home treatment of Hyperpigmentation

Hyperpigmentation can occur due to many reasons. But treating it successfully would depend completely upon how long you have had the problem. Sometimes, if you have started developing skin pigmentationpatches newly, you will find that treatment is not only simpler, it is also faster. Simple cases of newly developed pigmentation patches can be treated by using aloe vera gel. You can apply the gel to your patches in order to take care of it effectively and rapidly. If you can, try to get a fresh leaf and squeeze the gel out of that. This is relatively better than using it out of a bottle. But that is not to say that the bottle version does not work as effectively or as well. Look for a bottle that states that it contains 50 per cent or more of pure aloe gel. It is advisable to start using aloe soap. This will not make a significant contribution, but it will certainly help to not develop more spots.

 

Another step that has to be taken to arrest the growth of pigmentationpatches is that you must use sunscreen lotion when going outdoors as a rule rather than only while going to the beach. This will also make a considerable difference in that you will be preventing further patches from appearing. There are also some simple fruits and vegetables which you can apply to get rid of dark patches and spots. Cucumber juice is considered to be one such remedial measure. Raw potatoes are also rich in starch and mildly bleaching agents. If you can squeeze out the juice of a raw potato and apply this to your patches, you will see a lightening of the discoloration in as little as a week.

 

It is also important to inculcate a daily routine to cure yourself of the problem. Soak almonds overnight, and peel and grind them the next morning. Apply this to your patches to reduce darkness. A tablespoon of milk powder, honey, lemon juice, and almond oil can be mixed and stored in the refrigerator. Applying this for about 20 minutes will help to even out your skin tone considerably. You can also apply very diluted ammonia to your dark patches. But make it a point that you do not go out in the sun after doing this, otherwise your skin will only darken further. Therefore, the best time to do this is at night, when you know you will not be going out.

 

_____________________________________________________________________________ 

Hyperpigmentation is the formation of dark skin patches. It’s very common and can occur for people with all skin types and complexions. Successful hyperpigmentation treatment depends on how long you’ve had the problem. New dark skin patches are often easier and faster to get rid of than ones that have been on your skin for years and years.

In order to find the right hyperpigmentation treatment, you should find out the reason you’re getting dark skin patches. There are a number of different causes of hyperpigmentation. Here are a few:

    • Sun Damage — Dark skin patches can occur due to sun exposure. They’re sometimes called age spots or liver spots. This type of hyperpigmentation is often seen on the face, hands and shoulders. It’s the result of many years of exposure to UV rays.

 

    • Melasma, or Chloasma — These look a lot like the dry skin patches caused by sun damage, but the cause is hormonal changes. Women often get melasma or chloasma during pregnancy, or sometimes while taking birth control pills. If you’re looking for a hyperpigmentation treatment, and your dark skin patches are due to melasma, you might just need to wait until you’re no longer pregnant, or you may have to stop the birth control pills (if you’re taking them). The dark spots are likely to go away on their own.

 

    • Scars — Sometimes, after you’ve had acne, you’re left with scars that look like dark skin patches.

 

  • Freckles — Some dark spots are simply inherited, so there is no hyperpigmentation treatment for this type of skin spot. Consider them beauty marks!

 

There are a few natural hyperpigmentation treatments I’ve heard people use that might be worth trying at home. You could try applying these natural ingredients to your dark skin patches:

  • Aloe vera
  • Cucumber juice
  • Raw potato juice
  • Ground almonds, soaked in water
  • Mix of milk powder, honey, lemon juice and almond oil

There are also some good hyperpigmentation treatments described here. Just be careful not to use any product or ingredient that could damage or dry out your skin.

It’s also really important not to expose your dark skin patches to further sun damage. Be sure to wear a sunscreen daily to prevent more dark spots and to keep the ones you have from getting darker. I can’t encourage this enough — sunscreen is an essential part of your hyperpigmentation treatment!

Life & Style | Health Eat right for lush hair and glowing skin

When it comes to the blame game for hair and skin problems, climate is a top favourite. Dull hair? It’s the dry, hot winds that are damaging it. Sallow complexion? It’s the heat and humidity. Rarely do people confess they are not eating right, are stressed and are also probably overdoing hair and skin treatments. While the last two problems can be optional vices, what’s almost unarguable is that most people are eating food that’s not meant to nourish skin and hair. Fast food for breakfast? Check. Processed foods for lunch? Check. Fizzy beverages through the day? Check. Too much coffee through the day to stay alert? Check.

“Chemicals in processed foods, trans-fat and chemical compounds in fried foods speed up the process of ageing,” says Yasmine Haddad, senior dietician, Live’ly, a health and nutrition lounge in Dubai. Fast foods are also full of sugar, which are empty in nutrients and full of calories. High-salt diets, also a popular choice with many people, lead to excess sodium accumulation around hair follicles, hindering absorption of essential nutrients needed for healthy hair, says Haddad.

For lush locks and a glowing skin, it is absolutely essential to eat nutritious foods. These include vegetables, fruits, vegetable oils, nuts and protein, “It’s about a healthy lifestyle,” says Haddad. “You have to sleep well, eat well, exercise and avoid stress. Stress is very bad for hair,” she says. Of course, hard water, as in the UAE, also has a bad effect on hair, but if your diet is poor, it can increase hair problems. (Haddad uses a shower filter that removes large amounts of calcium and magnesium in hard water.)

A diet rich in protein is essential for healthy hair as hair is primarily composed of keratin, a type of protein. Salmon, beans, fish, meat and fortified dairy products, cereals and Vitamin D supplements are essential for healthy skin and hair.

For supple and healthy skin, foods rich in Vitamin A and D, such as avocado and sunflower oil help repair body tissue, prevent dryness and postpone ageing.

Vitamin C, which helps maintain levels of collagen, a protein constituent of skin that is essential for healing skin as well as keeping it firm, should also be an important nutrient in your diet.

Exposure to the sun for Vitamin D is essential for bones, cells and tissues, as is folic acid, the deficiency of which leads to a condition called seborrheic dermatitis. It may be also linked to vitiligo (loss of skin pigment). A regular oil massage with olive oil promotes scalp strength.

Introducing potassium-rich foods in your diet, such as parsley, prunes, green leafy vegetables, will help flush out excess sodium and reduce risk of the potassium deficiency and hair loss, she says.

The bottomline however is that you need to make a conscious effort to eat well. “People want the easy way out,” she says. “but there’s no miracle cure; no amount of taking pills will help. You have to change your lifestyle and eat healthy.”

Though, she warns that hair loss can also be a sign of other problems with your body. “There could be hormonal issues or a problem with the thyroid, or malnutrition. A simple blood test to eliminate any medical conditions would be good to get to the root of the problem.”

Should one take vitamin supplements? “These are necessary only if the doctor recommends them because of a medical problem or if you are no able to get nutrients from foods.”

The essential vitamin hit list:

Vitamin A: Helps repair body tissue, prevents dry skin and postpones ageing.

Source: Liver, sweet potatos, carrots, spinach, milk, egg yolk.

Vitamins B-6, B-12: Important for general hair health.

Sources: Bananas, potatoes, spinach, meat, poultry, fish, dairy products.

Vitamin C: Maintains collagen, the protein part of skin that keeps it smooth and firm.

Sources: Citrus fruits and tomatoes.

Vitamin D: Promotes skin-collagen health.

Sources: Sardines, cod liver oil and Omega-3 fatty acids.

Vitamin E: Repairs body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Sources:

Thiamine: Also known as B1, for general hair health.

Source: Brown rice, sunflower seeds, various nuts, oatmeal.

Potassium: Good for skin and hair.

Source: Sweet potato, potato, white beans, yogurt (fat-free), orange juice, broccoli, banana.

Selenium: Adds lustre.

Source: All vegetables, fish, red meat, grains, eggs,

Zinc: xxxxxxx

Source: Beans, cheese and salads are rich in zinc, which is vital for skin and hair.

Manganese: Good for skin and hair.

Source: Nuts, seeds, grains, oatmeal, whole wheat bread, fruit and vegetables, Pineapple is rich in manganese,

Copper: Liver is rich in copper as are sesame seeds, chocolate, lobster and calamari, nuts, These are good antioxidants and halts ageing. Good for hair and skin.

Folic acid: This is important for your hair,

Source: Fresh fruits and vegetables, specially citrus fruits and tomatoes, whole grain and fortified grain products, beans, and lentils.

Calcium: For strong hair and a healthy scalp.

Source: Milk, sardines, almonds and yoghurt.

Iron: For a healthy complexion.

Source: Liver, red meats, tuna, salmon, and shrimp, beans, lentils, spinach, tofu, broccoli, chicken and turkey, nuts, egg yolk,dried fruits. Good for both hair and skin, but be careful not to consume too much iron.

Eating for good hair:

Protein is the building block of hair. Without enough protein in your system, you may experience greater hair loss. Calcium found in foods such as yogurt and cottage cheese has proven to help promote hair growth and repair damaged hair follicles.

Olives and olive oil are rich in oleic acid, a monounsaturated fatty acid, which has shown to help the hair grow thicker and stronger.

In addition, fresh vegetables such as cucumber, lemon, lettuce and tomato consist of 70-90 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

Cheese which is derived from milk is a high source of calcium and protein. However, it’s important to note that it’s preferable to consume it low-fat since in its full-fat form it contains high saturated fat (i.e.: bad fats).

Eat your way to healthy hair

Greek Salad

Preparation Time: 10 mins

Ingredients:

10 black olives

60 gms. light Feta cheese, cut into cubes

200 gms cherry tomato or tomato, cut into cubes

200 gr. cucumber, cut into cubes

500 gr. Romaine lettuce, roughly torn

A few mint leaves

Dressing:

1 tbsp olive oil

1 tbsp white vinegar

2 tbsp lemon juice

Pinch of dry oregano

Pinch of salt

Method: Mix all ingredients in a salad bowl topping with cheese, olives and mint leaves. Add the dressing just before serving.

Nutrition notes

Serving size: 1 salad bowl

Number of servings: 4

Per serving:

Calories = 95 cal

Protein = 5 g

Carbs = 8 g

Fat = 5 g

(These recipes have been created by Live’ly Executive Chef Kassem Taha)

Watermelon sorbet

Watermelon is rich in lycopene, vitamin C and vitamin A which are known to be powerful antioxidants. These help protect and rejuvenate hair follicles and skin tissues. Studies have shown that a regular consumption of watermelon and green tea may reduce the risk of certain cancers such as prostate cancer. Watermelon and lime juice consist of 90 to 95 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

There is nothing better than a low-calorie and guilt-free watermelon sorbet to add life to your hair.

Preparation Time: 35 min

Ingredients

½ cup plus 4 cups seeded and pureed watermelon

½ cup fruit sugar

2 tbsp lime juice

1 tsp lime zest

Method:

In a small saucepan, bring ½ cup watermelon puree and the fruit sugar to a simmer and remove it from the heat. Add the lime juice and zest and allow the mixture to cool for 20 minutes. Add the 4 cups fresh watermelon puree to the melon-lime mixture, and freeze in an ice cream maker. Place sorbet in a plastic container and allow to freeze for 3-4 hours.

Nutrition notes:

Serving size: 1 scoop

Number of servings: 8

Calories per serving: 68 cal

Protein = 0.3g

Carbs = 17g

Fat = 0g

Date and walnut cake

Preparation time: 55 mins

Serves: 16

Walnuts are high in fat, but they have good fats. The fats in walnuts are rich in polyunsaturated fats such as omega-3 fatty acids and monounsaturated fats which have shown to have many beneficial properties such as preventing cardiovascular disease and helping in boosting the immune system and improving the health of your hair and scalp.

Nuts are rich in vitamins and minerals such as folic acid and iron which make it an ideal choice for people struggling with hair loss. It is better to avoid consuming it roasted or salted, but have it raw and in moderation due to its high calorie content.

Dates are also very rich in vitamins (B complex vitamins) and minerals like potassium and iron. A potassium deficiency, also called hypokalemia, can lead to hair loss. B complex vitamins play various important roles in the body including improved hair growth and thickness.

Enjoy this guilt-free and delicious dessert.

Ingredients:

1 cup of pitted dates (seedless)

1 cup boiling water

1 tsp of soda bicarbonate powder

1/2 cup of oil (sunflower or corn)

3/4 cup of sugar

2 cups cake flour

3 tsp of baking Powder

1/2 cup skimmed or low-fat milk

4 eggs, beaten

1/2 tsp vanilla (powder or extract)

1/2 cup chopped walnuts

3 tbsp flour

Method:

In a casserole, put the dates, add boiling water and soda bicarbonate and boil for 3-4 minutes (until the dates are soft). Set aside to cool to room temperature. (It is okay if the mixture foams and turns dark brown). Beat eggs with vanilla essence, add sugar, oil and dates mixture.

While mixing, alternate by adding the flour and baking powder and milk. Pour the batter in the baking pan (spray the pan with oil first and add flour). Toast chopped walnuts with 3 tbsp of flour in a pan until little brown, and sieve them from the flour. Spread chopped walnuts on top of the cake batter and bake the cake in a 180 degree oven (350F) for 30-40 minutes.

Nutition notes

Calories per serving = 226 cal

Protein = 4 g

Carbs = 31 g

Fat = 10 g

Eating your way to a glowing skin

Japanese chicken salad

Preparation Time: 40 mins

Serves 3

Serving size: 1 bowl

If you are suffering from dry and unhealthy skin, the good news is that the secrets to a healthy and radiant skin are very basic and you do not have to use high-end skin products or layers of make-up to hide unhealthy skin. A well-balanced diet and a healthy lifestyle are the two most important factors influencing the condition of your skin.

In addition, fresh vegetable such as onions, cucumber and peppers consist of 70 to 90 percent water. Water flushes out the toxins from the body and helps rehydrate the skin and reduce risk of dryness and irritation.

Ingredients:

For salad:

110 gms Thai jasmine rice

1 cucumber, diced small

3 spring onions, sliced

1/2 red pepper, diced

85 ms cooked chicken, diced

1/2 avocado, diced

Salt & fresh coarse ground black pepper, to taste

For dressing:

2 tbsp rice wine vinegar

1 tbsp caster sugar

1/2 tsp sunflower oil

Method:

Put the rice in a large pan with plenty of cold water and a pinch of salt. Bring to the boil and simmer for 12-15 min until the rice is just tender. Drain and leave to stand in a sieve for 15 mins, stirring half way through. Transfer to a bowl.

To make the dressing, gently warm the rice wine vinegar and sugar until the sugar dissolves. Add sunflower oil and stir into the rice. Leave until cold.

Stir cucumber into the dressed rice with spring onions, pepper, chicken and avocado and season to taste.

Nutrition notes

Calories per serving = 219 cal

Protein = 11g

Carbs = 32g

Fat = 5.2g

Baby corn and spinach pizza

Number of servings: 4

Preparation time: 20 mins

Baking time: 20 min in 280 degrees oven

Spinach has a high nutritional value and is extremely rich in antioxidants, especially when fresh, steamed, or quickly boiled. It is a rich source of vitamin A (and especially high in Lutein), vitamin C, vitamin K, and Vitamin B9 (folic acid). Vitamin A helps repair body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Using whole wheat dough in preparing your pizza will help improve your skin complexion. Brown bread and flour as well as whole wheat germs are rich in B vitamins which have shown to improve circulation and skin color.

Ingredients
Whole wheat pizza dough:

1 cup whole wheat flour

1/2 cup all-purpose flour

1/2 tsp salt

1 packet active dry yeast

2 tsp olive oil

1/2 tsp sugar

1 cup warm water

Pizza sauce:

1 onion, chopped finely

2 garlic cloves, chopped finely

2 tsp olive oil

1 kg fresh tomato, peeled & chopped OR 1-1/2 x 415 g cans crushed tomato

1 tsp dry oregano

2 tbsp fresh basil

1/2 tsp dry thyme

Dash of salt and black pepper

(Optional: Drizzle of Hot Sauce)

Toppings:

2 onions; cut into rounds (lightly sautéed)

1 cups colored and green peppers; cut into strips

1 cup of baby corn, sliced

2 cups baby spinach

1 cup of light mozzarella cheese, grated

1 tbsp pine nuts

Method:

Mix dough ingredients and let it rest for 90 minutes. Cook pizza sauce. Roll dough out thinly to fit a greased pizza base. Top dough with pizza sauce and arrange toppings over it. Sprinkle mozzarella cheese and top with pine nuts. Bake at 280 degrees C for 20 minutes.

Serving size: ¼ slice pizza

Calories per serving = 300 cal

Protein = 11g

Carbs = 48g

Fat = 8 g

Tasty fillet salmon

Serves 2

Preparation time: 15-17 minutes

Salmon is considered an excellent source of omega-3 fatty acids and vitamin D. It is also a very good source of protein, vitamin B3 (niacin) and vitamin B12. Omega-3 fatty acids reduce risk of dryness by helping skin retain its natural moisture. It has the ability to neutralise damaging free radicals and therefore protect the skin from aging and reduce the risk of skin cancer.

Vitamin B3 (niacin) has shown to increase production of ceramides and fatty acids, two key components of skin’s outer protective barrier. A deficiency of niacin leads to pellagra, a condition characterised by diarrhoea, dermatitis, dementia, inflammation of the mouth, amnesia, delirium, and if left untreated, death. Fall in love with salmon and enjoy a radiant skin.

Ingredients

2 salmon fillets, 1-inch thick and 6 ounces (170 grams) each

1/4 cup packed brown sugar

1/4 cup reduced-sodium soy sauce

3 tbsp unsweetened pineapple juice

3 tbsp red wine vinegar

1 tbsp lemon juice

3 garlic cloves, minced

1 tsp ground ginger

1 tsp pepper

1/4 teaspoon hot pepper sauce

Method

In a large resealable plastic bag, combine the first nine ingredients; add salmon. Seal bag and turn it to coat evenly; refrigerate for 15 minutes, turning once. Drain and discard marinade. Using long-handled tongs moisten a paper towel with cooking oil and lightly coat the grill rack. Place salmon skin side down on rack. Grill covered over medium heat or broil 4 inches from the heat for 13-15 minutes or until fish flakes easily with a fork.

Nutrition notes

Serving size: 1 fillet

Calories per serving = 330 cal

Protein = 36 g

Carbs = 32 g

Fat = 6g

* Rope Jumping for burning Belly Fat *

Belly fat is the most common problem that people are facing today. On top of that, losing this fat is not so easy. Patience and hard work is needed to get good results. One of the effective ways that has proven to be successful is skipping. Rope jumping for belly fat not only helps to lose tummy fat, but also to strengthen the body muscles. This kind of exercise can be done by people of all ages. Children do this exercise as a part of their play and adults do this to lose weight.
It is more effective for women as compared to men. It is like a cardio exercise offering you portability and flexibility. Choose a good jumping rope that reaches from the floor to mid chest when it is folded in half. Wear proper shoes with both cushioning at the ball of your foot.
Out of many cardio workouts, rope jumping has proven effective to burn calories and lose belly fat as compared to other exercises. Most of the people due to the changing world are under stress and find it difficult to go for long term exercises. However, rope jump has proved to be the fastest burning exercise to lose weight in less time.
Different Styles of Rope Jumping for Belly Fat
Single-Foot Jump: In this type of rope jumping, you have to jump up and land on one foot instead of your both feet. Do 10 jumps on left foot and then do the same with the right foot. Then slowly increase your jumps every day and then start working up to 100 jumps on every foot. To lessen the impact on your knees, lift your foot so high that it allows the rope to pass underneath.

Lateral Hops: Performing lateral hops is not difficult. You have to lay the rope on the floor in a straight line from handle to handle. Then you can stand at one end and jump back and forth over the rope. Then again go backwards and start the same thing till you get to the beginning point. Do at least 100 revolutions once you pick up the speed. Try repeating the series first at least five times and then have a one minute rest.

Backward Jump: In backward jump, you have to use both the feet and swing the rope along the front of your body and then take a big jump. You need a good coordination, so that you can jump correctly. This will help to improve alternate jumps and make you perfect in the single foot jump as you will swing the rope backwards.

Alternate Foot Jump: In this style, you need to switch back and forth between the feet with every swing of jump rope. First, you have to jump with your right foot on first swing and then with the left one on the other swing.
Benefits of Rope Jumping: This exercise not only helps to lose belly fat, but also has other advantages like:

In just 30 minutes rope jumping workout, you can burn at least 250-500 calories.
You can increase the rate of your heart and eliminate the calories without getting much stress.
This exercise is actually fun as you can work out with changing patterns or styles.
It can be a great warm up and a good weight training exercise
It is more advantageous for women as they have the tendency to lose bone calcium after crossing 30 years of age. Weight bearing exercise like rope jumping can help to preserve bone mass and build strong bones.
It is known for its more comprehensive type of body weight exercise

Some workouts if done in a correct manner help to burn calories every minute like rope jumping. It is a high intensity workout that includes interval training for 15 minutes and burning more calories compared to any other cardio exercises like treadmill or fast walk or even jogging. Usually, rope jumping is done by athletes to increase their strength.
Most health experts suggest obese people to use rope jumping for belly fat as it can burn the calories quicker and faster. It is a convenient tool that every individual should use to maintain his/her health. You can use this rope jumping in many styles and can carry it wherever you want.

By sumerasblog Posted in Life

humsafar a comic review

If you’re a human being and you know a Pakistani woman, then you’ve probably heard about Humsafar.

I could write pages on how this show is planting the seed of fasaad (trouble) in perfectly normal and happy households and how it’s basically just a guide on how to break up pretty normal marriages. The fact that most women like it says a lot. I’ll end the casual sexism now and just give you the review. Enjoy it!

A couple of things to remember: this review is supposed to be funny. If you do not find it funny there is a little ‘x”on the right side of your webpage – just click on it!. I’ve seen only 15 minutes of this show and made the rest of the comic from the word on the street. If there are any Urdu phrases you don’t understand, please leave a comment.

Also Khirad is kind of hot. I approve.

Lastly, ignore all grammar and spelling mistakes and click on the image if you have trouble reading the text.


By sumerasblog Posted in Life

What keeps you awake at night?

“Am I honoring my purpose?”

“Am I in control of my life?”

“Is my career going in the right direction?”

“Do I have enough cash in the bank?”

“Am I doing enough for the people around me?”

Humsafar

Humsafar (Urduہم سَفر) is a Pakistani drama directed by Sarmad Sultan Khoosat, based on the novel (Humsafar) of the same name written by Farhat Ishtiaq. The story revolves around the trials and tribulations of a married couple, Ashar Hussain (Fawad Afzal Khan) and Khirad Ihsan (Mahira Khan), and the jealous forces that work to break them apart. The story of Humsafar (Novel) was laid out in retrospective manner and was mainly told in flashbacks. However the drama’s narrative is mostly linear. The drama airs on Hum TV and has gained a cult following globally and is critically acclaimed.[1]

 

Episodes 1-5

The drama’s first episode begins with a glimpse into the lives of the three main characters. Khirad Ihsan (Mahira Khan) lives in Hyderabad, Pakistan with her mother, Maimona Ihsan, a school teacher. They belong to a lower-middle class family. Maimona’s wealthy nephew, Ashar Hussain (Fawad Afzal Khan), is also introduced alongside his best friend (and maternal cousin), Sara Ajmal (Naveen Waqar). Unknown to Ashar, Sara is deeply in love with him. Both Ashar and Sara’s mothers, Farida (Atiqa Odho) and Zareena (Hina Khawaja Bayat), assume that Ashar will eventually propose to Sara since they have always been so close.

It is soon revealed that Maimona Ihsan is diagnosed with cancer and she requests her brother, Baseerat Hussain (Behroze Sabzwari), Ashar’s rich father, to help her in this dire time of need. Out of guilt for neglecting his sister’s welfare for so long, Baseerat decides promptly to bring Maimona and Khirad to his Karachi mansion and provide first class treatment for her cancer. However, the doctors state that there is no hope of saving Maimona’s life as her cancer has progressed to an advanced stage. Hearing this, Maimona becomes worried over what will happen to Khirad after she is gone, and she requests Baseerat to find a decent proposal for Khirad. Ridden with guilt, Baseerat decides to get Khirad married to Ashar.

Baseerat later conveys his desire to Ashar, his son is taken much aback as he has no plans of getting married to anyone at that moment, let alone a girl who seems like the exact opposite of him. After Ashar shares this news with Sara, she becomes very angry and heartbroken, revealing to Ashar that no one has any right over him since she has loved him all her life. Ashar strictly tells Sara that he does not share the feelings that Sara harbours for him; in his eyes, their relationship has always been limited to friendship. Sara promises Ashar that she will not let him ruin his life by marrying Khirad and she will not be rejected in favour of the “veiled and backwards” Khirad since she is better in every aspect (education, background etc.). However, Baseerat breaks down in front of his son, begging him to marry Khirad, as he believes that no one else could take better care of her.

Eventually, Ashar agrees to marry Khirad under his dad’s immense emotional pressure. Farida, who is extremely possessive about her son, feels neglected during the whole process and lashes out at Baseerat, begging him to think of his son’s welfare and reconsider the decision since Khirad and Ashar are such a mismatch. Baseerat threatens his wife with a divorce if she tries to come between Ashar and Khirad’s marriage. Meanwhile, Khirad is even more shocked than Ashar to hear about her proposed marriage to Ashar. Khirad decides to talk to Ashar but overhears Ashar conversation with a friend about her being backwards. Khirad who is revealed to be very egoistic is deeply hurt. Being her dying mother’s wish, Khirad has no choice but to agree to the wedding . Sara attempts suicide but is rescued in time. Ashar and Khirad are married in a rush (and with a simple Nikaah) due to Maimona’s failing health. She dies soon after, leaving Khirad very depressed and lonely. Ashar and Khirad begin their marriage on a very somber note, where both of them feel that they have been included into each others lives without consent and are being enforced on each other. None of them are happy about the union, however Ashar promises Khirad that he will try his best to make her feel comfortable and this marriage work even though he knows that it will take them a long period of time to come to an understanding. Khirad is deeply hurt by the fact that she has been forced into Ashar’s life and feels that her self-respect has been lost.

[]Episodes 6-10

Later on, however, they both begin falling in love with each other, and Ashar believes it is her innocence, simplicity, and purity of heart that attracts him to her, saying that she’s unlike any other girl he’s ever come across. Even as Sara pretends to befriend Khirad and humiliates her in front of her friends, Ashar rebukes Sara for her cruelty and tells Khirad that she is the most perfect, beautiful girl he could have ever asked for. He tells her that people normally like each other, love each other, and then marry. But with them, it was the opposite. He tells her he loves her, and she loves him too, and that he thanks God every day that he agreed to the wedding.

Soon, Baseerat becomes very sick, and while he’s in the hospital, he warns his son against hurting Khirad, saying that she’s very innocent by nature and doesn’t know the realities of this world or the people in it. He asks him to treat her with constant love and kindess and to always forgive her for anything she might ever do. Ashar, already in love with his new wife, agrees. Baseerat later dies in his sleep.

While Sara pretends to befriend Khirad, she falsely tells Khirad that Ashar makes fun of housewives by referring to them as “desperate housewives” in order to make her feel more embarrassed. Already well-educated with a BSC in physics and mathematics, Khirad decides to enroll in graduate studies to further her math skills in order to impress Ashar and reach more to his standards. There, she meets Khizar, Sara’s paternal cousin who has strong feelings towards Sara. Still, Sara expresses no feelings for Khizar and is still not over Ashar. When Khizar starts to come to Ashar and Khirad’s house, where he praises Khirad at how smart and beautiful she is, Ashar starts to get irritated and slightly jealous. Unbeknownst to Ashar, Khirad is pregnant and can’t wait to tell him this great news.

[]Episodes 11-20

Meanwhile, Farida, Zareena, and Sara come up with a plan to separate Khirad and her husband. Farida plans on paying large sums of money to Khizar for him to be able to study abroad as well as have him marry Sara if he can convince Ashar that he and Khirad are secretly engaged in an extramarital affair. Sara lies to Khizar by telling him that she’ll marry him when he returns from his abroad studying. The scheme goes into action (before Khirad could tell Ashar she was pregnant), and Ashar sees what falsely appears to be Khirad and Khizar alone in his apartment. He storms off angry. When Khirad later asks Farida why she did this, she responds that she would never allow a public school teacher’s daughter to be her daughter-in-law. She goes on to say that she raised Ashar in such a perfect way with his education and work and that she won’t allow him to waste it all on a lower-class woman. Khirad tries to protest and calls Khizar, who falsely keeps insisting that she is in an affair with him. However, Farida backs Khizar’s lies and kicks Khirad out of the house before Ashar has a chance to speak with her. Before leaving, she quickly manages to write a note for Ashar and leaves it with a servant. Although Ashar returns expecting to be able to speak with Khirad to hear her explanation, his mother lies and says that she and Khizar have already eloped together.

Heartbroken and alone, Khirad takes refuge at the house of her mother’s old friend, Batul Khala, in Hyderabad, Pakistan. Throughout her time there, she calls Ashar at his cell phone and his office, but he promptly hangs up whenever he finds out it is Khirad calling. Believing his mother’s story that Khirad eloped with Khizar, he says he no longer knows anyone named Khirad. After a few months, Khirad goes into labor and calls Ashar one last time. Again he hangs up, and she prematurely gives birth to a baby girl whom she names Hareem. While in the small clinic with her newborn baby, Khirad vows that even on the Day of Judgment in front of Allah, she won’t forgive Ashar for what he did. Her desperate attempts to reach out to Ashar have now turned to heartfelt anger and possibly hatred.

Four years pass and Khirad learns that her daughter is a patient of congenital heart disease, and needs immediate open heart surgery. Since she knows she will not be able to afford Hareem’s treatment, Khirad hesitantly pays a visit to her husband and tells him about the current situation. She comes back a changed woman, one with more power and anger than she had before. At first, he doesn’t react and refuses to help, but later, as he realizes his sudden love for the daughter he had never met, decides to treat Hareem. Ashar brings his wife and four-year-old child to his house, but does not reveal this to Sara, Farida, or Zareena. He bonds with Khirad and Hareem over time, though Khirad still thinks he is a weak and horrible husband as he did not believe/listen to her four years earlier. In addition, she states that she’s only there for her daughter’s treatment and no longer cares about being with Ashar, and it is because of this that she hasn’t told him the realities of what his mother did to her four years earlier.

When Sara finds out that her “enemy” has returned, she is outraged, and informs Farida. Farida quickly returns to Pakistan from a conference in the United States and explains to Khirad that she can easily throw her and her daughter back on the streets again. No longer afraid of her mother-in-law, Khirad tells her to do as she pleases, as she is only there for her daughter’s care and no longer cares for the Hussain family. She says, “I was afraid of you back when I actually wanted to be with your son…” As Hareem demands to see old pictures from their wedding, Ashar brings out an old box, which contains the note Khirad left for Ashar four years earlier as she was being thrown out of the house. He doesn’t see it right away, however.

Khizar returns from his studies abroad and demands Farida fulfill her promise of marrying him to Sara. Sara, angered by his return, refuses, but Farida insists she go through with it since Khizar threatens to tell Ashar the truth of what happened four years ago.

Meanwhile, Hareem’s surgery takes place and is successful. Seeing how much he loves his daughter, Khirad decides to leave Hareem with Ashar as he can provide for her better. Ashar, on the other hand, has (again) developed feelings for his wife and decides to forgive her for her former affair (he still doesn’t know that it was a well-played lie). So far, Khirad tells Ashar that she is leaving and leaving Hareem with him, but Ashar says that he has forgiven her (although, actually, he loves her), and he asks her to stay.

[]Episodes 21-onwards

Khizar returns to Pakistan and visits Farida. He demands her to give an answer to his marriage request for Sara within two days or else he’ll “destroy” her with everything he knows. Meanwhile, Ashar finds Khizar leaving his home, and when he confronts his mother as to why he was there, Farida responds by saying, “He wants for you and Khirad to get a divorce…” Ashar is seen visibly shaking with anger and sadness at this false revelation.

Sara continues to spiral down with her depression, saying that she can never get over Ashar due to her strong love and that she can never forget Khirad due to her strong hatred for her.

Ashar takes Khirad from the hospital (where Hareem is still recovering) to the seaside of Karachi and pours out his feelings to her. Still unaware of her innocence, he asks how she can walk around without feeling any kind of shame for what she did. He then says that he loves her just as he did four years ago and that he can’t remove her from his heart. He begs her to stay, if not for him then for Hareem. Khirad, seemingly untouched by his emotional speech, rejects his offer and, when pressed, will not tell him her reasoning. She says she only cares about Hareem’s health and happiness now and wants nothing else from this world, not even Ashar. She tells him she’s leaving Hareem with him so she can have a better life.

In a promo for the next episode, it shows Ashar finding a note Khirad left for him, implying that she’s already left for Hyderabad, leaving Hareem at Ashar’s home for good. Later on, he finds the note Khirad left nearly four years ago when she was being thrown out of the house by her mother-in-law. He is seen confronting Khizar for his lie and going into an emotional breakdown, realizing for the first time how innocent Khirad was in everything and how he refused to believe her for so long.

Changes from the novel

-In the novel, Sarah is a very limited character and is never close to Ashar and nor is his best friend or works with him. Sara’s role in the drama was expanded to a main character. Hareem was the portagonist; however in the drama she had a minor role and does not appears until episode 15.

-In the novel, Ashar and Khirad have a proper wedding ceremony and a grand reception after Maimoona’s mourning period has passed. In the drama, Ashar and Khirad never have a proper wedding, instead they have a simple nikkah ceremony and soon afterwards Maimoona dies. There is no mention of a wedding nor a reception (Walima). However, in episode 19 when Hareem requests to see the wedding pictures it is never explained where the pictures of the wedding came from if the two events never occurred or weren’t mentioned.

-Khirad and Maimoona reside in Nawabshah in the novel however; the drama’s location is changed to Hyderabad.

-Khizar in the novel is never in love with sara but to another girl, named Mehreen and never comes back from America.

-In the drama it is never explained how or where Hareem has seen Ashars picture or why she suddenly becomes so attached to her father even though she has never met him before. In the novel, it was explained by the heart necklace that Khirad is wearing when she is kicked out of the house which contains a picture of ashar (a birthday gift Ashar bestows on Khirad). When Khirad takes the necklace out after four years before her move to Karachi, Hareem becomes interested in the picture and Khirad explains to Hareem that it is her father who loves her a lot but lives in a different city and will bring her loads of toys and dolls. Khirad does not want to instigate a bad image of Ashar in Hareems mind at such an early age. She also gives the necklace to Hareem to keep, so can learn what her father’s image looks like.

-Ashar does not bring Hareem and Khirad back to his house in Karachi (like it is shown in the drama) but rents a separate apartment for them in the novel.

-The Drama’s end was changed significantly from the novel, as in the novel the only confrontation that occurs is between Ashar and Farida before it’s concluded.

 

Soundtrack

The theme song Woh Humsafar Tha was composed by Waqar Ali and sung by Qurratulain Baloch, and was written by Naseer Turabi. The lines of the song are frequently used during the course of the show.

In certain parts of the show, a track from Dexter, “Blood Theme” composed by Daniel Licht is played. However, there’s no mention of credits in this regard.

Zindgi

♥ Hansi Ko Inbox ♥
♥ Aansu Ko Outbox ♥
♥ Gusa Ko Delete ♥
♥ Muskan Ko Send ♥
♥ Pyar ko Save ♥
♥ & ♥
♥ Dil Ko Karo Vibrate ♥
♥ phir Dekho Zindgi Kitni ♥
♥ Pyari Ringtone Bajati hai ♥

A Wedding in the Month of Muharram / Misconceptions and Baseless Traditions

By Mufti Taqi Usmani

However, there are some legends and misconceptions with regard to ‘Aashooraa’ that have managed to find their way into the minds of the unlearned, but have no support of authentic Islamic sources, some very common of them are these:
·        This is the day on which Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention was created.
·        This is the day when Ibraaheem  may  Allaah  exalt  his  mention was born.
·        This is the day when Allaah accepted the repentance of Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention.
This is the day when Doomsday will take place. Whoever takes a bath on the day of ‘Aashooraa’ will never get ill
All these and other similar whims and fancies are totally baseless and the traditions referred to in this respect are not worthy of any credit. Some people take it as Sunnah (established recommended practice) to prepare a particular type of meal on the day of ‘Aashooraa’. This practice, too, has no basis in the authentic Islamic sources.
Some other people attribute the sanctity of ‘Aashooraa’ to the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. No doubt, the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him is one of the most tragic episodes of our history. Yet, the sanctity of ‘Aashooraa’ cannot be ascribed to this event for the simple reason that the sanctity of ‘Aashooraa’ was established during the days of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) much earlier than the birth of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. On the contrary, it is one of the merits of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him that his martyrdom took place on this blessed day.
Another misconception about the month of Muharram is that it is an evil or unlucky month, for Sayyidna Husain, Radi-Allahu anhu, was killed in it. It is for this misconception that people avoid holding marriage ceremonies in the month of Muharram. This is again a baseless concept, which is contrary to the express teachings of the Holy Quran and the Sunnah. If the death of an eminent person on a particular day renders that day unlucky for all times to come, one can hardly find a day of the year free from this bad luck because every day is associated with the demise of some eminent person. The Holy Quran and the Sunnah of the Holy Prophet, Sall-Allahu alayhi wa sallam, have liberated us from such superstitious beliefs.

url

Lamentations and mourning:
Another wrong practice related to this month is to hold the lamentation and mourning ceremonies in the memory of martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. As mentioned earlier, the event of Karbalaa’ is one of the most tragic events of our history, but the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) has forbidden us from holding the mourning ceremonies on the death of any person. The people of Pre-Islamic ignorance era used to mourn over their deceased through loud lamentations, by tearing their clothes and by beating their cheeks and chests. The Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) prevented the Muslims from doing all this and directed them to observe patience by saying “Inna lillaahi wa inna ilayhi raaji’oon” (To Allaah We belong, and to Him is our return). A number of authentic narrations are available on the subject. To quote only one of them: “He is not from us who slaps his checks, tears his clothes and cries in the manner of the people of jahiliyyah (Pre-Islamic ignorance)”. [Al-Bukhaari]
All the prominent jurists are unanimous on the point that the mourning of this type is impermissible. Even Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him shortly before his demise, had advised his beloved sister Zaynab  may  Allaah  be  pleased  with  her not to mourn over his death in this manner. He  may  Allaah  be  pleased  with  him said, “My dear sister! I swear upon you that in case I die you shall not tear your clothes, nor scratch your face, nor curse anyone for me or pray for your death.” (Al-Kaamil, Ibn Katheer vol. 4 pg. 24)
It is evident from this advice, that this type of mourning is condemned even by the blessed person for the memory of whom these mourning ceremonies are held. Every Muslim should avoid this practice and abide by the teachings of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ).

Q. Could you please explain whether any function, particularly weddings, could be held in the month of Muharram, particularly its first 8 or 9 days?

A. Some people hold a notion that it is not permissible to arrange a marriage or make a marriage contract in the month of Muharram, particularly its first ten days. Some extend this to even arranging the waleemah, or the dinner after marriage, in this period. There is nothing in the Qur’an or the Sunnah to confirm this. The Muharram month is the same as the rest of the year. Muslims do not allow any aspect of omen to interfere with their arrangements or plans. They rely on God in all matters, and reliance on God is sufficient to remove any thoughts of bad omen. The Prophet (peace be upon him) in fact spoke against notions of bad omen. They have no substance. Hence, it is perfectly permissible to arrange a marriage in the month of Muharram and also to arrange the waleemah or any other function. In fact marriage can be contracted and organized at any time, except when a person is in the state of consecration, or ihraam, during his pilgrimage or his Umrah. Other than this, there is no restriction. Aljazeerah

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے اور عورت پھول

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے

اسلام نے مرد کو ’’قَوَّام‘‘(گھر کا نگران اور کفيل) اور عورت کو ’’ريحان‘‘(پھول) قرار ديا ہے۔ نہ يہ مرد کي شان ميں گستاخي ہے اور نہ عورت سے بے ادبي، نہ يہ مرد کے حقوق کو کم کرنا ہے اور نہ عورت کے حقوق کي پائمالي ہے بلکہ يہ ان کي فطرت و طبيعت کو صحيح زاويے سے ديکھنا ہے۔

 امور زندگي کے ترازو ميں يہ دونوں پلڑے برابر ہيں۔ يعني جب ايک پلڑے ميں (عورت کي شکل ميں) صنف نازک، لطيف و زيبا احساس اور زندگي کے ماحول ميں آرام و سکون اور معنوي زينت و آرائش کے عامل کو رکھتے ہيں اور دوسرے پلڑے ميں گھر کے مدير، محنت و مشقت کرنے والے بازوں اور بيوي کي تکيہ گاہ اور قابل اعتماد ہستي کو (شوہر کي شکل ميں) رکھتے ہيں تو يہ دونوں پلڑے برابر ہو جاتے ہيں۔ نہ يہ اُس سے اونچا ہوتا ہے اور نہ وہ اس سے نيچے۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف :  حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

مرد کي خام خيالي اور غلط رويّہ

مرد

مرد ہر گز يہ خيال نہ کرے کہ چونکہ وہ صبح سے شام تک نوکري کے لئے باہر رہتاہے، اپنا مغز کھپاتا اور تھوڑي بہت جو رقم گھر لاتا ہے تو وہ بيوي سميت اس کي تمام چيزوں حتيٰ اس کے جذبات، احساسات اور خيالات کا بھي مالک بن گيا ہے، نہيں ! وہ جو کچھ گھر لے کر آتا ہے وہ گھر کے اجتماعي حصے اور ذمے داريوں کي نسبت آدھا ہوتا ہے۔ جب کہ دوسرا آدھا حصہ اور ذمہ داري بيوي سے متعلق ہے۔ بيوي کے اختيارات، اس کي سليقہ شعاري اور گھريلو انتظام سنبھالنا، اس کي رائے، نظر، مشورہ اور اس کي باطني ضرورتوں کا خيال رکھنا شوہر ہي کے ذمے ہے۔ ايسا نہ ہو کہ مرد چونکہ اپني غير ازدواجي زندگي ميں رات کو دير سے گھر آتا تھا لہٰذا اب شادي کرنے کے بعد بھي ايسا ہي کرے، نہيں ! اسے چاہيے کہ وہ اپني زوجہ کے روحي، جسمي اور نفسياتي پہلووں کا خيال رکھے۔

قديم زمانے ميں بہت سے مرد خود کو اپني بيويوں کا مالک سمجھتے تھے، نہيں جناب يہ بات ہرگز درست نہيں ہے ! گھر ميں جس طرح آپ صاحبِ حق و اختيار ہيں اسي طرح آپ کي شريکہ حيات بھي اپنے حق اور اختيار کو لينے اور اسے اپني مرضي کے مطابق استعمال کرنے کي مجاز ہے۔ ايسا نہ ہو کہ آپ اپني زوجہ پر اپني بات ٹھونسيں اور زور زبردستي اس سے اپني بات منوا ليں۔ چونکہ عورت، مرد کي بہ نسبت جسماني لحاظ سے کمزور ہے لہٰذا کچھ لوگ يہ خيال کرتے ہيں کہ عورت کو دبانا چاہيے، اُس سے چيخ کر اور بھاري بھرکم لہجے ميں بات کريں، ان سے لڑيں اور ان کي مرضي اور اختيار کا گلا گھونٹتے ہوئے اپني بات کو ان پر مسلط کر ديں۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف : حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

جہاں خداوند متعال نے انساني مصلحت کي بنا پر مرد و عورت ميں فرق رکھا ہے اور يہ فرق مرد کا نفع يا عورت کا نقصان نہيں ہے۔ لہٰذا مياں بيوي کو چاہيے کہ گھر ميں دو شريک اور ايک دوسرے کے مدد گار اور دوستوں کي مانند زندگي گزاريں۔

عقلمند بيوي اپنے شوہر کي معاون و مدد گار ہے

بيوي کو بھي چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کي ضرورتوں، اندرون اور بيرون خانہ اس کي فعاليت اور اس کي جسماني اور فکري حالت کو درک کرے۔ ايسا نہ ہو کہ بيوي کے کسي فعل سے مرد اپنے اوپر روحي اور اخلاقي دباو محسوس کرے۔

بيوي کو بھي چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کي ضرورتوں، اندرون اور بيرون خانہ اس کي فعاليت اور اس کي جسماني اور

شريکہ حيات کو چاہيے کہ وہ کوئي ايسا کام انجام نہ دے کہ جس سے اس کا شوہر امور زندگي سے مکمل طور پر نا اميد اور مايوس ہو جائے اور خدا نخواستہ غلط راستوں اور ناموس کو زک پہنچانے والي راہوں پر قدم اٹھا لے۔ زندگي کے ہر کام اور ہر موڑ پر ساتھ دينے والي شريکہ حيات کو چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کو زندگي کے مختلف شعبوں ميں استقامت اور ثابت قدمي کے لئے شوق و رغبت دلائے اور اگر اس کي نوکري اس طرح کي ہے کہ وہ اپنے گھر کو چلانے ميں اپنا صحيح اور مناسب کردار ادا نہيں کر پا رہا ہے تو اس پر احسان نہ جتائے اور اسے طعنے نہ دے۔ گھر کا مرد اگر علمي، جہادي (سيکورٹي اور حفاظت و غيرہ) اور معاشرے کے تعميري کاموں ميں مصروف ہے خواہ وہ نوکري کے لئے ہو يا عمومي کام کے لئے، تو بيوي کو چاہيے کہ وہ گھر کے ماحول کو اس کے لئے مساعد اور ہموار بنائے تا کہ وہ شوق و رغبت سے کام پر جائے اور خوش خوش گھر لوٹے۔ تمام مرد حضرات اس بات کو پسند کرتے ہيں کہ جب وہ گھر ميں قدم رکھيں تو گھر کا آرام دہ، پر سکون اور پر امن ماحول انہيں خوش آمديد کہے اور وہ اپنے گھر ميں اطمينان اور سکھ کا سانس ليں۔ يہ ہيں زوجہ کے فرائض۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف :  حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

ماضی کا البم

انسانی زندگی میں بعض اوقات ایسے واقعات پیش آتے ہیں کہ آدمی کو کسی چیز سے ایسی چڑ ہو جاتی ہےکہ اس کا کوئی خاص جواز نہیں ہوتا مگر یہ ہوتی ہے- اور میں اُن خاص لوگوں میں سے تھا جس کو اس بات سے چڑ تھی کہ “دروازہ بند کر دو-“ بہت دیر کی بات ہے کئی سال پہلے کی، جب ہم سکول میں پڑھتے تھے، تو ایک انگریز ہیڈ ماسٹر سکول میں آیا- وہ ٹیچرز اور طلباء کی خاص تربیت کے لئے متعین کیا گیا تھا – جب بھی اُس کے کمرے میں جاؤ وہ ایک بات ہمیشہ کہتا تھا- “Shut The Door Behind You ”
پھر پلٹنا پڑتا تھا اور دروازہ بند کرنا پڑتا تھا-

ہم دیسی آدمی تو ایسے ہیں کہ اگر دروازہ کُھلا چھوڑ دیا تو بس کُھلا چھوڑ دیا، بند کر دیا تو بند کر دیا، قمیص اُتار کے چارپائی پر پھینک دی، غسل خانہ بھی ایسے ہی کپڑوں سے بھرا پڑا ہے، کوئی قاعدہ طریقہ یا رواج ہمارے ہاں نہیں ہوتا کہ ہر کام میں اہتمام کرتے پھریں-

یہ کہنا کہ دروازہ بند کر دیں، ہمیں کچھ اچھا نہیں لگتا تھا اور ہم نے اپنے طورپر کافی ٹریننگ کی اور اُنہوں نے بھی اس بارے میں کافی سکھایا لیکن دماغ میں یہ بات نہیں آئی کہ بھئی دروازہ کیوں بند کیا جائے؟ رہنے دو ،کُھلا کیا کہتا ہے، آپ نے بھی اپنے بچّوں، پوتوں، بھتیجوں کو دیکھا ہو گا وہ ایسا کرنے سے گھبراتے ہیں- بہت سال پہلےجب میں باہر چلا گیا تھا اور مجھے روم میں رہتے ہوئے کافی عرصہ گُزر گیا وہاں میری لینڈ لیڈی ایک “درزن“ تھی جو سلائی کا کام کرتی تھی- ہم تو سمجھتے تھے کہ درزی کا کام بہت معمولی سا ہے لیکن وہاں جا کر پتہ چلا کہ یہ عزّت والا کام ہے- اُس درزن کی وہاں ایک بوتیک تھی اور وہ بہت با عزّت لوگ تھے-

میں اُن کے گھر میں رہتا تھا- اُن کی زبان میں درزن کو “سارتہ” کہتے ہیں میں جب اُس کے کمرے میں داخل ہوتا اُس نے ہمیشہ اپنی زبان میں کہا”دروازہ بند کرنا ہے“ وہ چڑ جو بچپن سے میرے ساتھ چلی تھی وہ ایم اے پاس کرنے کے بعد، یونیورسٹی کا پروفیسر لگنے کے بعد بھی میرے ساتھ ہی رہی- یہ بات بار بار سُننی پڑتی تھی تو بڑی تکلیف ہوتی، اور پھر لوٹ کے دروازہ بند کرنا، ہمیں تو عادت ہی نہیں تھی-کبھی ہم آرام سے دھیمے انداز میں گروبا پائی سے کمرے میں داخل ہی نہیں ہوئے، کبھی ہم نے کمرے میں داخل ہوتے وقت دستک نہیں دی، جیسا کہ قران پاک میں بڑی سختی سے حُکم ہے کہ جب کسی کے ہاں جاؤ تو پہلے اُس سے اجازت لو، اور اگر وہ اجازت دے تو اندر آؤ، ورنہ واپس چلے جاؤ- پتہ نہیں یہ حُکم اٹھارویں پارے میں ہے کہ اُنتیسویں میں کہ”اگر اتّفاق سے تم نے اجازت نہ لی ہو اور پھر کسی ملنے والے کے گھر چلے جاؤ اور وہ کہ دے کہ میں آپ سے نہیں مل سکتا تو ماتھے پر بل ڈالے بغیر واپس آ جاؤ-“

کیا پیارا حُکم ہے لیکن ہم میں سے کوئی بھی اس کو تسلیم نہیں کرتا- ہم کہتے ہیں کہ اندر گُھسا ہوا ہے اور کہ رہا ہے کہ میں نہیں مل سکتا، ذرا باہر نکلے تو اس کو دیکھیں گے وغیرہ وغیرہ، ہماری انا اس طرح کی ہے اور یہ کہنا کہ”دروازہ بند کر دیں“ بھی عجیب سی بات لگتی ہے- ایک روز میں نے بار بار یہ سُننے کے بعد روم میں زچ ہو کر اپنی اُس لینڈ لیڈی سے پوچھا کہ آپ اس بات پر اتنا زور کیوں دیتی ہیں- میں ایک بات تو سمجھتا ہوں کہ یہاں (روم میں) سردی بہت ہے، برف باری بھی ہوتی ہے کبھی کبھی اور تیز”وینتو“ (رومی زبان کا لفظ مطلب ٹھنڈی ہوائیں چلنا) بھی ہوتی ہیں اور ظاہر ہے کہ کُھلے ہوئے دروازے سے میں بالکل شمشیر زنی کرتی ہوئی کمروں میں داخل ہوتی ہیں- یہاں تک تو آپ کی دروازہ بند کرنے والی فرمائش بجا ہے لیکن آپ اس بات پر بہت زیادہ زور دیتی ہیں- چلو اگرکبھی دروازہ کُھلا رہ گیا اور اُس میں سے اندر ذرا سی ہوا آگئی یا برف کی بوچھاڑ ہوگئی تو اس میں ایسی کون سی بڑی بات ہے-

اس نے کہا کہ تم ایک سٹول لو اور یہاں میرے سامنے بیٹھ جاؤ (وہ مشین پر کپڑے سی رہی تھی ) میں بیٹھ گیا وہ بولی دروازہ اس لئے بند نہیں کرایا جاتا اور ہم بچپن سے بچّوں کو ایسا کرنے کی ترغیب اس لئے نہیں دیتے کہ ٹھنڈی ہوا نہ آجائے یا دروازہ کُھلا رہ گیا تو کوئی جانور اندر آ جائے گا بلکہ اس کا فلسفہ بہت مختلف ہے اور یہ کہ اپنا دروازہ، اپنا وجود ماضی کے اوپر بند کر دو، آپ ماضی میں سے نکل آئے ہیں اور اس جگہ پر اب حال میں داخل ہو گئے ہیں- ماضی سے ہر قسم کا تعلق کاٹ دو اور بھول جاؤ کہ تم نے کیسا ماضی گُزارا ہے اور اب تم ایک نئے مُستقبل میں داخل ہو گئے ہو- ایک نیا دروازہ تمہارے آگے کُھلنے والا ہے، اگر وہی کُھلا رہے گا تو تم پلٹ کر پیچھے کی طرف ہی دیکھتے رہو گے- اُس نے کہا کہ ہمارا سارے مغرب کا فلسفہ یہ ہے اور دروازہ بند کر دو کا مطلب لکڑی، لوہے یا پلاسٹک کا دروازہ نہیں ہے بلکہ اس کا مطلب تمہارے وجود کے اوپر ہر وقت کُھلا رہنے والا دروازہ ہے- اُس وقت میں ان کی یہ بات نہیں سمجھ سکا جب تک میں لوٹ کے یہاں (پاکستان) نہیں آگیااور میں اپنےجن”بابوں“ کا ذکر کیا کرتا ہوں ان سے نہیں ملنے لگا۔ میرے”بابا“ نے مومن کی مجھے یہ تعریف بتائی کہ مومن وہ ہے جو ماضی کی یاد میں مبتلا نہ ہو اور مستقبل سے خوفزدہ نہ ہو- ( کہ یا اللہ پتہ نہیں آگے چل کے کیا ہونا ہے ) وہ حال میں زندہ ہو

آپ نے ایک اصلاح اکثر سُنی ہو گی کہ فلاں بُزرگ بڑے صاحبِ حال تھے- مطلب یہ کہ اُن کا تعلق حال سے تھا وہ ماضی کی یاد اور مستقبل کی فکر کے خوف میں مبتلا نہیں تھے- مجھے اُس لینڈ لیڈی نے بتایا کہ دروازہ بند کرنے کا مطلب یہ ہے کہ اب تم ایک نئے عہد، ایک نئے دور ایک نئے Era اور ایک اور وقت اور زمانے میں داخل ہو چکے ہیں اور ماضی پیچھے رہ گیا ہے- اب آپ کو اس زمانے سے فائدہ اُٹھانا ہے اور اس زمانے کے ساتھ نبرد آزمائی کرنی ہے ۔جب میں نے یہ مطلب سُنا تو ہم چکاچوند گیا کہ میں کیا ہم سارے ہی دروازہ بند کرنے کا مطلب یہی لیتے ہیں جو عام طور پر ہو یا عام اصطلاح میں لیا جاتا ہے- بچّوں کو یہ بات شروع سے سکھانی چاہئے کہ جب تم آگے بڑھتے ہو، جب تم زندگی میں داخل ہوتے ہو، کسی نئے کمرے میں جاتے ہو تو تمہارے آگے اور دروازے ہیں جو کُھلنے چاہئیں- یہ نہیں کہ تم پیچھے کی طرف دھیان کر کے بیٹھے رہو-

جب اُس نے یہ بات کہی اور میں نے سُنی تو پھر میں اس پر غور کرتا رہا اور میرے ذہن میں اپنی زندگی کے واقعات، ارد گرد کے لوگوں کی زندگی کے واقعات بطور خاص اُجاگر ہونے لگے اور میں نے محسوس کرنا شروع کیا کہ ہم لوگوں میں سے بہت سے لوگ آپ نے ایسے دیکھے ہوں گے جو ہر وقت ماضی کی فائل بلکہ ماضی کے البم بغل میں دبائے پھرتے ہیں- اکثر کے پاس تصویریں ہوتی ہیں- کہ بھائی جان میرے ساتھ یہ ہو گیا، میں چھوٹا ہوتا تھا تو میرے ابّا جی مجھے مارتے تھےسوتیلی ماں تھی، فلاں فلاں، وہ نکلتے ہی نہیں اس یادِ ماضی سے- میں نے اس طرح ماضی پر رونے دھونے والے ایک دوست سے پوچھا آپ اب کیا ہیں؟ کہنے لگے جی میں ڈپٹی کمشنر ہوں لیکن رونا یہ ہے کہ جی میرے ساتھ یہ زمانہ بڑا ظلم کرتا رہا ہے- وہ ہر وقت یہی کہانی سُناتے- ہمارے مشرق میں ایشیاء، فارس تقریباً سارے مُلکوں میں یہ رواج بہت عام ہے اور ہم جب ذکر کریں گے اس”دردناکی“ کا ذکر کرتے رہیں گے- ہماری ایک آپا سُکیاں ہیں- جو کہتی ہیں کہ میری زندگی بہت بربادی میں گزری بھائی جان، میں نے بڑی مشکل سے وقت کاٹا ہے- اب ایک بیٹا تو ورلڈ بینک میں ملازم ہے ایک یہاں چارٹرڈ اکاؤنٹینٹ ہے- اہک بیٹا سرجن ہے ( ان کے خاوند کی بھی اچھی تنخواہ تھی، اچھی رشوت بھی لیتے رہے،اُنہوں نے بھی کافی کامیاب زندگی بسر کی ۔)

میں نے ایک بار اُن سے پوچھا تو کہنے لگے بس گُزارا ہو ہی جاتا ہے، وقت کے تقاضے ایسے ہوتے ہیں- میں نے کہا کہ آدھی رشوت تو آپ سرکاری افسر ہونے کے ناطے دے کر سرکاری سہولتوں کی مد میں وصول کرتے ہیں مثلاً آپ کی اٹھارہ ہزار روپے تنخواہ ہو گی تو ایک کار ایک دوسری کار، پانچ نوکر، گھر، یہ اللہ کے فضل سے بہت بڑی بات ہے کیا اس کے علاوہ بھی چاہیئے- وہ بولے ہاں اس کے علاوہ بھی ضرورت پڑتی ہے لیکن ہم نے بڑا دُکھی وقت گُزارا ہے، مشکل میں گُزارا، ہمارا ماضی بہت دردناک تھا- وہ ماضی کا دروازہ بند ہی نہیں کرتے- ہر وقت یہ دروازہ نہ صرف کُھلا رکھتے ہیں بلکہ اپنے ماضی کو ساتھ اُٹھائے پھرتے ہیں- میں نے بہت سے ایسے لوگ دیکھے، آج کے بعد آپ بھی غور فرمائیں گے تو آپ دیکھیں گے کہ ان کے پاس اپنے ماضی کی رنگین البمیں ہوتی ہیں- ان میں فوٹو لگے ہوئے ہوتے ہیں اور دُکھ درد کی کہانیاں بھری ہوئی ہوتی ہیں- اگر وہ دُکھ درد کی کہانیاں بند کر دیں، کسی نہ کسی طور پر”تگڑے“ ہو جائیں اور یہ تہیہ کر لیں کہ اللہ نے اگر ایک دروازہ بند کیا تو وہ اور کھولے گا، تو یقیناً اور دروازے کُھلتے جائیں گے-

اگر آپ پلٹ کر پیچھے دیکھتے جائیں گے اور اُسی دروازے میں سے جھانک کے وہی گندی مندی، گری پڑی چیزوں کو اکٹھا کرتے رہیں گے تو آگے نہیں جا سکتے- اس طرح سے مجھے پتہ چلا کہ Shut behind the door کا مطلب یہ نہیں ہے جو میں سمجھتا رہا ہوں- وہ تو اچھا ہو گیا کہ میں اتفاق سے وہاں چلا گیا ورنہ ہمارے جو انگریز اُستاد آئے تھے اُنہوں نے اس تفصیل سے نہیں بتایا تھا- آپ کو ہم کو، سب کو یہ کوشش ضرور کرنی چاہئے کہ ماضی کا پیچھا چھوڑ دیں-

ہمارے بابے، جن کا میں اکثر ذکر کرتا ہوں، بار بار کرتا ہوں اور کرتا رہوں گا، اُن کے ڈیروں پر آپ جا کر دیکھیں، وہ ماضی کی بات نہیں کریں گے- وہ کہتے ہیں کہ بسم اللہ آپ یہاں آگئے ہیں، یہ نئی زندگی شروع ہو گئی ہے، آپ بالکل روشن ہو جائیے، چمک جایئے- جب ہمارے جیسے نالائق بُری ہیئت رکھنے والے آدمی اُن کی خدمت میں حاضر ہوتے ہیں، تو وہ نعرہ مار کے کہتے ہیں”واہ واہ! رونق ہو گئی، برکت ہوگئی، ہمارے ڈیرے کی کہ آپ جیسے لوگ آ گئے-“ اب آپ دیکھئے ہمارے اوپر مشکل وقت ہے، لیکن سارے ہی اپنے اپنے انداز میں مستقبل سے خوفزدہ رہتے ہیں کہ پتا نہیں جی کیا ہوگا اور کیسا ہوگا ؟ میں یہ کہتا ہوں کہ ہمیں سوچنا چاہئے- ہم کوئی ایسے گرے پڑے ہیں، ہم کوئی ایسے مرے ہوئے ہیں، ہمارا پچھلا دروازہ تو بند ہے، اب تو ہم آگے کی طرف چلیں گے اور ہم کبھی مایوس نہیں ہوں گے، اس لئے کہ اللہ نے بھی حکم دے دیا ہے کہ مایوس نہیں ہونا، اس لئے حالات مشکل ہوں گے، تکلیفیں آئیں گی، بہت چیخیں نکلیں گی- لیکن ہم مایوس نہیں ہوں گے، کیونکہ ہمارے اللہ کا حکم ہے اور ہمارے نبیﷺ کے ذریعے یہ فرمان دیا گیا ہے کہ لَا تَـقنُـطـومِـن رحـمـۃِ اللہ (“یعنی اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہوں“)- بعض اوقات یہ پتا نہیں چلتا کہ اللہ کی رحمت کے کیا کیا رُوپ ہوتے ہیں- آدمی یہ سمجھتا ہے میرے ساتھ یہ زیادتی ہو رہی ہے، میں Demote ہو گیا ہوں، لیکن اس Demote ہونے میں کیا راز ہے؟ یہ ہم نہیں سمجھ سکتے- اس راز کو پکڑنے کے لئے ایک ڈائریکٹ کنکشن اللہ کے ساتھ ہونا چاہئے اور اُس سے پوچھنا چاہئے کہ جناب! اللہ تعالٰی میرے ساتھ یہ جو مشکل ہے، میرے ساتھ یہ تنزّلی کیوں ہے؟ لیکن ہمیں اتنا وقت نہیں ملتا اور ہم پریشانی میں اتنا گُم ہوجاتے ہیں کہ ہمیں وقت ہی نہیں ملتا، ہمارے ساتھ یہ بڑی بدقسمتی ہے کہ ہمیں بازاروں میں جانے کا وقت مل جاتا ہے، تفریح کے لئے مل جاتا ہے،دوستوں سے ملنے، بات کرنے کا وقت مل جاتا ہے- لیکن اپنے ساتھ بیٹھنے کا، اپنے اندر جھانکنے کا کوئی وقت میسر نہیں آتا-

آپ ہی نہیں، میں بھی ایسے لوگوں میں شامل ہوں- اگر میں اپنی ذات سے پوچھوں کہ”اشفاق احمد صاحب! آپ کو اپنے ساتھ بیٹھنے کا کتنا وقت ملتا ہے؟ کبھی آپ نے اپنا احتساب کیا ہے؟“تو جواب ظاہر ہے کہ کیا ملے گا- دوسروں کا احتساب تو ہم بہت کر لیتے ہیں-اخباروں میں، کالموں میں، اداریوں میں لیکن میری بھی تو ایک شخصیت ہے، میں بھی تو چاہوں گا کہ میں اپنے آپ سے پوچھوں کہ ایسا کیوں ہے، اگر ایسا ممکن ہو گیا، تو پھر خفیہ طور پر، اس کا کوئی اعلان نہیں کرنا ہے، یہ بھی اللہ کی بڑی مہربانی ہے کہ اُس نے ایک راستہ رکھا ہوا ہے، توبہ کا! کئی آدمی تو کہتے ہیں کہ نفل پڑھیں، درود وظیفہ کریں، لیکن یہ اُس وقت تک نہیں چلے گا، جب تک آپ نے اُس کئے ہوئے برے کام سے توبہ نہیں کر لی، توبہ ضروری ہے- جیسا آپ کاغذ لے کے نہیں جاتے کہ”ٹھپہ“ لگوانے کے لئے- کوئی “ٹھپہ“ لگا کر دستخط کردے گا اور پھر آپ کا کام ہو جاتا ہے، اس طرح توبہ وہ”ٹھپہ“ ہے جو لگ جاتا ہے اور بڑی آسانی سے لگ جاتا ہے،اگر آپ تنہائی میں دروازہ بند کر کے بیٹھیں اور اللہ سے کہیں کہ !”اللہ میاں پتہ نہیں مجھے کیا ہو گیا تھا، مجھ سے یہ غلطی، گُناہ ہو گیا اور میں اس پر شرمندہ ہوں-“ ( میں یہ Reason نہیں دیتا کہ Human Being کمزور ہوتا ہے، یہ انسانی کمزوری ہے یہ بڑی فضول بات ہے ۔ایسی کرنی ہی نہیں چاہئے) بس یہ کہے کہ مجھ سے کوتاہی ہوئی ہے اور میں اے خداوند تعالٰی آپ سے معافی چاہتا ہوں اور میں کسی کو یہ بتا نہیں سکتا، اس لئے کہ میں کمزور انسان ہوں- بس آپ سے معافی مانگتا ہوں-

اس طرح سے پھر زندگی کا نیا، کامیاب اور شاندار راستہ چل نکلتا ہے- لیکن اگر آپ اپنے ماضی کو ہی اُٹھائے پھریں گے، اُس کی فائلیں ہی بغل میں لئے پھریں گے اور یہی رونا روتے رہیں گے کہ میرے ابا نے دوسری شادی کر لی تھی، یا میرے ساتھ سختی کرتے رہے، یا اُنہوں نے بڑے بھائی کو زیادہ دے دیا، مجھےکچھ کم دے دیا، چھوٹے نے زیادہ لے لیا، شادی میں کوئی گڑ بڑ ہوئی تھی- اس طرح تو یہ سلسلہ کبھی ختم ہی نہیں ہوگا، پھر تو آپ وہیں کھڑے رہ جائیں گے، دہلیز کے اوپر اور نہ دروازہ کھولنے دیں گے، نہ بند کرنے دیں گے، بس پھنسے ہوئے رہیں گے- لیکن آپ کو چاہئے کہ آپ Shut Behind The Door کر کے زندگی کو آگے لے کر چلیں- آپ زندگی میں یہ تجربہ کر کے دیکھیں- ایک مرتبہ تو ضرور کریں- آپ میری یہ بات سننے کے بعد جو میری نہیں میری لینڈ لیڈی ، اُس اطالوی درزن کی بات ہے، اس پہ عمل کر کے دیکھیں-

اس کے بعد میں نے رونا چھوڑ دیا اور ہر ایک کے پاس جا کر رحم کی اور ہمدردی کی بھیک مانگنا چھوڑ دی- آدمی اپنے دُکھ کی البم دکھا کر بھیک ہی مانگتا ہے نا! جسے سُن کر کہا جاتا ہے کہ بھئی! غلام محمّد، یا نور محمّد یا سلیم احمد تیرے ساتھ بڑی زیادتی ہوئی- اس طرح دو لفظ آپ کیا حاصل کر لیں گے اور سمجھیں گے کہ میں نے بہت کچھ سر کر لیا، لیکن وہ قلعہ بدستور قائم رہے گا، جسے فتح کرنا ہے- اگر آپ تہیہ کر لیں گے کہ یہ ساری مشکلات، یہ سارے بل، یہ سارے یوٹیلیٹی کے خوفناک بل تو آتے ہی رہیں گے، یہ تکلیف ساتھ ہی رہے گی، بچّے بھی بیمار ہوں گے، بیوی بھی بیمار ہوگی، خاوند کو بھی تکیلف ہو گی، جسمانی عارضے بھی آئیں گے، روحانی بھی، نفسیاتی بھی- لیکن ان سب کے ہوتے ہوئے ہم تھوڑا سا وقت نکال کراور مغرب کا وقت اس کے لئے بڑا بہتر ہوتا ہے، کیونکہ یوں تو سارے ہی وقت اللہ کے ہیں، اس وقت الگ بیٹھ کر ضرور اپنی ذات کے ساتھ کچھ گُفتگو کریں اور جب اپنے آپ سے وہ گُفتگو کر چکیں، تو پھر خفیہ طور پر وہی گُفتگو اپنے اللہ سے کریں، چاہے کسی بھی زبان میں، کیونکہ اللہ ساری زبانیں سمجھتا ہے، انگریزی میں بات کریں، اردو، پنجابی، پشتو اور سندھی جس زبان میں چاہے اس زبان میں آپ کا یقیناً اُس سے رابطہ قائم ہو گا اور اس سے آدمی تقویت پکڑتا ہے، بجائے اس کے آپ مجھ سے آ کر کسی بابے کا پوچھیں، ایسا نہیں ہے- آپ خود بابے ہیں- آپ نے اپنی طاقت کو پہچانا ہی نہیں ہے- جس طرح ہمارے جوگی کیا کرتے ہیں کہ ہاتھی کی طاقت سارے جانوروں سے زیادہ ہے۔ لیکن چونکہ اس کی آنکھیں چھوٹی ہوتی ہیں، اس لئے وہ اپنی طاقت، وجودکو پہچانتا ہی نہیں- ہاتھی جانتا ہی نہیں کہ میں کتنا بڑا ہوں- اس طرح سے ہم سب کی آنکھیں بھی اپنے اعتبار سے چھوٹی ہیں اور ہم نے اپنی طاقت کو، اپنی صلاحیت کو جانا ہی نہیں- اللہ میاں نے تو انسان کو بہت اعلٰی و ارفع بنا کر سجود و ملائک بنا کر بھیجا ہے- یہ باتیں یاد رکھنے کی ہیں کہ اب تک جتنی بھی مخلوق نے انسان کو سجدہ کیا تھا، وہ انسان کے ساتھ ویسے ہی نباہ کر رہی ہے- یعنی شجر، حجر، نباتات، جمادات اور فرشتے وہ بدستور انسان کا احترام کر رہے ہیں- انسان سے کسی کا احترام کم ہی ہوتا ہے- اب جب ہم یہاں بیٹھے ہیں، تو اس وقت کروڑوں ٹن برف کے۔ ٹو (K2) پر پڑی آوازیں دے کر پکار پکار کر سورج کی منّتیں کر رہی ہے کہ “ذرا ادھر کرنیں زیادہ ڈالنا، سندھ میں پانی نہیں ہے- جہلم، چناب خشک ہیں اور مجھے وہاں پانی پہنچانا ہے اور نوعِ انسان کو پانی کی ضرورت ہے-“ برف اپنا آپ پگھلاتی ہے اور آپ کو پانی دے کر جاتی ہے- صبح کے وقت اگر غور سے سوئی گیس کی آواز سُنیں اور اگر آپ اس درجے یا جگہ پر پہنچ جائیں کہ اس کی آواز سن سکیں، تو وہ چیخ چیخ کر اپنے سے سے نیچے والے کو کہ رہی ہوتی ہے”نی کُڑیو! چھیتی کرو- باہر نکلو، جلدی کرو تم تو ابھی ہار سنگھار کر رہی ہو- بچوں نے سکول جانا ہے- ماؤں کو انہیں ناشتہ دینا ہے- لوگوں کو دفتر جانا ہے- چلو اپنا آپ قربان کرو-“ وہ اپنا آپ قربان کر کے جل بھن کر آپ کا ناشتہ، روٹیاں تیار کرواتی ہے-

یہ سب پھل، سبزیاں اپنے وعدے پر قائم ہیں- یہ آم دیکھ لیں، آج تک کسی انور راٹھور یا کسی ثمر بہشت درخت نے اپنا پھل خود کھا کر یا چوس کر نہیں دیکھا- بس وہ تو انسانوں سے کئے وعدے کی فکر میں رہتا ہے کہ میرا پھل توڑ کر بلوچستان ضرور بھیجو، وہاں لوگوں کو آم کم ملتا ہے- اس کا اپنے اللہ کے ساتھ رابطہ ہے اور وہ خوش ہے- آج تک کسی درخت نے افسوس کا اظہار نہیں کیا- شکوہ نہیں کیا کہ ہماری بھی کوئی زندگی ہے، جی جب سے گھڑے ہیں، وہیں گھڑے ہیں- نہ کبھی اوکاڑہ گئے نہ کبھی آگے گئے، ملتان سے نکلے ہی نہیں- میرا پوتا کہتا ہے”دادا! ہو سکتا ہے کہ درخت ہماری طرح ہی روتا ہو، کیونکہ اس کی باتیں اخبار نہیں چھاپتا-“ میں نے کہا وہ پریشان نہیں ہوتا، نہ روتا ہے، وہ خوش ہے اور ہوا میں جھومتا ہے- کہنے لگا، آپ کو کیسے پتا ہے کہ وہ خوش ہے؟ میں نے کہا کہ وہ خوش ایسے ہے کہ ہم کو باقاعدگی سے پھل دیتا ہے- جو ناراض ہو گا ، تو وہ پھل نہیں دے گا-

میں اگر اپنے گریبان میں منہ ڈال کر دیکھوں، میں جو اشفاق احمد ہوں، میں پھل نہیں دیتا- میرے سارے دوست میرے قریب سے گُزر جاتے ہیں- میں نہ تو انور راٹھور بن سکا، نہ ثمر بہشت بن سکا نہ میں سوئی گیس بن سکا-

بيوى كى ديكھ بھال

بيوى كى ديكھ بھال

اسلامى شريعت ميں ، جس طرح شوہر كى ديكھ بھال كو ، ايك عورت كے لئے جہاد سے تعبير كيا گيا ہے ، اسى طرح بيوى كى ديكھ بھال كو بھى ايك شادى شدہ مرد كا سب سے اہم اور گرانقدر عمل سمجھا گيا ہے اور اس ميں خاندان كى سعادتمندى مضمر ہے _ لكن ”زن داري” يا بيوى كى ديكھ بھال كوئي آسان كام نہيں ہے بلكہ يہ ايك ايسا راز ہے جس سے ہر شخص كو پور ى طرح آگاہ و با خبر ہونا چاہئے تا كہ اپنى بيوى كو اپنى مرضى كے مطابق ايك آئيڈيل خاتون ، بلكہ فرشتہ رحمت كى صورت دے سكے _
جو مرد واقعى ايك شوہر كے فرائض بنھانا چاہتے ہيں ان كو چاہئے كہ اپنى بيوى كے دل كو موہ ليں _ اس كى دلى خواہشات و رجحانات و ميلانات سے آگاہى حاصل كريں اور اس كے مطابق زندگى كا پروگرام مرتب كريں _ اپنے اچھے اخلاق و كردار و گفتار اور حسن سلوك كے ذريعہ اس پر ايسا اچھا اثر ڈاليں كہ خود بخود اس كا دل ان كے بس ميں آجائے _ اس كے دل ميں زندگى اور گھر سے رغبت و انسيت پيدا ہو اور دل و جان سے امور خانہ دارى كو انجام دے _
”زن داري” يا بيوى كى ديكھ بھال كے الفاظ ، جامع اور مكمل مفہوم كے حامل ہيں كہ جس كى وضاحت كى ضرورت ہے اور آئندہ ابواب ميں اس موضوع پر تفصيلى بحث كى جائے گى _

اپنى محبت نچھا وركيجئے

عورت محبت كا مركز اور شفقت و مہربانى سے بھر پور ايك مخلوق ہے اس كے وجود سے مہرو محبت كى بارش ہوتى ہے _

اس كى زندگى عشق و محبت سے عبادت ہے _ اس كا دل چاہتا ہے دوسروں كى محبوب ہوا ور جو عورت جتنى زيادہ محبوب ہوتى ہے اتنى ہى تر و تازہ اور شاداب رہتى ہے _محبوبيت حاصل كرنے كيلئے وہ فداكارى كى حد تك كوشش كرتى ہے _ اس نكتہ كو جان ليجئے كہ اگر عورت كسى كى محبوب نہ ہو تو خود كو شكست خودرہ اور بے اثر سمجھ كر ہميشہ پمردہ اور افسردہ رہتى ہے _ اس سبب سے قطعى طور پر اس بات كا دعوى كيا جا سكتاہے كہ بيوى كى ديكھ بھال يا ”زن داري” كا سب سے بڑا راز اس سے اپنى محبت اور پسنديدگى كا اظہار كرنا ہے _

شوہر كى بے اعتنائيوں اور بے مہريوں يا زيادہ كاموں ميں مشغول رہنے كے نتيجہ ميں بيوى اور گھر كى طرف سے غفلت ، زيادہ تر عليحدگى كے اسباب رہے ہيں __

اگر آپ چاہتے ہيں آپ كى بيوى زندہ دل ، خوش و خرم اور شاداب رہے گھر اور زندگى ميں پورى دل جمعى كے ساتھ دلچسپى لے ، اگر آپ چاہتے ہيں كہ وہ آپ سے سچے دل سے محبت كرے ، اگر آپ چاہتے ہيں كہ آخر عمر تك آپ كى وفادار رہے ، تو اس كا بہترين طريقہ يہ ہے ك جس قدر ممكن ہو سكے اپنى بيوى سے محبت وچاہت كا اظہار كيجئے _ اگر اسے معلوم ہو كہ آپ كو اس محبت نہيں ہے تو گھر اور زندگى سے

بيزار ہوجائے گى ہميشہ پمردہ اور اداس رہے گى _ خانہ دارى اور بچوں كے كاموں ميں اس كا دل نہيں لگے گا _ آپ كے گھر كى حالت ہميشہ ابتر رہے گى _ اپنے دل ميں سوچے گى كہ ايسے شوہر كے لئے كيوں جاں كھپاؤں جو مجھے عزيز نہيں ركھتا _

src=http://www.alhassanain.com/urdu/show_book.php?book_id=306&search=%C7%D3%E1%C7%E3%20%E3&show_file_s=012.html&link_book=family_and_community_library/family_and_child/khandan_ka_akhlaq

changes

change.

everything in life can change. everything .
time change, life change.

firends change.
relashions change.
wishes change.
goals change.
love change.

this is what i am experiencing. and i am lost now. fade up of living this L….

امين خانہ

گھر كے اخراجات كا انتظام عموماً مرد كے ذمہ ہوتا ہے _ مرد شب و روز محنت كركے اپنے خاندان كى ضروريات پورى كرتا ہے _ اس دائمى بيگارى كو ايك شرعى اور انسانى فريضہ سمجھ كروں و جان سے انجام ديتا ہے _ اپنے خاندان كے آرام و آسائشے كى خاطر ہر قسم كى تكليف و پريشانى كو خندہ پيشانى سے برداشت كرتا ہے اور ان كى خوشى ميں لذت محسوس كرتا ہے _ ليكن گھر كى مالكہ سے توقع ركھتا ہے كہ پيسے كى قدروقيمت سمجھے اور بيكار خرچ نہ كرے _ اس سے توقع كرتا ہے كہ گھركے اخراجات ميں نہايت دل سوزى اور عاقبت انديشى سے كام لے _

زبان کی حفاظت

أما بعد! قال اللہ تعالی:

(وَمَن يَتَّقِ اللَّـهَ يَجْعَل لَّهُ مَخْرَجًا۔ وَيَرْزُقْهُ مِنْ حَيْثُ لَا يَحْتَسِبُ ۚ وَمَن يَتَوَكَّلْ عَلَى اللَّـهِ فَهُوَ حَسْبُهُ ۚ إِنَّ اللَّـهَ بَالِغُ أَمْرِهِ ۚ قَدْ جَعَلَ اللَّـهُ لِكُلِّ شَيْءٍ قَدْرًا) [الطلاق :2-3]

“اور جو شخص اللہ سے ڈرتا ہے اللہ اس کے لیے چھٹکارے کی شکل نکال دیتا ہے۔ اور اسے ایسی جگہ سے روزی دیتا ہے جس کا اسے گمان بھی نہ ہو اور جو شخص اللہ پر توکل کرے گا اللہ اسے کافی ہوگا۔ اللہ تعالیٰ اپنا کام پورا کرکے ہی رہے گا۔ اللہ تعالیٰ نے ہر چیز کا ایک اندازه مقرر کر رکھا ہے۔”

وقال فی موضع آخر: (وَسِعَ رَبِّي كُلَّ شَيْءٍ عِلْمًا ۗ ) [الأنعام:80]

” میرا پروردگار ہر چیز کو اپنے علم میں گھیرے ہوئے ہے۔”

وقال: (وَمَا يَعْزُبُ عَن رَّبِّكَ مِن مِّثْقَالِ ذَرَّةٍ فِي الْأَرْضِ وَلَا فِي السَّمَاءِ وَلَا أَصْغَرَ مِن ذَٰلِكَ وَلَا أَكْبَرَ إِلَّا فِي كِتَابٍ مُّبِينٍ) [یونس:61]

“اور آپ کے رب سے کوئی چیز ذره برابر بھی غائب نہیں، نہ زمین میں اور نہ آسمان میں اورنہ کوئی چیز اس سے چھوٹی اور نہ کوئی چیز بڑی مگر یہ سب کتاب مبین میں ہے۔”

 بندہ ہر وقت اللہ کی  نگرا نی میں  رہتا ہے اس کی کوئی بھی حرکت اس سے پوشیدہ نہیں۔ یہی نہیں بلکہ آسمان وزمین کی کوئی بھی چیز   اس سے چھپی  ہوئی نہیں ہے۔ وہ ہر چیز کا علم رکھتا ہے چھوٹی بڑی ہر چیز سے وہ باخبر ہے۔اسی وجہ سے اس نے ہمیں حکم دیا ہے کہ ہم اس سے ڈریں اور ان تمام چیزوں سے اپنے آپ کو بچائیں جو اس کی ناراضگی کا باعث ہیں۔

اللہ کے بندو!زبان اللہ کی نعمتوں میں سے ایک بہت بڑی نعمت ہے۔ یہ انسان کو اس لیے ملی ہے تاکہ وہ اس سے چیزوں کاذائقہ  معلوم کر سکے اور اپنے دل کی باتیں لوگوں  کوبتا سکے۔ زبان نہ ہوتی تو ہم اپنے مافی الضمیر  کا اظہار نہیں کرسکتے  تھے۔  اس لیے احسان  جتا تے ہوئے  اللہ تعالیٰ نے اس کا ذکر فرمایا ہے:

(أَلَمْ نَجْعَل لَّهُ عَيْنَيْنِ۔ وَلِسَانًا وَشَفَتَيْنِ) [البلد:8-9]

“کیا ہم نے اس کی دو آنکھیں نہیں بنائیں۔ اور زبان اور ہونٹ (نہیں بنائے)۔”

زبان ہی سے آدمی کےعقل وشعور  اور اس کی صلاحتیوں  کاپتہ چلتا ہے لیکن اس نعمت کا  استعمال اگر غلط طریقے سے ہو تو یہ نعمت اللہ کی ناراضگی  کا باعث بن جاتی ہے اور لوگوں کے دل بھی اس سے زخمی ہوتے ہیں۔ یاد رکھیے، زبان کا زخم  تیروسنان کے زخم سےزیادہ  کاری ہوتا ہے۔اسی لیے زبان  کےخوف سے بڑے بڑے بہادر لرزتے ہیں۔  ایک عربی شاعر کہتا ہے  ؎

جراحات السنان لھا التیام

ولا یلتام ما جرح  اللسان

“تیرکے زخم بھر جاتے ہیں  لیکن زبان  کے زخم کبھی نہیں بھر تے۔”

 اسی وجہ سے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ جہنم میں لوگ اپنی زبانوں کے حصائد  یعنی  زبان کی کاٹی ہوئی کھیتیوں  سے ہی اور ندھے منہ گرائے جائیں گے۔ زبان  کی کا ٹی ہوئی  کھیتیوں  سے مراد  زبان  سے سرزد  ہونے والے  گناہ کی  باتیں ہیں۔اسی لیے مؤمن جو اس بات کایقین رکھتا  ہے کہ اللہ  اس کی ہر بات اور ہرحرکت کوسنتا   اور دیکھتا  ہے، کھبی بھی اپنی  زبان کو آزاد اور بےلگام نہیں چھوڑ  تا۔ ہمیشہ  اسے اپنے کنٹرول  میں رکھتا  ہے۔ زبان  کے حصائد  یعنی  اس سے سرزد ہونے والے گنا ہوں کی بہت ساری قسمیں ہیں۔  ان میں سے چند کا ذکر ہم آج  کے اس خطبے میں کریں گے۔ ان میں سے سب  سے اہم غیبت اور بہتان ہے۔ اللہ تعالیٰ نے سورۂ الحجرات میں اس سے بچنے  کی سخت  تاکید فر مائی ہے۔ ارشاد باری ہے:

(وَلَا يَغْتَب بَّعْضُكُم بَعْضًا ۚ أَيُحِبُّ أَحَدُكُمْ أَن يَأْكُلَ لَحْمَ أَخِيهِ مَيْتًا فَكَرِهْتُمُوهُ ۚ) [الحجرات:12]

“اور نہ تم میں سے کوئی کسی کی غیبت کرے۔ کیا تم میں سے کوئی بھی اپنے مرده بھائی کا گوشت کھانا پسند کرتا ہے؟ تم کو اس سے گھن آئے گی۔”

ابو بزرہ  اسلمی رضی اللہ عنہ  سے روایت  ہے وہ کہتے ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے:

(یا معشر من آمن بلسانہ ولم یدخل الإیمان فی قلبہ لا تغتابوا المسلمین ولا تتبعوا عوراتھم فإنہ من اتبع عوراتھم یتبع اللہ عز وجل عورتہ، ومن یتبع اللہ عورتہ یفضحہ فی بیتہ) [أبو داؤد]

“اے وہ لوگو!جو ایمان لاۓ ہو،،  اپنی زبان سے (اور  حال یہ ہے کہ ایمان  اس کے دل میں داخل  نہیں ہواہے)  مسلمانوں  کی غیبت  نہ کرو۔ اور ان کے عیوب کے پیچھے نہ پڑو۔ اس لیے کہ  جو ان کے عیوب کے پیچھے  پڑےگا،  اللہ اس کے  عیب کےپیچھے  پڑےگا۔ اور اللہ جس  کے عیب کے پیچھے  پڑےگا،  اسے اس کے گھر میں ذلیل  ورسوا کر دےگا۔

ابوہریرہ  رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:

(أ تدرون ما الغیبۃ؟ قالوا اللہ ورسولہ أعلم، قال: ذکرک أخاک بما یکرہ، قیل أ فرأیت إن کان فی أخی ما أقول؟ قال؛ إن کان فیہ ما تقول فقد اغتبتہ وإن لم یکن فیہ ما تقول فقد بھتَّہ)

“کیا تم جانتے ہوکہ غیبت کیا ہے؟ صحابہ نے عرض کیا  اللہ اور اس کے رسول  بہتر جانتے  ہیں۔ آپ نے فرمایا:  اپنے بھائی کا اس انداز  میں ذکر  کرنا، جسے وہ نہ پسند  کرے۔ آپ سے پوچھا گيا: اگر میرے بھائی میں وہ چیز  موجود ہو جس کا میں ذکر کروں؟ آپ نے فرمایا: اگر اس میں وہ چیز موجود ہو جس کا تونے ذکر کیا، تو یہ اس کی غیبت ہے اور اگر اس میں وہ بات  نہیں ہے جو تو اس کی بابت  بیان کر رہا ہے تو  پھر تونے اس پر بہتان باندھا۔

اسی طرح  زبان کے حصائد میں سے چغل خوری  بھی ہے۔  اس سے بھی اللہ کے رسول  صلی اللہ علیہ وسلم  نے ڈرایا ہے۔ جیسا کہ عبد اللہ بن عباس  رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم  کا دو قبروں کے پاس سے گزر ہوا تو آپ  نے فرمایا:

(إنھما لیعذبان وما یعذبان فی کبیر، أما أحدھما فکان لا یستنزی من بولہ، وأما الآخر فکان یمشی بالنمیمۃ)

“یہ دونوں قبر  والے عذاب دیے جار ہے ہیں اور وہ بھی کسی بڑے گناہ کی وجہ سے نہیں، بلکہ  ان میں سے ایک شخص تو پیشاب سے پاکی حاصل نہیں کرتا تھا  اور دوسرا چغل خوری  میں لگا رہتا تھا۔”

زبان ہی کے حصائد میں سے عورتوں  کا کثرت  سے لعن طعن کرنا بھی ہے۔ جہنم میں عور توں کے زیادہ جانے کا سبب آپ  نے ان کی لعن طعن کی کثرت  کو بتا یا۔  جیسا کہ ابو سعید خدری  رضی اللہ عنہ  کی ایک  روایت  میں ہے۔

(یا معشر النساء تصدقن فإنی رأیتکن أکثر أھل النار، فقلن لم ذلک یا رسول اللہ؟ قال تکثرن اللعن وتکفرن العشیر) [بخاری]

“اے عورتوں کی جماعت! صدقہ کیا کرو، کیونکہ  میں نے تم عورتوں کو جہنم میں زیادہ دیکھا ہے۔ تو ان سب نے پوچھا:   اس کی کیا وجہ ہے اللہ کے رسول؟ آپ نے فرمایا: تم لعن طعن  زیادہ کرتی ہو اور شوہروں  کی ناشکر ی کرتی ہے۔”

بخاری میں ابو ہریرہ  رضی اللہ  عنہ  سے مرفوعا  روایت ہے:

(و أن العبد لیتکلم بالکلمۃ من سخط اللہ یلقی لھا بالا یھوی بھا فی جھنم)

“بندہ اپنی زبان  سے اللہ کی ناراضگی  کی بات بولتا ہے  اور اسے  اس کی  کوئی  پرواہ نہیں  ہوتی۔ حالانکہ وہ اس کی وجہ سے جہنم میں ڈال دیا جاتا ہے۔”

اس کے برعکس  اچھی اور بھلی بات سے اللہ خوش ہوتا ہے اور اس  سے بندے کا درجہ اور  وقار بلند  ہوتا ہے۔ اسی لیے زبان  کی حفاظت  کی طرف اللہ  کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم  نے خاص توجہ دی ہے ۔ مسند احمد  وغیرہ میں معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے نماز روزہ،زکوۃ جہاد  وغیرہ اچھی  باتوں کا ذکر کیا اور فرمایا:

(ألا أخبرک بملاک ذلک کلہ؟ قلت بلی یا رسول اللہ! فأخذ بلسانہ وقال: کف علیک ھذا، قلت: یا رسول اللہ! وأنا لمؤخذون بما نتکلم بہ؟ فقال ثکلتک أمک وھل یکب الناس فی النار علی وجوھھم إلا حصائد ألسنتھم)

“کیا میں تمہیں  ایسی بات  نہ بتاؤ ں  جس پر ان سب کا دار ومدار ہے؟ میں نے کہا: کیوں  نہیں اے اللہ کے  رسول! آپ نے اپنی زبان  پکڑی  اور فرمایا:اس کو روک کے رکھ۔میں نے عرض کیا:  ہم زبان  کے ذریعہ  سے جو گفتگو کرتے ہیں، اس پر بھی  ہماری گرفت ہوگی؟  آپ نے فرمایا: تیری ماں تجھے گم پائے، (یہ بددعا  نہیں عربی محاور ہ ہے )جہنم میں لوگوں  کو ان کی زبانوں کی کاٹی ہوئی کھیتیاں  ہی اوندھے منہ گرائيں گی۔

اس سلسلے میں اللہ کے رسول اپنے اہل وعیال  کی  خاص طور سے نگرانی  کرتے تھے۔ حضر ت عائشہ  رضی اللہ عنھا سے روایت  ہے وہ کہتی ہیں  کہ ایک بار میں نے  نبی صلی اللہ علیہ وسلم  سے کہا: (حسبک من صفیہ کذا وکذا) “آپ کے لیے  کافی  ہے کہ صفیہ  ایسی اور ایسی ہیں۔”

بعض رواۃ  نے کہا ہے کہ ان کی مراد  اس سے یہ تھی کہ وہ پستہ قد ہیں،  تو آپ نے فرمایا:

(لقد قلت کلمۃ لو مزجت بماء البحر لمزجتہ قالت وحکیتُ لہ إنسانا، فقال: ما أحب إنی حکیت إنسانا وأن لی کذا وکذا)

“تو نے ایسی  کڑوی بات کہی ہے کہ اگر یہ دریا کے پانی میں ملا دی جائےتو اسے بھی کڑوا کر دے، حضرت عائشہ  فرماتی ہیں  کہ میں نے آپ  کے سامنے ایک آدمی  کی نقل اتاری  تو آپ نے فرمایا  میں  پسند نہیں کرتاکہ میں کسی انسان کی نقل اتاروں، چاہے    اس کے بدلے  مجھے اتنا اور مال ملے۔

 لایعنی  اور فضول  باتوں سے بھی زبان  کو بچا نا چاہئے  جس سے نہ کوئی نقصان پہنچتا ہو، نہ فائدہ۔ امام بخاری  نے  “الأدب المفرد” میں  حضرت انس سے صحیح  سند سے روایت  نقل کی ہے،  وہ کہتے ہیں کہ ایک شخص نےحضرت عمر  کی موجود گی میں خطبہ دیا  اور اس نے بہت سی بے فائدہ باتیں کہیں ، تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ  نے کہا :

(إن کثرۃ الکلام فی الخطب من شقاشق الشیطان)

” خطبوں  میں زیادہ  بولنا ایسا ہی  ہے جیسے شیطان  منہ  سے جھاگ  نکالے  ۔ “

 لایعنی  چیزوں میں نہ پڑ نا آدمی کے حسن اسلام کی دلیل  ہے۔ ابوہریرہ  رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے، کہتے ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(من حسن إسلام المرء ترکہ ما لا یعنیہ)

” آدمی کے حسن اسلام میں سے اس کا لایعنی  چیزوں  کا چھوڑ دینا ہے  ۔ ” [ امام  ترمذی  نے اس حدیث کی  تخریج  بسند حسن کی ہے]

زبان کے حصائد  میں سے مسلمان کی عزت وآبرو کے درپے ہونا  بھی ہے۔  واثلہ  بن اسقع  رضی اللہ عنہ  سے روایت  ہے وہ کہتے  ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے‍‍:

(المسلم علی المسلم حرام دمہ وعرضہ ومالہ المسلم أخو المسلم لا یظلمہ ولا یخذلہ، التقوی ھاھنا وأومأ بیدہ إلی القلب)

” مسلمان کا خون، اس کی عزت  آبرو اور اس کا مال،  مسلمان پر حرام  ہے۔مسلمان   مسلمان کا بھائی ہے۔ نہ وہ اس پر زیادتی  کرے اور نہ اسے بےیار ومددگار چھوڑے کہ اسے دشمن کے سپرد کر دے۔ تقوی ٰ یہاں  ہے اور آپ  نے اپنے ہاتھ  سے دل کی طرف  اشارہ کیا  ۔”

 بےحیائی کی باتیں اور فحش کلامی  بھی زبان  کے حصائد  میں سے ہے۔  آج کل مسلمان  سوسائٹیوں  میں یہ وبا بڑ ی تیزی  کے ساتھ پھیل  رہی ہے۔ یہ نتیجہ ہے یہودیوں کی  ابلا غی  یورش، ریڈیو، ٹیلی ویژن  اور بےحیائی  اور فحاشی  پھیلانے   والے چینلوں کا۔  ان فحش چینلوں کے ذریعہ مسلما  نوں کے گھروں میں  یہ برائی بڑی  تیزی  سے پھیل رہی ہے اور انہیں  اس کا شعور واحساس  تک نہیں ۔ ابوداؤد کی روایت ہے  اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

(ما من شئ أثقل فی میزان العبد المؤمن یوم القیامۃ من حسن الخلق و إن اللہ یبغض الفاحش البذی)

” قیا مت  کے دن مؤمن بندے کی  میزان  میں حسن خلق سے زیادہ بھاری  کوئی چیز نہیں  ہوگی۔ اور یقینا ً اللہ تعالیٰ بدزبان  اور فحش گوئی  کرنے والے  کونہ پسند کرتا ہے۔”

جھوٹ بولنا  بھی زبان کے حصائد میں سے ہے۔ آج کل یہ وبا بھی  مسلمانوں میں عام  ہے۔ حالانکہ جھوٹ  بولنا کبیرہ گناہوں  میں سے ہے ۔اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے اسے نفاق کی علامت قرار دیا ہے۔ ابن  مسعود رضی اللہ  عنہ   سے  روایت  ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ  علیہ وسلم   کا ارشاد ہے :

(و إیاکم الکذب فإن الکذب یھدی إلی الفجور والفجور یھدی إلی النار و إن الرجل لیکذب حتی یکتب عند اللہ کذابا) [بخاری ومسلم]

“جھوٹ سے بچو، بلاشبہ جھوٹ  نافرمانی کی طرف رہنما ئی کرتا ہے۔ اور نافرمانی  جہنم کی طرف  رہنمائی کرتی ہے۔ اور آدمی جھوٹ  بولتا  رہتا  ہے، یہاں تک  کہ وہ اللہ کے یہاں کذاب لکھ دیا جاتا  ہے۔”

انہیں سے روایت ہے آپ نے فرمایا:

(لا یصلح الکذب فی جدو لا ھزل ولا أن یعد أحدکم ولدہ لا ینجز)

“جھوٹ  سنجیدگی  اور مذاق کسی حال میں درست نہیں، اور نہ یہ کہ تم میں سے کوئی اپنے بیٹے سےجھوٹا وعدہ کرے، پھر  اسے پورا نہ کرے۔”

 ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت  ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے :

(من تحلم بحلم لم یرہ کلف أن یعقد بین شعیرتین ولن یفعل)

” جو شخص  جھوٹا  خواب بیان کرے جسے اس نے نہیں دیکھا ہے تو اسے قیامت کے دن مجبور کیا جائےگا کہ وہ جَو کے دودانوں  کے درمیان گرہ لگائے اور وہ یہ گرہ نہیں لگاسکےگا۔”

 اسی طرح جھو ٹی گواہی دینا بھی زبان کے حصا ئد میں سے ہے۔ ابوبکر  رضی اللہ عنہ  سے روایت ہے، وہ کہتے  ہیں   اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(ألا أنبئکم بأکبر الکبائر؟ قلنا: بلی یا رسول اللہ قال! الإشراک باللہ وعقوق الوالدین وکان متکئا فجلس فقال: ألا وقول الزور، فما زال یکررھا حتی قلنا: لیتہ سکت)

”  کیا  میں تمہیں سب سے بڑے گنا ہ کی  خبر نہ دوں؟ ہم نے کہا: کیوں نہیں اے اللہ کے رسول! آپ  نے فرمایا: اللہ کے ساتھ شریک ٹھہرانا اور والدین کی نافرمانی کرنا۔ اور آپ ٹیک  لگائے ہوئے تھے اُٹھ کر بیٹھ گئےاور فرمایا: سنو اور جھوٹی بات، جھوٹی بات، آپ  برابر یہ بات دہراتے رہے یہاں تک کہ ہم نے کہا: کاش آپ خاموش ہوجاتے۔”

  اللہ تعالیٰ نے مؤمن کی صفات کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا : (وَالَّذِينَ لَا يَشْهَدُونَ الزُّور) [الفرقان: 72]

“اور جو لوگ جھوٹی گواہی نہیں دیتے۔”

اللہ تعالیٰ  نے اہل ایمان کو حکم دیا ہے کہ وہ کسی، فاسق  سے کوئی بات سنے تو پہلے  اس کی پوری تحقیق کرلے، پھر اسے لوگوں  سے بیان کرے۔ ارشاد  باری ہے :

(يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِن جَاءَكُمْ فَاسِقٌ بِنَبَإٍ فَتَبَيَّنُوا أَن تُصِيبُوا قَوْمًا بِجَهَالَةٍ فَتُصْبِحُوا عَلَىٰ مَا فَعَلْتُمْ نَادِمِينَ) [الحجرات:6]

“اے مسلمانو! اگر تمہیں کوئی فاسق خبر دے تو تم اس کی اچھی طرح تحقیق کر لیا کرو ایسا نہ ہو کہ نادانی میں کسی قوم کو ایذا پہنچا دو پھر اپنے کیے پر پشیمانی اٹھاؤ۔”

علامہ سعدی اس آیت کی تفسیر میں فرماتے ہیں  کہ یہ ان آداب میں سے ہے جس سے ہر صاحب عقل وشعور بہرہ ور ہوتا ہے۔ جب اسے کوئی فاسق  کسی چیز کی خبر  دیتا ہے تو وہ اس کی اچھی طرح چھان بین  کرتاہے۔  اسے سنتے ہی مان  نہیں لیتا کیونکہ  اندیشہ ہے کہ اسے صحیح سمجھ کر آدمی کوئی ایسا اقدام کر بیٹھے جس میں جان واموال ناحق  تلف ہوں  اور بعد میں  اسے شرمندگی وندامت  اٹھانی  پڑ جائے۔  اس لیے فاسق کی خبر کی  چھان  بین ضروری  ہے۔ اگر دلائل وقرائن  سے اس کا جھوٹا ہونا  ثابت ہو جائے قوم  اس کی بات  پرعمل  نہ کرے اس میں اس بات  کی دلیل  بھی ہے کہ سچے آدمی  کی خبر مقبول ہوگی اور جھوٹے شخص  کی خبر  مردود اور فاسق  کی خبر  پہ توقف کیا جائےگا۔ اسی وجہ سے سلف نے ان خوارج کی بہت سی روایات قبول کی ہیں  جو اپنی سچائی اور صدق  بیا نی میں   معروف ومشہور تھے   اگر چہ  وہ فاسق تھے ۔

دوسرا خطبہ

إن الحمد لله، نحمده، ونستعينه، ونستغفره، ونعوذ بالله من شرور أنفسنا وسيئات أعمالنا، من يهده الله فلا مضل له، ومن يضلل فلا هادى له، وأشهد أن لا إله إلا الله وحده لاشريك له، وأشهد أن محمداً عبده ورسوله،

قرآن وسنت میں ایسے بہت سے نصوص  وارد ہیں  جن سے معلوم  ہوتا ہے  کہ اللہ تعالیٰ نے کچھ ایسے فرشتے مقرر  کر رکھے  ہیں جو لوگوں  کی نگرانی  کرتےہیں ۔   ارشاد باری ہے :

(وَيُرْسِلُ عَلَيْكُمْ حَفَظَة) [الأنعام:61]

“اور تم پر نگہداشت رکھنے والے بھیجتا ہے۔”

یہ فرشتے اس  کے اچھے  اور برے تمام اقوال  واعمال  کو نوٹ  کرتے رہتے ہیں ۔

 ارشاد باری ہے:

(وَإِنَّ عَلَيْكُمْ لَحَافِظِينَ۔ كِرَامًا كَاتِبِينَ۔ يَعْلَمُونَ مَا تَفْعَلُون) [الانفطار :10-12]

” یقیناً تم پر نگہبان عزت والے۔ لکھنے والے مقرر ہیں۔ جوکچھ تم کرتے ہو وه جانتے ہیں۔”

 ایک جگہ ارشاد ہے: (إِذْ يَتَلَقَّى الْمُتَلَقِّيَانِ عَنِ الْيَمِينِ وَعَنِ الشِّمَالِ قَعِيدٌ۔ مَّا يَلْفِظُ مِن قَوْلٍ إِلَّا لَدَيْهِ رَقِيبٌ عَتِيدٌ) [قٓ:16-17]

“جس وقت دو لینے والے جا لیتے ہیں ایک دائیں طرف اور ایک بائیں طرف بیٹھا ہوا ہے۔ (انسان) منھ سے کوئی لفظ نکال نہیں پاتا مگر کہ اس کے پاس نگہبان تیار ہے۔”

 ایک جگہ  ارشادہے:

(أَمْ يَحْسَبُونَ أَنَّا لَا نَسْمَعُ سِرَّهُمْ وَنَجْوَاهُم ۚ بَلَىٰ وَرُسُلُنَا لَدَيْهِمْ يَكْتُبُونَ)  [الزخرف: 80)

“کیا ان کا یہ خیال ہے کہ ہم ان کی پوشیده باتوں کو اور ان کی سرگوشیوں کو نہیں سنتے، (یقیناً ہم برابر سن رہے ہیں) بلکہ ہمارے بھیجے ہوئے ان کے پاس ہی لکھ رہے ہیں۔”

صحیحین  میں ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:

(یتعاقبون فیکم ملائکۃ باللیل وملائکۃ بالنھار یجتمعون فی صلاۃ الفجر وصلاۃ العصر ثم یعرج الذین باتوا  فیکم قال لھم ربھم وھو أعلم بھم کیف ترکتم عبادی؟ فیقولون ترکناھم وھم یصلون واتیناھم وھم یصلون) [بخاری ومسلم]

“تمہارے درمیان رات کو اور دن کو فرشتے  باری باری سے آتے اور جاتے ہیں اور صبح کی نماز  میں اور عصر کی نماز میں وہ اکٹھے ہوتے ہیں۔  پھر  وہ فرشتے  جو تمہارے درمیان رات  گزارتے  ہیں اوپر چڑ ھ جاتے ہیں۔تو اللہ تعا لیٰ ان سے پو چھتا  ہے:  تم نے میرے بندوں کو کس حال میں چھوڑ  ا؟ وہ کہتے ہیں: ہم انہیں نماز  پڑ ھتے ہوئے چھوڑ کر  آئے   ہیں۔  اور جب ہم  ان کے پاس  گئے تھے۔  تب  بھی وہ نماز  ہی  میں مصروف  تھے۔

 اگر آپ یہ اعتراض کریں کہ اللہ تعالیٰ تو سب کچھ جانتا ہے۔ اسے فرشتوں  کے لکھنے  کی کیا ضرورت پڑ گئی؟ توہم کہیں  گے  کہ یہ بندوں پر  اس کا لطف وکرم ہے۔ اس نے  ایسا اس لیے   کر رکھا ہے تا کہ بندے  اس بات کو یاد رکھیں کہ اللہ   ان کی نگرانی کر رہا ہے۔ اور اس نے ان کی ہرہر حرکت  کو نوٹ  کر نے کے لیے  فرشتوں  کو لگا رکھا  ہے جو اس  کی مخلوق  میں اشرف  ہیں۔ یہ فرشتے  اس کے تمام اعمال  رجسٹر میں نوٹ کر رہے  ہیں اور قیامت  کے دن میدان  محشر میں  اسے پیش  کریں گے۔ یہ چیز اسے غلط  کاریوں  سے زیادہ روکنے والی ہوگی۔

 جب ایسی بات ہے کہ  اللہ ہماری  ہر بات اور ہر حرکت فرشتوں  کے ذریعے نوٹ کروا رہا  ہے تو   ہمیں  درست اور سچی  بات  ہی زبان سے نکالنی چاہئے  اور زبان  کو غلط  اور دل آزار  باتو ں سے آلودہ نہیں  ہونے دینا چاہئے۔  اللہ تعالیٰ  کا ارشاد ہے:

(يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّـهَ وَقُولُوا قَوْلًا سَدِيدًا۔ يُصْلِحْ لَكُمْ أَعْمَالَكُمْ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ ۗ وَمَن يُطِعِ اللَّـهَ وَرَسُولَهُ فَقَدْ فَازَ فَوْزًا عَظِيمًا) [الأحزاب:70-71]

“اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ سے ڈرو اور سیدھی سیدھی (سچی) باتیں کیا کرو۔ تاکہ اللہ تعالیٰ تمہارے کام سنوار دے اور تمہارے گناه معاف فرما دے، اور جو بھی اللہ اور اس کے رسول کی تابعداری کرے گا اس نے بڑی مراد پالی۔”

 قول منہ  سے نکلی  ہوئی بات کو کہتے ہیں۔  اور سدید کے معنی  درست  اور حق ہونے کےہیں۔ اسی سے “تسد السھم” آتا ہے ، یعنی  تیر کو شکار کی طرف  درست  کرنا تاکہ  نشانہ   نہ چوکے۔

لہذا “قول سدید”  ان تمام  باتوں کو شامل ہوگاجو درست، صحیح اور مفید  ہوں۔ اس میں سلام  کرنا، اپنے  مسلمان بھائی سےیہ  کہنا  کہ میں تم  سے محبت  کرتا ہوں ، قرآن  مجید  کی تلاوت  کرنی  اچھی  باتوں کی طرف رہنمائی کرنا، اللہ کی تسبیح وتحمید کرنی، اذان  واقامت کہنی ، وغیرہ تمام  امور  “قول سدید” میں داخل  ہیں۔

 محترم بھائیو!یہ بات  یاد رکھئے کہ  زبان  نیکی اور بدی کے  دروازوں  میں سے ایک  اہم  دروازہ  ہے۔ لوگ  جہنم  میں اوندھے  منہ اپنی زبان  ہی سے کہی ہوئی باتوں کی وجہ سے ڈالے جائیں گے۔ اسی  وجہ  سے حدیث  میں آتا ہے:

(من کان یؤمن باللہ والیوم الآخر فلیقل خیرا أو لیصمت)

” جو اللہ اور یوم آخرت  پر  ایمان  رکھتا  ہو، اسے چا ہئے کہ وہ اچھی  اور بھلی  بات  کہے  یا خاموش  رہے ۔

” قول سدید ” ہی سے معاشرے میں اچھی  باتوں  کا فروغ  ہوتا ہے۔ لوگوں  میں حقیقت  پسندی عام ہوتي ہے۔  اس کے  برخلاف “قول شر” سے گمرا ہیاں پھیلتی  ہیں۔  “قول سدید ” کے نتیجے  میں لوگوں  کے اعمال  میں درستگی آتی ہے؛  کیونکہ  ایسے  شخص  کی لوگ  اقتدا کرتے ہیں اور اس کی باتوں  کوغور  سے سنتے ہیں  اور اپنی اصلاح کرتے ہیں۔

 اخیر میں اللہ تعالیٰ سے دعا ہے  کہ ہمیں  اپنی زبان  کو قابو  میں رکھنے  اور اس سے سچی  اور درست بات  کہنے کی توفیق  دے۔ اور ہمیں  ایسی  باتیں  زبان  پر لانے  سے محفوظ  رکھے  جو اللہ  کی ناراضگی کا باعث ہیں اور جن سے اللہ کے بندوں  کی بھی دل  آزاری  ہو رہی ہو۔

أقول قولی ھذا واستغفر اللہ لی ولکم ولسائر المسلمین فاستغفروہ إنہ ھو الغفور الرحیم۔