home treatment of Hyperpigmentation

Hyperpigmentation can occur due to many reasons. But treating it successfully would depend completely upon how long you have had the problem. Sometimes, if you have started developing skin pigmentationpatches newly, you will find that treatment is not only simpler, it is also faster. Simple cases of newly developed pigmentation patches can be treated by using aloe vera gel. You can apply the gel to your patches in order to take care of it effectively and rapidly. If you can, try to get a fresh leaf and squeeze the gel out of that. This is relatively better than using it out of a bottle. But that is not to say that the bottle version does not work as effectively or as well. Look for a bottle that states that it contains 50 per cent or more of pure aloe gel. It is advisable to start using aloe soap. This will not make a significant contribution, but it will certainly help to not develop more spots.

 

Another step that has to be taken to arrest the growth of pigmentationpatches is that you must use sunscreen lotion when going outdoors as a rule rather than only while going to the beach. This will also make a considerable difference in that you will be preventing further patches from appearing. There are also some simple fruits and vegetables which you can apply to get rid of dark patches and spots. Cucumber juice is considered to be one such remedial measure. Raw potatoes are also rich in starch and mildly bleaching agents. If you can squeeze out the juice of a raw potato and apply this to your patches, you will see a lightening of the discoloration in as little as a week.

 

It is also important to inculcate a daily routine to cure yourself of the problem. Soak almonds overnight, and peel and grind them the next morning. Apply this to your patches to reduce darkness. A tablespoon of milk powder, honey, lemon juice, and almond oil can be mixed and stored in the refrigerator. Applying this for about 20 minutes will help to even out your skin tone considerably. You can also apply very diluted ammonia to your dark patches. But make it a point that you do not go out in the sun after doing this, otherwise your skin will only darken further. Therefore, the best time to do this is at night, when you know you will not be going out.

 

_____________________________________________________________________________ 

Hyperpigmentation is the formation of dark skin patches. It’s very common and can occur for people with all skin types and complexions. Successful hyperpigmentation treatment depends on how long you’ve had the problem. New dark skin patches are often easier and faster to get rid of than ones that have been on your skin for years and years.

In order to find the right hyperpigmentation treatment, you should find out the reason you’re getting dark skin patches. There are a number of different causes of hyperpigmentation. Here are a few:

    • Sun Damage — Dark skin patches can occur due to sun exposure. They’re sometimes called age spots or liver spots. This type of hyperpigmentation is often seen on the face, hands and shoulders. It’s the result of many years of exposure to UV rays.

 

    • Melasma, or Chloasma — These look a lot like the dry skin patches caused by sun damage, but the cause is hormonal changes. Women often get melasma or chloasma during pregnancy, or sometimes while taking birth control pills. If you’re looking for a hyperpigmentation treatment, and your dark skin patches are due to melasma, you might just need to wait until you’re no longer pregnant, or you may have to stop the birth control pills (if you’re taking them). The dark spots are likely to go away on their own.

 

    • Scars — Sometimes, after you’ve had acne, you’re left with scars that look like dark skin patches.

 

  • Freckles — Some dark spots are simply inherited, so there is no hyperpigmentation treatment for this type of skin spot. Consider them beauty marks!

 

There are a few natural hyperpigmentation treatments I’ve heard people use that might be worth trying at home. You could try applying these natural ingredients to your dark skin patches:

  • Aloe vera
  • Cucumber juice
  • Raw potato juice
  • Ground almonds, soaked in water
  • Mix of milk powder, honey, lemon juice and almond oil

There are also some good hyperpigmentation treatments described here. Just be careful not to use any product or ingredient that could damage or dry out your skin.

It’s also really important not to expose your dark skin patches to further sun damage. Be sure to wear a sunscreen daily to prevent more dark spots and to keep the ones you have from getting darker. I can’t encourage this enough — sunscreen is an essential part of your hyperpigmentation treatment!

Life & Style | Health Eat right for lush hair and glowing skin

When it comes to the blame game for hair and skin problems, climate is a top favourite. Dull hair? It’s the dry, hot winds that are damaging it. Sallow complexion? It’s the heat and humidity. Rarely do people confess they are not eating right, are stressed and are also probably overdoing hair and skin treatments. While the last two problems can be optional vices, what’s almost unarguable is that most people are eating food that’s not meant to nourish skin and hair. Fast food for breakfast? Check. Processed foods for lunch? Check. Fizzy beverages through the day? Check. Too much coffee through the day to stay alert? Check.

“Chemicals in processed foods, trans-fat and chemical compounds in fried foods speed up the process of ageing,” says Yasmine Haddad, senior dietician, Live’ly, a health and nutrition lounge in Dubai. Fast foods are also full of sugar, which are empty in nutrients and full of calories. High-salt diets, also a popular choice with many people, lead to excess sodium accumulation around hair follicles, hindering absorption of essential nutrients needed for healthy hair, says Haddad.

For lush locks and a glowing skin, it is absolutely essential to eat nutritious foods. These include vegetables, fruits, vegetable oils, nuts and protein, “It’s about a healthy lifestyle,” says Haddad. “You have to sleep well, eat well, exercise and avoid stress. Stress is very bad for hair,” she says. Of course, hard water, as in the UAE, also has a bad effect on hair, but if your diet is poor, it can increase hair problems. (Haddad uses a shower filter that removes large amounts of calcium and magnesium in hard water.)

A diet rich in protein is essential for healthy hair as hair is primarily composed of keratin, a type of protein. Salmon, beans, fish, meat and fortified dairy products, cereals and Vitamin D supplements are essential for healthy skin and hair.

For supple and healthy skin, foods rich in Vitamin A and D, such as avocado and sunflower oil help repair body tissue, prevent dryness and postpone ageing.

Vitamin C, which helps maintain levels of collagen, a protein constituent of skin that is essential for healing skin as well as keeping it firm, should also be an important nutrient in your diet.

Exposure to the sun for Vitamin D is essential for bones, cells and tissues, as is folic acid, the deficiency of which leads to a condition called seborrheic dermatitis. It may be also linked to vitiligo (loss of skin pigment). A regular oil massage with olive oil promotes scalp strength.

Introducing potassium-rich foods in your diet, such as parsley, prunes, green leafy vegetables, will help flush out excess sodium and reduce risk of the potassium deficiency and hair loss, she says.

The bottomline however is that you need to make a conscious effort to eat well. “People want the easy way out,” she says. “but there’s no miracle cure; no amount of taking pills will help. You have to change your lifestyle and eat healthy.”

Though, she warns that hair loss can also be a sign of other problems with your body. “There could be hormonal issues or a problem with the thyroid, or malnutrition. A simple blood test to eliminate any medical conditions would be good to get to the root of the problem.”

Should one take vitamin supplements? “These are necessary only if the doctor recommends them because of a medical problem or if you are no able to get nutrients from foods.”

The essential vitamin hit list:

Vitamin A: Helps repair body tissue, prevents dry skin and postpones ageing.

Source: Liver, sweet potatos, carrots, spinach, milk, egg yolk.

Vitamins B-6, B-12: Important for general hair health.

Sources: Bananas, potatoes, spinach, meat, poultry, fish, dairy products.

Vitamin C: Maintains collagen, the protein part of skin that keeps it smooth and firm.

Sources: Citrus fruits and tomatoes.

Vitamin D: Promotes skin-collagen health.

Sources: Sardines, cod liver oil and Omega-3 fatty acids.

Vitamin E: Repairs body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Sources:

Thiamine: Also known as B1, for general hair health.

Source: Brown rice, sunflower seeds, various nuts, oatmeal.

Potassium: Good for skin and hair.

Source: Sweet potato, potato, white beans, yogurt (fat-free), orange juice, broccoli, banana.

Selenium: Adds lustre.

Source: All vegetables, fish, red meat, grains, eggs,

Zinc: xxxxxxx

Source: Beans, cheese and salads are rich in zinc, which is vital for skin and hair.

Manganese: Good for skin and hair.

Source: Nuts, seeds, grains, oatmeal, whole wheat bread, fruit and vegetables, Pineapple is rich in manganese,

Copper: Liver is rich in copper as are sesame seeds, chocolate, lobster and calamari, nuts, These are good antioxidants and halts ageing. Good for hair and skin.

Folic acid: This is important for your hair,

Source: Fresh fruits and vegetables, specially citrus fruits and tomatoes, whole grain and fortified grain products, beans, and lentils.

Calcium: For strong hair and a healthy scalp.

Source: Milk, sardines, almonds and yoghurt.

Iron: For a healthy complexion.

Source: Liver, red meats, tuna, salmon, and shrimp, beans, lentils, spinach, tofu, broccoli, chicken and turkey, nuts, egg yolk,dried fruits. Good for both hair and skin, but be careful not to consume too much iron.

Eating for good hair:

Protein is the building block of hair. Without enough protein in your system, you may experience greater hair loss. Calcium found in foods such as yogurt and cottage cheese has proven to help promote hair growth and repair damaged hair follicles.

Olives and olive oil are rich in oleic acid, a monounsaturated fatty acid, which has shown to help the hair grow thicker and stronger.

In addition, fresh vegetables such as cucumber, lemon, lettuce and tomato consist of 70-90 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

Cheese which is derived from milk is a high source of calcium and protein. However, it’s important to note that it’s preferable to consume it low-fat since in its full-fat form it contains high saturated fat (i.e.: bad fats).

Eat your way to healthy hair

Greek Salad

Preparation Time: 10 mins

Ingredients:

10 black olives

60 gms. light Feta cheese, cut into cubes

200 gms cherry tomato or tomato, cut into cubes

200 gr. cucumber, cut into cubes

500 gr. Romaine lettuce, roughly torn

A few mint leaves

Dressing:

1 tbsp olive oil

1 tbsp white vinegar

2 tbsp lemon juice

Pinch of dry oregano

Pinch of salt

Method: Mix all ingredients in a salad bowl topping with cheese, olives and mint leaves. Add the dressing just before serving.

Nutrition notes

Serving size: 1 salad bowl

Number of servings: 4

Per serving:

Calories = 95 cal

Protein = 5 g

Carbs = 8 g

Fat = 5 g

(These recipes have been created by Live’ly Executive Chef Kassem Taha)

Watermelon sorbet

Watermelon is rich in lycopene, vitamin C and vitamin A which are known to be powerful antioxidants. These help protect and rejuvenate hair follicles and skin tissues. Studies have shown that a regular consumption of watermelon and green tea may reduce the risk of certain cancers such as prostate cancer. Watermelon and lime juice consist of 90 to 95 percent water. Water is a natural remedy which supports hair vitamin consumption and a healthy hair growth.

There is nothing better than a low-calorie and guilt-free watermelon sorbet to add life to your hair.

Preparation Time: 35 min

Ingredients

½ cup plus 4 cups seeded and pureed watermelon

½ cup fruit sugar

2 tbsp lime juice

1 tsp lime zest

Method:

In a small saucepan, bring ½ cup watermelon puree and the fruit sugar to a simmer and remove it from the heat. Add the lime juice and zest and allow the mixture to cool for 20 minutes. Add the 4 cups fresh watermelon puree to the melon-lime mixture, and freeze in an ice cream maker. Place sorbet in a plastic container and allow to freeze for 3-4 hours.

Nutrition notes:

Serving size: 1 scoop

Number of servings: 8

Calories per serving: 68 cal

Protein = 0.3g

Carbs = 17g

Fat = 0g

Date and walnut cake

Preparation time: 55 mins

Serves: 16

Walnuts are high in fat, but they have good fats. The fats in walnuts are rich in polyunsaturated fats such as omega-3 fatty acids and monounsaturated fats which have shown to have many beneficial properties such as preventing cardiovascular disease and helping in boosting the immune system and improving the health of your hair and scalp.

Nuts are rich in vitamins and minerals such as folic acid and iron which make it an ideal choice for people struggling with hair loss. It is better to avoid consuming it roasted or salted, but have it raw and in moderation due to its high calorie content.

Dates are also very rich in vitamins (B complex vitamins) and minerals like potassium and iron. A potassium deficiency, also called hypokalemia, can lead to hair loss. B complex vitamins play various important roles in the body including improved hair growth and thickness.

Enjoy this guilt-free and delicious dessert.

Ingredients:

1 cup of pitted dates (seedless)

1 cup boiling water

1 tsp of soda bicarbonate powder

1/2 cup of oil (sunflower or corn)

3/4 cup of sugar

2 cups cake flour

3 tsp of baking Powder

1/2 cup skimmed or low-fat milk

4 eggs, beaten

1/2 tsp vanilla (powder or extract)

1/2 cup chopped walnuts

3 tbsp flour

Method:

In a casserole, put the dates, add boiling water and soda bicarbonate and boil for 3-4 minutes (until the dates are soft). Set aside to cool to room temperature. (It is okay if the mixture foams and turns dark brown). Beat eggs with vanilla essence, add sugar, oil and dates mixture.

While mixing, alternate by adding the flour and baking powder and milk. Pour the batter in the baking pan (spray the pan with oil first and add flour). Toast chopped walnuts with 3 tbsp of flour in a pan until little brown, and sieve them from the flour. Spread chopped walnuts on top of the cake batter and bake the cake in a 180 degree oven (350F) for 30-40 minutes.

Nutition notes

Calories per serving = 226 cal

Protein = 4 g

Carbs = 31 g

Fat = 10 g

Eating your way to a glowing skin

Japanese chicken salad

Preparation Time: 40 mins

Serves 3

Serving size: 1 bowl

If you are suffering from dry and unhealthy skin, the good news is that the secrets to a healthy and radiant skin are very basic and you do not have to use high-end skin products or layers of make-up to hide unhealthy skin. A well-balanced diet and a healthy lifestyle are the two most important factors influencing the condition of your skin.

In addition, fresh vegetable such as onions, cucumber and peppers consist of 70 to 90 percent water. Water flushes out the toxins from the body and helps rehydrate the skin and reduce risk of dryness and irritation.

Ingredients:

For salad:

110 gms Thai jasmine rice

1 cucumber, diced small

3 spring onions, sliced

1/2 red pepper, diced

85 ms cooked chicken, diced

1/2 avocado, diced

Salt & fresh coarse ground black pepper, to taste

For dressing:

2 tbsp rice wine vinegar

1 tbsp caster sugar

1/2 tsp sunflower oil

Method:

Put the rice in a large pan with plenty of cold water and a pinch of salt. Bring to the boil and simmer for 12-15 min until the rice is just tender. Drain and leave to stand in a sieve for 15 mins, stirring half way through. Transfer to a bowl.

To make the dressing, gently warm the rice wine vinegar and sugar until the sugar dissolves. Add sunflower oil and stir into the rice. Leave until cold.

Stir cucumber into the dressed rice with spring onions, pepper, chicken and avocado and season to taste.

Nutrition notes

Calories per serving = 219 cal

Protein = 11g

Carbs = 32g

Fat = 5.2g

Baby corn and spinach pizza

Number of servings: 4

Preparation time: 20 mins

Baking time: 20 min in 280 degrees oven

Spinach has a high nutritional value and is extremely rich in antioxidants, especially when fresh, steamed, or quickly boiled. It is a rich source of vitamin A (and especially high in Lutein), vitamin C, vitamin K, and Vitamin B9 (folic acid). Vitamin A helps repair body tissue, prevents skin dryness and postpones ageing.

Using whole wheat dough in preparing your pizza will help improve your skin complexion. Brown bread and flour as well as whole wheat germs are rich in B vitamins which have shown to improve circulation and skin color.

Ingredients
Whole wheat pizza dough:

1 cup whole wheat flour

1/2 cup all-purpose flour

1/2 tsp salt

1 packet active dry yeast

2 tsp olive oil

1/2 tsp sugar

1 cup warm water

Pizza sauce:

1 onion, chopped finely

2 garlic cloves, chopped finely

2 tsp olive oil

1 kg fresh tomato, peeled & chopped OR 1-1/2 x 415 g cans crushed tomato

1 tsp dry oregano

2 tbsp fresh basil

1/2 tsp dry thyme

Dash of salt and black pepper

(Optional: Drizzle of Hot Sauce)

Toppings:

2 onions; cut into rounds (lightly sautéed)

1 cups colored and green peppers; cut into strips

1 cup of baby corn, sliced

2 cups baby spinach

1 cup of light mozzarella cheese, grated

1 tbsp pine nuts

Method:

Mix dough ingredients and let it rest for 90 minutes. Cook pizza sauce. Roll dough out thinly to fit a greased pizza base. Top dough with pizza sauce and arrange toppings over it. Sprinkle mozzarella cheese and top with pine nuts. Bake at 280 degrees C for 20 minutes.

Serving size: ¼ slice pizza

Calories per serving = 300 cal

Protein = 11g

Carbs = 48g

Fat = 8 g

Tasty fillet salmon

Serves 2

Preparation time: 15-17 minutes

Salmon is considered an excellent source of omega-3 fatty acids and vitamin D. It is also a very good source of protein, vitamin B3 (niacin) and vitamin B12. Omega-3 fatty acids reduce risk of dryness by helping skin retain its natural moisture. It has the ability to neutralise damaging free radicals and therefore protect the skin from aging and reduce the risk of skin cancer.

Vitamin B3 (niacin) has shown to increase production of ceramides and fatty acids, two key components of skin’s outer protective barrier. A deficiency of niacin leads to pellagra, a condition characterised by diarrhoea, dermatitis, dementia, inflammation of the mouth, amnesia, delirium, and if left untreated, death. Fall in love with salmon and enjoy a radiant skin.

Ingredients

2 salmon fillets, 1-inch thick and 6 ounces (170 grams) each

1/4 cup packed brown sugar

1/4 cup reduced-sodium soy sauce

3 tbsp unsweetened pineapple juice

3 tbsp red wine vinegar

1 tbsp lemon juice

3 garlic cloves, minced

1 tsp ground ginger

1 tsp pepper

1/4 teaspoon hot pepper sauce

Method

In a large resealable plastic bag, combine the first nine ingredients; add salmon. Seal bag and turn it to coat evenly; refrigerate for 15 minutes, turning once. Drain and discard marinade. Using long-handled tongs moisten a paper towel with cooking oil and lightly coat the grill rack. Place salmon skin side down on rack. Grill covered over medium heat or broil 4 inches from the heat for 13-15 minutes or until fish flakes easily with a fork.

Nutrition notes

Serving size: 1 fillet

Calories per serving = 330 cal

Protein = 36 g

Carbs = 32 g

Fat = 6g

گھر میں کتے پالنا جدید سائنسی معلومات کی روشنی میں

نبی رحمت  صلی اللہ علیہ وسلم نے بلا ضرورت گھر میں کتے پالنے کی ممانعت فرمائی ہے۔مگر کس قدردکھ کی بات ہے کہ یورپ کی تقلید میں ہمارے ہاں بھی امیر گھرانوں میں کتوں سے کھیلنا اور شوقیہ طور پر گھروں پر پالنا ایک فیشن اور سٹیٹس سمبل بنتا جارہاہے ۔پچھلے دنوں پاکستانی چینلز پر ایک موبائل کمپنی کی جانب سے ایک ایڈ دی جارہی تھی، جس میں ایک معصوم بچی ایم ایس ایم کے ذریعے اپنے والد سے کتے کے ایک بچے کو گھر میں لانے کی فرمائش کرتی ہے۔اسلام میں کتے رکھنابالکل ہی منع نہیں کیاگیا ہے بلکہ اس کی محدود اجازت بھی دی گئی ہے چناچہ جو کتے کسی ضرورت سے پالے جائیں مثلاً شکاری کتے یا کھیت اور مویشیوں وغیرہ کی حفاظت کرنے والے کتے تو وہ اس حکم سے مستثنیٰ ہیں ۔
مشاہدے کی بات ہے کہ لوگ کتوں پر تو خوب خرچ کرتے ہیں لیکن انسان کی اولادپر خرچ کرنے میں بخل سے کام لیتے ہیں اورمغرب میں توایسے بھی لوگ ہیں جو مرتے وقت اپنی جائیداد کتوں کے نام وقف کردیتے ہیں جبکہ وہ اپنے اقرباسے بے رخی برتتے ہیں اور اپنے پڑوسی اوربھائی کو بھول جاتے ہیں ۔مسلمان کے گھر میں اگر کتا ہوتو اس بات کا احتمال رہتاہے کہ وہ برتنوں وغیرہ کوچاٹ کر نجس بنا کر رکھ دے۔
نبی  صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
”جب کتا کسی کے برتن میں منہ ڈالے تو اسے چاہیے کہ برتن کو سات مرتبہ دھوئے ۔ان میں سے ایک مرتبہ مٹی لگا کر دھولے۔” (صحیح بخاری)
ایک اور حدیث میں نبی  صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
” میرے پاس جبریل  تشریف لائے اور کہا : گزشتہ شب میں آیا تھا لیکن گھر میں داخل نہ ہونے کی وجہ یہ تھی کہ دروازہ پر مجسمہ تھا اور گھر میں تصویروں والا پردہ تھا اور گھر میں کتا بھی تھا۔لہذا جو مجسمہ گھر میں ہے اس کا سر آپ اس طرح کٹوادیجئے کہ وہ درخت کی شکل میں رہ جائے اور پردہ پھاڑ کر تکیے بنالیجئے جن کو پامال کیا جائے اور کتے کو گھر سے باہر نکلوادیجئے۔(سنن ابی داؤد)
صحیح بخاری اور صحیح مسلم کی ایک اور حدیث میں رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی درج ذیل الفاظ میں مذکور ہے۔
” جو شخص کتا پالتا ہے اس کا اجر روزانہ ایک قیراط کم ہوجاتاہے الا یہ کہ شکار یا کھیتی یا مویشیوں کے لیے پالا جائے ۔” ان احادیث کی رو سے گھر میں کتا پالنے کی ممانعت واضح الفا ظ میں موجود ہے مگر اس ممانعت کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم کتوں کے ساتھ سنگدلانہ برتاؤ کریں اور ان کو ختم کردیاجائے۔کیونکہ سنن ابی داؤدکی ایک حدیث میں نبی مہرباں  صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشا د گرامی موجود ہے کہ
” اگر کتے بھی ایک امت نہ ہوتے تو میں انہیں قتل کرنے کا حکم دیتا ”۔
چناچہ کتوں کے متعلق اسلامی احکامات بیان کرنے کے بعد یہ مناسب معلوم ہوتاہے کہ کتوں کے گھر میں پالنے کے بارے میں جدید سائنسی معلومات سے بھی عوام الناس کو آگاہ کردیاجائے جس سے جہاں ایک عام مسلمان کااپنے دین پر ایمان مضبو ط ہوگا وہیں ایک غیر مسلم کے دل میں بھی دین اسلام کے بر حق ہونے کے بارے میں ایک مثبت فکر پیدا ہوگی۔انشاء اللہ
علامہ یوسف القرضاوی نے ان سائنسی معلومات کو اپنی کتا ب ”اسلام میں حلال وحرام ”میں ایک جرمن اسکالر سے قلمبند کیا ہے ، اس کا یہ مضمون ایک جرمن رسالے میں شائع ہوا تھا۔اس مضمون میں ان اہم خطرات کو بیان کیا گیا ہے جو کتے کو پالنے یا ا س کے قریب رہنے کی صورت میں لاحق ہوتے ہیں۔چناچہ وہ لکھتا ہے :
گزشتہ چند برسوںمیں لوگوں کے اندر کتا پالنے کا شوق کافی بڑھ گیا ہے،جس کے پیش نظر ضرورت محسوس ہوتی ہے کہ لوگوں کی توجہ ان خطرات کی طرف مبذول کرائی جائے جو اس سے پیدا ہوتے ہیں خصوصاً جبکہ لوگ کتا پالنے ہی پر اکتفا نہیں کرتے بلکہ اس کے ساتھ خوش طبعی بھی کرنے لگتے ہیں اور اس کو چومتے بھی ہیں،نیز اس کو اس طرح چھوڑ دیا جاتا ہے کہ وہ چھوٹوں اوربڑوں کے ہاتھ چاٹ لے۔اکثر ایسا ہوتا ہے کہ بچا ہوا کھانا کتوں کے آگے اپنے کھانے کی پلیٹوں میں رکھ دیاجاتاہے ۔علاوہ ازیں یہ عادتیں ایسی معیوب ہیں کہ ذوق سلیم ان کو قبول نہیں کرتا اور یہ شائستگی کے خلاف ہیں ۔مزید برآں یہ صحت ونظافت کے اصول کے بھی منافی ہے۔
طبی نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو کتے کو پالنے اوراس کے ساتھ خوش طبعی کرنے سے جو خطرات انسان کی صحت اور اس کی زندگی کو لاحق ہوتے ہیں ان کو معمولی خیال کرنا صحیح نہیں ہے ۔بہت سے لوگوں کو اپنی نادانی کی بھاری قیمت اد اکرنی پڑی ہے ۔اس کی وجہ یہ ہے کہ کتوں کے جسم پر ایسے جراثیم ہوتے ہیں جو دائمی اور لاعلاج امراض کا سبب بنتے ہیں بلکہ کتنے ہی لوگ اس مرض میں مبتلا ہوکر اپنی جان سے ہاتھ دو چکے ہیں۔اس جرثومہ کی شکل فیتہ کی ہوتی ہے اوریہ انسان کے جسم پر پھنسی کی شکل میں ظاہر ہوتے ہیں۔گو اس قسم کے جراثیم مویشیوں اور خاص طورسے سؤروں کے جسم پر بھی پائے جاتے ہیں لیکن نشوونما کی پوری صلاحیت رکھنے والے جراثیم صرف کتوں پر ہوتے ہیں۔
یہ جراثیم گیدڑ اور بھیڑئیے کے جسم پر بھی ہوتے ہیں لیکن بلیوں کے جسم پر شاذ ہی ہوتے ہیں ۔یہ جراثیم دوسرے فیتہ والے جراثیم سے مختلف ہوتے ہیں اور اتنے باریک ہوتے ہیں کہ دکھائی دینا مشکل ہے ،ان کے بارے میں گزشتہ چند سالوں ہی میں کچھ معلومات ہوسکی ہیں۔”
مقالہ نگا ر آگے لکھتاہے :
” یہ جراثیم انسان کے جسم میں داخل ہوتے ہیں اور وہاںمختلف شکلوںمیں ظاہر ہوتے ہیں ۔یہ اکثر پھیپھڑے ، عضلات ،تلی ،گردہ اور سر کے اندرونی حصہ میں داخل ہوتے ہیں ۔ان کی شکل بہت کچھ بدل جاتی ہے،یہاں تک کہ خصوصی ماہرین کے لیے بھی ان کی شناخت مشکل ہو جاتی ہے۔بہرحال اس سے جو زخم پیدا ہوتاہے خواہ جسم کے کسی حصہ میں پیداہو ،صحت کے لیے سخت مضر ہے ۔ان جراثیم کا علاج اب تک دریافت نہیں کیاجاسکا ہے ۔ان وجوہ سے ضروری ہے کہ ہم تمام ممکنہ وسائل کے ساتھ اس لا علاج بیماری کا مقابلہ کریں اور انسان کو اس کے خطرات سے بچائیں۔
جرمن ڈاکٹر نوللر کا بیان ہے کہ کتے کے جراثیم سے انسان پر جو زخم ابھر آتے ہیں ان کی تعداد ایک فی صد سے کسی طرح کم نہیں ہے اور بعض ممالک میں تو بارہ فیصد تک اس میں مبتلا پائے جاتے ہیں…….اس مرض کا مقابلہ کرنے کی بہترین صورت یہ ہے کہ ان جراثیم کو کتوں تک ہی رہنے دیاجائے اورانہیں پھیلنے نہ دیاجائے……..
اگر انسان اپنی صحت کو محفوظ اور اپنی زندگی کو باقی رکھنا چاہتا ہے تو اسے کتوں کے ساتھ خوش طبعی نہیں کرناچاہیے ، انہیں قریب آنے سے روکناچاہیے ،بچوں کو ان کے ساتھ گھل مل جانے سے بازرکھناچاہیے۔کتوں کوہاتھ چاٹنے کے لیے نہیں چھوڑ دیناچاہیے اورنہ ان کو بچوں کے کھیل کود اورتفریح کے مقامات میں رہنے اور وہاں گندگی پھیلانے کا موقع دیناچاہیے ۔لیکن بڑے افسوس کے ساتھ کہنا پڑتاہے کہ کتوں کی بڑی تعداد بچوں کی ورزش گاہوں میں پائی جاتی ہے……
اسی طرح ان کے کھانے کے برتن الگ ہونے چاہئیں۔انسان اپنے کھانے کے لیے جو پلیٹیں وغیرہ استعمال کرتاہے ان کو کتوں کے آگے چاٹنے کے لیے نہ ڈال دیاجائے۔غرضیکہ پوری احتیاط سے کام لے کر ان کو کھانے پینے کی تمام چیزوں سے دور رکھا جائے”۔
قارئین کرام سے گزار ش ہے کہ وہ ان معلومات کو بغور پڑھیں اور پھر ان کا موازنہ نبی مہرباں ،آقائے دوجہاں  صلی اللہ علیہ وسلمکے ان فرمودات کے ساتھ ملاحظہ فرمائیں کہ جن میں آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے گھر میں کتے پالنے سے منع فرمایا ہے۔مقام غور ہے کہ کیا اس زمانے میں کوئی جدید لیبارٹری موجود تھی کہ جہاں سے حاصل ہونے والی معلومات کی بناء پر آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے صحابہ کرام  کو ان باتوں کی تلقین فرمائی ؟۔یقیناایسی بات نہیں تھی ،تو پھر ان نصیحتوں کا مأخذکیاتھا؟ہمارا ایمان ہے کہ وہ مأخذ !رب ذوالجلال کی ذات بابرکات ہے ۔اس کاثبوت قرآن مجید کی سورة النجم کی اس آیتِ مبارکہ میں ملتاہے :کہ ” وہ (رسول اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم)اپنی خواہش ِ نفس سے نہیں بولتا ۔یہ تو ایک وحی ہے جو اس کی طرف کی جاتی ہے ۔”اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں قرآن و حدیث کو سمجھنے ،ان پر ایمان رکھنے اور ان کے مطابق عمل کرنے کی توفیق عطافرمائے۔ آمین
موٴلف ۔ طارق اقبال سوہدروی ۔  جدہ ۔ سعودی عرب

نفرت نہیں، محبت

نفرت نہیں، محبت

ہم اپنی زندگی میں نہ جانے کتنی نفرتیں پالتے ہیں۔ محبت بکھیرنے کی بجائے ، فاصلے بکھیڑتے ہیں۔ نفرت نے سوچ کو محدود کیا، رائے و تحقیق کو تعصب کی نگاہ بخشی۔ زندگی کی گوناگونی میں متناقص و متناقض بے چینی پیدا کی۔ ژرف نگاری کے نام پر ضرب کاری ہونے لگی۔ پیدائش کا نطفہ بخیلی سے جنم لینے لگا۔ اسلام کے نام پر کرخت مزاجی بھڑکنے لگی۔

ہم آئے روزمنفی و تخریبی موضوعات پر تحاریرلکھتے ہیں۔اِن منفی موضوعات کومثبت انداز میں تنقید کی نکتہ چینی کی بجائے ؛ اصلاحی رنگ دے سکتے ہیں۔ ہم نفرت پہ تو بات کرتے ہیں۔ اگر نفرت کی ضد محبت سے بات کرے تو ہمارے اذہان و قلوب میں خوب صورت کیفیات ہی مرتب ہو سکتی ہے۔

آج ہمارا ادیب بھی کچھ ایسا ہی ہے۔ اُس کو معاشرہ کی فحش گوئی بیان کرنے کے لیے اب طوائفہ سے معشوقہ کی تلاش ہونے لگی۔ سکینڈل بیان کرتے کرتے معاشرہ کو سکینڈل زدہ بنا دیا۔ کاش! کو ئی ادیب تعمیری سوچ کے ساتھ معاشرہ میں تعمیر بخشے۔ شاعر کی شاعری برہنہ گوئی رہ گئی۔ مقصد و خیال رخصت ہو چکے۔

ہمیں آج تعمیری سوچ کی ضرورت ہے۔ جاہلانہ اذہان دوسروں کی آپسی ملاقاتوں سے بھی بُرا تصور اخذکرتے ہیں۔ شاکی اذہان میں سازش ، بد نگاہوں سے برائی، متلون مزاجی سے وسواس قلوب میں جنم لیتے ہیں۔نہ جانے نفرتیں کہاں کہاں پنپ رہی ہیں۔

لاﺅتزے نے تاﺅ تے چنگ میں فرمایا تھا۔” جب دُنیا جانتی ہے؛ خوبصورتی جیسے خوبصورتی ہے، بدصورتی اُبھرتی ہے،جب جانتے ہیں، اچھائی اچھائی ہے، برائی بڑھتی ہے“

مینیشس نے کہا تھا،” برائی کی موجودگی اچھائی کی شان ہے۔ برائی کی ضد اچھائی ہے۔ یہ ایک دوسرے سے بندھی ہے۔برائی کی کایا اچھائی میں پلٹ سکتی ہے۔ برائی کیا ہے؟ ایک وقت میں تو وُہ ہے،مگر بعدکے کسی دور میں وُہ اچھائی ہوسکتی ہے کسی اور کے لیے۔“

مذاہب محبت کی بات کرتے ہیں۔ عبادت گاہیں محبت کی مرکز ہیں مگر آج فرقوں کے نام پر نفرتیں بٹ رہی ہیں۔ گیتا، جپ جی صاحب، سُکھ منی صاحب، ادی گرنتھ صاحب،تاﺅتے چنگ محبت ہی کی تعلیم دے رہی ہیں۔ یہ اخلاقی تعلیمات کے لازوال شاہکارہیں۔ہر مذہب میں جھوٹ، شراب، جوائ، زنا، جھوٹی گواہی کی پابندیاں عائد ہیں۔ ان سے انحراف معاشرہ میں نفرت کا جنم ہے۔

ناکام معاشرے اپنی خامیوں کی پردہ پوشی کرتے ہیں، دوسروں کی خوبیوں کی عیب جوئی فرماتے ہیں,۔تنگ نظر اذہان تنگ نظری کی بات کرتے ہیں۔ کچھ لوگ خو د کو راجپوت، سید اور اعوان کہلانے پر فخر کرتے ہیں۔دوسروں کو اپنی احساس کمتری کے باعث کمی کمین کہتے ہیں۔ بھئی فخر کرنے کے لیے ویسے اعمال بھی ہونے چاہیے۔ راجپوت اپنی خودداری، وطن پرستی اور غیرت کی روایات کی پاسداری کرتے تھے ۔کٹھن حالات میں’ جوہر ‘ کی رسم ادا کرتے تھے۔ جب راجپوت اپنا دفاع ناکام ہوتا دیکھتے تو عورتیں بچوں سمیت آگ میں کود پڑتیں تاکہ بے حرمتی کی ذلت سے بچ سکیں۔یوںمرد اپنے گھر بار کی فکر سے آزاد ہوکرآخر دم تک لڑتے ہوئے ؛ وطن کے تحفظ پر جان قربان کر تے تھے۔ دشمن کی فتح تب ہوتی، جب کوئی راجپوت باقی نہ رہتا۔ رانااودے سنگھ، رانا پرتاب سنگھ نے مغل عہد میںراجپوت خودداری کو قائم رکھا۔سید اور اعوان خود کوحضرت علی رضی اللہ عنہ کی اُولاد ہونے پر ناز کرتے ہیں۔ شان تویہ ہیں؛جب اعمال و کردار حضرت علی رضی اللہ عنہ کے نقش قدم کے مطابق ہو۔ ورنہ حضرت علی رضی اللہ عنہ کا نام سن کر سر شرمندگی سے جھک جائے۔لوگ خود کو سردار، نواب ، راجگان ،ملک،بیگ، خان، رانا، چوہدری اور قاضی وغیرہ کے ناموں سے متعارف کرواتے ہیں۔ ایسے تاریخی سرکاری عہدوں اور القابات کا قبیلہ سے کوئی تعلق نہیں۔ کیا ہم میں کوئی ایسی خصوصیت ہے کہ ہمیں آج کی سرکار کوئی رتبہ عنائیت فرمائے۔ جب ہم میں ایسی کوئی خاصیت نہیں تو ہم ترقی پانے والے لوگوں کے کم ذات ہونے پر تبصرہ کیوں کرتے ہیں ؟ دراصل ہم اپنی احساس کمتری کو احساس برتری سے چھپانے کی ناکام کوشش کرتے ہیں۔ غالب کا مصرع ہے:

دِل کو خوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

محبت بانٹنے سے بڑھتی ہے اور نفرت سمیٹنے سے پھیلتی ہے۔ نفرتیں مت سمیٹوں۔تعصب کی عینک اُتار کر دیکھو تو سوچ کی وسعت خوب پھیلے گی ۔ ورنہ بند گلی کے بند راہی بنو گے۔

زندگی کا حسن محبت، نعمتِ خداوندی مسکراہٹ ہے۔ بندوں سے تعصب، دِل میں خدا کی محبت کو بھی دور کرتا ہے۔ اللہ سے محبت اللہ کے بندوں سے محبت ہے۔

میرے ذہن میں ایک سوال بچپن سے اُمڈتا ہے۔ اسلام خوش اخلاقی کی عملی تربیت دیتا ہے۔ ہمارے بیشتر مذہبی نمائندگان یا وُہ افراد جو مذہبی جھکاﺅ زیادہ رکھتے ہیں۔ دِن بدن اُنکے مزاج میں کرختگی اور برداشت کی کمی کیوں واقع ہوتی جا رہی ہے؟ اپنے گروہ کے سواءکسی اور کو سلام کرنا گوارہ کیوں نہیں کرتے۔ غیر مذہبی افراد کے ساتھ بیٹھ کر کھانا کھا تو سکتے ہیں۔ مگر مسلمان بھائی کے ساتھ بیٹھنا کیوں گوارہ نہیں؟ یہ وُہ عملی مناظر ہے، جس نے آج کے نوجوان کوپریشان کیاہے۔

برصغیر میں مسلمانوں کی آمد اور شاہجہانی دور کی عظمت ایک دِن یا عرصہ کی بات نہیں،یہ صدیوں کے تاریخی تسلسل میں نکلنے والی کونپل تھی، جسکی خوشبو میں نفرت کی بدبو گھٹتی گئی اور محبت پھیلی۔ اردو میل ملاپوں میں آسودہ ہوئی۔ علاقائی تعصبات سے آلودہ ہوئی۔پاکستان میں معاشرتی زندگی کا جو تصور تحریک آزادی میں پیش کیا گیا تھا۔ مذہبی آزادی و رواداری تھا۔ آج مسلکی بنیادوں پر نفرتیں سرائیت کر چکی۔ اے اللہ! ہمیں ایسی تحقیق سے محروم فرما، جس میں ہم تاریخ ِ اسلام کی عالیٰ مرتبت بزرگان کے مسلک کی تلاش کریں۔ ہمیںمسلک کی بنیاد پر نفرت سے بچا۔

مجھے کبھی کبھی افسوس ہوتا ہے۔ غیر جانبدارانہ رویہ بھی موت کا سبب بنتا ہے۔ابن رشد نے یونانی تراجم یونانی رو سے کیے تو ملحد ہوکر خارج الاسلام قرار دیا گیا۔ شہزادہ دارالشّکوہ نے سکینة الاولیاءاور سفینة الاولیاءایام جوانی میں تحریر فرما کر بڑا نام پایا۔ مگر ہندی تراجم ہندوﺅانہ روح سے کرکے مرتد قرار دیکر واجب القتل ٹھہرا اور سولی پر چڑھایا گیا۔ شائید ہر دور کا ارسطو زہر کا پیالہ پینے کو ترجیح دیتا ہے۔ اُس زمانے میں افلاطون نے شہر چھوڑا تھا۔ آج لوگ خاموش ہوگئے ہیں۔

یہ نفرتیں ہی ہیں۔ جنھوں نے ہماری زندگی میں تنہائیاں ہی جنم دی ہیں۔ خوشی اور غمی کے جذبات سے عاری معاشرہ پنپ رہا ہے۔ ہمیں سوچنا ہے ہم اپنی نسل کو کیا منتقل کر رہے ہیں!

ہماری عیدین گزرتی ہیں۔ذرا سوچئے! آپ کتنی خوشیاں بکھیرتے ہیں؟ کتنے چہروں پر مسکراہٹ لاتے ہیں؟کسقدر رخنہ زدہ بندھنوں کو اِک لڑی میں پروتے ہیں؟ کیا عید کے روز ماتھا پہ شکن، گفتگو میں گالم گلوچ، دِل میں بغض، حسد، کینہ اور رویوں میں نفرت ہونی چاہیے؟ عید کے روز خلاف مزاج بات پر سخت الفاظ منہ سے نکالنا بھی میرے خیال میں عید کی توہین ہے۔

کیا ہم سال میں صرف عیدین کے دو ایاّم کو اپنے رویہ سے خوبصورت نہیں بنا سکتے ،جہاں صرف محبت ہی محبت آپ سے مِل رہی ہو؟ معاشرہ کا ردّعمل جو بھی ہو، عید کے روز خود کو محبت کو عملی نمونہ بنائے۔

عید کے روز میرے ایس -ایم-ایس پہ پریشان مت ہوا کریں۔ میں آپ سب سے بھی خوشی بانٹ رہا ہوتا ہوں۔ میں عیدین پر اپنے ہزاروں چاہنے اور جاننے والوں کو نیک تمناﺅں کا پیغام بھیجتا ہوں اور رہونگا۔ لہذا! آپ نہ تو تذبذب کا شکار ہو اور نہ شک میں پڑیں۔ کیونکہ محبت کو شک کھا جاتا ہے۔

(فرخ نور)

مشکل الفاظ کے معنی

گوناگونی : ورائٹی، مختلف اقسام

متناقص: نقص رکھنے والا، ناقص، نامکمل

متناقض: مخالف، برعکس، اُلٹا، خلاف

زندگی سے موت بہتر ہے

: دنیا کے مصائب و آلام سے بیزار ہو کر موت کی تمنا کرنا اوراپنے لئے موت کی دعا کرنا مکروہ تحریمی ہے ۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مصیبتوں کے سبب موت کی آرزو کرنے سے منع فرمایا ہے ۔ صحیح بخاری شریف میں حدیث پاک ہے :
عن أنس بن مالك رضى الله عنه قال النبى صلى الله عليه وسلم « لا يتمنين أحدكم الموت من ضر أصابه ، فإن كان لا بد فاعلا فليقل اللهم أحينى ما كانت الحياة خيرا لى ، وتوفنى إذا كانت الوفاة خيرا لى »
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ،حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا: تم میں کوئی کسی مصیبت کی وجہ سے ہرگز موت کی آرزو نہ کرے اگر وہ موت کی خواہش ہی رکھتا ہے تو یہ دعا کرے
’’ اللَّهُمَّ أَحْيِنِى مَا كَانَتِ الْحَيَاةُ خَيْرًا لِى ، وَتَوَفَّنِى إِذَا كَانَتِ الْوَفَاةُ خَيْرًا لِى
ترجمہ :‘‘ اے اللہ تو مجھ کو حیات عطا فرما جب تک زندگی میرے حق میں بہتر ہو اور مجھکو موت عطاء فرما جب وفات میرے لئے بہتر ہو۔
﴿ صحیح بخاری شریف ،باب تمنی المریض الموت ،حدیث نمبر:5671﴾
اگر گناہوں کی کثرت ہو جائے ،فتنے امنڈنے لگیں اور مصیبت میں پڑنے کا خوف ہو تو اپنے دین کو بچانے اور فتنوں سے خلاصی پانے کیلئے موت کی تمنا کرسکتا ہے جیساکہ سنن ترمذی شریف میں حدیث شریف ہے :
عن أبى هريرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ……فبطن الأرض خير لكم من ظهرها ۔
ترجمہ:حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ……( ایسے زمانہ میں ) زمین کا اندرونی حصہ تمہارے لئے زمین کے بیرونی حصہ سے بہتر ہے۔ ﴿ جامع ترمذی شریف ،حدیث نمبر:2435﴾
الغرض دنیا کے خوف سے موت کی تمنا نہیں کرنا چاہئے ۔

در مختار ج 5 ص 297 میں ہے:
( یکرہ تمنی الموت ) لغضب او ضیق عیش ( الا لخوف الوقوع فی معصیۃ ) ای فیکرہ لخوف الدنیا لا الدین لحدیث فبطن الارض خیرلکم من ظھرھا
اور رد المحتار ‘‘ میں ہے
’’ فی صحیح مسلم « لا يتمنين أحدكم الموت لضر نزل به فإن كان لا بد متمنيا فليقل اللهم أحينى ما كانت الحياة خيرا لى وتوفنى إذا كانت الوفاة خيرا لى ». ﴿ مسلم شریف ،باب كراهة تمنى الموت لضر نزل به،حدیث نمبر:6990﴾
واللہ اعلم بالصواب –
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
نائب شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر

مسلمان ہونا کوئی مشکل امر نہیں مگر مسلمان بن کر حدود شرع کی پاسداری کرتے ہوئے زندگی گزارنا دشوار ہے اور صحیح معنوں میں مسلمان وہی ہے جو شرعی احکام و مسائل پر سختی سے کاربند ہو کر کتاب زندگی کی اوراق گردانی کرے۔

میرے منتخب اقوال،پختون کی بیٹی – باب دوئم سے۔ . سید تفسیر احمد

پختون کی بیٹی
, سید تفسیر احمد, باب دوئم۔ اجتماع

1۔ خواب
2۔ تشخیص
3۔ تعمیل کا منصوبہ
4۔ سوچ ایک طریقہ ہے
5۔ خواہش
6۔ یقین و ایمان
7۔ آٹوسجیشن
8۔ تعلیمِ خصوصی
9۔ تصور
10۔ منظم منصوبہ بندی
11۔ ارادۂِ مصمم اور فیصلہ
12۔ ثابت قدم
13۔ ماسٹرمائنڈ
14۔ کامیابی کے اصول۔ ایک نظرِ ثانی

میرے منتخب اقوال،پختون کی بیٹی – باب دوئم سے۔

جوکھوں اور عزیمت کے ارادوں میں وہی لوگ کامیاب ہوتے ہیں جو اپنی کشتی کوجلادیتے ہیں۔اس کشتی کو جلانے کے عمل سے دماغ کو روحانی کیفیت ملتی ہے یہ کیفیت جیتنے کی چاہت پیدا کرتی ہے جوکہ کامیابی کے لیے بہت ضروری ہے۔

یقین و ایمان

“ایمان تم کو جنت میں لے جاۓگا اور ایمانِ کامل جنت کو تمہارے پاس لاۓ گا”۔

یقینِ کامل دماغ کا کیمیاگر ہے۔ جب یقینِ کامل اورسوچ کی آمیزش ہوتی ہے۔ تو تحت الشعور ان کے مضطرب ہونے کو محسوس کر لیتا ہے اور اس کو روحانی برابری میں تبدیل کر دیتا ہے۔اور اس کو لا محدود حکمت میں منتقل کردیتا ہے۔ جس طرح کہ عملِ دعا ہے۔
تمام جذبات جو انسان کو فائدہ پہنچاتے ہیں ان میں یقین، لگن اور ہم آغوشئ جذبات سب سے ذیادہ طاقتور ہیں۔ جب یہ تین ملتے ہیں تو خیالات کو اس طرح رنگ دیتے ہیں کہ خیالات ایک دم سے تحت الشعور میں پہنچ کر لامحدود حکمت سے جواب لاتے ہیں۔ ایمان ایک ایسی دماغی کیفیت ہے جو کہ لامحدود حکمت کو جواب دینے کی ترغیب دیتی ہے”۔

ایمان ایک ایسا جذبہ ہے جس کو ایک ایسی دماغ اغرق ہو نے کی کیفیت کہہ سکتے ہیں جو ہم اظہار حلقی کے دہرانے سے پیدا کرسکتے ہیں”۔

سوچ کا جذباتی حصہ (ایمان و یقین) ، سوچ کو زندگی بخشتا ہے اور اس پرعمل کرنے پر اکساتا ہے۔یقین اور لگن کے جذبات یکجا ہوکرسوچ کو بہت بڑی قوت بنا دیتے ہیں۔

آٹوسجیشن
کسی چیز کو حاصل کرنے میں کامیابی کا پہلااصول اس چیز کی زبردست خواہش اور دوسرا اصول اپنی کامیابی کا یقین ہونا ہے۔

ک۔ اللہ تعالٰی نے ہر انسان کوایک دماغ دیا ہے“۔

۔ ” لیکن دماغ کو علمِ نفسیات میں کاموں کے لحاظ سے تین حصوں میں بانٹاگیا ہے۔

شعور، تحت الشعور اور لا شعور“۔

” تو ہم ان دماغ کے مختلف حصوں کو کس طرح اپنی کامیابی لیے استعمال کرتے ہیں؟“

اراد ہِ مصمم اور فیصلہ

کامیاب لوگوں کی سب سے بڑی خصوصیت یہ ہے کہ وہ جب کسی کام کرنے کا ارادہ کرتے ہیں تو بلا تؤقف فیصلہ کرتے ہیں۔اور جب فیصلہ کرلیں تو اس فیصلہ کو تبدیل کرنے میں وقت لیتے ہیں۔

جب تم نے اپنی قابلیت کے مطابق فیصلہ کرلیا تو دوسروں کی راۓ سے متاثر ہو کر فیصلہ تبدیل مت کرو۔

دنیا کو پہلے دکھاؤ کہ تم کیا کرنا چاہتے ہو اور پھر بتاؤ۔

فیصلہ کی قیمت کا انحصار جرات پر ہے۔ دنیا کے وہ فیصلے جن سے تہذیب کی بنیادیں رکھی گئیں، ان فیصلوں کے نتائج کو حاصل کرنے میں جانیں تک خطرے میں تھیں۔

سقراط پر جب یہ دباؤ ڈالا گیا کہ اگر اس نے اپنے خیالات نہ بدلے اور جمہوریت کی باتیں کرتا رہا تو اس کو زہر پی کر مرنا پڑے گا۔ سقراط نے اپنے خیالات نہیں بدلے اور اس کو زہر کا پیالہ دیا گیا۔

ظلم سے آزادی کی خواہش آزادی لاۓ گی۔

” سوچ + مقرر مقصد + قائم مزاجی + شدیدخواہش = کامیابئ مکمل”سعدیہ نے جواب دیا۔

آٹوسجیشن کا استعمال ان خیالوں جن کو آپ شدت سے چاہتے ہیں، شعور سے تحت الشعور میں رضاکارانہ طور پر پہہنچا دیتا ہے“

خواہش ِ < — شدت < — شدیدخواہش
(شعور) < — (آٹوسجیشن) < — (تحت الشعور)

تعلیمِ خصوصی

” ایک تعلیم کا حصول ، دوسرے تعلیم کا سمجھنا ، اور تیسرے تعلیم کا استعمال۔ جب تک آپ تعلیم کو استعمال نہ کریں تعلیم پوری نہیں ہوتی

” تعلیم صرف ایک صورتِ امکانی ہے۔ یہ اُس وقت ایک قوت بنتی ہے جب اس کو مقصد کے حصول کے لیے منظم کیا جاتا ہے ا ور اس کا رُخ مقرر خاتمہ کی طرف کیا جاۓ۔سینکڑوں لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ اگر کوئ شخص اسکول نہ جاۓ تو وہ تعلیم یا فتہ نہیں ہے۔ ایجوکیشن ایک اٹالین لفظ ’ ایڈوکو‘ سے بنی ہے۔ جس کے معنی ’ اندر سےابھرنا ، انکشاف کرنا ‘۔ ضروری نہیں کہ تعلیم یافتہ شخص وہ ہو جس کے پاس تعلیم عامہ یا تعلیم مخصوصہ کی بہتاب ہے، تعلیم یافتہ شخص وہ ہے جس نے اپنے ذہن کو تربیت دی ہے۔ تعلیم یافتہ شخص کسی کا حق مارے بغیر ہر اس چیز کو حاصل کرلیتا ہے جو اس کو پسند ہے“۔

تصور

” انسان ہر وہ چیز کرسکتا ہے جس کو وہ سوچ سکتا ہے“۔

منظم منصوبہ بندی

ہر چیز جو انسان بناتا ہے یا حاصل کرتا ہے وہ خواہش سے شروع ہوتی ہے“۔

خواہش کا پہلا قدم عدمِ وجود سے وجود میں تبدیل ہونا ، قوت متصورہ کے کارخانہ میں ہوتا ہے۔جہاں پر اس کی تبدلی کی منصوبہ بندی کی جاتی ہے۔

دنیا میں دو طرح کے لوگ ہوتے ہیں۔قائداورمعتقد۔ کچھ لوگ قائد بنتے ہیں کیوں کہ ان میں دلیری ، ضبط ، انصاف پسندی ، ا ستقلال، منصوبہ ، محنت پسندی ، خوش گوار شخصیت ، ہمدردی اور پکی سمجھ ، تفصیل کا مہارت ، ذمہ داری اور مل کر کام کرنے کی صفات ہو تی ہیں۔ معتقد لوگ ، قائد کا کہا مانتے ہیں۔ معتقد ہونا کوئ بری بات نہیں۔ بہت دفعہ ایک قائد، معتقد میں سے ہی بنتا ہے۔

وہ قائد ، اپنے مقصد میں کا میاب نہیں ہوتے ہیں جوکام کی تفصیل سے بھاگتے ہیں اور صرف وہ کام کرنا چاہتے ہیں جو ان کی حیثیت کے برابر ہو، چھوٹا کام کرنا نہیں پسند کرتے۔ وہ اپنی تمام قابلیت، یعنی اپنی تعلیم کے مطابق صلہ مانگتے ہیں اپنے کام کے مطابق نہیں۔جومتقدوں سے مقابلہ کرتے ہوۓ گھبراتے ہیں۔ جن میں صورت متخیلہ نہیں ہوتی اور خود غرضی کا شکار ہوتے ہیں۔

منظم منصوبہ بندی کے اصول

1۔ جتنے ساتھیوں کی اپنے منصوبہ پر عمل کرنے کے لیے ضرورت ہے ان کو اپنے مہتممِ دماغ علم یا ماسٹر مائنڈ کا پارٹنر بنالیں۔

2۔ تمام شرکاء اور شریکِ کار کو پتہ ہو نا چاہیے کہ اس شرکت میں ان کی کیا ذمہ داری ہے۔

3۔ جب تک کہ منصوبہ مکمل نہ ہوجاۓ، تمام شرکاء اور شریکِ کارکو کم از کم ہفتہ میں دو دفعہ ملنا چاہیے۔

4۔ جب تک کہ منصوبہ مکمل نہ ہوجاۓ تمام شرکاء اور شریکِ کار کو میل اور اتفاق سے رہنا چاہیے۔

.ماسٹرمائنڈ

” علم ایک طاقت ہے“۔اباجان نے کہا۔ کامیابی کے لیے طاقتِ علم کا ہونا ضروری ہے“

” منصوبے بغیر معقول طاقتِ علم کے غیرمؤثراور بے کار ہیں اور ان کو عمل میں تبدیل نہیں کیاجاسکتا“۔

” دما غی قوت ، یہاں ایک منظم اوردانش مند علم کو مسئلۂ مرکوز پر توجہ کرنے کے معنی میں استمعال کی گئ ہے“۔

علم کے حاصل کرنے کے تین ذرائع ہیں۔

ایک ۔ لا محدود قابلیت۔

دو ۔ جمع کیا ہوا علم، پبلک لائبریری، پبلک سکول اور کالج۔

تین ۔ تجربات اور تحقیقات، سائنس اور تمام دنیاوی چیزوں میں انسان ہر وقت جمع کرتا ہے، باترتیب رکھتا ہے اور ہرروز مرتب کرتا ہے“۔

علم کوان ذرائع سے حاصل کر کے منصوبۂ مقرر میں مننظم کرنا اور پھر منصوبوں کو عمل میں تبدیل کرنا، دماغ کی طاقتِ علم ہے۔
اگر منصوبہ وسیع ہے تو آپ کو دوسرے لوگوں کے دماغ کی طاقتِ علم کی مدد کی ضرورت گی“۔

” جب دو یا دو سے ذیادہ لوگ ایک مقرر اور مخصوص مقصد کو حاصل کر نے کے لیے علم کی ہم آہنگی کرتے ہیں تو وہ ماسٹرمائنڈ کہلاتے ہیں“۔

اولیا اور انبیاٴ علیہ السلام کی نصیحتیں.

  • کم بولنا حکمت ہے ، کم کھانا صحت ، کم سونا عبادت ، اور عوام سے کم ملنا عافیت ہے ۔.حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہُ. ،
  • بےکاربولنے سے منہ بند رکھنا بھتر ہے۔شيخ سعدي شيرازي
  • جہاں تک ہو سکے لوگوں سے دور رہ، تاکہ تیرا دل سلامت اور نفس پاکیزا رہے.  حضرت لقمان علیہ السلام.
  • زیادہ سنو اور کم بولو۔ .  حضرت لقمان علیہ السلام.

  • کثیرا فہم اور کم سخن بنا رہ، اور حالت خاموشی میں بے  فکر مت رہ۔ .  حضرت لقمان علیہ السلام.
  • دوسروں کے عیب پوشیدہ رکھ  تاکہ خدا تیرے عیب بھی پوشیدہرکھے. حضرت خواجہ سراالدین۔
  • جو شخص خاموش رہتا ہے، وہ بہت دانا ہے، کیوں کہ کثرت کلام سے کچھ نہ کچھ گناہ سر ذد ہو جاتے ہیں۔ حضرت سلیمان
  • زبان سے بری بات نہ کرو، کان سے برے الفاظ نہ سنو،  آنکھوں سے بری چیزیں نہیں دیکھو,  ہاتھ سے بری چیزیں نہیں چھوٴو, پیر سے بری جگہ نہیں جاو, ور دل سے اللہ کو یاد کرو۔ حضرت ابو بکر
  • خاموشی نعمت ہے، درگزر جہاد ہے،غریب پروری زاراہ ہے۔ . حضرت خواجہ محمد اسد ہاشمی۔
  • جب راستہ چلو ،تو دائیں بائیں نہیں جھانکا کرو۔  نظر ہمیشہ نیچےاور  سامنے رکھو۔۔ حضرت امام ابو حنیفہ رحمت اللہ علیہ
  • بازاوں میں زیادہ نہ پھرو، نہ چلتےچلتے راستے میں کوئی چیز کھاو۔ حضرت امام ابو حنیفہ رحمت اللہ علیہ۔
  • زبان کی حفاضت کرو،کیوں کہ یہ ایک بہرین خصلت ہے۔ حضرت عائشہ صدیقہ  رضی اللہ عنہُ
  • اچھے لوگوں کی صحبت اخیار کرو، اس سے تمھارے اعمال اچھے ہو جاہیں گے۔ ابن جوزی رحمت اللہ علیہ
  • برے لوگوں کی صحبت نیک لوگوں سے بدگمانی پیدا کرتی ہے، جب کہ  نیک لوگوں کی صحبت برے لوگوں کیلیئے بھی نیک گمان پیدا کرتی ہے. حضرت  بشر حائی.

CSS3 and html5

tools & resources for web professionals

the best site for understanding and creating online code of css3.

http://westciv.com/tools/gradients/

http://westciv.com/

what you can do by using cc3. http://www.everydayworks.com/css_typography/HTMLCSSrotation.html

i like it. alot. 😀

http://creatingsexystylesheets.com/

خودداری

غیرت نہ تو خودی ہے نہ ہی انائ، غیرت تو ایک جذبہ ہے جو قوموں کی حمیت کو برقرار رکھتا ہے، نہ کہ قوموں کو بے قرار، یہ ایسا جذبہ ہے کہ اگر قوموں میں بے قراری آجائے توجراری کی تاریخیں رقم ہوجایاکرتی ہے۔

معاشرہ میں ہائی جیک ہوئے جذبوں میں سے ایک خوبصورت جذبہ” غیرت“ ہے۔جب غیرت قوموں میں سے رخصت ہوجائے تو وُہ قومیں اقوام میں شمار نہیں ہوا کرتی۔ بلکہ اُن کا شمارکسی بھی مرتبہ میں نہیں رہتا۔ یہ بات صرف اقوام کی حد تک نہیں ہمارا معاشرہ بھی یہی ہمیں سمجھاتا ہے۔ ہمارے رشتوں میں ؛جو رشتے ہاتھ پھیلاتے رہتے ہیں، وُہ رشتے رشتہ داری میں شمار نہیں کیے جاتے۔اکثر اُنھیں اچھوت کی طرح سمجھا جانے لگتا ہے۔اللہ کسی کو بھی ہاتھ پھیلانے پر مجبور نہ کرے۔ جب انسان کا وزن نہ رہے تو اُسکی بات کا بھی وزن نہیں رہتا، جسکا جہاز ڈوب جائے لوگ اُسی کا ساتھ چھوڑ جاتے ہیں۔خوددار قومیں اپناوزن غیرت سے برقرار رکھتی ہیں۔تبھی خوددار قومیں مر جاتی ہیں مگر اپنی غیرت کا سودا نہیں کیا کرتیں۔ بہت سے قبائل کاایک مقولہ رہا:”سر کٹوا سکتے ہیںمگر جھک نہیں سکتے ”

ایک فلمی کہانی کچھ یوں تھی: ایک جاگیر دار غریب کسانوں سے زمین خریدنے کی کوشش کرتا ہے مگر کوئی کسان بھی اُسکی بات خاطر میں نہیںلاتا، ایک رات وُہ تمام کھلیانوں میں پکی فصل کوآگ لگواتا ہے۔اگلی ہی صبح جاگیر دار اظہار ہمدردی میں مددکوآتا ہے ۔ بغیر کسی شرط کے گندم ، چاول، دال کی بوریاں بطورخوراک مدد دیتا ہے،و ُہ ایک سال تک ایسے ہی امدادی خوراک دیتا ہے ، کچھ عرصہ بعد معمولی سے سود پربحالیئِ امدادکا قرض دیتا ہے،اس عرصہ کے دوران، وُ ہ گاﺅں والوں میں شراب اور جواءکی لَت ڈالتا ہے، پھراُن خوددار گاﺅں والوں کو کام کے عادی سے کام چوری کی عادت پڑتی ہے۔ تمام گاﺅں جاگیردار کی جوتیاںچاٹنے کےلیے سب کچھ کرنے کو تیار ہوتا ہے۔ وُہ اپنی عورتوں کو قحبہ خانہ کی نظر کرتے ہیں۔ آخر اُنکی تمام زمینیں قرض وسود کے عوض جاگیردار باآسانی ہتھیا تا ہے۔ماضی کے غیرت مند وُہ گاﺅں والے نشے میں دھت ہیں یا کچھ اپنی بے بسی پر کراہتے ہیں اور کسی مسیحا کے انتظار میں وقت بیتانے لگتے ہیں۔

اسلام میں ہے کہ ایک دوسرے کی مدد کرو، یوں مدد کرو کہ کسی کو محسوس بھی نہ ہونے پائے،مقصد یہ ہے کہ مدد بھی ہوجائے اور کسی کی خوداری کو ٹھیس بھی نہ پہنچ پائے۔

غیرت یہ نہیں کہ غیرت کے نام پر قتل کیا جائے،غیرت تو یہ ہے کہ اپنی خوداری کا قتل نہ کرے۔ایسی خود سوزی سے موت کو گلے لگا لینا زیادہ بہتر ہے۔

غیرت ہے کیا؟ اپنے حق پر کسی کو ڈاکا نہ ڈالنے دینا اور کسی سے اُسکا حق چھیننا گوارہ نہ کرنا۔ اپنی حد میں رہتے ہوئے، پورے شان اور وقار سے زندگی دوسروں کے لیے بسر کرنا۔ کسی بھی حال میں دوسرے کے مال پر نظر نہ رکھنا اور اپنے مال میں سے ضرورت مندوںمیں تقسیم کرتے رہنا۔ ہاتھ پھیلانے کی بجائے ، خدا کے حضور سر کٹوا لینا کو ترجیح دینا۔فقیرانہ حالت میں بھی شاہانہ انداز سے زندگی بسر کرنا ہی خودار اقوام کا طرز زندگی ہے۔خوددار افراد کسی بھی صورت اپنا اُدھار باقی نہیں رکھتے۔ وُہ فوراً ہی کچھ نہ کچھ ادا کر کے معاملہ ہی چکا دیتے ہیں۔

ہمارے خطہ کا شمار غیور اور خودار اقوام میں ہوتا رہا ہے؟سکندراعظم کے حملہ سے موجودہ دور تک خودداری کی انمول مثالیں تاریخ بنی۔ ابراہیم لودھی اور مرہٹہ ؛عوام پرمظالم کے باوجود غیرت مند شکست خوردہ شخصیات ہیں۔ٹیپوسلطانؒ، نواب سراج الدولہؒ،سید احمد شہیدؒ کی سوانح حیات خودداری کی علمبردار رہی۔ برصغیرمیں رسول پاکﷺ کی شان میں گستاخی کرنے والے سات شاتم رسولوں کو سات عظیم شہداء(غازی علم دین شہیدؒ، غازی عبدالقیوم شہیدؒ، غازی محمد صدیق شہیدؒ، غازی عبداللہ شاہ شہیدؒ، غازی عبد الرّشید شہیدؒ،غازی میاں محمد شہیدؒ، غازی مرید حسین شہیدؒ)نے محبت رسول ﷺمیں جہنم واصل کیا۔

معاشرتی رسم و رواج میں بیٹی کو غیر گھر میں بیا ہ دینے کے بعد، وہاں سے پانی نہ پینا ،غیر اور دشمن کے مہمان کو بھی اپنا مہمان سمجھ کر بھرپور مہمان نوازی کرنا،کسی بھی انجان کی پکار پر لبیک کہنا، کسی کی جاہ وجلال کے آگے جھکنے کی بجائے اپنے اصولوں پر ڈٹ کر فیصلہ کرنا ہی اس خطہ کی روایات رہی ہیں۔

قائد اعظم ایک خوددار رہنماتھے، اُنھوں نے قوم کو بھی خودداری کی تعلیم دی، جبکہ کہا جاتا ہے کہ گاندھی کی پالیسی انا پرستی کی حد تک رہی۔ اقبال کی خودی میں ہم قائد کی خودداری بھی دیکھتے ہیں۔

انا اور خوداری میں یہی فرق ہے کہ انا اپنی ذات کے لیے ہوتی ہے اور خوداری دوسروں کی بھلائی کے لیے ہوتی ہے۔خودداری قوموں میں اصلاح کا عمل پیدا کرتی ہے، انا انسان میں بیگاڑ لاتی ہے۔انا ضد لاتی ہے، خودداری اُصول پرڈٹے رہنا سکھاتی ہے۔شخصیت وُہ خودی ہے جو زندگی کو منظم بناتی ہے۔

یہ مثالیں صرف کتب یا تاریخ میں نہیں ملتی بلکہ آج بھی حقیقی زندگیوں میں حقیقت کا روپ بھر رہی ہے، نہ ہی یہ عمل طبقات تک محددو ہے۔ ہمارے ملک ہی کے ایک نامور مزاح نگار کچھ دہائیوں قبل جب بیمار تھے تو اُنھوں نے اپنے حالات کی تنگدستی کے باعث شہر کو خیرباد کہنے کا ارادہ کرلیا،جب وقت کے سپاہ سالار اعظم کو یہ خبر ہوئی تو اُس نے فوری ملاقات کی اور شہر نہ چھوڑنے کی گزارش فرمائی اور عرض کیا کہ آپ ایک درخواست لکھ دیں تو صدر ِپاکستان اُنکا وظیفہ مقرر فرما دے گے۔ اُنھوں نے اس بات کو اہمیت نہ دی، کچھ عرصہ بعد وُہ جنرل صاحب درخواست کے کاغذات خود لے کرآئے کہ اِن کو پُر کر دیجیے، مگر اُن مزاح نگار نے بات پھر ٹال دی، اگلی مرتبہ جنرل صاحب فارم بھر کر لے آئے اور کہا دستخط فرما دیجیے مگر مزاح نگار نے ایسا نہ کیا۔ اُنکا مﺅقف تھا،میں کیوںبھیک مانگو؟اگر صدر مملکت میری مدد فرمانا چاہتے ہیں تو اس کاغذی بھیک کے بغیر فرمائے۔ دراصل اُنکی غیرت کو گوارہ نہ تھا کہ اُنکو کوئی خیرات دی جائے جبکہ حالات تنگ دستی کاشکار تھے۔ آج وُہ تینوں شخصیات حیات نہیں مگر ایک خوداری کی تازہ ترین مثال چھوڑ گئیں۔

تجربہ کار پروفیسر حضرات اپنے زعم میں سیاسیات پر گفتگو میں فرماتے ہیں،کہ حاکم نے قوم کو منگتی قوم بنا دیاہے، مگر کبھی کبھی محسوس ہوتا ہے، ہمارے رویے بھی کچھ تعمیری نہیں۔ ہم ایک ڈرائیور کو کھانا لینے کے لیئے بھیجتے ہیں، وُہ کھانا لاتا ہے، ہم کھانا ڈالتے ہیں، وُہ ایک پلیٹ آخرمیں پھیلائے لاتا ہے اورہماراہی بچا ہواکھانا ڈالتا ہے اور اُسی انداز سے واپس مڑ کر کہیں باہر بیٹھ کر کھانا کھاتا ہے،ہم یہ اسلام کی تعلیم دیتے ہیں؟ اختلاف یہ نہیں کہ وُہ آخر میں کھانا کیوں ڈالتا ہے۔اصل بات یہ ہے ،ملازم جس اندازمیں کھانا لیتا ہے وہاں خودداری کا پہلو کمزوری کا شکار ہوتا ہے۔ ہم اُسکو اپنے ساتھ بٹھا کر کھانا کیوں نہیں کھلاتے؟ چلوں ساتھ نہ بٹھائے اُسکے حصہ کا کھانا ڈال کر اُس تک پہنچا تو سکتے ہیں۔پلیٹ پھیلائے لانا خودداری کو دفن کرتا ہے۔ سرکاری ملازمت میں گریڈ کے چکر نے انسان کی سوچ کو سرِکا کر سرکار ہی بنا ڈالا ہے۔جبکہ اسلامی تربیت کے ماحول میں دستر خوان پر نہ کوئی مالک ہے اور نہ کوئی ملازم۔آج بھی ایسے کھلے دِل کے افراد ہمارے معاشرے میں بیشمار ہیں۔جو کھانے کے دوران آقا و غلام کا فرق نہیں رکھتے بلکہ ایک ہی پلیٹ میں مل کر کھانا نوش فرماتے ہیں۔

یہ بات ایک دفتر کی حدتک نہیں،ملازمین سے لیکر آقا تک سب ہر روز کچھ نہ کچھ مانگ رہے ہیں، بھکاری کو دیکھےں، واسطے دے کر مانگ رہے ہیں۔ کیا آج اس قوم کی تربیت بھیک میں روپیہ مانگنا ہی ہے۔ شائید ضرورت روپیہ کی نہیں، روپیہ ضرورت ہے۔کیا یہ تربیت سکول کے اُساتذہ، ملک کے سیاستدانوں کی ہی رہ گئی ہے جو کہ والدین،خاندان، معاشرہ، محلہ اور ہمسایوں کی مشترکہ ذمہ داری بھی ہے۔

ایک گھر میں اگر وقتی طور پرچائے کےلیے اگر چینی یا چائے کی پتی ختم ہو جائے تو کسی دوسرے سے مانگنے کی بجائے مناسب ہے کہ اُسکے بغیر ہی گزارہ کر یں یا بازار سے خرید لیں۔ مگروُہ ایسی کسی تعاون کی درخواست آئے تو وُہ دینے سے انکار نہ کرے۔ یوں معاشرہ میں مانگنے کی عادت نہ رہے گی۔

ایک درویش کے ہاںیہ منظر تھاکہ اُنکا ضروریات زندگی کا سامان ایک گٹھری اور بنیادی طبی امدادسے زیادہ نہ تھا ، وُہ جہاں پہنچتے، عقیدت مند تحائف کے ساتھ آموجود ہوتے تھے۔وُہ کچھ تحائف رکھ لیتے اور بعد میں آنے والوں کو وُہ اُنکی ضرورت کے مطابق وُہ تحائف بانٹ دیتے۔ اکثر تو وُہ تحفہ لانے والے کو کہتے فلاں کو بلاﺅ، وُہ آتا تو کہتے، یہ اِسکو میری طرف سے دے دوں۔اُس درویش کا ایک خاص وصف یہ تھا کہ وُہ کسی کو خالی ہاتھ نہیں لوٹنے دیتا تھا۔ اُسی درویش نے ایک مرتبہ کسی کوکچھ یوں کہا تھا کہ”فقیر کبھی بھی کسی کا اُدھار نہیں رکھتا، کچھ نہیں تو کام کی بات بتا دیتا ہے۔“

یہ ملک پاکستان درویشوں نے مل کر بنایا، آج درویش ہمیں اپنی عملی زندگی سے خودداری کی عملی تربیت دینے میں مصروف عمل ہے۔

ہمیں اپنی ضد کو خوداری کا نام نہیں دینا چاہیے بلکہ اپنی انا کو ”میں “سے باہر رکھ کر خودداری سے فیصلے کرنے چاہیں۔
(فرخ نور)

Total Success is Determined by Your Thoughts, Beliefs and Actions

Many people say they want success, yet they are not willing to do what it takes to achieve their desired outcome. I am a believer in Total Success. Total Success requires more then a successful business and a great income. Total Success is about having a balanced life, giving back and enjoying what you do.

In order to achieve Total Success there are specific thoughts and beliefs you must have. There are also certain actions you must take.

Success in anything goes beyond the obvious. Although you need a certain amount of skill and knowledge, your successes will come from the way you think, feel and act, coupled with intense emotion and a steadfast belief in “self.”

To achieve Total Success you must set goals. Setting goals cannot be a hit and miss process. It has to be systematic, deliberate and the cornerstone of every other aspect of what you do in order to create a successful, abundant, happy, and balanced life. Goals are about gaining direction, clarity and vision.

Even though the concept of goal setting took a while for me to grasp, once I did, the difference in my ability to achieve the outcomes I desired was amazing. Initially I dabbled in the process. Over time, as with virtually every other component of my success, it became very systemized.

My success is directly proportionate to my willingness to set goals, write down my goals, review my goals and stay committed to my goals.

If you want what you say you do, you have to set goals. It’s not that difficult and the results will amaze you. Get a blank book. On each page write down your goals in a specific category and date it.

Not only should you write your goals down, you must review them morning and night. Write your primary goals on a 3 x 5 card to make the review time more targeted. Doing this will keep you on target with what you want.

When you focus on your goals by writing them down and reviewing them on a regular basis amazing events will begin to happen. You will be able to manifest what you want a lot quicker.

However, you must do more than write them down and read them. You have to be committed to the outcome. This means that if you want to get and stay healthy, you will have to make choices around what you eat and how often you exercise.

It is the same with your finances. If you want to increase your wealth you must make specific choices on how you spend and invest your money.

Think of every area of your life you want improvement in. Decide what you want and what you are willing to do to get it. Write your goals down, read them morning and night and take the appropriate actions to achieve your desired outcome.

With dedication and commitment you will be well on your way to Total Success.

Dr. Joe

Articles / Tutorials on lists, menus, navigations and tabs.

Articles / Tutorials on lists, menus, navigations and tabs.

  1. 11 CSS navigation menus : at Exploding Boy
  2. 12 more CSS Navigation Menus. : at Exploding Boy
  3. 14 Free Vertical CSS Menus : at Exploding Boy
  4. 2-level horizontal navigation : demo at Duoh
  5. Absolute Lists: Alternatives to Divs : An approach of using lists instead of divs at evolt
  6. Accessible Image-Tab Rollovers : demo at Simplebits
  7. ADxMenu : multiple menu examples at aPlus
  8. A drop-down theme : at CSS Play
  9. Bookend Lists: Using CSS to Float a Masthead : at WebSiteOptimization
  10. Bulletproof Slants : demo at Simplebits
  11. Centered Tabs with CSS : at 24ways
  12. Clickable Link Backgrounds : A bulletproof unordered list of links, each with a unique (purely decorative) left-aligned icon that is referenced with CSS ; but that is also clickable.
  13. Create a Teaser Thumbnail List Using CSS: Part 1 : lists of items made up of a title, short description, and thumbnail.
  14. Creating Indented Navigation Lists : A multi-level indented list
  15. Creating Multicolumn Lists : at Builder.com
  16. cssMenus – 4 Level Deep List Menu : at SolarDreamStudios
  17. CSS and Round Corners: Build Accessible Menu Tabs : at SitePoint
  18. CSS-Based Tabbed Menu : a simple tabbed menu.
  19. CSS-based Navigation : demo at Nundroo
  20. CSS: Double Lists : A single list that appears in two columns
  21. CSS Mini Tabs (the UN-tab, tab) : demo at Simplebits
  22. CSS only dropdown menu : at CSS Play
  23. CSS only flyout menus : at CSS Play
  24. CSS only flyout/dropdown menu : at CSS Play
  25. CSS only flyout menu with transparency : at CSS Play
  26. CSS only vertical sliding menu : at CSS Play
  27. CSS Swag: Multi-Column Lists : at A List Apart
  28. CSS Tabs : tabs without any images
  29. CSS Tabs : list of various tab solutions
  30. CSS tabs with Submenus : at Kalsey.
  31. dTree Navigation Menu : Javascripts Tree at Destroydrop
  32. Definition lists – misused or misunderstood? : appropriate uses of definition lists
  33. Do You Want To Do That With CSS? – Multiple Column Lists : multi-column lists.
  34. Drop-Down Menus, Horizontal Style : at A List Apart
  35. Float Mini tabs : at Web-Graphics
  36. Flowing a List Across Multiple Columns : A table without using tables.
  37. Free Menu Designs V 1.1 : ready-to-download block menusat e-lusion
  38. FreeStyle Menus : XHTML compliant, CSS-formatted menu script at TwinHelix
  39. Hidden tab menu : at CSS Play
  40. How to Style a Definition List with CSS : at WebReference
  41. How to Style an Unordered List with CSS : at WebReference
  42. How to Use CSS to Position Horizontal Unordered Lists : at WebReference
  43. Hybrid CSS Dropdowns : at a List Apart
  44. Inline Mini Tabs : at Web-Graphics
  45. Intelligent Menus : CSS and PHP menu at PhotoMatt.net
  46. Inverted Sliding Doors Tabs : at 456BereaStreet
  47. Light Weight Multi Level Menu : at CssCreator
  48. List Display Problems In Explorer For Windows : list hack for IE
  49. Listamatic : simple lists; various styles.
  50. Listamatic2 : nexted lists; various styles
  51. Menus galleries in CSS and XHTML : multiple examples and downloads at Alsacreations
  52. Mini-Tab Shapes : demo at Simplebits
  53. Mini-Tab Shapes 2 : demo at Simplebits
  54. More than Just Bullets : at W3.org
  55. Multiple Column Lists : at css-discuss
  56. A Navbar Using Lists : A lightweight nav bar at WestCiv
  57. Navigation Matrix Reloaded : at SuperfluousBanter
  58. Remote Control CSS : examples of lists styled differently
  59. Remote Control CSS Revisited – Caving in to peer pressure : multi-column remote control
  60. Rounding Tab Corners : by Eric A. Meyer.
  61. Simple CSS Tabs : at SilverOrange
  62. Simplified CSS Tabs : demo at Simplebits
  63. Sliding Doors : at A List Apart
  64. Spruced-Up Site Maps : sitemaps as lists
  65. Styling Nested List : at SimpleBits
  66. Suckerfish Dropdowns : at HTMLDog
  67. Tabtastic : Gavin Kistner.
  68. Tabs Tutorial at BrainJar
  69. Taming Lists : at A List Apart
  70. Turning a List into a Navigation Bar : at 456BereaStreet
  71. Ultimate css only dropdown menu : at CSS Play

Sadqa

Agar bachpun main hame koi chot lug jaati to dadi kehtiN: “Chalo achha huwa, bari musibat ka saqda huwa”.

Kiya ye sach hoga ke zindagi main darasl koi chota nuqsan is baat ka istaa’ra hota hai ke hamara koi bara nuqsan hone wala tha magar qudrat ne hamari bachat ker di!

zindagi har roz class lyti ha

bara dushwar hota ha, zara sa Faisla karna, K Zindagi ki kahani ko, Biyan-o-bazabnko, kaha sa yad rakhna ha, kaha se bhol jana ha, kisy kitna batana ha, ki say kitna chupana ha, kaha hans hans k rona ha, kaha ro ro k hansna ha, kaha awaz daini ha, kaha khamosh rehna ha, kaha rasta badalna ha, kaha sy lot ana ha. bara dushwar hota ha, zara sa faisla karna.

بڑا دشوار ہوتا ہے

ذرا سا فیصلہ کرنا

کہ جیون کی کہانی کو

بیانِ بے زبانی کو

کہاں سے یاد رکھنا ہے

کہاں سے بھول جانا ہے

اِسے کتنا بتانا ہے

اِسے کتنا چھپانا ہے

کہاں رو رو کے ہنسنا ہے

کہاں ہنس ہنس کے رونا ہے

کہاں آواز دینی ہے

کہاں خاموش رہنا ہے

کہاں رَستہ بدلنا ہے

کہاں سے لوَٹ آنا ہے

(سلیم کوثر)

Perceiving Reality

http://www.perceivingreality.com/

He who knows not and knows not he knows not, He is a fool – Shun him.
He who knows not and knows he knows not, He is simple – Teach him.
He who knows and knows not he knows, he is asleep – Awaken him.
He who knows and knows that he knows, He is wise – Follow him.

MAY BE THIS WORLD IS ANOTHER PLANET’S HELL.

Habib Jalib’s Mainay Uss Say Yeh Kaha

میں نے اس سے یہ کہا

یہ جو دس کروڑ ہیں

جہل کا نچوڑ ہیں

ان کی فکر سو گئی

ہر امید کی کرن

ظلمتوں میں کھو گئی

یہ خبر درست ہے

ان کی موت ہوگئی

بے شعور لوگ ہیں

زندگی کا روگ ہیں

اور تیرے پاس ہے

ان کے درد کی دوا

حبیب جالب کی یہ نظم کچھ حسبِ موقع لگی ہے۔

Become a Lie Detector

How to Detect Lies
Become a Lie Detector

Introduction to Detecting Lies:
The following techniques to telling if someone is lying are often used by police, and security experts. This knowledge is also useful for managers, employers, and for anyone to use in everyday situations where telling the truth from a lie can help prevent you from being a victim of fraud/scams and other deceptions.

Warning: Sometimes Ignorance is bliss; after gaining this knowledge, you may be hurt when it is obvious that someone is lying to you.

Signs of Deception:
Body Language of Lies:
• Physical expression will be limited and stiff, with few arm and hand movements. Hand, arm and leg movement are toward their own body the liar takes up less space.

• A person who is lying to you will avoid making eye contact.

• Hands touching their face, throat & mouth. Touching or scratching the nose or behind their ear. Not likely to touch his chest/heart with an open hand.

Emotional Gestures & Contradiction
• Timing and duration of emotional gestures and emotions are off a normal pace. The display of emotion is delayed, stays longer it would naturally, then stops suddenly.

• Timing is off between emotions gestures/expressions and words. Example: Someone says “I love it!” when receiving a gift, and then smile after making that statement, rather then at the same time the statement is made.

• Gestures/expressions don’t match the verbal statement, such as frowning when saying “I love you.”

• Expressions are limited to mouth movements when someone is faking emotions (like happy, surprised, sad, awe, )instead of the whole face. For example; when someone smiles naturally their whole face is involved: jaw/cheek movement, eyes and forehead push down, etc.

Interactions and Reactions
• A guilty person gets defensive. An innocent person will often go on the offensive.

• A liar is uncomfortable facing his questioner/accuser and may turn his head or body away.

• A liar might unconsciously place objects (book, coffee cup, etc.) between themselves and you.

Verbal Context and Content
• A liar will use your words to make answer a question. When asked, “Did you eat the last cookie?” The liar answers, “No, I did not eat the last cookie.”

•A statement with a contraction is more likely to be truthful: “ I didn’t do it” instead of “I did not do it”

• Liars sometimes avoid “lying” by not making direct statements. They imply answers instead of denying something directly.

• The guilty person may speak more than natural, adding unnecessary details to convince you… they are not comfortable with silence or pauses in the conversation.

• A liar may leave out pronouns and speak in a monotonous tone. When a truthful statement is made the pronoun is emphasized as much or more than the rest of the words in a statement.

• Words may be garbled and spoken softly, and syntax and grammar may be off. In other
words, his sentences will likely be muddled rather than emphasized.

Related Books:

Never be Lied to Again

Body Language
Other signs of a lie:
• If you believe someone is lying, then change subject of a conversation quickly, a liar follows along willingly and becomes more relaxed. The guilty wants the subject changed; an innocent person may be confused by the sudden change in topics and will want to back to the previous subject.

• Using humor or sarcasm to avoid a subject.

Final Notes:
Obviously, just because someone exhibits one or more of these signs does not make them a liar. The above behaviors should be compared to a persons base (normal) behavior whenever possible.

Most lie detecting experts agree that a combination of body language and other cues must be used to make an educated guess on whether someone is telling the truth or a lie.

forgiving and forgetting.

I would like to hear your opinion on forgiving and forgetting. When people hurt you: do you forgive and forget? Or do you just forgive but don’t forget?

People who tend to be seen as good – usually forgive and forget. But I don’t think that this is a question of being good or evil – I think the point is about being just. So maybe the tendency to forgive and forget those that have hurt us is not necessarily a good thing. Because if we don’t do anything to people that hurt us – they will probably continue on hurting others.

This is the way I see it and I would like to hear you about this subject and also your own experiences.

Muhabbat ki haqeeqat – II

muhabat aik afaqi jazba ha. is k beshumar roop hoty han. ik insan ki dosray insan se muhabat,dosto ki muhabat,behan bhai ki muhabat, ma baap ki muhabat, aulad ki muhabat, aur SAB SE BARH KAR MAKHLOOQ KI APNY KHALIQ SE MUHBBAT. ye sab muhabbaten han jo insan karta ha, karta rahy ga. Ghor karo to in me koi be-gharz nahi ha. insan kitna hi be-gharz ho, magar kisi dosray insan se muhabat karty huay mukamal tor par be-gharz nahi ho sakta.koi gharz na ho to tanhae door karny ki gharz to ha. Akyla to koi nahi reh sakta. insaan mashrati janwar ha. to taluq rakhny ki gharz to aik bari sachae ha. DOSTI KA BHI YAHI HAAL HA. koi HAM KHAYAL, jo acha b lagta ho. is se mil kar bat kar ky dil khush hota ha. Gharz to Hue na. aur ikhtilaf ho jaiey ,,,, sangeen nouyat ka ikhtilaf ho jiaiye to ADMI is dost ko chor dyta ha. koi aur dost talash kar lyta ha. Bhai dost se bari zarurat hota ha. Ak bohot apna, jo har kary waqt me sath rahy…. hamara dukh bantay… tasaali dy. Lakin aj kal bohot kamm bhai bhai hony ka farz pora karty han. aur muhabbat , ye to bohot mushkil se milti ha. ya milti hi nahi.
Maa baap se aulaad ki gharz hoti ha, bulkay is ki had nahi hoti. aadmi ko itna kuch milta ha maa baap se. wo in se muhabbat na kary to kia kary aur KHUDA ki MUHABBAT! wo to ha hi MOHTAAJ ki muhabbat jo wo is se karta ha, jo is ki har zarurat pori karta ha. wo maa baap se BARH KAR KHAYAL RAKHNY WALA HA. ZARURATEN PORI KARNY WALA HA. Bss MAA BAAP KI AULAD SE MUHABBAT SE SE MUKHTALIF HA. Magar nihayet be-gharz hony ka bawajood gharz se bilkul paak wo bhi nahi ha. BAAP ko aulad se aik masoom c gharz hoti ha k wo is ki nasal ko agay barhaiye ga, marnay k bad is k nam ko zinda rakhy . Haan maa ki muhabbat bilkul be-gharz ha, is ka bss chaly to aulaad ka har dukh khud ly ly aur usay dukh se mehfooz kar dy.

KHALIQ KI ALLAH KI MUHABBAT hi sab se khalis , sab se be-gharz aur baak muhabbat ha, kiun k isay kisi sy kuch nahi chahiyey. wo sab kuch banany wala ha har chez ka malik ha. koi usay kuch dy nai sakta, isay na hi zarurat ha. lakin humen us ki rehmat aur barkat ki zaruat ha.

Muhabbat admi ALLAH se kary ya is ki makhlooq se, wo ibadat hoti ha. shart ye ha k wo Paak mohabbat ho aur muhabbat karny wala har pal ye yaad rakhy k isay aur is k mehboob ko ALLAH ne banaya ha… Ehsaan kia. Aur yahi nahi, in k dilo me muhabbat b isi na daali, warna wo yek-ja nahi ho sakty thy. Ye to ALLAH ka ehsaan ha. Is KHAYAL K SATH MUHBBAT IBADAT HO GE. AUR IS K BAGHER HAWIS.

Ishq ka sheen by aleemul haq haqi

ALLAH PAR TAWAKAL