔ماں ایک خبصورت احساس بچوں کے لیے ماں کے انچل سے زیادہ محفظوظ پناہ گاہ اس دنیا میں کوی نھیں جھاں چپھکر وہ اپنے اپ کو محفظوظ سمجتا ھے کہ اس کو دینا کی کوی تکلیف چھوکر بھی نھیں گزرسکتی۔ دنیا جھاں کی تمام چاشنی لفظ ماں میں سماگی ھے۔ اس رشتے کی سچای اور معنویت سے انکار ممکن نھیں ھے۔ ماں کی محبت اس کی بے لوث چاھت، پیار اور خلوص دینا کی انمول دولت ھیں۔ اولاد کی خوشی میں خوش ھونا، ان کی ھر تکلیف کا دکھ اپنے دل پر محسوس کرنا ماں کا فطری جذبہ ھے۔ یہ ھی اس انمول تصویر کا بھی خبصورت احساس ھے جو ایک ماں اپنی بے لوث چاھت کا اظھار ھے جو وہ اپنے معذور بچے سے کرکے دیھکا ررھی ھے۔ اس عمر میں جب خود اسکو پیار اور نگھاداشت کی ضرورت ھے پر وہ اپنی بے مثال ممتا سے مجبور جو قدرت کی طرف سے صرف اور صرف ماں کو ھی نصیب ھوتی ھے۔ یہ ھی وہ واحد رشتہ ھے جس سے ھم اپنی ھر بات بلاجھجک کھیہ سکتے ھیں۔ شاید اسی محبت اور انسیت کا ثبوت ھے کہ پروردگار عالم کی محبت اور ماں کی محبت کو اپس میں تشبہ دی گی ھے۔ حدیث مبارکہ ھے کہ
اللہ تعالی اپنے بندوں سے کسی ماں سے ستر گنا زیادہ محبت کرتا ھے۔
ماں کے رتبے اور مقام کا پتہ اس سے چلتا ھے کہ اللہ تعالی نے تخلیق کا رتبہ اور شرف اپنے بعد صرف ماں کو عطا کیا ھے اور اسکے قدموں کے تلے جنت رکھ دی ھے۔ تاریخ اسلام ایسے عظیم قصوں اور واقعات سے بھری پڑی ھے۔
نپولین کا قول ھے کہ ؛تم مجھے اچھی ماییں دو میں تم کو اچھی قوم دوں گا۔
کیونکہ کسی بھی انسان کا کردار اس بات کا ثبوت ھوتا ھے کہ اس کی پرورش اور تربییت کس نھج پر ھوتی ھے۔ دنیا میں جتنے لوگوں نے عظیم کارنامے انجام دیے ھیں ان کے پس پردہ ان کی ماوں کی پرورش اور تعلیم و تربیت کا انداز تھا۔
ماں ھی وہ ھستی ھے جس کو رب ذولجلال نے تخلیق کا اعجاز عطا کرکے اپنی صفات سے بھرہ مند فرمایا۔ اس کا وجود محبت کا وہ بیکراں سمندر ھے کہ جس کی وسعت کا اندازہ نھیں کیا جاسکتا۔ اسکا دل اتنا وسیع ھے کہ سارے زمانے کے دکھ الام بھی سمٹ اییں تو اس کی وسعت میں فرق اتا ایک ایسا صایبان عافیت جس کی چھاوں میں کوی دکھ پریشانی ھمیں چھو نھیں سکتی۔
اج تعلیم یافتہ مھذب معاشرے میں رھنیے والے طبقات نہ صرف اسلامی تعلیمات بھول چکے ھیں یعنی حکم خدا کی نفی کررھے ھیں بلکہ انکو نہ :ماں  : کی وہ مھربایناں بھی یاد نھیں جو وہ اس وقت کرتی ھے جب انسان اپنی ایک مکھی اڑانے کا بھی متحمل ھوسکتا۔
حضرت موسی علیہ السلام کی والدہ کی وفات ھوگی اور جب اپ علیہ السلام اللہ تعالی سے کلام کرنے طور پر چڑھے تو اللہ تعالی نے کھا ؛اے موسی اب تم سنبھل کر انا تمھارہ ماں کا انتقال ھوگیا ھے جب تم ھمارے پاس اتے تھے تو تمھاری ماں سجدہ میں جاکر ھم سے دعا کرتی تھی ؛اے سب جھانھوں کے رب میرے بیٹے سے کوی چوک ھوجاے تو اسے معاف کردینا.
ثابت ھوا کہ ماں وہ عظیم ھستی ھے جس کی دعاوں کی ھم جیسے گنھگاروں کو ھی نھیں پیغبروں، انبیا اکرام، اولیا علہہ رحمہ کو بھی ضرورت ھوتی ھے۔ جس کے لبوں سے نکلی دعا بارگاہ الھی میں شرف قبولیت حاصل کرتی ھے۔
اللہ تعالی قران میں ماں کے ساتھ حسن سلوک کی تلقین فرماتا ھے، قران میں اللہ تعالی نے بارھا والدین کی اطاعت کی تلقین فرمای ھے بلاشبہ والدین انسان کے لیے تحفہ خداوندی ھیں نعمت عظیم ھیں۔
اگر اج کے دور کا جایزہ لیں تو دیکھ کر دکھ ھوتا ھے کہ ھم نے جنت کو اپنے ھاتھوں سے گھروں سے نکال دیا ھے۔ اگر ماں باپ بوڑھے ھوجایں تو ھم ان کو محفلوں میں لے جانے سے کترانے لگتے ھیں۔ اخر ھمارے معاشرے میں ایدھی ھوم اور اولڈ سینڑ جیسے ادارے کیوں جنم لے رھے ھیں۔ اگر ھم غور کریں تو ھماری تباھی کا اصل سبب ماں کی دعاوں سے دوری ھے۔ ماں تو وہ ھے جو ھم کو معاشرے کی پتھریلی راھوں پر چلنا سکھاتی ھے، محبت سے لبریز زشتہ ، ماں کا احترام کریں، ماں کے دست بارگاہ الھی میں جب بھی اٹھتے ھیں وہ اپنی اولاد کے لیے دعاگو ھوتی ھے اور اسکی کامیابی پر ھمشہ شاداں ھوتی ھے اور اسکی ناکامی اور تکلیف پر خود بھی اتنی ھی تکلیف محسوس کرتی ھے جسیسے اس کا بچہ محسوس کرھا ھوتا۔ یہ ھی اس تصویر کا ھم سب کو پیغام ھے جو یہ معذور انسان بھی اپنے دل میں بے شک یہ دعا کرھا ھوگا۔
میری ماں کو سدا شاد رکھنا
خوشیوں سے دامن انکا اباد رکھنا
مفکریں و اھل علم ایسے گھروں کو ویرانے سے تشبہ دیتے ھیں جھاں ماں نہ ھو۔ قلبی سکون اور راحت ماں کی دعا سے حاصل ھوتا جو لوگ ان دعاوں کی دل سے قدر کرتے ھیں وھی دینا اور اخرت میں بھتیرین زندگی بسر کرتے ھیں۔اخر میں اللہ سے دعا ھے کہ ھماری ماوں کو سلامت رکھے کیونکہ ان کا سایہ عافیت ھی ھماری بھتر زندگی کے لیے مشعل راہ ھے۔

اٹلی and UAE (تہذیب کا دائرہ)

اٹلی:منی سکرٹ پر پابندی کی تجویز

ٹلی کے ساحلی شہر کیسٹلامارے ڈی سٹیبیا کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ وہ عوامی مقامات پر منی سکرٹ اور اس جیسے دیگر نیم عریاں ملبوسات پہننے پر پابندی عائد کرنے کے بارے میں سوچ رہی ہے۔

اگر یہ پابندی عائد ہو جاتی ہے تو یہ شہر ان شہروں کی فہرست میں شامل ہو جائے گا جنہوں نے عوامی مقامات کو تہذیب کے دائرے میں رکھنے کے لیے اقدامات کیے ہیں۔

کیسٹلامارے ڈی سٹیبیا کے میئر کا کہنا ہے کہ منی سکرٹ اور چھوٹے چھوٹے کپڑے پہننے کی ممانعت کی خلاف ورزی کرنے والے پر پینتیس ڈالر سے لے کر چھ سو چھیانوے ڈالر تک کا جرمانہ عائد ہوگا۔

شہر کے میئر کی نئی پالیسی ہے ’غیر مناسب کپڑوں کی اجازت نہیں‘۔ میئر کا کہنا ہے کہ وہ اس قانون سے ان لوگوں کو ہدف بنانا چاہتے ہیں جو ’ہنگامہ پرور ہوں یا جن کو معاشی طور طریقے میں رہنا نہیں آتا‘۔

پیر کے روز اس پابندی پر ووٹنگ ہوگی۔ نئے قانون کے تحت غسلِ آفتابی، عوامی مقامات پر فٹ بال کھیلنے اور مذہب کی توہین کرنے پر بھی پابندی ہوگی۔

مقامی پادری کا کہنا ہے ’میرے خیال میں یہ اچھا فیصلہ ہے۔ اس فیصلے سے بڑھتی ہوئی جنسی زیادتیوں پر بھی قابو پایا جا سکے گا‘۔

اس شہر سے قبل کئی شہروں میں ریت سے بنائے جانے والے گھروندوں اور گاڑی میں بوس و کنار جیسے عمل کو ممنوع قرار دیا ہے

 

italy Gov is 1000 times better then UAE regarding this…atleast they think to implement this law in there country……..

Shame on UAE Gov (muslims k naam par kaala dhabba)