Web Design and Web Development

WEBSA is a web design company and web design firm that offers creative, professional and skilled web page design. Custom website designers and developers at our company focus on delivering our clients with customized and user-friendly designs. We are ready to promote your business.

http://www.websadubai.com/index.php

Advertisements

What keeps you awake at night?

“Am I honoring my purpose?”

“Am I in control of my life?”

“Is my career going in the right direction?”

“Do I have enough cash in the bank?”

“Am I doing enough for the people around me?”

Humsafar

Humsafar (Urduہم سَفر) is a Pakistani drama directed by Sarmad Sultan Khoosat, based on the novel (Humsafar) of the same name written by Farhat Ishtiaq. The story revolves around the trials and tribulations of a married couple, Ashar Hussain (Fawad Afzal Khan) and Khirad Ihsan (Mahira Khan), and the jealous forces that work to break them apart. The story of Humsafar (Novel) was laid out in retrospective manner and was mainly told in flashbacks. However the drama’s narrative is mostly linear. The drama airs on Hum TV and has gained a cult following globally and is critically acclaimed.[1]

 

Episodes 1-5

The drama’s first episode begins with a glimpse into the lives of the three main characters. Khirad Ihsan (Mahira Khan) lives in Hyderabad, Pakistan with her mother, Maimona Ihsan, a school teacher. They belong to a lower-middle class family. Maimona’s wealthy nephew, Ashar Hussain (Fawad Afzal Khan), is also introduced alongside his best friend (and maternal cousin), Sara Ajmal (Naveen Waqar). Unknown to Ashar, Sara is deeply in love with him. Both Ashar and Sara’s mothers, Farida (Atiqa Odho) and Zareena (Hina Khawaja Bayat), assume that Ashar will eventually propose to Sara since they have always been so close.

It is soon revealed that Maimona Ihsan is diagnosed with cancer and she requests her brother, Baseerat Hussain (Behroze Sabzwari), Ashar’s rich father, to help her in this dire time of need. Out of guilt for neglecting his sister’s welfare for so long, Baseerat decides promptly to bring Maimona and Khirad to his Karachi mansion and provide first class treatment for her cancer. However, the doctors state that there is no hope of saving Maimona’s life as her cancer has progressed to an advanced stage. Hearing this, Maimona becomes worried over what will happen to Khirad after she is gone, and she requests Baseerat to find a decent proposal for Khirad. Ridden with guilt, Baseerat decides to get Khirad married to Ashar.

Baseerat later conveys his desire to Ashar, his son is taken much aback as he has no plans of getting married to anyone at that moment, let alone a girl who seems like the exact opposite of him. After Ashar shares this news with Sara, she becomes very angry and heartbroken, revealing to Ashar that no one has any right over him since she has loved him all her life. Ashar strictly tells Sara that he does not share the feelings that Sara harbours for him; in his eyes, their relationship has always been limited to friendship. Sara promises Ashar that she will not let him ruin his life by marrying Khirad and she will not be rejected in favour of the “veiled and backwards” Khirad since she is better in every aspect (education, background etc.). However, Baseerat breaks down in front of his son, begging him to marry Khirad, as he believes that no one else could take better care of her.

Eventually, Ashar agrees to marry Khirad under his dad’s immense emotional pressure. Farida, who is extremely possessive about her son, feels neglected during the whole process and lashes out at Baseerat, begging him to think of his son’s welfare and reconsider the decision since Khirad and Ashar are such a mismatch. Baseerat threatens his wife with a divorce if she tries to come between Ashar and Khirad’s marriage. Meanwhile, Khirad is even more shocked than Ashar to hear about her proposed marriage to Ashar. Khirad decides to talk to Ashar but overhears Ashar conversation with a friend about her being backwards. Khirad who is revealed to be very egoistic is deeply hurt. Being her dying mother’s wish, Khirad has no choice but to agree to the wedding . Sara attempts suicide but is rescued in time. Ashar and Khirad are married in a rush (and with a simple Nikaah) due to Maimona’s failing health. She dies soon after, leaving Khirad very depressed and lonely. Ashar and Khirad begin their marriage on a very somber note, where both of them feel that they have been included into each others lives without consent and are being enforced on each other. None of them are happy about the union, however Ashar promises Khirad that he will try his best to make her feel comfortable and this marriage work even though he knows that it will take them a long period of time to come to an understanding. Khirad is deeply hurt by the fact that she has been forced into Ashar’s life and feels that her self-respect has been lost.

[]Episodes 6-10

Later on, however, they both begin falling in love with each other, and Ashar believes it is her innocence, simplicity, and purity of heart that attracts him to her, saying that she’s unlike any other girl he’s ever come across. Even as Sara pretends to befriend Khirad and humiliates her in front of her friends, Ashar rebukes Sara for her cruelty and tells Khirad that she is the most perfect, beautiful girl he could have ever asked for. He tells her that people normally like each other, love each other, and then marry. But with them, it was the opposite. He tells her he loves her, and she loves him too, and that he thanks God every day that he agreed to the wedding.

Soon, Baseerat becomes very sick, and while he’s in the hospital, he warns his son against hurting Khirad, saying that she’s very innocent by nature and doesn’t know the realities of this world or the people in it. He asks him to treat her with constant love and kindess and to always forgive her for anything she might ever do. Ashar, already in love with his new wife, agrees. Baseerat later dies in his sleep.

While Sara pretends to befriend Khirad, she falsely tells Khirad that Ashar makes fun of housewives by referring to them as “desperate housewives” in order to make her feel more embarrassed. Already well-educated with a BSC in physics and mathematics, Khirad decides to enroll in graduate studies to further her math skills in order to impress Ashar and reach more to his standards. There, she meets Khizar, Sara’s paternal cousin who has strong feelings towards Sara. Still, Sara expresses no feelings for Khizar and is still not over Ashar. When Khizar starts to come to Ashar and Khirad’s house, where he praises Khirad at how smart and beautiful she is, Ashar starts to get irritated and slightly jealous. Unbeknownst to Ashar, Khirad is pregnant and can’t wait to tell him this great news.

[]Episodes 11-20

Meanwhile, Farida, Zareena, and Sara come up with a plan to separate Khirad and her husband. Farida plans on paying large sums of money to Khizar for him to be able to study abroad as well as have him marry Sara if he can convince Ashar that he and Khirad are secretly engaged in an extramarital affair. Sara lies to Khizar by telling him that she’ll marry him when he returns from his abroad studying. The scheme goes into action (before Khirad could tell Ashar she was pregnant), and Ashar sees what falsely appears to be Khirad and Khizar alone in his apartment. He storms off angry. When Khirad later asks Farida why she did this, she responds that she would never allow a public school teacher’s daughter to be her daughter-in-law. She goes on to say that she raised Ashar in such a perfect way with his education and work and that she won’t allow him to waste it all on a lower-class woman. Khirad tries to protest and calls Khizar, who falsely keeps insisting that she is in an affair with him. However, Farida backs Khizar’s lies and kicks Khirad out of the house before Ashar has a chance to speak with her. Before leaving, she quickly manages to write a note for Ashar and leaves it with a servant. Although Ashar returns expecting to be able to speak with Khirad to hear her explanation, his mother lies and says that she and Khizar have already eloped together.

Heartbroken and alone, Khirad takes refuge at the house of her mother’s old friend, Batul Khala, in Hyderabad, Pakistan. Throughout her time there, she calls Ashar at his cell phone and his office, but he promptly hangs up whenever he finds out it is Khirad calling. Believing his mother’s story that Khirad eloped with Khizar, he says he no longer knows anyone named Khirad. After a few months, Khirad goes into labor and calls Ashar one last time. Again he hangs up, and she prematurely gives birth to a baby girl whom she names Hareem. While in the small clinic with her newborn baby, Khirad vows that even on the Day of Judgment in front of Allah, she won’t forgive Ashar for what he did. Her desperate attempts to reach out to Ashar have now turned to heartfelt anger and possibly hatred.

Four years pass and Khirad learns that her daughter is a patient of congenital heart disease, and needs immediate open heart surgery. Since she knows she will not be able to afford Hareem’s treatment, Khirad hesitantly pays a visit to her husband and tells him about the current situation. She comes back a changed woman, one with more power and anger than she had before. At first, he doesn’t react and refuses to help, but later, as he realizes his sudden love for the daughter he had never met, decides to treat Hareem. Ashar brings his wife and four-year-old child to his house, but does not reveal this to Sara, Farida, or Zareena. He bonds with Khirad and Hareem over time, though Khirad still thinks he is a weak and horrible husband as he did not believe/listen to her four years earlier. In addition, she states that she’s only there for her daughter’s treatment and no longer cares about being with Ashar, and it is because of this that she hasn’t told him the realities of what his mother did to her four years earlier.

When Sara finds out that her “enemy” has returned, she is outraged, and informs Farida. Farida quickly returns to Pakistan from a conference in the United States and explains to Khirad that she can easily throw her and her daughter back on the streets again. No longer afraid of her mother-in-law, Khirad tells her to do as she pleases, as she is only there for her daughter’s care and no longer cares for the Hussain family. She says, “I was afraid of you back when I actually wanted to be with your son…” As Hareem demands to see old pictures from their wedding, Ashar brings out an old box, which contains the note Khirad left for Ashar four years earlier as she was being thrown out of the house. He doesn’t see it right away, however.

Khizar returns from his studies abroad and demands Farida fulfill her promise of marrying him to Sara. Sara, angered by his return, refuses, but Farida insists she go through with it since Khizar threatens to tell Ashar the truth of what happened four years ago.

Meanwhile, Hareem’s surgery takes place and is successful. Seeing how much he loves his daughter, Khirad decides to leave Hareem with Ashar as he can provide for her better. Ashar, on the other hand, has (again) developed feelings for his wife and decides to forgive her for her former affair (he still doesn’t know that it was a well-played lie). So far, Khirad tells Ashar that she is leaving and leaving Hareem with him, but Ashar says that he has forgiven her (although, actually, he loves her), and he asks her to stay.

[]Episodes 21-onwards

Khizar returns to Pakistan and visits Farida. He demands her to give an answer to his marriage request for Sara within two days or else he’ll “destroy” her with everything he knows. Meanwhile, Ashar finds Khizar leaving his home, and when he confronts his mother as to why he was there, Farida responds by saying, “He wants for you and Khirad to get a divorce…” Ashar is seen visibly shaking with anger and sadness at this false revelation.

Sara continues to spiral down with her depression, saying that she can never get over Ashar due to her strong love and that she can never forget Khirad due to her strong hatred for her.

Ashar takes Khirad from the hospital (where Hareem is still recovering) to the seaside of Karachi and pours out his feelings to her. Still unaware of her innocence, he asks how she can walk around without feeling any kind of shame for what she did. He then says that he loves her just as he did four years ago and that he can’t remove her from his heart. He begs her to stay, if not for him then for Hareem. Khirad, seemingly untouched by his emotional speech, rejects his offer and, when pressed, will not tell him her reasoning. She says she only cares about Hareem’s health and happiness now and wants nothing else from this world, not even Ashar. She tells him she’s leaving Hareem with him so she can have a better life.

In a promo for the next episode, it shows Ashar finding a note Khirad left for him, implying that she’s already left for Hyderabad, leaving Hareem at Ashar’s home for good. Later on, he finds the note Khirad left nearly four years ago when she was being thrown out of the house by her mother-in-law. He is seen confronting Khizar for his lie and going into an emotional breakdown, realizing for the first time how innocent Khirad was in everything and how he refused to believe her for so long.

Changes from the novel

-In the novel, Sarah is a very limited character and is never close to Ashar and nor is his best friend or works with him. Sara’s role in the drama was expanded to a main character. Hareem was the portagonist; however in the drama she had a minor role and does not appears until episode 15.

-In the novel, Ashar and Khirad have a proper wedding ceremony and a grand reception after Maimoona’s mourning period has passed. In the drama, Ashar and Khirad never have a proper wedding, instead they have a simple nikkah ceremony and soon afterwards Maimoona dies. There is no mention of a wedding nor a reception (Walima). However, in episode 19 when Hareem requests to see the wedding pictures it is never explained where the pictures of the wedding came from if the two events never occurred or weren’t mentioned.

-Khirad and Maimoona reside in Nawabshah in the novel however; the drama’s location is changed to Hyderabad.

-Khizar in the novel is never in love with sara but to another girl, named Mehreen and never comes back from America.

-In the drama it is never explained how or where Hareem has seen Ashars picture or why she suddenly becomes so attached to her father even though she has never met him before. In the novel, it was explained by the heart necklace that Khirad is wearing when she is kicked out of the house which contains a picture of ashar (a birthday gift Ashar bestows on Khirad). When Khirad takes the necklace out after four years before her move to Karachi, Hareem becomes interested in the picture and Khirad explains to Hareem that it is her father who loves her a lot but lives in a different city and will bring her loads of toys and dolls. Khirad does not want to instigate a bad image of Ashar in Hareems mind at such an early age. She also gives the necklace to Hareem to keep, so can learn what her father’s image looks like.

-Ashar does not bring Hareem and Khirad back to his house in Karachi (like it is shown in the drama) but rents a separate apartment for them in the novel.

-The Drama’s end was changed significantly from the novel, as in the novel the only confrontation that occurs is between Ashar and Farida before it’s concluded.

 

Soundtrack

The theme song Woh Humsafar Tha was composed by Waqar Ali and sung by Qurratulain Baloch, and was written by Naseer Turabi. The lines of the song are frequently used during the course of the show.

In certain parts of the show, a track from Dexter, “Blood Theme” composed by Daniel Licht is played. However, there’s no mention of credits in this regard.

Gates of Happiness are Open

“For you see, each day I love you moreToday more than yesterday and less than tomorrow.”~ Rosemonde Gerard

“You rose into my life like a promised sunrise, brightening my days with the light in your eyes. I’ve never been so strong. Now I’m where I belong.”~ Maya Angelou

“Love is the master key that opens the gates of happiness.”~ Oliver Wendell Holmes

“In the arithmetic of love, one plus one equals everything, and two minus one equals nothing.”~ Mignon McLaughlin

When you realize you want to spend the rest of your life with somebody, you want the rest of your life to start as soon as possible.  ~Nora Ephron, When Harry Met Sally

s

 

گھر میں کتے پالنا جدید سائنسی معلومات کی روشنی میں

نبی رحمت  صلی اللہ علیہ وسلم نے بلا ضرورت گھر میں کتے پالنے کی ممانعت فرمائی ہے۔مگر کس قدردکھ کی بات ہے کہ یورپ کی تقلید میں ہمارے ہاں بھی امیر گھرانوں میں کتوں سے کھیلنا اور شوقیہ طور پر گھروں پر پالنا ایک فیشن اور سٹیٹس سمبل بنتا جارہاہے ۔پچھلے دنوں پاکستانی چینلز پر ایک موبائل کمپنی کی جانب سے ایک ایڈ دی جارہی تھی، جس میں ایک معصوم بچی ایم ایس ایم کے ذریعے اپنے والد سے کتے کے ایک بچے کو گھر میں لانے کی فرمائش کرتی ہے۔اسلام میں کتے رکھنابالکل ہی منع نہیں کیاگیا ہے بلکہ اس کی محدود اجازت بھی دی گئی ہے چناچہ جو کتے کسی ضرورت سے پالے جائیں مثلاً شکاری کتے یا کھیت اور مویشیوں وغیرہ کی حفاظت کرنے والے کتے تو وہ اس حکم سے مستثنیٰ ہیں ۔
مشاہدے کی بات ہے کہ لوگ کتوں پر تو خوب خرچ کرتے ہیں لیکن انسان کی اولادپر خرچ کرنے میں بخل سے کام لیتے ہیں اورمغرب میں توایسے بھی لوگ ہیں جو مرتے وقت اپنی جائیداد کتوں کے نام وقف کردیتے ہیں جبکہ وہ اپنے اقرباسے بے رخی برتتے ہیں اور اپنے پڑوسی اوربھائی کو بھول جاتے ہیں ۔مسلمان کے گھر میں اگر کتا ہوتو اس بات کا احتمال رہتاہے کہ وہ برتنوں وغیرہ کوچاٹ کر نجس بنا کر رکھ دے۔
نبی  صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
”جب کتا کسی کے برتن میں منہ ڈالے تو اسے چاہیے کہ برتن کو سات مرتبہ دھوئے ۔ان میں سے ایک مرتبہ مٹی لگا کر دھولے۔” (صحیح بخاری)
ایک اور حدیث میں نبی  صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
” میرے پاس جبریل  تشریف لائے اور کہا : گزشتہ شب میں آیا تھا لیکن گھر میں داخل نہ ہونے کی وجہ یہ تھی کہ دروازہ پر مجسمہ تھا اور گھر میں تصویروں والا پردہ تھا اور گھر میں کتا بھی تھا۔لہذا جو مجسمہ گھر میں ہے اس کا سر آپ اس طرح کٹوادیجئے کہ وہ درخت کی شکل میں رہ جائے اور پردہ پھاڑ کر تکیے بنالیجئے جن کو پامال کیا جائے اور کتے کو گھر سے باہر نکلوادیجئے۔(سنن ابی داؤد)
صحیح بخاری اور صحیح مسلم کی ایک اور حدیث میں رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی درج ذیل الفاظ میں مذکور ہے۔
” جو شخص کتا پالتا ہے اس کا اجر روزانہ ایک قیراط کم ہوجاتاہے الا یہ کہ شکار یا کھیتی یا مویشیوں کے لیے پالا جائے ۔” ان احادیث کی رو سے گھر میں کتا پالنے کی ممانعت واضح الفا ظ میں موجود ہے مگر اس ممانعت کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم کتوں کے ساتھ سنگدلانہ برتاؤ کریں اور ان کو ختم کردیاجائے۔کیونکہ سنن ابی داؤدکی ایک حدیث میں نبی مہرباں  صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشا د گرامی موجود ہے کہ
” اگر کتے بھی ایک امت نہ ہوتے تو میں انہیں قتل کرنے کا حکم دیتا ”۔
چناچہ کتوں کے متعلق اسلامی احکامات بیان کرنے کے بعد یہ مناسب معلوم ہوتاہے کہ کتوں کے گھر میں پالنے کے بارے میں جدید سائنسی معلومات سے بھی عوام الناس کو آگاہ کردیاجائے جس سے جہاں ایک عام مسلمان کااپنے دین پر ایمان مضبو ط ہوگا وہیں ایک غیر مسلم کے دل میں بھی دین اسلام کے بر حق ہونے کے بارے میں ایک مثبت فکر پیدا ہوگی۔انشاء اللہ
علامہ یوسف القرضاوی نے ان سائنسی معلومات کو اپنی کتا ب ”اسلام میں حلال وحرام ”میں ایک جرمن اسکالر سے قلمبند کیا ہے ، اس کا یہ مضمون ایک جرمن رسالے میں شائع ہوا تھا۔اس مضمون میں ان اہم خطرات کو بیان کیا گیا ہے جو کتے کو پالنے یا ا س کے قریب رہنے کی صورت میں لاحق ہوتے ہیں۔چناچہ وہ لکھتا ہے :
گزشتہ چند برسوںمیں لوگوں کے اندر کتا پالنے کا شوق کافی بڑھ گیا ہے،جس کے پیش نظر ضرورت محسوس ہوتی ہے کہ لوگوں کی توجہ ان خطرات کی طرف مبذول کرائی جائے جو اس سے پیدا ہوتے ہیں خصوصاً جبکہ لوگ کتا پالنے ہی پر اکتفا نہیں کرتے بلکہ اس کے ساتھ خوش طبعی بھی کرنے لگتے ہیں اور اس کو چومتے بھی ہیں،نیز اس کو اس طرح چھوڑ دیا جاتا ہے کہ وہ چھوٹوں اوربڑوں کے ہاتھ چاٹ لے۔اکثر ایسا ہوتا ہے کہ بچا ہوا کھانا کتوں کے آگے اپنے کھانے کی پلیٹوں میں رکھ دیاجاتاہے ۔علاوہ ازیں یہ عادتیں ایسی معیوب ہیں کہ ذوق سلیم ان کو قبول نہیں کرتا اور یہ شائستگی کے خلاف ہیں ۔مزید برآں یہ صحت ونظافت کے اصول کے بھی منافی ہے۔
طبی نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو کتے کو پالنے اوراس کے ساتھ خوش طبعی کرنے سے جو خطرات انسان کی صحت اور اس کی زندگی کو لاحق ہوتے ہیں ان کو معمولی خیال کرنا صحیح نہیں ہے ۔بہت سے لوگوں کو اپنی نادانی کی بھاری قیمت اد اکرنی پڑی ہے ۔اس کی وجہ یہ ہے کہ کتوں کے جسم پر ایسے جراثیم ہوتے ہیں جو دائمی اور لاعلاج امراض کا سبب بنتے ہیں بلکہ کتنے ہی لوگ اس مرض میں مبتلا ہوکر اپنی جان سے ہاتھ دو چکے ہیں۔اس جرثومہ کی شکل فیتہ کی ہوتی ہے اوریہ انسان کے جسم پر پھنسی کی شکل میں ظاہر ہوتے ہیں۔گو اس قسم کے جراثیم مویشیوں اور خاص طورسے سؤروں کے جسم پر بھی پائے جاتے ہیں لیکن نشوونما کی پوری صلاحیت رکھنے والے جراثیم صرف کتوں پر ہوتے ہیں۔
یہ جراثیم گیدڑ اور بھیڑئیے کے جسم پر بھی ہوتے ہیں لیکن بلیوں کے جسم پر شاذ ہی ہوتے ہیں ۔یہ جراثیم دوسرے فیتہ والے جراثیم سے مختلف ہوتے ہیں اور اتنے باریک ہوتے ہیں کہ دکھائی دینا مشکل ہے ،ان کے بارے میں گزشتہ چند سالوں ہی میں کچھ معلومات ہوسکی ہیں۔”
مقالہ نگا ر آگے لکھتاہے :
” یہ جراثیم انسان کے جسم میں داخل ہوتے ہیں اور وہاںمختلف شکلوںمیں ظاہر ہوتے ہیں ۔یہ اکثر پھیپھڑے ، عضلات ،تلی ،گردہ اور سر کے اندرونی حصہ میں داخل ہوتے ہیں ۔ان کی شکل بہت کچھ بدل جاتی ہے،یہاں تک کہ خصوصی ماہرین کے لیے بھی ان کی شناخت مشکل ہو جاتی ہے۔بہرحال اس سے جو زخم پیدا ہوتاہے خواہ جسم کے کسی حصہ میں پیداہو ،صحت کے لیے سخت مضر ہے ۔ان جراثیم کا علاج اب تک دریافت نہیں کیاجاسکا ہے ۔ان وجوہ سے ضروری ہے کہ ہم تمام ممکنہ وسائل کے ساتھ اس لا علاج بیماری کا مقابلہ کریں اور انسان کو اس کے خطرات سے بچائیں۔
جرمن ڈاکٹر نوللر کا بیان ہے کہ کتے کے جراثیم سے انسان پر جو زخم ابھر آتے ہیں ان کی تعداد ایک فی صد سے کسی طرح کم نہیں ہے اور بعض ممالک میں تو بارہ فیصد تک اس میں مبتلا پائے جاتے ہیں…….اس مرض کا مقابلہ کرنے کی بہترین صورت یہ ہے کہ ان جراثیم کو کتوں تک ہی رہنے دیاجائے اورانہیں پھیلنے نہ دیاجائے……..
اگر انسان اپنی صحت کو محفوظ اور اپنی زندگی کو باقی رکھنا چاہتا ہے تو اسے کتوں کے ساتھ خوش طبعی نہیں کرناچاہیے ، انہیں قریب آنے سے روکناچاہیے ،بچوں کو ان کے ساتھ گھل مل جانے سے بازرکھناچاہیے۔کتوں کوہاتھ چاٹنے کے لیے نہیں چھوڑ دیناچاہیے اورنہ ان کو بچوں کے کھیل کود اورتفریح کے مقامات میں رہنے اور وہاں گندگی پھیلانے کا موقع دیناچاہیے ۔لیکن بڑے افسوس کے ساتھ کہنا پڑتاہے کہ کتوں کی بڑی تعداد بچوں کی ورزش گاہوں میں پائی جاتی ہے……
اسی طرح ان کے کھانے کے برتن الگ ہونے چاہئیں۔انسان اپنے کھانے کے لیے جو پلیٹیں وغیرہ استعمال کرتاہے ان کو کتوں کے آگے چاٹنے کے لیے نہ ڈال دیاجائے۔غرضیکہ پوری احتیاط سے کام لے کر ان کو کھانے پینے کی تمام چیزوں سے دور رکھا جائے”۔
قارئین کرام سے گزار ش ہے کہ وہ ان معلومات کو بغور پڑھیں اور پھر ان کا موازنہ نبی مہرباں ،آقائے دوجہاں  صلی اللہ علیہ وسلمکے ان فرمودات کے ساتھ ملاحظہ فرمائیں کہ جن میں آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے گھر میں کتے پالنے سے منع فرمایا ہے۔مقام غور ہے کہ کیا اس زمانے میں کوئی جدید لیبارٹری موجود تھی کہ جہاں سے حاصل ہونے والی معلومات کی بناء پر آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے صحابہ کرام  کو ان باتوں کی تلقین فرمائی ؟۔یقیناایسی بات نہیں تھی ،تو پھر ان نصیحتوں کا مأخذکیاتھا؟ہمارا ایمان ہے کہ وہ مأخذ !رب ذوالجلال کی ذات بابرکات ہے ۔اس کاثبوت قرآن مجید کی سورة النجم کی اس آیتِ مبارکہ میں ملتاہے :کہ ” وہ (رسول اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم)اپنی خواہش ِ نفس سے نہیں بولتا ۔یہ تو ایک وحی ہے جو اس کی طرف کی جاتی ہے ۔”اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں قرآن و حدیث کو سمجھنے ،ان پر ایمان رکھنے اور ان کے مطابق عمل کرنے کی توفیق عطافرمائے۔ آمین
موٴلف ۔ طارق اقبال سوہدروی ۔  جدہ ۔ سعودی عرب

اٹلی and UAE (تہذیب کا دائرہ)

اٹلی:منی سکرٹ پر پابندی کی تجویز

ٹلی کے ساحلی شہر کیسٹلامارے ڈی سٹیبیا کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ وہ عوامی مقامات پر منی سکرٹ اور اس جیسے دیگر نیم عریاں ملبوسات پہننے پر پابندی عائد کرنے کے بارے میں سوچ رہی ہے۔

اگر یہ پابندی عائد ہو جاتی ہے تو یہ شہر ان شہروں کی فہرست میں شامل ہو جائے گا جنہوں نے عوامی مقامات کو تہذیب کے دائرے میں رکھنے کے لیے اقدامات کیے ہیں۔

کیسٹلامارے ڈی سٹیبیا کے میئر کا کہنا ہے کہ منی سکرٹ اور چھوٹے چھوٹے کپڑے پہننے کی ممانعت کی خلاف ورزی کرنے والے پر پینتیس ڈالر سے لے کر چھ سو چھیانوے ڈالر تک کا جرمانہ عائد ہوگا۔

شہر کے میئر کی نئی پالیسی ہے ’غیر مناسب کپڑوں کی اجازت نہیں‘۔ میئر کا کہنا ہے کہ وہ اس قانون سے ان لوگوں کو ہدف بنانا چاہتے ہیں جو ’ہنگامہ پرور ہوں یا جن کو معاشی طور طریقے میں رہنا نہیں آتا‘۔

پیر کے روز اس پابندی پر ووٹنگ ہوگی۔ نئے قانون کے تحت غسلِ آفتابی، عوامی مقامات پر فٹ بال کھیلنے اور مذہب کی توہین کرنے پر بھی پابندی ہوگی۔

مقامی پادری کا کہنا ہے ’میرے خیال میں یہ اچھا فیصلہ ہے۔ اس فیصلے سے بڑھتی ہوئی جنسی زیادتیوں پر بھی قابو پایا جا سکے گا‘۔

اس شہر سے قبل کئی شہروں میں ریت سے بنائے جانے والے گھروندوں اور گاڑی میں بوس و کنار جیسے عمل کو ممنوع قرار دیا ہے

 

italy Gov is 1000 times better then UAE regarding this…atleast they think to implement this law in there country……..

Shame on UAE Gov (muslims k naam par kaala dhabba)

heart and head

Creating a joint venture between head and heart puts a power pack behind your goals. Getting your head in sync with your heart and harnessing the power of coherence gives you the energy efficiency you need to achieve changes that haven’t been possible before. The head can notice what things need to change, but the heart provides the power and direction to actually bring about the changes….

 

 
We wait all these years to find someone who understands us, I thought, someone who accepts us as we are, someone with a wizard’s power to melt stone to sunlight, who can bring us happiness in spite of trials, who can face our dragons in the night, who can transform us into the soul we choose to be. Just yesterday I found that magical Someone is the face we see in the mirror: It’s us and our homemade masks.

نفرت نہیں، محبت

نفرت نہیں، محبت

ہم اپنی زندگی میں نہ جانے کتنی نفرتیں پالتے ہیں۔ محبت بکھیرنے کی بجائے ، فاصلے بکھیڑتے ہیں۔ نفرت نے سوچ کو محدود کیا، رائے و تحقیق کو تعصب کی نگاہ بخشی۔ زندگی کی گوناگونی میں متناقص و متناقض بے چینی پیدا کی۔ ژرف نگاری کے نام پر ضرب کاری ہونے لگی۔ پیدائش کا نطفہ بخیلی سے جنم لینے لگا۔ اسلام کے نام پر کرخت مزاجی بھڑکنے لگی۔

ہم آئے روزمنفی و تخریبی موضوعات پر تحاریرلکھتے ہیں۔اِن منفی موضوعات کومثبت انداز میں تنقید کی نکتہ چینی کی بجائے ؛ اصلاحی رنگ دے سکتے ہیں۔ ہم نفرت پہ تو بات کرتے ہیں۔ اگر نفرت کی ضد محبت سے بات کرے تو ہمارے اذہان و قلوب میں خوب صورت کیفیات ہی مرتب ہو سکتی ہے۔

آج ہمارا ادیب بھی کچھ ایسا ہی ہے۔ اُس کو معاشرہ کی فحش گوئی بیان کرنے کے لیے اب طوائفہ سے معشوقہ کی تلاش ہونے لگی۔ سکینڈل بیان کرتے کرتے معاشرہ کو سکینڈل زدہ بنا دیا۔ کاش! کو ئی ادیب تعمیری سوچ کے ساتھ معاشرہ میں تعمیر بخشے۔ شاعر کی شاعری برہنہ گوئی رہ گئی۔ مقصد و خیال رخصت ہو چکے۔

ہمیں آج تعمیری سوچ کی ضرورت ہے۔ جاہلانہ اذہان دوسروں کی آپسی ملاقاتوں سے بھی بُرا تصور اخذکرتے ہیں۔ شاکی اذہان میں سازش ، بد نگاہوں سے برائی، متلون مزاجی سے وسواس قلوب میں جنم لیتے ہیں۔نہ جانے نفرتیں کہاں کہاں پنپ رہی ہیں۔

لاﺅتزے نے تاﺅ تے چنگ میں فرمایا تھا۔” جب دُنیا جانتی ہے؛ خوبصورتی جیسے خوبصورتی ہے، بدصورتی اُبھرتی ہے،جب جانتے ہیں، اچھائی اچھائی ہے، برائی بڑھتی ہے“

مینیشس نے کہا تھا،” برائی کی موجودگی اچھائی کی شان ہے۔ برائی کی ضد اچھائی ہے۔ یہ ایک دوسرے سے بندھی ہے۔برائی کی کایا اچھائی میں پلٹ سکتی ہے۔ برائی کیا ہے؟ ایک وقت میں تو وُہ ہے،مگر بعدکے کسی دور میں وُہ اچھائی ہوسکتی ہے کسی اور کے لیے۔“

مذاہب محبت کی بات کرتے ہیں۔ عبادت گاہیں محبت کی مرکز ہیں مگر آج فرقوں کے نام پر نفرتیں بٹ رہی ہیں۔ گیتا، جپ جی صاحب، سُکھ منی صاحب، ادی گرنتھ صاحب،تاﺅتے چنگ محبت ہی کی تعلیم دے رہی ہیں۔ یہ اخلاقی تعلیمات کے لازوال شاہکارہیں۔ہر مذہب میں جھوٹ، شراب، جوائ، زنا، جھوٹی گواہی کی پابندیاں عائد ہیں۔ ان سے انحراف معاشرہ میں نفرت کا جنم ہے۔

ناکام معاشرے اپنی خامیوں کی پردہ پوشی کرتے ہیں، دوسروں کی خوبیوں کی عیب جوئی فرماتے ہیں,۔تنگ نظر اذہان تنگ نظری کی بات کرتے ہیں۔ کچھ لوگ خو د کو راجپوت، سید اور اعوان کہلانے پر فخر کرتے ہیں۔دوسروں کو اپنی احساس کمتری کے باعث کمی کمین کہتے ہیں۔ بھئی فخر کرنے کے لیے ویسے اعمال بھی ہونے چاہیے۔ راجپوت اپنی خودداری، وطن پرستی اور غیرت کی روایات کی پاسداری کرتے تھے ۔کٹھن حالات میں’ جوہر ‘ کی رسم ادا کرتے تھے۔ جب راجپوت اپنا دفاع ناکام ہوتا دیکھتے تو عورتیں بچوں سمیت آگ میں کود پڑتیں تاکہ بے حرمتی کی ذلت سے بچ سکیں۔یوںمرد اپنے گھر بار کی فکر سے آزاد ہوکرآخر دم تک لڑتے ہوئے ؛ وطن کے تحفظ پر جان قربان کر تے تھے۔ دشمن کی فتح تب ہوتی، جب کوئی راجپوت باقی نہ رہتا۔ رانااودے سنگھ، رانا پرتاب سنگھ نے مغل عہد میںراجپوت خودداری کو قائم رکھا۔سید اور اعوان خود کوحضرت علی رضی اللہ عنہ کی اُولاد ہونے پر ناز کرتے ہیں۔ شان تویہ ہیں؛جب اعمال و کردار حضرت علی رضی اللہ عنہ کے نقش قدم کے مطابق ہو۔ ورنہ حضرت علی رضی اللہ عنہ کا نام سن کر سر شرمندگی سے جھک جائے۔لوگ خود کو سردار، نواب ، راجگان ،ملک،بیگ، خان، رانا، چوہدری اور قاضی وغیرہ کے ناموں سے متعارف کرواتے ہیں۔ ایسے تاریخی سرکاری عہدوں اور القابات کا قبیلہ سے کوئی تعلق نہیں۔ کیا ہم میں کوئی ایسی خصوصیت ہے کہ ہمیں آج کی سرکار کوئی رتبہ عنائیت فرمائے۔ جب ہم میں ایسی کوئی خاصیت نہیں تو ہم ترقی پانے والے لوگوں کے کم ذات ہونے پر تبصرہ کیوں کرتے ہیں ؟ دراصل ہم اپنی احساس کمتری کو احساس برتری سے چھپانے کی ناکام کوشش کرتے ہیں۔ غالب کا مصرع ہے:

دِل کو خوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

محبت بانٹنے سے بڑھتی ہے اور نفرت سمیٹنے سے پھیلتی ہے۔ نفرتیں مت سمیٹوں۔تعصب کی عینک اُتار کر دیکھو تو سوچ کی وسعت خوب پھیلے گی ۔ ورنہ بند گلی کے بند راہی بنو گے۔

زندگی کا حسن محبت، نعمتِ خداوندی مسکراہٹ ہے۔ بندوں سے تعصب، دِل میں خدا کی محبت کو بھی دور کرتا ہے۔ اللہ سے محبت اللہ کے بندوں سے محبت ہے۔

میرے ذہن میں ایک سوال بچپن سے اُمڈتا ہے۔ اسلام خوش اخلاقی کی عملی تربیت دیتا ہے۔ ہمارے بیشتر مذہبی نمائندگان یا وُہ افراد جو مذہبی جھکاﺅ زیادہ رکھتے ہیں۔ دِن بدن اُنکے مزاج میں کرختگی اور برداشت کی کمی کیوں واقع ہوتی جا رہی ہے؟ اپنے گروہ کے سواءکسی اور کو سلام کرنا گوارہ کیوں نہیں کرتے۔ غیر مذہبی افراد کے ساتھ بیٹھ کر کھانا کھا تو سکتے ہیں۔ مگر مسلمان بھائی کے ساتھ بیٹھنا کیوں گوارہ نہیں؟ یہ وُہ عملی مناظر ہے، جس نے آج کے نوجوان کوپریشان کیاہے۔

برصغیر میں مسلمانوں کی آمد اور شاہجہانی دور کی عظمت ایک دِن یا عرصہ کی بات نہیں،یہ صدیوں کے تاریخی تسلسل میں نکلنے والی کونپل تھی، جسکی خوشبو میں نفرت کی بدبو گھٹتی گئی اور محبت پھیلی۔ اردو میل ملاپوں میں آسودہ ہوئی۔ علاقائی تعصبات سے آلودہ ہوئی۔پاکستان میں معاشرتی زندگی کا جو تصور تحریک آزادی میں پیش کیا گیا تھا۔ مذہبی آزادی و رواداری تھا۔ آج مسلکی بنیادوں پر نفرتیں سرائیت کر چکی۔ اے اللہ! ہمیں ایسی تحقیق سے محروم فرما، جس میں ہم تاریخ ِ اسلام کی عالیٰ مرتبت بزرگان کے مسلک کی تلاش کریں۔ ہمیںمسلک کی بنیاد پر نفرت سے بچا۔

مجھے کبھی کبھی افسوس ہوتا ہے۔ غیر جانبدارانہ رویہ بھی موت کا سبب بنتا ہے۔ابن رشد نے یونانی تراجم یونانی رو سے کیے تو ملحد ہوکر خارج الاسلام قرار دیا گیا۔ شہزادہ دارالشّکوہ نے سکینة الاولیاءاور سفینة الاولیاءایام جوانی میں تحریر فرما کر بڑا نام پایا۔ مگر ہندی تراجم ہندوﺅانہ روح سے کرکے مرتد قرار دیکر واجب القتل ٹھہرا اور سولی پر چڑھایا گیا۔ شائید ہر دور کا ارسطو زہر کا پیالہ پینے کو ترجیح دیتا ہے۔ اُس زمانے میں افلاطون نے شہر چھوڑا تھا۔ آج لوگ خاموش ہوگئے ہیں۔

یہ نفرتیں ہی ہیں۔ جنھوں نے ہماری زندگی میں تنہائیاں ہی جنم دی ہیں۔ خوشی اور غمی کے جذبات سے عاری معاشرہ پنپ رہا ہے۔ ہمیں سوچنا ہے ہم اپنی نسل کو کیا منتقل کر رہے ہیں!

ہماری عیدین گزرتی ہیں۔ذرا سوچئے! آپ کتنی خوشیاں بکھیرتے ہیں؟ کتنے چہروں پر مسکراہٹ لاتے ہیں؟کسقدر رخنہ زدہ بندھنوں کو اِک لڑی میں پروتے ہیں؟ کیا عید کے روز ماتھا پہ شکن، گفتگو میں گالم گلوچ، دِل میں بغض، حسد، کینہ اور رویوں میں نفرت ہونی چاہیے؟ عید کے روز خلاف مزاج بات پر سخت الفاظ منہ سے نکالنا بھی میرے خیال میں عید کی توہین ہے۔

کیا ہم سال میں صرف عیدین کے دو ایاّم کو اپنے رویہ سے خوبصورت نہیں بنا سکتے ،جہاں صرف محبت ہی محبت آپ سے مِل رہی ہو؟ معاشرہ کا ردّعمل جو بھی ہو، عید کے روز خود کو محبت کو عملی نمونہ بنائے۔

عید کے روز میرے ایس -ایم-ایس پہ پریشان مت ہوا کریں۔ میں آپ سب سے بھی خوشی بانٹ رہا ہوتا ہوں۔ میں عیدین پر اپنے ہزاروں چاہنے اور جاننے والوں کو نیک تمناﺅں کا پیغام بھیجتا ہوں اور رہونگا۔ لہذا! آپ نہ تو تذبذب کا شکار ہو اور نہ شک میں پڑیں۔ کیونکہ محبت کو شک کھا جاتا ہے۔

(فرخ نور)

مشکل الفاظ کے معنی

گوناگونی : ورائٹی، مختلف اقسام

متناقص: نقص رکھنے والا، ناقص، نامکمل

متناقض: مخالف، برعکس، اُلٹا، خلاف

زندگی سے موت بہتر ہے

: دنیا کے مصائب و آلام سے بیزار ہو کر موت کی تمنا کرنا اوراپنے لئے موت کی دعا کرنا مکروہ تحریمی ہے ۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مصیبتوں کے سبب موت کی آرزو کرنے سے منع فرمایا ہے ۔ صحیح بخاری شریف میں حدیث پاک ہے :
عن أنس بن مالك رضى الله عنه قال النبى صلى الله عليه وسلم « لا يتمنين أحدكم الموت من ضر أصابه ، فإن كان لا بد فاعلا فليقل اللهم أحينى ما كانت الحياة خيرا لى ، وتوفنى إذا كانت الوفاة خيرا لى »
حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ،حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا: تم میں کوئی کسی مصیبت کی وجہ سے ہرگز موت کی آرزو نہ کرے اگر وہ موت کی خواہش ہی رکھتا ہے تو یہ دعا کرے
’’ اللَّهُمَّ أَحْيِنِى مَا كَانَتِ الْحَيَاةُ خَيْرًا لِى ، وَتَوَفَّنِى إِذَا كَانَتِ الْوَفَاةُ خَيْرًا لِى
ترجمہ :‘‘ اے اللہ تو مجھ کو حیات عطا فرما جب تک زندگی میرے حق میں بہتر ہو اور مجھکو موت عطاء فرما جب وفات میرے لئے بہتر ہو۔
﴿ صحیح بخاری شریف ،باب تمنی المریض الموت ،حدیث نمبر:5671﴾
اگر گناہوں کی کثرت ہو جائے ،فتنے امنڈنے لگیں اور مصیبت میں پڑنے کا خوف ہو تو اپنے دین کو بچانے اور فتنوں سے خلاصی پانے کیلئے موت کی تمنا کرسکتا ہے جیساکہ سنن ترمذی شریف میں حدیث شریف ہے :
عن أبى هريرة قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ……فبطن الأرض خير لكم من ظهرها ۔
ترجمہ:حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ……( ایسے زمانہ میں ) زمین کا اندرونی حصہ تمہارے لئے زمین کے بیرونی حصہ سے بہتر ہے۔ ﴿ جامع ترمذی شریف ،حدیث نمبر:2435﴾
الغرض دنیا کے خوف سے موت کی تمنا نہیں کرنا چاہئے ۔

در مختار ج 5 ص 297 میں ہے:
( یکرہ تمنی الموت ) لغضب او ضیق عیش ( الا لخوف الوقوع فی معصیۃ ) ای فیکرہ لخوف الدنیا لا الدین لحدیث فبطن الارض خیرلکم من ظھرھا
اور رد المحتار ‘‘ میں ہے
’’ فی صحیح مسلم « لا يتمنين أحدكم الموت لضر نزل به فإن كان لا بد متمنيا فليقل اللهم أحينى ما كانت الحياة خيرا لى وتوفنى إذا كانت الوفاة خيرا لى ». ﴿ مسلم شریف ،باب كراهة تمنى الموت لضر نزل به،حدیث نمبر:6990﴾
واللہ اعلم بالصواب –
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
نائب شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر

مسلمان ہونا کوئی مشکل امر نہیں مگر مسلمان بن کر حدود شرع کی پاسداری کرتے ہوئے زندگی گزارنا دشوار ہے اور صحیح معنوں میں مسلمان وہی ہے جو شرعی احکام و مسائل پر سختی سے کاربند ہو کر کتاب زندگی کی اوراق گردانی کرے۔

لرزشِ زباں

یوں تو زبان بہت سی چھوٹی سی اور گوشت پوست کی بنی ہوئی ہوتی ہے لیکن اس کے کام بہت بڑے ہوتے ہیں۔ دانتوں اور زبان کی آپس میں کچھ زیادہ اچھی دوستی نہیں ہے۔ زبان نے دانتوں سے کہا۔ “جب تم کوئی بد مزا چیز چباتے ہو تو مجھے ذائقہ برداشت کرنا پڑتا پے۔“ تو دانتوں نے جواب دیا۔ “اور جب تم ذرا سی غلط بولتی ہو تو گھونسے ہم پر برسائے جاتے ہیں۔“

زبان ایک ہونے کے باوجود بتیس پر حاوی ہے تو طے یہ پایا کہ زبان چھوٹی ہونے کے باوجود زبردست قوت کی حامل ہے۔ شخصیت کی پہچان اس وقت تک نہیں ہوتی جب تک کہ وہ زبان نہ کھولے۔ زبان کھولنے سے کچھ اس قسم کی بات ذہن میں آتی ہے، جیسے فریج کھولنا، کمرے کا دروازہ کھولنا وغیرہ وغیرہ۔

مستورات کی پہچان کرنا کوئی خاص مشکل کام نہیں ہےکیونکہ آپ انہیں خاموش کروانے کی لاکھ کوشش کریں لیکن وہ اپنی پہچان کروا کر ہی رہیں گی۔ ان کی زبان ہر وقت نان اسٹاپ چلتی ہے۔ نہ جانے سوتے میں کس طرح رک جاتی ہے۔ ذرا سوچئے کہ اگر رات جیسی نعمت نہ ہوتی تو کیا ہوتا؟ اگر کبھی “مقابلہ زبان درازی“ کروایا جائے تو بلاشبہ خواتین پہلی تین پوزیشنز بلا مقابلہ حاصل کر لیں گی۔ خواتین کی زبان اتنی دراز ہوتی ہے کہ اکثر اوقات منہ سے باہر لٹک رہی ہوتی ہے۔ چوپایوں کی زبان باہر لٹک رہی ہوتی ہے کیونکہ انہوں نے گھاس کھانی ہوتی ہے۔ لمبی زبان کا ایک فائدہ تو یہ ہے کہ انسان گھاس کھا سکتا ہے اور گھاس کھانے کی وجہ سے عقل آتی ہے۔ چونکہ مرد حضرات گھاس نہیں کھاتے اس لئے ان میں عقل کی کمی ہوتی ہے۔ اکثر لمبی زبان والے چوپایوں کو ذبح کر دیا جاتا ہے، صرف اور صرف زبان کی وجہ سے۔ ذبح شدہ جانور کی زبان بھی سوا لاکھ کی ہوتی ہے۔ زبان نقشے بھی بنوانی ہے، اس کی ذرا سی جنبش سے چہرے کا نقشہ ہی بدل جاتا ہے۔ ویسے تو یہ کام بیوٹی پالرز بھی کر رہے ہیں لیکن زبان کے چھوڑے ہوئے اثرات عرصہ دراز تک چہرے پر رہتے ہیں۔

زبانیں مختلف قسم کی ہوتی ہیں۔ اردو، انگلش، فارسی و عربی وغیرہ۔ جب کسی دوسرے ملک جانا ہو تو سب سے بڑا مسئلہ زبان کا ہی درپیش آتا ہے۔ کیونکہ دونوں کی زبان ایک نہیں ہوتی، ایک ہو بھی کیسے سکتی ہے؟ جب دو افراد ہوں گے تو زبانیں بھی دو ہوں گی۔ ہر شخص کے منہ میں اپنی زبان ہوتی ہے۔ جب دو زبانیں ہوں گی تو دشنام طرازیاں بھی ہوں گی لیکن اس کے باوجود چہرے کا نقشہ وہی رہے گا۔ ہماری قومی زبان اردو ہے لیکن اردو بولتے ہوئے ہماری زبانیں گنگ ہو جاتی ہیں۔ ہمیں صرف فرنگی کی زبان پسند ہے اور اگر کوئی اردو بولے تو اس کی زبان پکڑ لی جاتی ہے اور جو زبانیں پکڑنے کے قابل نہیں ہوتیں، انہیں کاٹ دیا جاتا ہے۔ کٹنے سے بچاؤ کے لیے زبان کو لگام دے دینا چاہیے۔ چند حضرات زبان سے پھر جاتے ہیں۔ “پھر جانا“ بالکل اسی طرح لگتا ہے، جس طرح پھر آنا، پھر کھانا، پھر پینا وغیرہ۔۔۔۔۔کوئی زبان سے پھر پھر جاتا ہے تو اسے پھر جانے دیجئے، اس لحاظ سے بچے بہت اچھے ہوتے ہیں۔ بچے چونکہ کم بولتے ہیں، اس لئے معصوم کہلاتے ہیں۔ یہی بچے جب بڑے ہو کر زبان چلاتے ہیں تو بد تمیز اور نافرمان جیسے القابات سے نوازے جاتے ہیں۔ خواتین ٹین ایج میں بیس و پچیس سال رہنا پسند کرتی ہیں تاکہ معصوم کہلائیں۔

کہا جاتا ہے کہ “پہلے تولو پھر بولو“ ارے صاحب! اب ہم ہر بات کہنے سے پہلے اپنا چہرہ ترازو کے پلڑے میں تو نہیں رکھ سکتے نا۔۔۔! اسی لئے تولے بغیر ہی بول دیتے ہیں۔ بعد میں معلوم ہوتا ہے کہ جو کچھ بول دیا ہے، وہ بہت بھاری ہے اور اس وزن کو زبان پر نہیں لانا چاہیے تھا۔ اب زبان پر جو کچھ آیا ہے، وہ زبان زدوعام تو ہو گا اور کیوں نہ ہو، یہ کوئی زبانی جمع خرچ تھوڑا ہی ہے، یہ تو وہ بات ہے جو تحت زبان ہی رہتی تو اچھا تھا لیکن کیا کیجئے اس زبان کا جو پھسلتی ہے تو پھر پھسلتی ہی چلی جاتی ہے۔

اللہ تعالٰی نے زبان میں ہڈی نہیں رکھی۔ یہ دیکھنے میں جس قدر نرم معلوم ہوتی ہے۔ اس کے افعال اسی قدر سخت ہیں۔ اس کی کاٹ تلوار سے بھی زیادہ ہے۔ تلوار کا زخم تو کبھی نہ کبھی بھر ہی جاتا ہے لیکن اس کا لگایا ہوا زخم کبھی نہیں بھرتا۔ کوشش کیجئے گا آپ کی تلوار سے کوئی زخم نہ لگ جائے۔

زبردست ماورا ویسے یہ بھی لکھ دو کہ کس نے کہاں لکھا ہے تو لطف دوبالا ہو جائے

عورت

“بسم اللہ الرحمٰن الرحیم۔

روح القدوس نے اپنے نور سے ایک روح کو جدا کیا اور اسکو خوبصورت کی صفات دی۔
اللہ تعالیٰ نے اس روح کو خوش اسلوب اور رحم دلی کی برکت دی۔

پھر اس روح کو خوشی کا پیالہ عطا کیااور فرمایا۔’اس پیالہ سے اسوقت تک مت پینا جب تک کہ تم ماضی اور مستقبل کو نہ بھول جاؤ۔

وقتِ حال کی خوشی کے سوا کویئ خوشی نہیں۔

‘ پھر اللہ تعالیٰ اس روح کوغم کا پیالہ دیا اور فرمایا ‘ ا گر اس پیالے سے پیو تو چند روزا خوشی اور مستقیل غم ہوگا۔

تب روح القدوس نے عورت کو ایسی محبت دی جس کو وہ دنیاوی دل جوئ کے خاطر ، وہ کھودئے گی۔ اور جھوٹی تعریفوں کی وجہ سے اپنی لطافت اور نرمی کو چھوڑ دے گی۔

اللہ نے عورت کو جنت سے عقل مندی عطا کی تاکہ وہ صحیح راستہ پر چلے۔ اس کے دل کی گہرائیوں میں ایک آنکھ رکھی جو کے نہ دیکھی ہوئ چیزوں کو دیکھ سکے اور اس کو ہر چیز سے الفت اور ا چھایئ کی خوبی دی۔

روح القدوس نے اس کو امید کا لباس پہنایاجس کو جنت کے فرشتوں نے قوس و قزح سے بنایا اور اسکو پریشانی دماغ کا جامہ پہنا یا جو کہ زندگی کی صبح اور روشنی ہے۔

اس کے بعداللہ تعالی نے غصہ کی آگ سے جہالت کے ریگستان کی خشک ہوا اور نفس پرستی کے سمندر کے کناروںکی چاقو کی طرح تیز ریت اورکُھردری ، مددتوں پرانی زمین کی مٹی کو ملا کر آدمی بنایا۔

اللہ تعالی نے مرد کوایسا اندھی قوت دیئی جواسکو دیوانا بنادتی ہے اور وہ اس خواہش تکمیل کیلئے وہ موت کے منہ میں بھی چلا جاتا ہے۔

خلیل جبران   “مرد کوبہت ریاعت حاصل ہے” ۔

” لیکن اللہ تعالی نے ہم عورتوں کو عقل مندی، گہری سمجھ ، الفت و اچھایئ اور امید بخشی ہے۔

میرے منتخب اقوال،پختون کی بیٹی – باب دوئم سے۔ . سید تفسیر احمد

پختون کی بیٹی
, سید تفسیر احمد, باب دوئم۔ اجتماع

1۔ خواب
2۔ تشخیص
3۔ تعمیل کا منصوبہ
4۔ سوچ ایک طریقہ ہے
5۔ خواہش
6۔ یقین و ایمان
7۔ آٹوسجیشن
8۔ تعلیمِ خصوصی
9۔ تصور
10۔ منظم منصوبہ بندی
11۔ ارادۂِ مصمم اور فیصلہ
12۔ ثابت قدم
13۔ ماسٹرمائنڈ
14۔ کامیابی کے اصول۔ ایک نظرِ ثانی

میرے منتخب اقوال،پختون کی بیٹی – باب دوئم سے۔

جوکھوں اور عزیمت کے ارادوں میں وہی لوگ کامیاب ہوتے ہیں جو اپنی کشتی کوجلادیتے ہیں۔اس کشتی کو جلانے کے عمل سے دماغ کو روحانی کیفیت ملتی ہے یہ کیفیت جیتنے کی چاہت پیدا کرتی ہے جوکہ کامیابی کے لیے بہت ضروری ہے۔

یقین و ایمان

“ایمان تم کو جنت میں لے جاۓگا اور ایمانِ کامل جنت کو تمہارے پاس لاۓ گا”۔

یقینِ کامل دماغ کا کیمیاگر ہے۔ جب یقینِ کامل اورسوچ کی آمیزش ہوتی ہے۔ تو تحت الشعور ان کے مضطرب ہونے کو محسوس کر لیتا ہے اور اس کو روحانی برابری میں تبدیل کر دیتا ہے۔اور اس کو لا محدود حکمت میں منتقل کردیتا ہے۔ جس طرح کہ عملِ دعا ہے۔
تمام جذبات جو انسان کو فائدہ پہنچاتے ہیں ان میں یقین، لگن اور ہم آغوشئ جذبات سب سے ذیادہ طاقتور ہیں۔ جب یہ تین ملتے ہیں تو خیالات کو اس طرح رنگ دیتے ہیں کہ خیالات ایک دم سے تحت الشعور میں پہنچ کر لامحدود حکمت سے جواب لاتے ہیں۔ ایمان ایک ایسی دماغی کیفیت ہے جو کہ لامحدود حکمت کو جواب دینے کی ترغیب دیتی ہے”۔

ایمان ایک ایسا جذبہ ہے جس کو ایک ایسی دماغ اغرق ہو نے کی کیفیت کہہ سکتے ہیں جو ہم اظہار حلقی کے دہرانے سے پیدا کرسکتے ہیں”۔

سوچ کا جذباتی حصہ (ایمان و یقین) ، سوچ کو زندگی بخشتا ہے اور اس پرعمل کرنے پر اکساتا ہے۔یقین اور لگن کے جذبات یکجا ہوکرسوچ کو بہت بڑی قوت بنا دیتے ہیں۔

آٹوسجیشن
کسی چیز کو حاصل کرنے میں کامیابی کا پہلااصول اس چیز کی زبردست خواہش اور دوسرا اصول اپنی کامیابی کا یقین ہونا ہے۔

ک۔ اللہ تعالٰی نے ہر انسان کوایک دماغ دیا ہے“۔

۔ ” لیکن دماغ کو علمِ نفسیات میں کاموں کے لحاظ سے تین حصوں میں بانٹاگیا ہے۔

شعور، تحت الشعور اور لا شعور“۔

” تو ہم ان دماغ کے مختلف حصوں کو کس طرح اپنی کامیابی لیے استعمال کرتے ہیں؟“

اراد ہِ مصمم اور فیصلہ

کامیاب لوگوں کی سب سے بڑی خصوصیت یہ ہے کہ وہ جب کسی کام کرنے کا ارادہ کرتے ہیں تو بلا تؤقف فیصلہ کرتے ہیں۔اور جب فیصلہ کرلیں تو اس فیصلہ کو تبدیل کرنے میں وقت لیتے ہیں۔

جب تم نے اپنی قابلیت کے مطابق فیصلہ کرلیا تو دوسروں کی راۓ سے متاثر ہو کر فیصلہ تبدیل مت کرو۔

دنیا کو پہلے دکھاؤ کہ تم کیا کرنا چاہتے ہو اور پھر بتاؤ۔

فیصلہ کی قیمت کا انحصار جرات پر ہے۔ دنیا کے وہ فیصلے جن سے تہذیب کی بنیادیں رکھی گئیں، ان فیصلوں کے نتائج کو حاصل کرنے میں جانیں تک خطرے میں تھیں۔

سقراط پر جب یہ دباؤ ڈالا گیا کہ اگر اس نے اپنے خیالات نہ بدلے اور جمہوریت کی باتیں کرتا رہا تو اس کو زہر پی کر مرنا پڑے گا۔ سقراط نے اپنے خیالات نہیں بدلے اور اس کو زہر کا پیالہ دیا گیا۔

ظلم سے آزادی کی خواہش آزادی لاۓ گی۔

” سوچ + مقرر مقصد + قائم مزاجی + شدیدخواہش = کامیابئ مکمل”سعدیہ نے جواب دیا۔

آٹوسجیشن کا استعمال ان خیالوں جن کو آپ شدت سے چاہتے ہیں، شعور سے تحت الشعور میں رضاکارانہ طور پر پہہنچا دیتا ہے“

خواہش ِ < — شدت < — شدیدخواہش
(شعور) < — (آٹوسجیشن) < — (تحت الشعور)

تعلیمِ خصوصی

” ایک تعلیم کا حصول ، دوسرے تعلیم کا سمجھنا ، اور تیسرے تعلیم کا استعمال۔ جب تک آپ تعلیم کو استعمال نہ کریں تعلیم پوری نہیں ہوتی

” تعلیم صرف ایک صورتِ امکانی ہے۔ یہ اُس وقت ایک قوت بنتی ہے جب اس کو مقصد کے حصول کے لیے منظم کیا جاتا ہے ا ور اس کا رُخ مقرر خاتمہ کی طرف کیا جاۓ۔سینکڑوں لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ اگر کوئ شخص اسکول نہ جاۓ تو وہ تعلیم یا فتہ نہیں ہے۔ ایجوکیشن ایک اٹالین لفظ ’ ایڈوکو‘ سے بنی ہے۔ جس کے معنی ’ اندر سےابھرنا ، انکشاف کرنا ‘۔ ضروری نہیں کہ تعلیم یافتہ شخص وہ ہو جس کے پاس تعلیم عامہ یا تعلیم مخصوصہ کی بہتاب ہے، تعلیم یافتہ شخص وہ ہے جس نے اپنے ذہن کو تربیت دی ہے۔ تعلیم یافتہ شخص کسی کا حق مارے بغیر ہر اس چیز کو حاصل کرلیتا ہے جو اس کو پسند ہے“۔

تصور

” انسان ہر وہ چیز کرسکتا ہے جس کو وہ سوچ سکتا ہے“۔

منظم منصوبہ بندی

ہر چیز جو انسان بناتا ہے یا حاصل کرتا ہے وہ خواہش سے شروع ہوتی ہے“۔

خواہش کا پہلا قدم عدمِ وجود سے وجود میں تبدیل ہونا ، قوت متصورہ کے کارخانہ میں ہوتا ہے۔جہاں پر اس کی تبدلی کی منصوبہ بندی کی جاتی ہے۔

دنیا میں دو طرح کے لوگ ہوتے ہیں۔قائداورمعتقد۔ کچھ لوگ قائد بنتے ہیں کیوں کہ ان میں دلیری ، ضبط ، انصاف پسندی ، ا ستقلال، منصوبہ ، محنت پسندی ، خوش گوار شخصیت ، ہمدردی اور پکی سمجھ ، تفصیل کا مہارت ، ذمہ داری اور مل کر کام کرنے کی صفات ہو تی ہیں۔ معتقد لوگ ، قائد کا کہا مانتے ہیں۔ معتقد ہونا کوئ بری بات نہیں۔ بہت دفعہ ایک قائد، معتقد میں سے ہی بنتا ہے۔

وہ قائد ، اپنے مقصد میں کا میاب نہیں ہوتے ہیں جوکام کی تفصیل سے بھاگتے ہیں اور صرف وہ کام کرنا چاہتے ہیں جو ان کی حیثیت کے برابر ہو، چھوٹا کام کرنا نہیں پسند کرتے۔ وہ اپنی تمام قابلیت، یعنی اپنی تعلیم کے مطابق صلہ مانگتے ہیں اپنے کام کے مطابق نہیں۔جومتقدوں سے مقابلہ کرتے ہوۓ گھبراتے ہیں۔ جن میں صورت متخیلہ نہیں ہوتی اور خود غرضی کا شکار ہوتے ہیں۔

منظم منصوبہ بندی کے اصول

1۔ جتنے ساتھیوں کی اپنے منصوبہ پر عمل کرنے کے لیے ضرورت ہے ان کو اپنے مہتممِ دماغ علم یا ماسٹر مائنڈ کا پارٹنر بنالیں۔

2۔ تمام شرکاء اور شریکِ کار کو پتہ ہو نا چاہیے کہ اس شرکت میں ان کی کیا ذمہ داری ہے۔

3۔ جب تک کہ منصوبہ مکمل نہ ہوجاۓ، تمام شرکاء اور شریکِ کارکو کم از کم ہفتہ میں دو دفعہ ملنا چاہیے۔

4۔ جب تک کہ منصوبہ مکمل نہ ہوجاۓ تمام شرکاء اور شریکِ کار کو میل اور اتفاق سے رہنا چاہیے۔

.ماسٹرمائنڈ

” علم ایک طاقت ہے“۔اباجان نے کہا۔ کامیابی کے لیے طاقتِ علم کا ہونا ضروری ہے“

” منصوبے بغیر معقول طاقتِ علم کے غیرمؤثراور بے کار ہیں اور ان کو عمل میں تبدیل نہیں کیاجاسکتا“۔

” دما غی قوت ، یہاں ایک منظم اوردانش مند علم کو مسئلۂ مرکوز پر توجہ کرنے کے معنی میں استمعال کی گئ ہے“۔

علم کے حاصل کرنے کے تین ذرائع ہیں۔

ایک ۔ لا محدود قابلیت۔

دو ۔ جمع کیا ہوا علم، پبلک لائبریری، پبلک سکول اور کالج۔

تین ۔ تجربات اور تحقیقات، سائنس اور تمام دنیاوی چیزوں میں انسان ہر وقت جمع کرتا ہے، باترتیب رکھتا ہے اور ہرروز مرتب کرتا ہے“۔

علم کوان ذرائع سے حاصل کر کے منصوبۂ مقرر میں مننظم کرنا اور پھر منصوبوں کو عمل میں تبدیل کرنا، دماغ کی طاقتِ علم ہے۔
اگر منصوبہ وسیع ہے تو آپ کو دوسرے لوگوں کے دماغ کی طاقتِ علم کی مدد کی ضرورت گی“۔

” جب دو یا دو سے ذیادہ لوگ ایک مقرر اور مخصوص مقصد کو حاصل کر نے کے لیے علم کی ہم آہنگی کرتے ہیں تو وہ ماسٹرمائنڈ کہلاتے ہیں“۔

اولیا اور انبیاٴ علیہ السلام کی نصیحتیں.

  • کم بولنا حکمت ہے ، کم کھانا صحت ، کم سونا عبادت ، اور عوام سے کم ملنا عافیت ہے ۔.حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہُ. ،
  • بےکاربولنے سے منہ بند رکھنا بھتر ہے۔شيخ سعدي شيرازي
  • جہاں تک ہو سکے لوگوں سے دور رہ، تاکہ تیرا دل سلامت اور نفس پاکیزا رہے.  حضرت لقمان علیہ السلام.
  • زیادہ سنو اور کم بولو۔ .  حضرت لقمان علیہ السلام.

  • کثیرا فہم اور کم سخن بنا رہ، اور حالت خاموشی میں بے  فکر مت رہ۔ .  حضرت لقمان علیہ السلام.
  • دوسروں کے عیب پوشیدہ رکھ  تاکہ خدا تیرے عیب بھی پوشیدہرکھے. حضرت خواجہ سراالدین۔
  • جو شخص خاموش رہتا ہے، وہ بہت دانا ہے، کیوں کہ کثرت کلام سے کچھ نہ کچھ گناہ سر ذد ہو جاتے ہیں۔ حضرت سلیمان
  • زبان سے بری بات نہ کرو، کان سے برے الفاظ نہ سنو،  آنکھوں سے بری چیزیں نہیں دیکھو,  ہاتھ سے بری چیزیں نہیں چھوٴو, پیر سے بری جگہ نہیں جاو, ور دل سے اللہ کو یاد کرو۔ حضرت ابو بکر
  • خاموشی نعمت ہے، درگزر جہاد ہے،غریب پروری زاراہ ہے۔ . حضرت خواجہ محمد اسد ہاشمی۔
  • جب راستہ چلو ،تو دائیں بائیں نہیں جھانکا کرو۔  نظر ہمیشہ نیچےاور  سامنے رکھو۔۔ حضرت امام ابو حنیفہ رحمت اللہ علیہ
  • بازاوں میں زیادہ نہ پھرو، نہ چلتےچلتے راستے میں کوئی چیز کھاو۔ حضرت امام ابو حنیفہ رحمت اللہ علیہ۔
  • زبان کی حفاضت کرو،کیوں کہ یہ ایک بہرین خصلت ہے۔ حضرت عائشہ صدیقہ  رضی اللہ عنہُ
  • اچھے لوگوں کی صحبت اخیار کرو، اس سے تمھارے اعمال اچھے ہو جاہیں گے۔ ابن جوزی رحمت اللہ علیہ
  • برے لوگوں کی صحبت نیک لوگوں سے بدگمانی پیدا کرتی ہے، جب کہ  نیک لوگوں کی صحبت برے لوگوں کیلیئے بھی نیک گمان پیدا کرتی ہے. حضرت  بشر حائی.

خودداری

غیرت نہ تو خودی ہے نہ ہی انائ، غیرت تو ایک جذبہ ہے جو قوموں کی حمیت کو برقرار رکھتا ہے، نہ کہ قوموں کو بے قرار، یہ ایسا جذبہ ہے کہ اگر قوموں میں بے قراری آجائے توجراری کی تاریخیں رقم ہوجایاکرتی ہے۔

معاشرہ میں ہائی جیک ہوئے جذبوں میں سے ایک خوبصورت جذبہ” غیرت“ ہے۔جب غیرت قوموں میں سے رخصت ہوجائے تو وُہ قومیں اقوام میں شمار نہیں ہوا کرتی۔ بلکہ اُن کا شمارکسی بھی مرتبہ میں نہیں رہتا۔ یہ بات صرف اقوام کی حد تک نہیں ہمارا معاشرہ بھی یہی ہمیں سمجھاتا ہے۔ ہمارے رشتوں میں ؛جو رشتے ہاتھ پھیلاتے رہتے ہیں، وُہ رشتے رشتہ داری میں شمار نہیں کیے جاتے۔اکثر اُنھیں اچھوت کی طرح سمجھا جانے لگتا ہے۔اللہ کسی کو بھی ہاتھ پھیلانے پر مجبور نہ کرے۔ جب انسان کا وزن نہ رہے تو اُسکی بات کا بھی وزن نہیں رہتا، جسکا جہاز ڈوب جائے لوگ اُسی کا ساتھ چھوڑ جاتے ہیں۔خوددار قومیں اپناوزن غیرت سے برقرار رکھتی ہیں۔تبھی خوددار قومیں مر جاتی ہیں مگر اپنی غیرت کا سودا نہیں کیا کرتیں۔ بہت سے قبائل کاایک مقولہ رہا:”سر کٹوا سکتے ہیںمگر جھک نہیں سکتے ”

ایک فلمی کہانی کچھ یوں تھی: ایک جاگیر دار غریب کسانوں سے زمین خریدنے کی کوشش کرتا ہے مگر کوئی کسان بھی اُسکی بات خاطر میں نہیںلاتا، ایک رات وُہ تمام کھلیانوں میں پکی فصل کوآگ لگواتا ہے۔اگلی ہی صبح جاگیر دار اظہار ہمدردی میں مددکوآتا ہے ۔ بغیر کسی شرط کے گندم ، چاول، دال کی بوریاں بطورخوراک مدد دیتا ہے،و ُہ ایک سال تک ایسے ہی امدادی خوراک دیتا ہے ، کچھ عرصہ بعد معمولی سے سود پربحالیئِ امدادکا قرض دیتا ہے،اس عرصہ کے دوران، وُ ہ گاﺅں والوں میں شراب اور جواءکی لَت ڈالتا ہے، پھراُن خوددار گاﺅں والوں کو کام کے عادی سے کام چوری کی عادت پڑتی ہے۔ تمام گاﺅں جاگیردار کی جوتیاںچاٹنے کےلیے سب کچھ کرنے کو تیار ہوتا ہے۔ وُہ اپنی عورتوں کو قحبہ خانہ کی نظر کرتے ہیں۔ آخر اُنکی تمام زمینیں قرض وسود کے عوض جاگیردار باآسانی ہتھیا تا ہے۔ماضی کے غیرت مند وُہ گاﺅں والے نشے میں دھت ہیں یا کچھ اپنی بے بسی پر کراہتے ہیں اور کسی مسیحا کے انتظار میں وقت بیتانے لگتے ہیں۔

اسلام میں ہے کہ ایک دوسرے کی مدد کرو، یوں مدد کرو کہ کسی کو محسوس بھی نہ ہونے پائے،مقصد یہ ہے کہ مدد بھی ہوجائے اور کسی کی خوداری کو ٹھیس بھی نہ پہنچ پائے۔

غیرت یہ نہیں کہ غیرت کے نام پر قتل کیا جائے،غیرت تو یہ ہے کہ اپنی خوداری کا قتل نہ کرے۔ایسی خود سوزی سے موت کو گلے لگا لینا زیادہ بہتر ہے۔

غیرت ہے کیا؟ اپنے حق پر کسی کو ڈاکا نہ ڈالنے دینا اور کسی سے اُسکا حق چھیننا گوارہ نہ کرنا۔ اپنی حد میں رہتے ہوئے، پورے شان اور وقار سے زندگی دوسروں کے لیے بسر کرنا۔ کسی بھی حال میں دوسرے کے مال پر نظر نہ رکھنا اور اپنے مال میں سے ضرورت مندوںمیں تقسیم کرتے رہنا۔ ہاتھ پھیلانے کی بجائے ، خدا کے حضور سر کٹوا لینا کو ترجیح دینا۔فقیرانہ حالت میں بھی شاہانہ انداز سے زندگی بسر کرنا ہی خودار اقوام کا طرز زندگی ہے۔خوددار افراد کسی بھی صورت اپنا اُدھار باقی نہیں رکھتے۔ وُہ فوراً ہی کچھ نہ کچھ ادا کر کے معاملہ ہی چکا دیتے ہیں۔

ہمارے خطہ کا شمار غیور اور خودار اقوام میں ہوتا رہا ہے؟سکندراعظم کے حملہ سے موجودہ دور تک خودداری کی انمول مثالیں تاریخ بنی۔ ابراہیم لودھی اور مرہٹہ ؛عوام پرمظالم کے باوجود غیرت مند شکست خوردہ شخصیات ہیں۔ٹیپوسلطانؒ، نواب سراج الدولہؒ،سید احمد شہیدؒ کی سوانح حیات خودداری کی علمبردار رہی۔ برصغیرمیں رسول پاکﷺ کی شان میں گستاخی کرنے والے سات شاتم رسولوں کو سات عظیم شہداء(غازی علم دین شہیدؒ، غازی عبدالقیوم شہیدؒ، غازی محمد صدیق شہیدؒ، غازی عبداللہ شاہ شہیدؒ، غازی عبد الرّشید شہیدؒ،غازی میاں محمد شہیدؒ، غازی مرید حسین شہیدؒ)نے محبت رسول ﷺمیں جہنم واصل کیا۔

معاشرتی رسم و رواج میں بیٹی کو غیر گھر میں بیا ہ دینے کے بعد، وہاں سے پانی نہ پینا ،غیر اور دشمن کے مہمان کو بھی اپنا مہمان سمجھ کر بھرپور مہمان نوازی کرنا،کسی بھی انجان کی پکار پر لبیک کہنا، کسی کی جاہ وجلال کے آگے جھکنے کی بجائے اپنے اصولوں پر ڈٹ کر فیصلہ کرنا ہی اس خطہ کی روایات رہی ہیں۔

قائد اعظم ایک خوددار رہنماتھے، اُنھوں نے قوم کو بھی خودداری کی تعلیم دی، جبکہ کہا جاتا ہے کہ گاندھی کی پالیسی انا پرستی کی حد تک رہی۔ اقبال کی خودی میں ہم قائد کی خودداری بھی دیکھتے ہیں۔

انا اور خوداری میں یہی فرق ہے کہ انا اپنی ذات کے لیے ہوتی ہے اور خوداری دوسروں کی بھلائی کے لیے ہوتی ہے۔خودداری قوموں میں اصلاح کا عمل پیدا کرتی ہے، انا انسان میں بیگاڑ لاتی ہے۔انا ضد لاتی ہے، خودداری اُصول پرڈٹے رہنا سکھاتی ہے۔شخصیت وُہ خودی ہے جو زندگی کو منظم بناتی ہے۔

یہ مثالیں صرف کتب یا تاریخ میں نہیں ملتی بلکہ آج بھی حقیقی زندگیوں میں حقیقت کا روپ بھر رہی ہے، نہ ہی یہ عمل طبقات تک محددو ہے۔ ہمارے ملک ہی کے ایک نامور مزاح نگار کچھ دہائیوں قبل جب بیمار تھے تو اُنھوں نے اپنے حالات کی تنگدستی کے باعث شہر کو خیرباد کہنے کا ارادہ کرلیا،جب وقت کے سپاہ سالار اعظم کو یہ خبر ہوئی تو اُس نے فوری ملاقات کی اور شہر نہ چھوڑنے کی گزارش فرمائی اور عرض کیا کہ آپ ایک درخواست لکھ دیں تو صدر ِپاکستان اُنکا وظیفہ مقرر فرما دے گے۔ اُنھوں نے اس بات کو اہمیت نہ دی، کچھ عرصہ بعد وُہ جنرل صاحب درخواست کے کاغذات خود لے کرآئے کہ اِن کو پُر کر دیجیے، مگر اُن مزاح نگار نے بات پھر ٹال دی، اگلی مرتبہ جنرل صاحب فارم بھر کر لے آئے اور کہا دستخط فرما دیجیے مگر مزاح نگار نے ایسا نہ کیا۔ اُنکا مﺅقف تھا،میں کیوںبھیک مانگو؟اگر صدر مملکت میری مدد فرمانا چاہتے ہیں تو اس کاغذی بھیک کے بغیر فرمائے۔ دراصل اُنکی غیرت کو گوارہ نہ تھا کہ اُنکو کوئی خیرات دی جائے جبکہ حالات تنگ دستی کاشکار تھے۔ آج وُہ تینوں شخصیات حیات نہیں مگر ایک خوداری کی تازہ ترین مثال چھوڑ گئیں۔

تجربہ کار پروفیسر حضرات اپنے زعم میں سیاسیات پر گفتگو میں فرماتے ہیں،کہ حاکم نے قوم کو منگتی قوم بنا دیاہے، مگر کبھی کبھی محسوس ہوتا ہے، ہمارے رویے بھی کچھ تعمیری نہیں۔ ہم ایک ڈرائیور کو کھانا لینے کے لیئے بھیجتے ہیں، وُہ کھانا لاتا ہے، ہم کھانا ڈالتے ہیں، وُہ ایک پلیٹ آخرمیں پھیلائے لاتا ہے اورہماراہی بچا ہواکھانا ڈالتا ہے اور اُسی انداز سے واپس مڑ کر کہیں باہر بیٹھ کر کھانا کھاتا ہے،ہم یہ اسلام کی تعلیم دیتے ہیں؟ اختلاف یہ نہیں کہ وُہ آخر میں کھانا کیوں ڈالتا ہے۔اصل بات یہ ہے ،ملازم جس اندازمیں کھانا لیتا ہے وہاں خودداری کا پہلو کمزوری کا شکار ہوتا ہے۔ ہم اُسکو اپنے ساتھ بٹھا کر کھانا کیوں نہیں کھلاتے؟ چلوں ساتھ نہ بٹھائے اُسکے حصہ کا کھانا ڈال کر اُس تک پہنچا تو سکتے ہیں۔پلیٹ پھیلائے لانا خودداری کو دفن کرتا ہے۔ سرکاری ملازمت میں گریڈ کے چکر نے انسان کی سوچ کو سرِکا کر سرکار ہی بنا ڈالا ہے۔جبکہ اسلامی تربیت کے ماحول میں دستر خوان پر نہ کوئی مالک ہے اور نہ کوئی ملازم۔آج بھی ایسے کھلے دِل کے افراد ہمارے معاشرے میں بیشمار ہیں۔جو کھانے کے دوران آقا و غلام کا فرق نہیں رکھتے بلکہ ایک ہی پلیٹ میں مل کر کھانا نوش فرماتے ہیں۔

یہ بات ایک دفتر کی حدتک نہیں،ملازمین سے لیکر آقا تک سب ہر روز کچھ نہ کچھ مانگ رہے ہیں، بھکاری کو دیکھےں، واسطے دے کر مانگ رہے ہیں۔ کیا آج اس قوم کی تربیت بھیک میں روپیہ مانگنا ہی ہے۔ شائید ضرورت روپیہ کی نہیں، روپیہ ضرورت ہے۔کیا یہ تربیت سکول کے اُساتذہ، ملک کے سیاستدانوں کی ہی رہ گئی ہے جو کہ والدین،خاندان، معاشرہ، محلہ اور ہمسایوں کی مشترکہ ذمہ داری بھی ہے۔

ایک گھر میں اگر وقتی طور پرچائے کےلیے اگر چینی یا چائے کی پتی ختم ہو جائے تو کسی دوسرے سے مانگنے کی بجائے مناسب ہے کہ اُسکے بغیر ہی گزارہ کر یں یا بازار سے خرید لیں۔ مگروُہ ایسی کسی تعاون کی درخواست آئے تو وُہ دینے سے انکار نہ کرے۔ یوں معاشرہ میں مانگنے کی عادت نہ رہے گی۔

ایک درویش کے ہاںیہ منظر تھاکہ اُنکا ضروریات زندگی کا سامان ایک گٹھری اور بنیادی طبی امدادسے زیادہ نہ تھا ، وُہ جہاں پہنچتے، عقیدت مند تحائف کے ساتھ آموجود ہوتے تھے۔وُہ کچھ تحائف رکھ لیتے اور بعد میں آنے والوں کو وُہ اُنکی ضرورت کے مطابق وُہ تحائف بانٹ دیتے۔ اکثر تو وُہ تحفہ لانے والے کو کہتے فلاں کو بلاﺅ، وُہ آتا تو کہتے، یہ اِسکو میری طرف سے دے دوں۔اُس درویش کا ایک خاص وصف یہ تھا کہ وُہ کسی کو خالی ہاتھ نہیں لوٹنے دیتا تھا۔ اُسی درویش نے ایک مرتبہ کسی کوکچھ یوں کہا تھا کہ”فقیر کبھی بھی کسی کا اُدھار نہیں رکھتا، کچھ نہیں تو کام کی بات بتا دیتا ہے۔“

یہ ملک پاکستان درویشوں نے مل کر بنایا، آج درویش ہمیں اپنی عملی زندگی سے خودداری کی عملی تربیت دینے میں مصروف عمل ہے۔

ہمیں اپنی ضد کو خوداری کا نام نہیں دینا چاہیے بلکہ اپنی انا کو ”میں “سے باہر رکھ کر خودداری سے فیصلے کرنے چاہیں۔
(فرخ نور)

Total Success is Determined by Your Thoughts, Beliefs and Actions

Many people say they want success, yet they are not willing to do what it takes to achieve their desired outcome. I am a believer in Total Success. Total Success requires more then a successful business and a great income. Total Success is about having a balanced life, giving back and enjoying what you do.

In order to achieve Total Success there are specific thoughts and beliefs you must have. There are also certain actions you must take.

Success in anything goes beyond the obvious. Although you need a certain amount of skill and knowledge, your successes will come from the way you think, feel and act, coupled with intense emotion and a steadfast belief in “self.”

To achieve Total Success you must set goals. Setting goals cannot be a hit and miss process. It has to be systematic, deliberate and the cornerstone of every other aspect of what you do in order to create a successful, abundant, happy, and balanced life. Goals are about gaining direction, clarity and vision.

Even though the concept of goal setting took a while for me to grasp, once I did, the difference in my ability to achieve the outcomes I desired was amazing. Initially I dabbled in the process. Over time, as with virtually every other component of my success, it became very systemized.

My success is directly proportionate to my willingness to set goals, write down my goals, review my goals and stay committed to my goals.

If you want what you say you do, you have to set goals. It’s not that difficult and the results will amaze you. Get a blank book. On each page write down your goals in a specific category and date it.

Not only should you write your goals down, you must review them morning and night. Write your primary goals on a 3 x 5 card to make the review time more targeted. Doing this will keep you on target with what you want.

When you focus on your goals by writing them down and reviewing them on a regular basis amazing events will begin to happen. You will be able to manifest what you want a lot quicker.

However, you must do more than write them down and read them. You have to be committed to the outcome. This means that if you want to get and stay healthy, you will have to make choices around what you eat and how often you exercise.

It is the same with your finances. If you want to increase your wealth you must make specific choices on how you spend and invest your money.

Think of every area of your life you want improvement in. Decide what you want and what you are willing to do to get it. Write your goals down, read them morning and night and take the appropriate actions to achieve your desired outcome.

With dedication and commitment you will be well on your way to Total Success.

Dr. Joe

جگ درشن کا میلا

‘اڑ جآئے گا ہنس اکیلا
جگ درشن کا میلا’

is jag me jo is jag k darshan karny k liye jita ha wo apni aany wali haqeeqi zindagi par zulm karta ha.

jo musalman sari dunia k logo ko acha kehta ha, aur har mazhab k logo sa hamdardi rakhta ha, aur har mazhab k har jaga k logo ko kehta ha ALLAH ki makhlooq ha to acha kaho. wo musalman nihayat hi ghalat karty han. kafiro ki tablegh karo, wo na many to acha na kaho unhe. aur har us insaan sa jo shirq karta ha. aur har us aurat sa jo wahiyat kapry pehnti ha. aur har us mard sa jo aysi aurat ko daikhta ha. jo insan aj ki zindagi ye soch kar mazy se guzarta ha k kal ka kuch pata nahi.
jo apna past bhol jaey aur apni har kahi hue bat bhol kar apna aj guzary. wo bewaqoof ha.
kiu k wo aj kal ko sochy bagher guzar raha ha. wo kal jo guzar gaya wo kal jo any wala ha.
guzar jany waly kal me jo ghalti ki, agar wahi ghalti bar bar dohrai jaey aj me bhi , to is ka matlab ye ho ga k insaan na

kuch sekha hi nahi apni ghalti sa. us na khud ko nahi har us shakhs ko nuqsan phchaya jis ko us na apni ghalti me

shamil kia. aur wo ghalti kar k gunahgar hua.
sansee jab tak chal rahi han wo hamara kal nahi ha. sanseen jab nahi rahyn ge wo hamara kal ha.
insan ko apni sirf experience sa nahi sekhna chaheyey usay har us shakhs k experience se sekhna chahiye jis ki zindagi ko wo janta ha.

50 Ways To Make Yourself Miserable

What Not To Do/be

So here goes the 50 ways to make yourself miserable.
50 Ways To Make Yourself Miserable
1.Compare yourself frequently with others.
2.Belittle yourself.
3.Don’t believe in dreams. You believe dreams will only happen when you are sleeping.
4.Say yes to everybody and everything.
5.Work in a job you hate.
6.Complain about everything.
7.Complain about everything to your friends.
8.Suspicious of everything.
9.Counting your troubles.
10.Harbor negative thoughts.
11.Trying to please everyone and let everyone walk all over you.
12.Constantly thinking about the past.
13.Constantly thinking about the future.
14.Focusing on what you lack.
15.Focusing on what you don’t want.
16.Need others to validate you constantly.
17.Think of everything that can possibly go wrong in your life.

18.Get jealous easily.
19.Envious of others and is never grateful of what you have instead.
20.Imitating others due to lack of self confidence.
21.Lacking self esteem and cause others to dislike you.
22.Think the world revolves around you.
23.Judging others.
24.Absorbing all the bad news in the papers daily.
25.Eating junk food.
26.Exercising is your worst nightmare.
27.Believe that things can only go your way.
28.Do not accept others opinion.
29.Lack of sleep.
30.Lack of goals.
31.Worry consistently about the sky is falling.
32.Plan but never take action.
33.Fail to plan.
34.Feel that people around you are all jerks.
35.Thinking there is no purpose in living.
36.Being the “If Man”. If my father is the president, then I will be successful. If ____ then I will be _____. (fill in the blanks)
37.Lottery is the only way to success.
38.Trying to control everything that you can’t control.
39.Expect to be appreciated.
40.Expect others to be grateful to you.
41.Never forget about criticism.
42.Hate people around you to be successful.
43.Shirk responsibilities.
44.Receive and never give.
45.Do things that are easy.
46.Overworking.
47.Never forgive.
48.Never give your best effort in things you do.
49.Perfectionism.
50.Choosing to be miserable.

heart attack

I want to write few words from one of my prev. post: “…….Is kaainat main kub saare sawalon ke jawab milte hain. Koi formula nahi chalta. Kisi mantiq ki chul theek nahi bethti. Hum saari zindagi jaanne ki tag-o-do main lage rehte hain magar saara kuch is dil ke maanne se hai. Agar dil ko qarar aa jaaye to koi maujiza naqabile yaqeen nahi rehta. Kuch bhi namumkin nahi rehta. Falsafa chale na chale magar jo baat, jo cheez is dil ki dharkan ki ley(tune) se murtaish (vibrate) ho jaaye – wahi haq, wahi sach ! Sala ye kambakht dil !!..”

Pain was so severe that night, savage heart
wanted to confront each vein
diaphoresed from each sweat gland

(my heart was)
Like far at your patio
each petal washed in my despondent blood
appear morose with grace of moonlite glow

Like in my deserted body
tents of all aching threads openly
start giving signs serially (of)
farewell of (my) passions’ flock

And when appeared somewhere under smoldering lites of remembrance
one last moment of your affection
pain was so intense that (heart) wanted to pass it on

We did want to stay though, heart did not desire so

Sadqa

Agar bachpun main hame koi chot lug jaati to dadi kehtiN: “Chalo achha huwa, bari musibat ka saqda huwa”.

Kiya ye sach hoga ke zindagi main darasl koi chota nuqsan is baat ka istaa’ra hota hai ke hamara koi bara nuqsan hone wala tha magar qudrat ne hamari bachat ker di!