The dangers lurking in your make-up bag

They are there to make us feel better but cosmetics can be a breeding ground for bacteria

For most women, the vanity box is their little bag of tricks that helps hide their flaws and highlight their best features. But lipsticks, eyeshadows, mascara and powders can do more harm than good if they are not updated regularly. Just like food, cosmetics too have expiry dates and old and unhygienic ones can harbour harmful germs that can cause infections. So how often should you change your make-up?

Makka Elonheimo, Make Up For Ever’s International Training Manager, tells us how to keep our vanity bag bacteria-free.

How long can you keep cosmetics?

1. Loose powder (both translucent and bronzing): 3-5 years.
Go for a powder pot with a lid that has tiny holes. This ensures there is reduced  exposure to air as against ones without security lids.

2. Lipgloss: Up to 6 months.
The lipgloss applicator tip’s frequent physical contact with the lips carries microbes to the tube or bottle and reduces its shelf life. Don’t buy too many lipglosses at a time. Rotate just a few.

3. Day cream/ moisturiser: 1 year.
Using a spatula helps increase a skincare cream’s shelf life. Also do the sniff test to check if it’s off.

4. Foundation: 1-2 years.
Go for pump bottles as these have a longer shelf life due to reduced exposure to air. Open-cap bottles are more prone to germs as the entire product is exposed to air every time you open the cap.

5. Brushes: 5 years.
Brushes used to apply waxy and gel products like lipstick, lipgloss, liquid eyeliner, foundation and gel primer are highly prone to germs and must be cleaned before and after every use. Clean natural hair brushes with a mild 2-in-1 shampoo-cum-conditioner and cold water while artificial ones can be cleaned with hot water and liquid soap.

6. Lip pencil: 1-2 years if waxy; powdery ones last for 3 years.
Sharpening the pencil before every use helps sanitise it. Don’t share lip pencils as that can lead to itchy, sensitive lips.

7. Lipstick: 3-5 years.
Avoid sharing lipsticks as saliva is a breeding ground for bacteria. To sanitise a lipstick, use a sharp knife to simply shave off a thin layer from the top of the bullet.

8. Mascara: 3-6 months.
Do not ever share a mascara as eyes are a highly sensitive area. As for old mascara, it can cause conjunctivitis. Don’t pump the brush wand as that allows air to go in adding to the contamination. It also dries out the mascara pigment.

9. Eye pencils: 1-2 years if waxy. Powdery ones last for 3 years.
Smell the waxy tip to determine if it’s going off; sharpen the pencil before every use to sanitise it. Don’t ever share eye pencils as that can transfer germs and cause red, itchy eyes.

10. Sponges: 4-5 times.
Soft latex sponges tend to absorb grease and cosmetic particles easily, hence they have a shorter life span than hard sponges and should be replaced more frequently. To clean, use a washing-up liquid and very hot water as that’s very effective on grease and oil particles.

11. Liquid eyeliner: 6 months.
Sharing liquid eyeliner is a complete no-no as water from eyes can carry germs to the
brush and subsequently to the other person who uses it.

12. Pressed powders like compact, blush and bronzer: Over 5 years.
Sanitise the top layer of pressed powder by wiping with a tissue dipped in disinfecting
solution; or shave off the topmost layer every few months.

Make your mind up time

Put your make-up through this 10-point checklist every six-months. This exercise will ensure you declutter and never use expired products. Here are some questions to ask yourself:

1. What’s the formulation like: creamy, waxy, liquid or powdery? Creamy, waxy and liquid formulae are highly potent bacteria-breeding grounds and therefore have a shorter shelf life. On the other hand, powdery cosmetics have no such issues, be it pressed powder or the loose version.

2. Do I dip my finger in the product or use a spatula? Using a finger can spread germ microbes and reduce the cosmetic’s lifespan.

3. Does it have an integrated applicator that comes in contact with my facial features? If yes, that transfers germs from the skin to the bottle and reduces the product’s shelf life further.

4. Does it smell like it’s off? If yes, throw it away!

5. Do the contents look like the ingredient particles have begun to separate? Yes? Throw it right away.

6. Have I subjected the product to extreme heat or extreme cold temperatures at any time? If yes, then that can reduce the product’s shelf life.

7. Do I share my products with anyone? If yes, throw away the product within the expiry date on the box.

8. Can I scrape off the topmost layer of the product without affecting it? That’s a helpful way to sanitise a product regularly.

9. Does the colour/product still work for me? If it doesn’t, why are you still keeping it? Discard it and try a colour or texture from the new season.

10. Have I felt the need to use the product even once in the past three months? If the answer is no, then give it away to someone who might suit it, but do this before it expires.

Cosmetics: The dirty truth

How long women keep cosmetics*:

Mascara – 1 year
Eyeshadow – 15 years
Blush – 15 years
Eyebrow pencil – 8 years
Eyeliner – 1 year
Lipstick – 10 years
Lipgloss – 10 years

A Wedding in the Month of Muharram / Misconceptions and Baseless Traditions

By Mufti Taqi Usmani

However, there are some legends and misconceptions with regard to ‘Aashooraa’ that have managed to find their way into the minds of the unlearned, but have no support of authentic Islamic sources, some very common of them are these:
·        This is the day on which Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention was created.
·        This is the day when Ibraaheem  may  Allaah  exalt  his  mention was born.
·        This is the day when Allaah accepted the repentance of Aadam  may  Allaah  exalt  his  mention.
This is the day when Doomsday will take place. Whoever takes a bath on the day of ‘Aashooraa’ will never get ill
All these and other similar whims and fancies are totally baseless and the traditions referred to in this respect are not worthy of any credit. Some people take it as Sunnah (established recommended practice) to prepare a particular type of meal on the day of ‘Aashooraa’. This practice, too, has no basis in the authentic Islamic sources.
Some other people attribute the sanctity of ‘Aashooraa’ to the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. No doubt, the martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him is one of the most tragic episodes of our history. Yet, the sanctity of ‘Aashooraa’ cannot be ascribed to this event for the simple reason that the sanctity of ‘Aashooraa’ was established during the days of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) much earlier than the birth of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. On the contrary, it is one of the merits of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him that his martyrdom took place on this blessed day.
Another misconception about the month of Muharram is that it is an evil or unlucky month, for Sayyidna Husain, Radi-Allahu anhu, was killed in it. It is for this misconception that people avoid holding marriage ceremonies in the month of Muharram. This is again a baseless concept, which is contrary to the express teachings of the Holy Quran and the Sunnah. If the death of an eminent person on a particular day renders that day unlucky for all times to come, one can hardly find a day of the year free from this bad luck because every day is associated with the demise of some eminent person. The Holy Quran and the Sunnah of the Holy Prophet, Sall-Allahu alayhi wa sallam, have liberated us from such superstitious beliefs.

url

Lamentations and mourning:
Another wrong practice related to this month is to hold the lamentation and mourning ceremonies in the memory of martyrdom of Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him. As mentioned earlier, the event of Karbalaa’ is one of the most tragic events of our history, but the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) has forbidden us from holding the mourning ceremonies on the death of any person. The people of Pre-Islamic ignorance era used to mourn over their deceased through loud lamentations, by tearing their clothes and by beating their cheeks and chests. The Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ) prevented the Muslims from doing all this and directed them to observe patience by saying “Inna lillaahi wa inna ilayhi raaji’oon” (To Allaah We belong, and to Him is our return). A number of authentic narrations are available on the subject. To quote only one of them: “He is not from us who slaps his checks, tears his clothes and cries in the manner of the people of jahiliyyah (Pre-Islamic ignorance)”. [Al-Bukhaari]
All the prominent jurists are unanimous on the point that the mourning of this type is impermissible. Even Al-Hussayn  may  Allaah  be  pleased  with  him shortly before his demise, had advised his beloved sister Zaynab  may  Allaah  be  pleased  with  her not to mourn over his death in this manner. He  may  Allaah  be  pleased  with  him said, “My dear sister! I swear upon you that in case I die you shall not tear your clothes, nor scratch your face, nor curse anyone for me or pray for your death.” (Al-Kaamil, Ibn Katheer vol. 4 pg. 24)
It is evident from this advice, that this type of mourning is condemned even by the blessed person for the memory of whom these mourning ceremonies are held. Every Muslim should avoid this practice and abide by the teachings of the Prophet  sallallaahu  `alayhi  wa  sallam ( may  Allaah exalt his mention ).

Q. Could you please explain whether any function, particularly weddings, could be held in the month of Muharram, particularly its first 8 or 9 days?

A. Some people hold a notion that it is not permissible to arrange a marriage or make a marriage contract in the month of Muharram, particularly its first ten days. Some extend this to even arranging the waleemah, or the dinner after marriage, in this period. There is nothing in the Qur’an or the Sunnah to confirm this. The Muharram month is the same as the rest of the year. Muslims do not allow any aspect of omen to interfere with their arrangements or plans. They rely on God in all matters, and reliance on God is sufficient to remove any thoughts of bad omen. The Prophet (peace be upon him) in fact spoke against notions of bad omen. They have no substance. Hence, it is perfectly permissible to arrange a marriage in the month of Muharram and also to arrange the waleemah or any other function. In fact marriage can be contracted and organized at any time, except when a person is in the state of consecration, or ihraam, during his pilgrimage or his Umrah. Other than this, there is no restriction. Aljazeerah

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے اور عورت پھول

مرد گھر کا نگران و کفيل ہے

اسلام نے مرد کو ’’قَوَّام‘‘(گھر کا نگران اور کفيل) اور عورت کو ’’ريحان‘‘(پھول) قرار ديا ہے۔ نہ يہ مرد کي شان ميں گستاخي ہے اور نہ عورت سے بے ادبي، نہ يہ مرد کے حقوق کو کم کرنا ہے اور نہ عورت کے حقوق کي پائمالي ہے بلکہ يہ ان کي فطرت و طبيعت کو صحيح زاويے سے ديکھنا ہے۔

 امور زندگي کے ترازو ميں يہ دونوں پلڑے برابر ہيں۔ يعني جب ايک پلڑے ميں (عورت کي شکل ميں) صنف نازک، لطيف و زيبا احساس اور زندگي کے ماحول ميں آرام و سکون اور معنوي زينت و آرائش کے عامل کو رکھتے ہيں اور دوسرے پلڑے ميں گھر کے مدير، محنت و مشقت کرنے والے بازوں اور بيوي کي تکيہ گاہ اور قابل اعتماد ہستي کو (شوہر کي شکل ميں) رکھتے ہيں تو يہ دونوں پلڑے برابر ہو جاتے ہيں۔ نہ يہ اُس سے اونچا ہوتا ہے اور نہ وہ اس سے نيچے۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف :  حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

مرد کي خام خيالي اور غلط رويّہ

مرد

مرد ہر گز يہ خيال نہ کرے کہ چونکہ وہ صبح سے شام تک نوکري کے لئے باہر رہتاہے، اپنا مغز کھپاتا اور تھوڑي بہت جو رقم گھر لاتا ہے تو وہ بيوي سميت اس کي تمام چيزوں حتيٰ اس کے جذبات، احساسات اور خيالات کا بھي مالک بن گيا ہے، نہيں ! وہ جو کچھ گھر لے کر آتا ہے وہ گھر کے اجتماعي حصے اور ذمے داريوں کي نسبت آدھا ہوتا ہے۔ جب کہ دوسرا آدھا حصہ اور ذمہ داري بيوي سے متعلق ہے۔ بيوي کے اختيارات، اس کي سليقہ شعاري اور گھريلو انتظام سنبھالنا، اس کي رائے، نظر، مشورہ اور اس کي باطني ضرورتوں کا خيال رکھنا شوہر ہي کے ذمے ہے۔ ايسا نہ ہو کہ مرد چونکہ اپني غير ازدواجي زندگي ميں رات کو دير سے گھر آتا تھا لہٰذا اب شادي کرنے کے بعد بھي ايسا ہي کرے، نہيں ! اسے چاہيے کہ وہ اپني زوجہ کے روحي، جسمي اور نفسياتي پہلووں کا خيال رکھے۔

قديم زمانے ميں بہت سے مرد خود کو اپني بيويوں کا مالک سمجھتے تھے، نہيں جناب يہ بات ہرگز درست نہيں ہے ! گھر ميں جس طرح آپ صاحبِ حق و اختيار ہيں اسي طرح آپ کي شريکہ حيات بھي اپنے حق اور اختيار کو لينے اور اسے اپني مرضي کے مطابق استعمال کرنے کي مجاز ہے۔ ايسا نہ ہو کہ آپ اپني زوجہ پر اپني بات ٹھونسيں اور زور زبردستي اس سے اپني بات منوا ليں۔ چونکہ عورت، مرد کي بہ نسبت جسماني لحاظ سے کمزور ہے لہٰذا کچھ لوگ يہ خيال کرتے ہيں کہ عورت کو دبانا چاہيے، اُس سے چيخ کر اور بھاري بھرکم لہجے ميں بات کريں، ان سے لڑيں اور ان کي مرضي اور اختيار کا گلا گھونٹتے ہوئے اپني بات کو ان پر مسلط کر ديں۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف : حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

جہاں خداوند متعال نے انساني مصلحت کي بنا پر مرد و عورت ميں فرق رکھا ہے اور يہ فرق مرد کا نفع يا عورت کا نقصان نہيں ہے۔ لہٰذا مياں بيوي کو چاہيے کہ گھر ميں دو شريک اور ايک دوسرے کے مدد گار اور دوستوں کي مانند زندگي گزاريں۔

عقلمند بيوي اپنے شوہر کي معاون و مدد گار ہے

بيوي کو بھي چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کي ضرورتوں، اندرون اور بيرون خانہ اس کي فعاليت اور اس کي جسماني اور فکري حالت کو درک کرے۔ ايسا نہ ہو کہ بيوي کے کسي فعل سے مرد اپنے اوپر روحي اور اخلاقي دباو محسوس کرے۔

بيوي کو بھي چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کي ضرورتوں، اندرون اور بيرون خانہ اس کي فعاليت اور اس کي جسماني اور

شريکہ حيات کو چاہيے کہ وہ کوئي ايسا کام انجام نہ دے کہ جس سے اس کا شوہر امور زندگي سے مکمل طور پر نا اميد اور مايوس ہو جائے اور خدا نخواستہ غلط راستوں اور ناموس کو زک پہنچانے والي راہوں پر قدم اٹھا لے۔ زندگي کے ہر کام اور ہر موڑ پر ساتھ دينے والي شريکہ حيات کو چاہيے کہ وہ اپنے شوہر کو زندگي کے مختلف شعبوں ميں استقامت اور ثابت قدمي کے لئے شوق و رغبت دلائے اور اگر اس کي نوکري اس طرح کي ہے کہ وہ اپنے گھر کو چلانے ميں اپنا صحيح اور مناسب کردار ادا نہيں کر پا رہا ہے تو اس پر احسان نہ جتائے اور اسے طعنے نہ دے۔ گھر کا مرد اگر علمي، جہادي (سيکورٹي اور حفاظت و غيرہ) اور معاشرے کے تعميري کاموں ميں مصروف ہے خواہ وہ نوکري کے لئے ہو يا عمومي کام کے لئے، تو بيوي کو چاہيے کہ وہ گھر کے ماحول کو اس کے لئے مساعد اور ہموار بنائے تا کہ وہ شوق و رغبت سے کام پر جائے اور خوش خوش گھر لوٹے۔ تمام مرد حضرات اس بات کو پسند کرتے ہيں کہ جب وہ گھر ميں قدم رکھيں تو گھر کا آرام دہ، پر سکون اور پر امن ماحول انہيں خوش آمديد کہے اور وہ اپنے گھر ميں اطمينان اور سکھ کا سانس ليں۔ يہ ہيں زوجہ کے فرائض۔

کتاب کا نام : طلوع عشق

مصنف :  حضرت آيۃ اللہ العظميٰ خامنہ اي

ماضی کا البم

انسانی زندگی میں بعض اوقات ایسے واقعات پیش آتے ہیں کہ آدمی کو کسی چیز سے ایسی چڑ ہو جاتی ہےکہ اس کا کوئی خاص جواز نہیں ہوتا مگر یہ ہوتی ہے- اور میں اُن خاص لوگوں میں سے تھا جس کو اس بات سے چڑ تھی کہ “دروازہ بند کر دو-“ بہت دیر کی بات ہے کئی سال پہلے کی، جب ہم سکول میں پڑھتے تھے، تو ایک انگریز ہیڈ ماسٹر سکول میں آیا- وہ ٹیچرز اور طلباء کی خاص تربیت کے لئے متعین کیا گیا تھا – جب بھی اُس کے کمرے میں جاؤ وہ ایک بات ہمیشہ کہتا تھا- “Shut The Door Behind You ”
پھر پلٹنا پڑتا تھا اور دروازہ بند کرنا پڑتا تھا-

ہم دیسی آدمی تو ایسے ہیں کہ اگر دروازہ کُھلا چھوڑ دیا تو بس کُھلا چھوڑ دیا، بند کر دیا تو بند کر دیا، قمیص اُتار کے چارپائی پر پھینک دی، غسل خانہ بھی ایسے ہی کپڑوں سے بھرا پڑا ہے، کوئی قاعدہ طریقہ یا رواج ہمارے ہاں نہیں ہوتا کہ ہر کام میں اہتمام کرتے پھریں-

یہ کہنا کہ دروازہ بند کر دیں، ہمیں کچھ اچھا نہیں لگتا تھا اور ہم نے اپنے طورپر کافی ٹریننگ کی اور اُنہوں نے بھی اس بارے میں کافی سکھایا لیکن دماغ میں یہ بات نہیں آئی کہ بھئی دروازہ کیوں بند کیا جائے؟ رہنے دو ،کُھلا کیا کہتا ہے، آپ نے بھی اپنے بچّوں، پوتوں، بھتیجوں کو دیکھا ہو گا وہ ایسا کرنے سے گھبراتے ہیں- بہت سال پہلےجب میں باہر چلا گیا تھا اور مجھے روم میں رہتے ہوئے کافی عرصہ گُزر گیا وہاں میری لینڈ لیڈی ایک “درزن“ تھی جو سلائی کا کام کرتی تھی- ہم تو سمجھتے تھے کہ درزی کا کام بہت معمولی سا ہے لیکن وہاں جا کر پتہ چلا کہ یہ عزّت والا کام ہے- اُس درزن کی وہاں ایک بوتیک تھی اور وہ بہت با عزّت لوگ تھے-

میں اُن کے گھر میں رہتا تھا- اُن کی زبان میں درزن کو “سارتہ” کہتے ہیں میں جب اُس کے کمرے میں داخل ہوتا اُس نے ہمیشہ اپنی زبان میں کہا”دروازہ بند کرنا ہے“ وہ چڑ جو بچپن سے میرے ساتھ چلی تھی وہ ایم اے پاس کرنے کے بعد، یونیورسٹی کا پروفیسر لگنے کے بعد بھی میرے ساتھ ہی رہی- یہ بات بار بار سُننی پڑتی تھی تو بڑی تکلیف ہوتی، اور پھر لوٹ کے دروازہ بند کرنا، ہمیں تو عادت ہی نہیں تھی-کبھی ہم آرام سے دھیمے انداز میں گروبا پائی سے کمرے میں داخل ہی نہیں ہوئے، کبھی ہم نے کمرے میں داخل ہوتے وقت دستک نہیں دی، جیسا کہ قران پاک میں بڑی سختی سے حُکم ہے کہ جب کسی کے ہاں جاؤ تو پہلے اُس سے اجازت لو، اور اگر وہ اجازت دے تو اندر آؤ، ورنہ واپس چلے جاؤ- پتہ نہیں یہ حُکم اٹھارویں پارے میں ہے کہ اُنتیسویں میں کہ”اگر اتّفاق سے تم نے اجازت نہ لی ہو اور پھر کسی ملنے والے کے گھر چلے جاؤ اور وہ کہ دے کہ میں آپ سے نہیں مل سکتا تو ماتھے پر بل ڈالے بغیر واپس آ جاؤ-“

کیا پیارا حُکم ہے لیکن ہم میں سے کوئی بھی اس کو تسلیم نہیں کرتا- ہم کہتے ہیں کہ اندر گُھسا ہوا ہے اور کہ رہا ہے کہ میں نہیں مل سکتا، ذرا باہر نکلے تو اس کو دیکھیں گے وغیرہ وغیرہ، ہماری انا اس طرح کی ہے اور یہ کہنا کہ”دروازہ بند کر دیں“ بھی عجیب سی بات لگتی ہے- ایک روز میں نے بار بار یہ سُننے کے بعد روم میں زچ ہو کر اپنی اُس لینڈ لیڈی سے پوچھا کہ آپ اس بات پر اتنا زور کیوں دیتی ہیں- میں ایک بات تو سمجھتا ہوں کہ یہاں (روم میں) سردی بہت ہے، برف باری بھی ہوتی ہے کبھی کبھی اور تیز”وینتو“ (رومی زبان کا لفظ مطلب ٹھنڈی ہوائیں چلنا) بھی ہوتی ہیں اور ظاہر ہے کہ کُھلے ہوئے دروازے سے میں بالکل شمشیر زنی کرتی ہوئی کمروں میں داخل ہوتی ہیں- یہاں تک تو آپ کی دروازہ بند کرنے والی فرمائش بجا ہے لیکن آپ اس بات پر بہت زیادہ زور دیتی ہیں- چلو اگرکبھی دروازہ کُھلا رہ گیا اور اُس میں سے اندر ذرا سی ہوا آگئی یا برف کی بوچھاڑ ہوگئی تو اس میں ایسی کون سی بڑی بات ہے-

اس نے کہا کہ تم ایک سٹول لو اور یہاں میرے سامنے بیٹھ جاؤ (وہ مشین پر کپڑے سی رہی تھی ) میں بیٹھ گیا وہ بولی دروازہ اس لئے بند نہیں کرایا جاتا اور ہم بچپن سے بچّوں کو ایسا کرنے کی ترغیب اس لئے نہیں دیتے کہ ٹھنڈی ہوا نہ آجائے یا دروازہ کُھلا رہ گیا تو کوئی جانور اندر آ جائے گا بلکہ اس کا فلسفہ بہت مختلف ہے اور یہ کہ اپنا دروازہ، اپنا وجود ماضی کے اوپر بند کر دو، آپ ماضی میں سے نکل آئے ہیں اور اس جگہ پر اب حال میں داخل ہو گئے ہیں- ماضی سے ہر قسم کا تعلق کاٹ دو اور بھول جاؤ کہ تم نے کیسا ماضی گُزارا ہے اور اب تم ایک نئے مُستقبل میں داخل ہو گئے ہو- ایک نیا دروازہ تمہارے آگے کُھلنے والا ہے، اگر وہی کُھلا رہے گا تو تم پلٹ کر پیچھے کی طرف ہی دیکھتے رہو گے- اُس نے کہا کہ ہمارا سارے مغرب کا فلسفہ یہ ہے اور دروازہ بند کر دو کا مطلب لکڑی، لوہے یا پلاسٹک کا دروازہ نہیں ہے بلکہ اس کا مطلب تمہارے وجود کے اوپر ہر وقت کُھلا رہنے والا دروازہ ہے- اُس وقت میں ان کی یہ بات نہیں سمجھ سکا جب تک میں لوٹ کے یہاں (پاکستان) نہیں آگیااور میں اپنےجن”بابوں“ کا ذکر کیا کرتا ہوں ان سے نہیں ملنے لگا۔ میرے”بابا“ نے مومن کی مجھے یہ تعریف بتائی کہ مومن وہ ہے جو ماضی کی یاد میں مبتلا نہ ہو اور مستقبل سے خوفزدہ نہ ہو- ( کہ یا اللہ پتہ نہیں آگے چل کے کیا ہونا ہے ) وہ حال میں زندہ ہو

آپ نے ایک اصلاح اکثر سُنی ہو گی کہ فلاں بُزرگ بڑے صاحبِ حال تھے- مطلب یہ کہ اُن کا تعلق حال سے تھا وہ ماضی کی یاد اور مستقبل کی فکر کے خوف میں مبتلا نہیں تھے- مجھے اُس لینڈ لیڈی نے بتایا کہ دروازہ بند کرنے کا مطلب یہ ہے کہ اب تم ایک نئے عہد، ایک نئے دور ایک نئے Era اور ایک اور وقت اور زمانے میں داخل ہو چکے ہیں اور ماضی پیچھے رہ گیا ہے- اب آپ کو اس زمانے سے فائدہ اُٹھانا ہے اور اس زمانے کے ساتھ نبرد آزمائی کرنی ہے ۔جب میں نے یہ مطلب سُنا تو ہم چکاچوند گیا کہ میں کیا ہم سارے ہی دروازہ بند کرنے کا مطلب یہی لیتے ہیں جو عام طور پر ہو یا عام اصطلاح میں لیا جاتا ہے- بچّوں کو یہ بات شروع سے سکھانی چاہئے کہ جب تم آگے بڑھتے ہو، جب تم زندگی میں داخل ہوتے ہو، کسی نئے کمرے میں جاتے ہو تو تمہارے آگے اور دروازے ہیں جو کُھلنے چاہئیں- یہ نہیں کہ تم پیچھے کی طرف دھیان کر کے بیٹھے رہو-

جب اُس نے یہ بات کہی اور میں نے سُنی تو پھر میں اس پر غور کرتا رہا اور میرے ذہن میں اپنی زندگی کے واقعات، ارد گرد کے لوگوں کی زندگی کے واقعات بطور خاص اُجاگر ہونے لگے اور میں نے محسوس کرنا شروع کیا کہ ہم لوگوں میں سے بہت سے لوگ آپ نے ایسے دیکھے ہوں گے جو ہر وقت ماضی کی فائل بلکہ ماضی کے البم بغل میں دبائے پھرتے ہیں- اکثر کے پاس تصویریں ہوتی ہیں- کہ بھائی جان میرے ساتھ یہ ہو گیا، میں چھوٹا ہوتا تھا تو میرے ابّا جی مجھے مارتے تھےسوتیلی ماں تھی، فلاں فلاں، وہ نکلتے ہی نہیں اس یادِ ماضی سے- میں نے اس طرح ماضی پر رونے دھونے والے ایک دوست سے پوچھا آپ اب کیا ہیں؟ کہنے لگے جی میں ڈپٹی کمشنر ہوں لیکن رونا یہ ہے کہ جی میرے ساتھ یہ زمانہ بڑا ظلم کرتا رہا ہے- وہ ہر وقت یہی کہانی سُناتے- ہمارے مشرق میں ایشیاء، فارس تقریباً سارے مُلکوں میں یہ رواج بہت عام ہے اور ہم جب ذکر کریں گے اس”دردناکی“ کا ذکر کرتے رہیں گے- ہماری ایک آپا سُکیاں ہیں- جو کہتی ہیں کہ میری زندگی بہت بربادی میں گزری بھائی جان، میں نے بڑی مشکل سے وقت کاٹا ہے- اب ایک بیٹا تو ورلڈ بینک میں ملازم ہے ایک یہاں چارٹرڈ اکاؤنٹینٹ ہے- اہک بیٹا سرجن ہے ( ان کے خاوند کی بھی اچھی تنخواہ تھی، اچھی رشوت بھی لیتے رہے،اُنہوں نے بھی کافی کامیاب زندگی بسر کی ۔)

میں نے ایک بار اُن سے پوچھا تو کہنے لگے بس گُزارا ہو ہی جاتا ہے، وقت کے تقاضے ایسے ہوتے ہیں- میں نے کہا کہ آدھی رشوت تو آپ سرکاری افسر ہونے کے ناطے دے کر سرکاری سہولتوں کی مد میں وصول کرتے ہیں مثلاً آپ کی اٹھارہ ہزار روپے تنخواہ ہو گی تو ایک کار ایک دوسری کار، پانچ نوکر، گھر، یہ اللہ کے فضل سے بہت بڑی بات ہے کیا اس کے علاوہ بھی چاہیئے- وہ بولے ہاں اس کے علاوہ بھی ضرورت پڑتی ہے لیکن ہم نے بڑا دُکھی وقت گُزارا ہے، مشکل میں گُزارا، ہمارا ماضی بہت دردناک تھا- وہ ماضی کا دروازہ بند ہی نہیں کرتے- ہر وقت یہ دروازہ نہ صرف کُھلا رکھتے ہیں بلکہ اپنے ماضی کو ساتھ اُٹھائے پھرتے ہیں- میں نے بہت سے ایسے لوگ دیکھے، آج کے بعد آپ بھی غور فرمائیں گے تو آپ دیکھیں گے کہ ان کے پاس اپنے ماضی کی رنگین البمیں ہوتی ہیں- ان میں فوٹو لگے ہوئے ہوتے ہیں اور دُکھ درد کی کہانیاں بھری ہوئی ہوتی ہیں- اگر وہ دُکھ درد کی کہانیاں بند کر دیں، کسی نہ کسی طور پر”تگڑے“ ہو جائیں اور یہ تہیہ کر لیں کہ اللہ نے اگر ایک دروازہ بند کیا تو وہ اور کھولے گا، تو یقیناً اور دروازے کُھلتے جائیں گے-

اگر آپ پلٹ کر پیچھے دیکھتے جائیں گے اور اُسی دروازے میں سے جھانک کے وہی گندی مندی، گری پڑی چیزوں کو اکٹھا کرتے رہیں گے تو آگے نہیں جا سکتے- اس طرح سے مجھے پتہ چلا کہ Shut behind the door کا مطلب یہ نہیں ہے جو میں سمجھتا رہا ہوں- وہ تو اچھا ہو گیا کہ میں اتفاق سے وہاں چلا گیا ورنہ ہمارے جو انگریز اُستاد آئے تھے اُنہوں نے اس تفصیل سے نہیں بتایا تھا- آپ کو ہم کو، سب کو یہ کوشش ضرور کرنی چاہئے کہ ماضی کا پیچھا چھوڑ دیں-

ہمارے بابے، جن کا میں اکثر ذکر کرتا ہوں، بار بار کرتا ہوں اور کرتا رہوں گا، اُن کے ڈیروں پر آپ جا کر دیکھیں، وہ ماضی کی بات نہیں کریں گے- وہ کہتے ہیں کہ بسم اللہ آپ یہاں آگئے ہیں، یہ نئی زندگی شروع ہو گئی ہے، آپ بالکل روشن ہو جائیے، چمک جایئے- جب ہمارے جیسے نالائق بُری ہیئت رکھنے والے آدمی اُن کی خدمت میں حاضر ہوتے ہیں، تو وہ نعرہ مار کے کہتے ہیں”واہ واہ! رونق ہو گئی، برکت ہوگئی، ہمارے ڈیرے کی کہ آپ جیسے لوگ آ گئے-“ اب آپ دیکھئے ہمارے اوپر مشکل وقت ہے، لیکن سارے ہی اپنے اپنے انداز میں مستقبل سے خوفزدہ رہتے ہیں کہ پتا نہیں جی کیا ہوگا اور کیسا ہوگا ؟ میں یہ کہتا ہوں کہ ہمیں سوچنا چاہئے- ہم کوئی ایسے گرے پڑے ہیں، ہم کوئی ایسے مرے ہوئے ہیں، ہمارا پچھلا دروازہ تو بند ہے، اب تو ہم آگے کی طرف چلیں گے اور ہم کبھی مایوس نہیں ہوں گے، اس لئے کہ اللہ نے بھی حکم دے دیا ہے کہ مایوس نہیں ہونا، اس لئے حالات مشکل ہوں گے، تکلیفیں آئیں گی، بہت چیخیں نکلیں گی- لیکن ہم مایوس نہیں ہوں گے، کیونکہ ہمارے اللہ کا حکم ہے اور ہمارے نبیﷺ کے ذریعے یہ فرمان دیا گیا ہے کہ لَا تَـقنُـطـومِـن رحـمـۃِ اللہ (“یعنی اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہوں“)- بعض اوقات یہ پتا نہیں چلتا کہ اللہ کی رحمت کے کیا کیا رُوپ ہوتے ہیں- آدمی یہ سمجھتا ہے میرے ساتھ یہ زیادتی ہو رہی ہے، میں Demote ہو گیا ہوں، لیکن اس Demote ہونے میں کیا راز ہے؟ یہ ہم نہیں سمجھ سکتے- اس راز کو پکڑنے کے لئے ایک ڈائریکٹ کنکشن اللہ کے ساتھ ہونا چاہئے اور اُس سے پوچھنا چاہئے کہ جناب! اللہ تعالٰی میرے ساتھ یہ جو مشکل ہے، میرے ساتھ یہ تنزّلی کیوں ہے؟ لیکن ہمیں اتنا وقت نہیں ملتا اور ہم پریشانی میں اتنا گُم ہوجاتے ہیں کہ ہمیں وقت ہی نہیں ملتا، ہمارے ساتھ یہ بڑی بدقسمتی ہے کہ ہمیں بازاروں میں جانے کا وقت مل جاتا ہے، تفریح کے لئے مل جاتا ہے،دوستوں سے ملنے، بات کرنے کا وقت مل جاتا ہے- لیکن اپنے ساتھ بیٹھنے کا، اپنے اندر جھانکنے کا کوئی وقت میسر نہیں آتا-

آپ ہی نہیں، میں بھی ایسے لوگوں میں شامل ہوں- اگر میں اپنی ذات سے پوچھوں کہ”اشفاق احمد صاحب! آپ کو اپنے ساتھ بیٹھنے کا کتنا وقت ملتا ہے؟ کبھی آپ نے اپنا احتساب کیا ہے؟“تو جواب ظاہر ہے کہ کیا ملے گا- دوسروں کا احتساب تو ہم بہت کر لیتے ہیں-اخباروں میں، کالموں میں، اداریوں میں لیکن میری بھی تو ایک شخصیت ہے، میں بھی تو چاہوں گا کہ میں اپنے آپ سے پوچھوں کہ ایسا کیوں ہے، اگر ایسا ممکن ہو گیا، تو پھر خفیہ طور پر، اس کا کوئی اعلان نہیں کرنا ہے، یہ بھی اللہ کی بڑی مہربانی ہے کہ اُس نے ایک راستہ رکھا ہوا ہے، توبہ کا! کئی آدمی تو کہتے ہیں کہ نفل پڑھیں، درود وظیفہ کریں، لیکن یہ اُس وقت تک نہیں چلے گا، جب تک آپ نے اُس کئے ہوئے برے کام سے توبہ نہیں کر لی، توبہ ضروری ہے- جیسا آپ کاغذ لے کے نہیں جاتے کہ”ٹھپہ“ لگوانے کے لئے- کوئی “ٹھپہ“ لگا کر دستخط کردے گا اور پھر آپ کا کام ہو جاتا ہے، اس طرح توبہ وہ”ٹھپہ“ ہے جو لگ جاتا ہے اور بڑی آسانی سے لگ جاتا ہے،اگر آپ تنہائی میں دروازہ بند کر کے بیٹھیں اور اللہ سے کہیں کہ !”اللہ میاں پتہ نہیں مجھے کیا ہو گیا تھا، مجھ سے یہ غلطی، گُناہ ہو گیا اور میں اس پر شرمندہ ہوں-“ ( میں یہ Reason نہیں دیتا کہ Human Being کمزور ہوتا ہے، یہ انسانی کمزوری ہے یہ بڑی فضول بات ہے ۔ایسی کرنی ہی نہیں چاہئے) بس یہ کہے کہ مجھ سے کوتاہی ہوئی ہے اور میں اے خداوند تعالٰی آپ سے معافی چاہتا ہوں اور میں کسی کو یہ بتا نہیں سکتا، اس لئے کہ میں کمزور انسان ہوں- بس آپ سے معافی مانگتا ہوں-

اس طرح سے پھر زندگی کا نیا، کامیاب اور شاندار راستہ چل نکلتا ہے- لیکن اگر آپ اپنے ماضی کو ہی اُٹھائے پھریں گے، اُس کی فائلیں ہی بغل میں لئے پھریں گے اور یہی رونا روتے رہیں گے کہ میرے ابا نے دوسری شادی کر لی تھی، یا میرے ساتھ سختی کرتے رہے، یا اُنہوں نے بڑے بھائی کو زیادہ دے دیا، مجھےکچھ کم دے دیا، چھوٹے نے زیادہ لے لیا، شادی میں کوئی گڑ بڑ ہوئی تھی- اس طرح تو یہ سلسلہ کبھی ختم ہی نہیں ہوگا، پھر تو آپ وہیں کھڑے رہ جائیں گے، دہلیز کے اوپر اور نہ دروازہ کھولنے دیں گے، نہ بند کرنے دیں گے، بس پھنسے ہوئے رہیں گے- لیکن آپ کو چاہئے کہ آپ Shut Behind The Door کر کے زندگی کو آگے لے کر چلیں- آپ زندگی میں یہ تجربہ کر کے دیکھیں- ایک مرتبہ تو ضرور کریں- آپ میری یہ بات سننے کے بعد جو میری نہیں میری لینڈ لیڈی ، اُس اطالوی درزن کی بات ہے، اس پہ عمل کر کے دیکھیں-

اس کے بعد میں نے رونا چھوڑ دیا اور ہر ایک کے پاس جا کر رحم کی اور ہمدردی کی بھیک مانگنا چھوڑ دی- آدمی اپنے دُکھ کی البم دکھا کر بھیک ہی مانگتا ہے نا! جسے سُن کر کہا جاتا ہے کہ بھئی! غلام محمّد، یا نور محمّد یا سلیم احمد تیرے ساتھ بڑی زیادتی ہوئی- اس طرح دو لفظ آپ کیا حاصل کر لیں گے اور سمجھیں گے کہ میں نے بہت کچھ سر کر لیا، لیکن وہ قلعہ بدستور قائم رہے گا، جسے فتح کرنا ہے- اگر آپ تہیہ کر لیں گے کہ یہ ساری مشکلات، یہ سارے بل، یہ سارے یوٹیلیٹی کے خوفناک بل تو آتے ہی رہیں گے، یہ تکلیف ساتھ ہی رہے گی، بچّے بھی بیمار ہوں گے، بیوی بھی بیمار ہوگی، خاوند کو بھی تکیلف ہو گی، جسمانی عارضے بھی آئیں گے، روحانی بھی، نفسیاتی بھی- لیکن ان سب کے ہوتے ہوئے ہم تھوڑا سا وقت نکال کراور مغرب کا وقت اس کے لئے بڑا بہتر ہوتا ہے، کیونکہ یوں تو سارے ہی وقت اللہ کے ہیں، اس وقت الگ بیٹھ کر ضرور اپنی ذات کے ساتھ کچھ گُفتگو کریں اور جب اپنے آپ سے وہ گُفتگو کر چکیں، تو پھر خفیہ طور پر وہی گُفتگو اپنے اللہ سے کریں، چاہے کسی بھی زبان میں، کیونکہ اللہ ساری زبانیں سمجھتا ہے، انگریزی میں بات کریں، اردو، پنجابی، پشتو اور سندھی جس زبان میں چاہے اس زبان میں آپ کا یقیناً اُس سے رابطہ قائم ہو گا اور اس سے آدمی تقویت پکڑتا ہے، بجائے اس کے آپ مجھ سے آ کر کسی بابے کا پوچھیں، ایسا نہیں ہے- آپ خود بابے ہیں- آپ نے اپنی طاقت کو پہچانا ہی نہیں ہے- جس طرح ہمارے جوگی کیا کرتے ہیں کہ ہاتھی کی طاقت سارے جانوروں سے زیادہ ہے۔ لیکن چونکہ اس کی آنکھیں چھوٹی ہوتی ہیں، اس لئے وہ اپنی طاقت، وجودکو پہچانتا ہی نہیں- ہاتھی جانتا ہی نہیں کہ میں کتنا بڑا ہوں- اس طرح سے ہم سب کی آنکھیں بھی اپنے اعتبار سے چھوٹی ہیں اور ہم نے اپنی طاقت کو، اپنی صلاحیت کو جانا ہی نہیں- اللہ میاں نے تو انسان کو بہت اعلٰی و ارفع بنا کر سجود و ملائک بنا کر بھیجا ہے- یہ باتیں یاد رکھنے کی ہیں کہ اب تک جتنی بھی مخلوق نے انسان کو سجدہ کیا تھا، وہ انسان کے ساتھ ویسے ہی نباہ کر رہی ہے- یعنی شجر، حجر، نباتات، جمادات اور فرشتے وہ بدستور انسان کا احترام کر رہے ہیں- انسان سے کسی کا احترام کم ہی ہوتا ہے- اب جب ہم یہاں بیٹھے ہیں، تو اس وقت کروڑوں ٹن برف کے۔ ٹو (K2) پر پڑی آوازیں دے کر پکار پکار کر سورج کی منّتیں کر رہی ہے کہ “ذرا ادھر کرنیں زیادہ ڈالنا، سندھ میں پانی نہیں ہے- جہلم، چناب خشک ہیں اور مجھے وہاں پانی پہنچانا ہے اور نوعِ انسان کو پانی کی ضرورت ہے-“ برف اپنا آپ پگھلاتی ہے اور آپ کو پانی دے کر جاتی ہے- صبح کے وقت اگر غور سے سوئی گیس کی آواز سُنیں اور اگر آپ اس درجے یا جگہ پر پہنچ جائیں کہ اس کی آواز سن سکیں، تو وہ چیخ چیخ کر اپنے سے سے نیچے والے کو کہ رہی ہوتی ہے”نی کُڑیو! چھیتی کرو- باہر نکلو، جلدی کرو تم تو ابھی ہار سنگھار کر رہی ہو- بچوں نے سکول جانا ہے- ماؤں کو انہیں ناشتہ دینا ہے- لوگوں کو دفتر جانا ہے- چلو اپنا آپ قربان کرو-“ وہ اپنا آپ قربان کر کے جل بھن کر آپ کا ناشتہ، روٹیاں تیار کرواتی ہے-

یہ سب پھل، سبزیاں اپنے وعدے پر قائم ہیں- یہ آم دیکھ لیں، آج تک کسی انور راٹھور یا کسی ثمر بہشت درخت نے اپنا پھل خود کھا کر یا چوس کر نہیں دیکھا- بس وہ تو انسانوں سے کئے وعدے کی فکر میں رہتا ہے کہ میرا پھل توڑ کر بلوچستان ضرور بھیجو، وہاں لوگوں کو آم کم ملتا ہے- اس کا اپنے اللہ کے ساتھ رابطہ ہے اور وہ خوش ہے- آج تک کسی درخت نے افسوس کا اظہار نہیں کیا- شکوہ نہیں کیا کہ ہماری بھی کوئی زندگی ہے، جی جب سے گھڑے ہیں، وہیں گھڑے ہیں- نہ کبھی اوکاڑہ گئے نہ کبھی آگے گئے، ملتان سے نکلے ہی نہیں- میرا پوتا کہتا ہے”دادا! ہو سکتا ہے کہ درخت ہماری طرح ہی روتا ہو، کیونکہ اس کی باتیں اخبار نہیں چھاپتا-“ میں نے کہا وہ پریشان نہیں ہوتا، نہ روتا ہے، وہ خوش ہے اور ہوا میں جھومتا ہے- کہنے لگا، آپ کو کیسے پتا ہے کہ وہ خوش ہے؟ میں نے کہا کہ وہ خوش ایسے ہے کہ ہم کو باقاعدگی سے پھل دیتا ہے- جو ناراض ہو گا ، تو وہ پھل نہیں دے گا-

میں اگر اپنے گریبان میں منہ ڈال کر دیکھوں، میں جو اشفاق احمد ہوں، میں پھل نہیں دیتا- میرے سارے دوست میرے قریب سے گُزر جاتے ہیں- میں نہ تو انور راٹھور بن سکا، نہ ثمر بہشت بن سکا نہ میں سوئی گیس بن سکا-

بيوى كى ديكھ بھال

بيوى كى ديكھ بھال

اسلامى شريعت ميں ، جس طرح شوہر كى ديكھ بھال كو ، ايك عورت كے لئے جہاد سے تعبير كيا گيا ہے ، اسى طرح بيوى كى ديكھ بھال كو بھى ايك شادى شدہ مرد كا سب سے اہم اور گرانقدر عمل سمجھا گيا ہے اور اس ميں خاندان كى سعادتمندى مضمر ہے _ لكن ”زن داري” يا بيوى كى ديكھ بھال كوئي آسان كام نہيں ہے بلكہ يہ ايك ايسا راز ہے جس سے ہر شخص كو پور ى طرح آگاہ و با خبر ہونا چاہئے تا كہ اپنى بيوى كو اپنى مرضى كے مطابق ايك آئيڈيل خاتون ، بلكہ فرشتہ رحمت كى صورت دے سكے _
جو مرد واقعى ايك شوہر كے فرائض بنھانا چاہتے ہيں ان كو چاہئے كہ اپنى بيوى كے دل كو موہ ليں _ اس كى دلى خواہشات و رجحانات و ميلانات سے آگاہى حاصل كريں اور اس كے مطابق زندگى كا پروگرام مرتب كريں _ اپنے اچھے اخلاق و كردار و گفتار اور حسن سلوك كے ذريعہ اس پر ايسا اچھا اثر ڈاليں كہ خود بخود اس كا دل ان كے بس ميں آجائے _ اس كے دل ميں زندگى اور گھر سے رغبت و انسيت پيدا ہو اور دل و جان سے امور خانہ دارى كو انجام دے _
”زن داري” يا بيوى كى ديكھ بھال كے الفاظ ، جامع اور مكمل مفہوم كے حامل ہيں كہ جس كى وضاحت كى ضرورت ہے اور آئندہ ابواب ميں اس موضوع پر تفصيلى بحث كى جائے گى _

اپنى محبت نچھا وركيجئے

عورت محبت كا مركز اور شفقت و مہربانى سے بھر پور ايك مخلوق ہے اس كے وجود سے مہرو محبت كى بارش ہوتى ہے _

اس كى زندگى عشق و محبت سے عبادت ہے _ اس كا دل چاہتا ہے دوسروں كى محبوب ہوا ور جو عورت جتنى زيادہ محبوب ہوتى ہے اتنى ہى تر و تازہ اور شاداب رہتى ہے _محبوبيت حاصل كرنے كيلئے وہ فداكارى كى حد تك كوشش كرتى ہے _ اس نكتہ كو جان ليجئے كہ اگر عورت كسى كى محبوب نہ ہو تو خود كو شكست خودرہ اور بے اثر سمجھ كر ہميشہ پمردہ اور افسردہ رہتى ہے _ اس سبب سے قطعى طور پر اس بات كا دعوى كيا جا سكتاہے كہ بيوى كى ديكھ بھال يا ”زن داري” كا سب سے بڑا راز اس سے اپنى محبت اور پسنديدگى كا اظہار كرنا ہے _

شوہر كى بے اعتنائيوں اور بے مہريوں يا زيادہ كاموں ميں مشغول رہنے كے نتيجہ ميں بيوى اور گھر كى طرف سے غفلت ، زيادہ تر عليحدگى كے اسباب رہے ہيں __

اگر آپ چاہتے ہيں آپ كى بيوى زندہ دل ، خوش و خرم اور شاداب رہے گھر اور زندگى ميں پورى دل جمعى كے ساتھ دلچسپى لے ، اگر آپ چاہتے ہيں كہ وہ آپ سے سچے دل سے محبت كرے ، اگر آپ چاہتے ہيں كہ آخر عمر تك آپ كى وفادار رہے ، تو اس كا بہترين طريقہ يہ ہے ك جس قدر ممكن ہو سكے اپنى بيوى سے محبت وچاہت كا اظہار كيجئے _ اگر اسے معلوم ہو كہ آپ كو اس محبت نہيں ہے تو گھر اور زندگى سے

بيزار ہوجائے گى ہميشہ پمردہ اور اداس رہے گى _ خانہ دارى اور بچوں كے كاموں ميں اس كا دل نہيں لگے گا _ آپ كے گھر كى حالت ہميشہ ابتر رہے گى _ اپنے دل ميں سوچے گى كہ ايسے شوہر كے لئے كيوں جاں كھپاؤں جو مجھے عزيز نہيں ركھتا _

src=http://www.alhassanain.com/urdu/show_book.php?book_id=306&search=%C7%D3%E1%C7%E3%20%E3&show_file_s=012.html&link_book=family_and_community_library/family_and_child/khandan_ka_akhlaq

changes

change.

everything in life can change. everything .
time change, life change.

firends change.
relashions change.
wishes change.
goals change.
love change.

this is what i am experiencing. and i am lost now. fade up of living this L….

امين خانہ

گھر كے اخراجات كا انتظام عموماً مرد كے ذمہ ہوتا ہے _ مرد شب و روز محنت كركے اپنے خاندان كى ضروريات پورى كرتا ہے _ اس دائمى بيگارى كو ايك شرعى اور انسانى فريضہ سمجھ كروں و جان سے انجام ديتا ہے _ اپنے خاندان كے آرام و آسائشے كى خاطر ہر قسم كى تكليف و پريشانى كو خندہ پيشانى سے برداشت كرتا ہے اور ان كى خوشى ميں لذت محسوس كرتا ہے _ ليكن گھر كى مالكہ سے توقع ركھتا ہے كہ پيسے كى قدروقيمت سمجھے اور بيكار خرچ نہ كرے _ اس سے توقع كرتا ہے كہ گھركے اخراجات ميں نہايت دل سوزى اور عاقبت انديشى سے كام لے _

زبان کی حفاظت

أما بعد! قال اللہ تعالی:

(وَمَن يَتَّقِ اللَّـهَ يَجْعَل لَّهُ مَخْرَجًا۔ وَيَرْزُقْهُ مِنْ حَيْثُ لَا يَحْتَسِبُ ۚ وَمَن يَتَوَكَّلْ عَلَى اللَّـهِ فَهُوَ حَسْبُهُ ۚ إِنَّ اللَّـهَ بَالِغُ أَمْرِهِ ۚ قَدْ جَعَلَ اللَّـهُ لِكُلِّ شَيْءٍ قَدْرًا) [الطلاق :2-3]

“اور جو شخص اللہ سے ڈرتا ہے اللہ اس کے لیے چھٹکارے کی شکل نکال دیتا ہے۔ اور اسے ایسی جگہ سے روزی دیتا ہے جس کا اسے گمان بھی نہ ہو اور جو شخص اللہ پر توکل کرے گا اللہ اسے کافی ہوگا۔ اللہ تعالیٰ اپنا کام پورا کرکے ہی رہے گا۔ اللہ تعالیٰ نے ہر چیز کا ایک اندازه مقرر کر رکھا ہے۔”

وقال فی موضع آخر: (وَسِعَ رَبِّي كُلَّ شَيْءٍ عِلْمًا ۗ ) [الأنعام:80]

” میرا پروردگار ہر چیز کو اپنے علم میں گھیرے ہوئے ہے۔”

وقال: (وَمَا يَعْزُبُ عَن رَّبِّكَ مِن مِّثْقَالِ ذَرَّةٍ فِي الْأَرْضِ وَلَا فِي السَّمَاءِ وَلَا أَصْغَرَ مِن ذَٰلِكَ وَلَا أَكْبَرَ إِلَّا فِي كِتَابٍ مُّبِينٍ) [یونس:61]

“اور آپ کے رب سے کوئی چیز ذره برابر بھی غائب نہیں، نہ زمین میں اور نہ آسمان میں اورنہ کوئی چیز اس سے چھوٹی اور نہ کوئی چیز بڑی مگر یہ سب کتاب مبین میں ہے۔”

 بندہ ہر وقت اللہ کی  نگرا نی میں  رہتا ہے اس کی کوئی بھی حرکت اس سے پوشیدہ نہیں۔ یہی نہیں بلکہ آسمان وزمین کی کوئی بھی چیز   اس سے چھپی  ہوئی نہیں ہے۔ وہ ہر چیز کا علم رکھتا ہے چھوٹی بڑی ہر چیز سے وہ باخبر ہے۔اسی وجہ سے اس نے ہمیں حکم دیا ہے کہ ہم اس سے ڈریں اور ان تمام چیزوں سے اپنے آپ کو بچائیں جو اس کی ناراضگی کا باعث ہیں۔

اللہ کے بندو!زبان اللہ کی نعمتوں میں سے ایک بہت بڑی نعمت ہے۔ یہ انسان کو اس لیے ملی ہے تاکہ وہ اس سے چیزوں کاذائقہ  معلوم کر سکے اور اپنے دل کی باتیں لوگوں  کوبتا سکے۔ زبان نہ ہوتی تو ہم اپنے مافی الضمیر  کا اظہار نہیں کرسکتے  تھے۔  اس لیے احسان  جتا تے ہوئے  اللہ تعالیٰ نے اس کا ذکر فرمایا ہے:

(أَلَمْ نَجْعَل لَّهُ عَيْنَيْنِ۔ وَلِسَانًا وَشَفَتَيْنِ) [البلد:8-9]

“کیا ہم نے اس کی دو آنکھیں نہیں بنائیں۔ اور زبان اور ہونٹ (نہیں بنائے)۔”

زبان ہی سے آدمی کےعقل وشعور  اور اس کی صلاحتیوں  کاپتہ چلتا ہے لیکن اس نعمت کا  استعمال اگر غلط طریقے سے ہو تو یہ نعمت اللہ کی ناراضگی  کا باعث بن جاتی ہے اور لوگوں کے دل بھی اس سے زخمی ہوتے ہیں۔ یاد رکھیے، زبان کا زخم  تیروسنان کے زخم سےزیادہ  کاری ہوتا ہے۔اسی لیے زبان  کےخوف سے بڑے بڑے بہادر لرزتے ہیں۔  ایک عربی شاعر کہتا ہے  ؎

جراحات السنان لھا التیام

ولا یلتام ما جرح  اللسان

“تیرکے زخم بھر جاتے ہیں  لیکن زبان  کے زخم کبھی نہیں بھر تے۔”

 اسی وجہ سے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ جہنم میں لوگ اپنی زبانوں کے حصائد  یعنی  زبان کی کاٹی ہوئی کھیتیوں  سے ہی اور ندھے منہ گرائے جائیں گے۔ زبان  کی کا ٹی ہوئی  کھیتیوں  سے مراد  زبان  سے سرزد  ہونے والے  گناہ کی  باتیں ہیں۔اسی لیے مؤمن جو اس بات کایقین رکھتا  ہے کہ اللہ  اس کی ہر بات اور ہرحرکت کوسنتا   اور دیکھتا  ہے، کھبی بھی اپنی  زبان کو آزاد اور بےلگام نہیں چھوڑ  تا۔ ہمیشہ  اسے اپنے کنٹرول  میں رکھتا  ہے۔ زبان  کے حصائد  یعنی  اس سے سرزد ہونے والے گنا ہوں کی بہت ساری قسمیں ہیں۔  ان میں سے چند کا ذکر ہم آج  کے اس خطبے میں کریں گے۔ ان میں سے سب  سے اہم غیبت اور بہتان ہے۔ اللہ تعالیٰ نے سورۂ الحجرات میں اس سے بچنے  کی سخت  تاکید فر مائی ہے۔ ارشاد باری ہے:

(وَلَا يَغْتَب بَّعْضُكُم بَعْضًا ۚ أَيُحِبُّ أَحَدُكُمْ أَن يَأْكُلَ لَحْمَ أَخِيهِ مَيْتًا فَكَرِهْتُمُوهُ ۚ) [الحجرات:12]

“اور نہ تم میں سے کوئی کسی کی غیبت کرے۔ کیا تم میں سے کوئی بھی اپنے مرده بھائی کا گوشت کھانا پسند کرتا ہے؟ تم کو اس سے گھن آئے گی۔”

ابو بزرہ  اسلمی رضی اللہ عنہ  سے روایت  ہے وہ کہتے ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے:

(یا معشر من آمن بلسانہ ولم یدخل الإیمان فی قلبہ لا تغتابوا المسلمین ولا تتبعوا عوراتھم فإنہ من اتبع عوراتھم یتبع اللہ عز وجل عورتہ، ومن یتبع اللہ عورتہ یفضحہ فی بیتہ) [أبو داؤد]

“اے وہ لوگو!جو ایمان لاۓ ہو،،  اپنی زبان سے (اور  حال یہ ہے کہ ایمان  اس کے دل میں داخل  نہیں ہواہے)  مسلمانوں  کی غیبت  نہ کرو۔ اور ان کے عیوب کے پیچھے نہ پڑو۔ اس لیے کہ  جو ان کے عیوب کے پیچھے  پڑےگا،  اللہ اس کے  عیب کےپیچھے  پڑےگا۔ اور اللہ جس  کے عیب کے پیچھے  پڑےگا،  اسے اس کے گھر میں ذلیل  ورسوا کر دےگا۔

ابوہریرہ  رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:

(أ تدرون ما الغیبۃ؟ قالوا اللہ ورسولہ أعلم، قال: ذکرک أخاک بما یکرہ، قیل أ فرأیت إن کان فی أخی ما أقول؟ قال؛ إن کان فیہ ما تقول فقد اغتبتہ وإن لم یکن فیہ ما تقول فقد بھتَّہ)

“کیا تم جانتے ہوکہ غیبت کیا ہے؟ صحابہ نے عرض کیا  اللہ اور اس کے رسول  بہتر جانتے  ہیں۔ آپ نے فرمایا:  اپنے بھائی کا اس انداز  میں ذکر  کرنا، جسے وہ نہ پسند  کرے۔ آپ سے پوچھا گيا: اگر میرے بھائی میں وہ چیز  موجود ہو جس کا میں ذکر کروں؟ آپ نے فرمایا: اگر اس میں وہ چیز موجود ہو جس کا تونے ذکر کیا، تو یہ اس کی غیبت ہے اور اگر اس میں وہ بات  نہیں ہے جو تو اس کی بابت  بیان کر رہا ہے تو  پھر تونے اس پر بہتان باندھا۔

اسی طرح  زبان کے حصائد میں سے چغل خوری  بھی ہے۔  اس سے بھی اللہ کے رسول  صلی اللہ علیہ وسلم  نے ڈرایا ہے۔ جیسا کہ عبد اللہ بن عباس  رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم  کا دو قبروں کے پاس سے گزر ہوا تو آپ  نے فرمایا:

(إنھما لیعذبان وما یعذبان فی کبیر، أما أحدھما فکان لا یستنزی من بولہ، وأما الآخر فکان یمشی بالنمیمۃ)

“یہ دونوں قبر  والے عذاب دیے جار ہے ہیں اور وہ بھی کسی بڑے گناہ کی وجہ سے نہیں، بلکہ  ان میں سے ایک شخص تو پیشاب سے پاکی حاصل نہیں کرتا تھا  اور دوسرا چغل خوری  میں لگا رہتا تھا۔”

زبان ہی کے حصائد میں سے عورتوں  کا کثرت  سے لعن طعن کرنا بھی ہے۔ جہنم میں عور توں کے زیادہ جانے کا سبب آپ  نے ان کی لعن طعن کی کثرت  کو بتا یا۔  جیسا کہ ابو سعید خدری  رضی اللہ عنہ  کی ایک  روایت  میں ہے۔

(یا معشر النساء تصدقن فإنی رأیتکن أکثر أھل النار، فقلن لم ذلک یا رسول اللہ؟ قال تکثرن اللعن وتکفرن العشیر) [بخاری]

“اے عورتوں کی جماعت! صدقہ کیا کرو، کیونکہ  میں نے تم عورتوں کو جہنم میں زیادہ دیکھا ہے۔ تو ان سب نے پوچھا:   اس کی کیا وجہ ہے اللہ کے رسول؟ آپ نے فرمایا: تم لعن طعن  زیادہ کرتی ہو اور شوہروں  کی ناشکر ی کرتی ہے۔”

بخاری میں ابو ہریرہ  رضی اللہ  عنہ  سے مرفوعا  روایت ہے:

(و أن العبد لیتکلم بالکلمۃ من سخط اللہ یلقی لھا بالا یھوی بھا فی جھنم)

“بندہ اپنی زبان  سے اللہ کی ناراضگی  کی بات بولتا ہے  اور اسے  اس کی  کوئی  پرواہ نہیں  ہوتی۔ حالانکہ وہ اس کی وجہ سے جہنم میں ڈال دیا جاتا ہے۔”

اس کے برعکس  اچھی اور بھلی بات سے اللہ خوش ہوتا ہے اور اس  سے بندے کا درجہ اور  وقار بلند  ہوتا ہے۔ اسی لیے زبان  کی حفاظت  کی طرف اللہ  کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم  نے خاص توجہ دی ہے ۔ مسند احمد  وغیرہ میں معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے نماز روزہ،زکوۃ جہاد  وغیرہ اچھی  باتوں کا ذکر کیا اور فرمایا:

(ألا أخبرک بملاک ذلک کلہ؟ قلت بلی یا رسول اللہ! فأخذ بلسانہ وقال: کف علیک ھذا، قلت: یا رسول اللہ! وأنا لمؤخذون بما نتکلم بہ؟ فقال ثکلتک أمک وھل یکب الناس فی النار علی وجوھھم إلا حصائد ألسنتھم)

“کیا میں تمہیں  ایسی بات  نہ بتاؤ ں  جس پر ان سب کا دار ومدار ہے؟ میں نے کہا: کیوں  نہیں اے اللہ کے  رسول! آپ نے اپنی زبان  پکڑی  اور فرمایا:اس کو روک کے رکھ۔میں نے عرض کیا:  ہم زبان  کے ذریعہ  سے جو گفتگو کرتے ہیں، اس پر بھی  ہماری گرفت ہوگی؟  آپ نے فرمایا: تیری ماں تجھے گم پائے، (یہ بددعا  نہیں عربی محاور ہ ہے )جہنم میں لوگوں  کو ان کی زبانوں کی کاٹی ہوئی کھیتیاں  ہی اوندھے منہ گرائيں گی۔

اس سلسلے میں اللہ کے رسول اپنے اہل وعیال  کی  خاص طور سے نگرانی  کرتے تھے۔ حضر ت عائشہ  رضی اللہ عنھا سے روایت  ہے وہ کہتی ہیں  کہ ایک بار میں نے  نبی صلی اللہ علیہ وسلم  سے کہا: (حسبک من صفیہ کذا وکذا) “آپ کے لیے  کافی  ہے کہ صفیہ  ایسی اور ایسی ہیں۔”

بعض رواۃ  نے کہا ہے کہ ان کی مراد  اس سے یہ تھی کہ وہ پستہ قد ہیں،  تو آپ نے فرمایا:

(لقد قلت کلمۃ لو مزجت بماء البحر لمزجتہ قالت وحکیتُ لہ إنسانا، فقال: ما أحب إنی حکیت إنسانا وأن لی کذا وکذا)

“تو نے ایسی  کڑوی بات کہی ہے کہ اگر یہ دریا کے پانی میں ملا دی جائےتو اسے بھی کڑوا کر دے، حضرت عائشہ  فرماتی ہیں  کہ میں نے آپ  کے سامنے ایک آدمی  کی نقل اتاری  تو آپ نے فرمایا  میں  پسند نہیں کرتاکہ میں کسی انسان کی نقل اتاروں، چاہے    اس کے بدلے  مجھے اتنا اور مال ملے۔

 لایعنی  اور فضول  باتوں سے بھی زبان  کو بچا نا چاہئے  جس سے نہ کوئی نقصان پہنچتا ہو، نہ فائدہ۔ امام بخاری  نے  “الأدب المفرد” میں  حضرت انس سے صحیح  سند سے روایت  نقل کی ہے،  وہ کہتے ہیں کہ ایک شخص نےحضرت عمر  کی موجود گی میں خطبہ دیا  اور اس نے بہت سی بے فائدہ باتیں کہیں ، تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ  نے کہا :

(إن کثرۃ الکلام فی الخطب من شقاشق الشیطان)

” خطبوں  میں زیادہ  بولنا ایسا ہی  ہے جیسے شیطان  منہ  سے جھاگ  نکالے  ۔ “

 لایعنی  چیزوں میں نہ پڑ نا آدمی کے حسن اسلام کی دلیل  ہے۔ ابوہریرہ  رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے، کہتے ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(من حسن إسلام المرء ترکہ ما لا یعنیہ)

” آدمی کے حسن اسلام میں سے اس کا لایعنی  چیزوں  کا چھوڑ دینا ہے  ۔ ” [ امام  ترمذی  نے اس حدیث کی  تخریج  بسند حسن کی ہے]

زبان کے حصائد  میں سے مسلمان کی عزت وآبرو کے درپے ہونا  بھی ہے۔  واثلہ  بن اسقع  رضی اللہ عنہ  سے روایت  ہے وہ کہتے  ہیں  کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے‍‍:

(المسلم علی المسلم حرام دمہ وعرضہ ومالہ المسلم أخو المسلم لا یظلمہ ولا یخذلہ، التقوی ھاھنا وأومأ بیدہ إلی القلب)

” مسلمان کا خون، اس کی عزت  آبرو اور اس کا مال،  مسلمان پر حرام  ہے۔مسلمان   مسلمان کا بھائی ہے۔ نہ وہ اس پر زیادتی  کرے اور نہ اسے بےیار ومددگار چھوڑے کہ اسے دشمن کے سپرد کر دے۔ تقوی ٰ یہاں  ہے اور آپ  نے اپنے ہاتھ  سے دل کی طرف  اشارہ کیا  ۔”

 بےحیائی کی باتیں اور فحش کلامی  بھی زبان  کے حصائد  میں سے ہے۔  آج کل مسلمان  سوسائٹیوں  میں یہ وبا بڑ ی تیزی  کے ساتھ پھیل  رہی ہے۔ یہ نتیجہ ہے یہودیوں کی  ابلا غی  یورش، ریڈیو، ٹیلی ویژن  اور بےحیائی  اور فحاشی  پھیلانے   والے چینلوں کا۔  ان فحش چینلوں کے ذریعہ مسلما  نوں کے گھروں میں  یہ برائی بڑی  تیزی  سے پھیل رہی ہے اور انہیں  اس کا شعور واحساس  تک نہیں ۔ ابوداؤد کی روایت ہے  اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

(ما من شئ أثقل فی میزان العبد المؤمن یوم القیامۃ من حسن الخلق و إن اللہ یبغض الفاحش البذی)

” قیا مت  کے دن مؤمن بندے کی  میزان  میں حسن خلق سے زیادہ بھاری  کوئی چیز نہیں  ہوگی۔ اور یقینا ً اللہ تعالیٰ بدزبان  اور فحش گوئی  کرنے والے  کونہ پسند کرتا ہے۔”

جھوٹ بولنا  بھی زبان کے حصائد میں سے ہے۔ آج کل یہ وبا بھی  مسلمانوں میں عام  ہے۔ حالانکہ جھوٹ  بولنا کبیرہ گناہوں  میں سے ہے ۔اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے اسے نفاق کی علامت قرار دیا ہے۔ ابن  مسعود رضی اللہ  عنہ   سے  روایت  ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ  علیہ وسلم   کا ارشاد ہے :

(و إیاکم الکذب فإن الکذب یھدی إلی الفجور والفجور یھدی إلی النار و إن الرجل لیکذب حتی یکتب عند اللہ کذابا) [بخاری ومسلم]

“جھوٹ سے بچو، بلاشبہ جھوٹ  نافرمانی کی طرف رہنما ئی کرتا ہے۔ اور نافرمانی  جہنم کی طرف  رہنمائی کرتی ہے۔ اور آدمی جھوٹ  بولتا  رہتا  ہے، یہاں تک  کہ وہ اللہ کے یہاں کذاب لکھ دیا جاتا  ہے۔”

انہیں سے روایت ہے آپ نے فرمایا:

(لا یصلح الکذب فی جدو لا ھزل ولا أن یعد أحدکم ولدہ لا ینجز)

“جھوٹ  سنجیدگی  اور مذاق کسی حال میں درست نہیں، اور نہ یہ کہ تم میں سے کوئی اپنے بیٹے سےجھوٹا وعدہ کرے، پھر  اسے پورا نہ کرے۔”

 ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت  ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے :

(من تحلم بحلم لم یرہ کلف أن یعقد بین شعیرتین ولن یفعل)

” جو شخص  جھوٹا  خواب بیان کرے جسے اس نے نہیں دیکھا ہے تو اسے قیامت کے دن مجبور کیا جائےگا کہ وہ جَو کے دودانوں  کے درمیان گرہ لگائے اور وہ یہ گرہ نہیں لگاسکےگا۔”

 اسی طرح جھو ٹی گواہی دینا بھی زبان کے حصا ئد میں سے ہے۔ ابوبکر  رضی اللہ عنہ  سے روایت ہے، وہ کہتے  ہیں   اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

(ألا أنبئکم بأکبر الکبائر؟ قلنا: بلی یا رسول اللہ قال! الإشراک باللہ وعقوق الوالدین وکان متکئا فجلس فقال: ألا وقول الزور، فما زال یکررھا حتی قلنا: لیتہ سکت)

”  کیا  میں تمہیں سب سے بڑے گنا ہ کی  خبر نہ دوں؟ ہم نے کہا: کیوں نہیں اے اللہ کے رسول! آپ  نے فرمایا: اللہ کے ساتھ شریک ٹھہرانا اور والدین کی نافرمانی کرنا۔ اور آپ ٹیک  لگائے ہوئے تھے اُٹھ کر بیٹھ گئےاور فرمایا: سنو اور جھوٹی بات، جھوٹی بات، آپ  برابر یہ بات دہراتے رہے یہاں تک کہ ہم نے کہا: کاش آپ خاموش ہوجاتے۔”

  اللہ تعالیٰ نے مؤمن کی صفات کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا : (وَالَّذِينَ لَا يَشْهَدُونَ الزُّور) [الفرقان: 72]

“اور جو لوگ جھوٹی گواہی نہیں دیتے۔”

اللہ تعالیٰ  نے اہل ایمان کو حکم دیا ہے کہ وہ کسی، فاسق  سے کوئی بات سنے تو پہلے  اس کی پوری تحقیق کرلے، پھر اسے لوگوں  سے بیان کرے۔ ارشاد  باری ہے :

(يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِن جَاءَكُمْ فَاسِقٌ بِنَبَإٍ فَتَبَيَّنُوا أَن تُصِيبُوا قَوْمًا بِجَهَالَةٍ فَتُصْبِحُوا عَلَىٰ مَا فَعَلْتُمْ نَادِمِينَ) [الحجرات:6]

“اے مسلمانو! اگر تمہیں کوئی فاسق خبر دے تو تم اس کی اچھی طرح تحقیق کر لیا کرو ایسا نہ ہو کہ نادانی میں کسی قوم کو ایذا پہنچا دو پھر اپنے کیے پر پشیمانی اٹھاؤ۔”

علامہ سعدی اس آیت کی تفسیر میں فرماتے ہیں  کہ یہ ان آداب میں سے ہے جس سے ہر صاحب عقل وشعور بہرہ ور ہوتا ہے۔ جب اسے کوئی فاسق  کسی چیز کی خبر  دیتا ہے تو وہ اس کی اچھی طرح چھان بین  کرتاہے۔  اسے سنتے ہی مان  نہیں لیتا کیونکہ  اندیشہ ہے کہ اسے صحیح سمجھ کر آدمی کوئی ایسا اقدام کر بیٹھے جس میں جان واموال ناحق  تلف ہوں  اور بعد میں  اسے شرمندگی وندامت  اٹھانی  پڑ جائے۔  اس لیے فاسق کی خبر کی  چھان  بین ضروری  ہے۔ اگر دلائل وقرائن  سے اس کا جھوٹا ہونا  ثابت ہو جائے قوم  اس کی بات  پرعمل  نہ کرے اس میں اس بات  کی دلیل  بھی ہے کہ سچے آدمی  کی خبر مقبول ہوگی اور جھوٹے شخص  کی خبر  مردود اور فاسق  کی خبر  پہ توقف کیا جائےگا۔ اسی وجہ سے سلف نے ان خوارج کی بہت سی روایات قبول کی ہیں  جو اپنی سچائی اور صدق  بیا نی میں   معروف ومشہور تھے   اگر چہ  وہ فاسق تھے ۔

دوسرا خطبہ

إن الحمد لله، نحمده، ونستعينه، ونستغفره، ونعوذ بالله من شرور أنفسنا وسيئات أعمالنا، من يهده الله فلا مضل له، ومن يضلل فلا هادى له، وأشهد أن لا إله إلا الله وحده لاشريك له، وأشهد أن محمداً عبده ورسوله،

قرآن وسنت میں ایسے بہت سے نصوص  وارد ہیں  جن سے معلوم  ہوتا ہے  کہ اللہ تعالیٰ نے کچھ ایسے فرشتے مقرر  کر رکھے  ہیں جو لوگوں  کی نگرانی  کرتےہیں ۔   ارشاد باری ہے :

(وَيُرْسِلُ عَلَيْكُمْ حَفَظَة) [الأنعام:61]

“اور تم پر نگہداشت رکھنے والے بھیجتا ہے۔”

یہ فرشتے اس  کے اچھے  اور برے تمام اقوال  واعمال  کو نوٹ  کرتے رہتے ہیں ۔

 ارشاد باری ہے:

(وَإِنَّ عَلَيْكُمْ لَحَافِظِينَ۔ كِرَامًا كَاتِبِينَ۔ يَعْلَمُونَ مَا تَفْعَلُون) [الانفطار :10-12]

” یقیناً تم پر نگہبان عزت والے۔ لکھنے والے مقرر ہیں۔ جوکچھ تم کرتے ہو وه جانتے ہیں۔”

 ایک جگہ ارشاد ہے: (إِذْ يَتَلَقَّى الْمُتَلَقِّيَانِ عَنِ الْيَمِينِ وَعَنِ الشِّمَالِ قَعِيدٌ۔ مَّا يَلْفِظُ مِن قَوْلٍ إِلَّا لَدَيْهِ رَقِيبٌ عَتِيدٌ) [قٓ:16-17]

“جس وقت دو لینے والے جا لیتے ہیں ایک دائیں طرف اور ایک بائیں طرف بیٹھا ہوا ہے۔ (انسان) منھ سے کوئی لفظ نکال نہیں پاتا مگر کہ اس کے پاس نگہبان تیار ہے۔”

 ایک جگہ  ارشادہے:

(أَمْ يَحْسَبُونَ أَنَّا لَا نَسْمَعُ سِرَّهُمْ وَنَجْوَاهُم ۚ بَلَىٰ وَرُسُلُنَا لَدَيْهِمْ يَكْتُبُونَ)  [الزخرف: 80)

“کیا ان کا یہ خیال ہے کہ ہم ان کی پوشیده باتوں کو اور ان کی سرگوشیوں کو نہیں سنتے، (یقیناً ہم برابر سن رہے ہیں) بلکہ ہمارے بھیجے ہوئے ان کے پاس ہی لکھ رہے ہیں۔”

صحیحین  میں ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت  ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:

(یتعاقبون فیکم ملائکۃ باللیل وملائکۃ بالنھار یجتمعون فی صلاۃ الفجر وصلاۃ العصر ثم یعرج الذین باتوا  فیکم قال لھم ربھم وھو أعلم بھم کیف ترکتم عبادی؟ فیقولون ترکناھم وھم یصلون واتیناھم وھم یصلون) [بخاری ومسلم]

“تمہارے درمیان رات کو اور دن کو فرشتے  باری باری سے آتے اور جاتے ہیں اور صبح کی نماز  میں اور عصر کی نماز میں وہ اکٹھے ہوتے ہیں۔  پھر  وہ فرشتے  جو تمہارے درمیان رات  گزارتے  ہیں اوپر چڑ ھ جاتے ہیں۔تو اللہ تعا لیٰ ان سے پو چھتا  ہے:  تم نے میرے بندوں کو کس حال میں چھوڑ  ا؟ وہ کہتے ہیں: ہم انہیں نماز  پڑ ھتے ہوئے چھوڑ کر  آئے   ہیں۔  اور جب ہم  ان کے پاس  گئے تھے۔  تب  بھی وہ نماز  ہی  میں مصروف  تھے۔

 اگر آپ یہ اعتراض کریں کہ اللہ تعالیٰ تو سب کچھ جانتا ہے۔ اسے فرشتوں  کے لکھنے  کی کیا ضرورت پڑ گئی؟ توہم کہیں  گے  کہ یہ بندوں پر  اس کا لطف وکرم ہے۔ اس نے  ایسا اس لیے   کر رکھا ہے تا کہ بندے  اس بات کو یاد رکھیں کہ اللہ   ان کی نگرانی کر رہا ہے۔ اور اس نے ان کی ہرہر حرکت  کو نوٹ  کر نے کے لیے  فرشتوں  کو لگا رکھا  ہے جو اس  کی مخلوق  میں اشرف  ہیں۔ یہ فرشتے  اس کے تمام اعمال  رجسٹر میں نوٹ کر رہے  ہیں اور قیامت  کے دن میدان  محشر میں  اسے پیش  کریں گے۔ یہ چیز اسے غلط  کاریوں  سے زیادہ روکنے والی ہوگی۔

 جب ایسی بات ہے کہ  اللہ ہماری  ہر بات اور ہر حرکت فرشتوں  کے ذریعے نوٹ کروا رہا  ہے تو   ہمیں  درست اور سچی  بات  ہی زبان سے نکالنی چاہئے  اور زبان  کو غلط  اور دل آزار  باتو ں سے آلودہ نہیں  ہونے دینا چاہئے۔  اللہ تعالیٰ  کا ارشاد ہے:

(يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّـهَ وَقُولُوا قَوْلًا سَدِيدًا۔ يُصْلِحْ لَكُمْ أَعْمَالَكُمْ وَيَغْفِرْ لَكُمْ ذُنُوبَكُمْ ۗ وَمَن يُطِعِ اللَّـهَ وَرَسُولَهُ فَقَدْ فَازَ فَوْزًا عَظِيمًا) [الأحزاب:70-71]

“اے ایمان والو! اللہ تعالیٰ سے ڈرو اور سیدھی سیدھی (سچی) باتیں کیا کرو۔ تاکہ اللہ تعالیٰ تمہارے کام سنوار دے اور تمہارے گناه معاف فرما دے، اور جو بھی اللہ اور اس کے رسول کی تابعداری کرے گا اس نے بڑی مراد پالی۔”

 قول منہ  سے نکلی  ہوئی بات کو کہتے ہیں۔  اور سدید کے معنی  درست  اور حق ہونے کےہیں۔ اسی سے “تسد السھم” آتا ہے ، یعنی  تیر کو شکار کی طرف  درست  کرنا تاکہ  نشانہ   نہ چوکے۔

لہذا “قول سدید”  ان تمام  باتوں کو شامل ہوگاجو درست، صحیح اور مفید  ہوں۔ اس میں سلام  کرنا، اپنے  مسلمان بھائی سےیہ  کہنا  کہ میں تم  سے محبت  کرتا ہوں ، قرآن  مجید  کی تلاوت  کرنی  اچھی  باتوں کی طرف رہنمائی کرنا، اللہ کی تسبیح وتحمید کرنی، اذان  واقامت کہنی ، وغیرہ تمام  امور  “قول سدید” میں داخل  ہیں۔

 محترم بھائیو!یہ بات  یاد رکھئے کہ  زبان  نیکی اور بدی کے  دروازوں  میں سے ایک  اہم  دروازہ  ہے۔ لوگ  جہنم  میں اوندھے  منہ اپنی زبان  ہی سے کہی ہوئی باتوں کی وجہ سے ڈالے جائیں گے۔ اسی  وجہ  سے حدیث  میں آتا ہے:

(من کان یؤمن باللہ والیوم الآخر فلیقل خیرا أو لیصمت)

” جو اللہ اور یوم آخرت  پر  ایمان  رکھتا  ہو، اسے چا ہئے کہ وہ اچھی  اور بھلی  بات  کہے  یا خاموش  رہے ۔

” قول سدید ” ہی سے معاشرے میں اچھی  باتوں  کا فروغ  ہوتا ہے۔ لوگوں  میں حقیقت  پسندی عام ہوتي ہے۔  اس کے  برخلاف “قول شر” سے گمرا ہیاں پھیلتی  ہیں۔  “قول سدید ” کے نتیجے  میں لوگوں  کے اعمال  میں درستگی آتی ہے؛  کیونکہ  ایسے  شخص  کی لوگ  اقتدا کرتے ہیں اور اس کی باتوں  کوغور  سے سنتے ہیں  اور اپنی اصلاح کرتے ہیں۔

 اخیر میں اللہ تعالیٰ سے دعا ہے  کہ ہمیں  اپنی زبان  کو قابو  میں رکھنے  اور اس سے سچی  اور درست بات  کہنے کی توفیق  دے۔ اور ہمیں  ایسی  باتیں  زبان  پر لانے  سے محفوظ  رکھے  جو اللہ  کی ناراضگی کا باعث ہیں اور جن سے اللہ کے بندوں  کی بھی دل  آزاری  ہو رہی ہو۔

أقول قولی ھذا واستغفر اللہ لی ولکم ولسائر المسلمین فاستغفروہ إنہ ھو الغفور الرحیم۔

میراخاموش رویہ

میں گزشتہ خاصے عرصہ سے خاموش ہوں۔ لوگ سمجھتے ہیں  کہ میرے ترکش میں شاید تیر ختم ہو چکے ہیں۔

میں پاکستان میں  ٣٠ دن تک  بہت مصروف رہی ہوں. اور اس سے پہلے دبئی میں بھی. زندگی ہر آنے والی وقت میں مشکل اور مصروف ہو رہی ہے .آگے دیکھنا ہے کے اور کتنا  مشکل اور مصروف زندگی گزارنی ہے.

اک چپ تے سو سکھ (ایک چپ اور سو سکھ)

 

 

By sumerasblog Posted in Life

life is not good as we think.

Many people strive to achieve positive, happy living through persuasion, so they learn the definition of persuasion in their everyday lives and activities. Many of them achieve it with no problem but many more find that they need someone to help point the way and provide some good personality development tips.

عورت _شوہر

حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بیوی کے حق کی اہمیت کو اپنی سنت مبارکہ سے واضح فرمایا۔ آپ کا طریقہ مبارک یہ تھا کہ کسی سفر یا غزوہ پر تشریف لے جاتے تو بیویوں میں قرعہ ڈالتے اور جس کے نام قرعہ نکل آتا، اُسے ساتھ لے جاتے۔

بخاري، الصحيح، کتاب النکاح، باب القرعة بين النساء، 5 : 1999، رقم : 4913

ایک رات حضرت عمر رضی اللہ عنہ حسبِ معمول شہر میں گشت کر رہے تھے کہ اُنہوں نے ایک عورت کی زبان سے یہ شعر سنے :

تطاول هذا الليل تسري کواکبه
وارَّقني ان لاضجيع ألاعبه

فواﷲ لولا اﷲ تخشي عواقبه
لَزُحزِحَ من هذا السرير جوانبه

(یہ رات کس قدر لمبی ہو گئی ہے۔ اور اس کے کنارے کس قدر چھوٹے ہو گئے ہیں اور میں رو رہی ہوں کہ میرا شوہر میرے پاس نہیں ہے کہ اس کے ساتھ ہنس کھیل کر اس رات کو گزار دوں۔ خدا کی قسم خدا کا ڈرنہ ہوتا تو اس تخت کے پائے ہلا دیئے جاتے۔ )

سيوطي، تاريخ الخلفاء : 139

حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے یہ سُن کر افسوس کیا اور فوراً اپنی صاحبزادی اُم المؤمنین حضرت حفصہ رضی اﷲ عنہا کے پاس گئے اور پوچھا بیٹی! ایک عورت شوہر کے بغیر کتنے دن گزار سکتی ہے؟ اُنہوں نے جواب دیا : ’’چار ماہ۔‘‘ اس کے بعد حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے یہ حکم جاری کر دیا کہ کوئی شخص چار ماہ سے زیادہ فوج کے ساتھ باہر نہ رہے۔ خود قرآن حکیم نے یہ معیاد مقرر کی ہے :

لِّلَّذِينَ يُؤْلُونَ مِن نِّسَآئِهِمْ تَرَبُّصُ أَرْبَعَةِ أَشْهُرٍ فَإِنْ فَآؤُوا فَإِنَّ اللّهَ غَفُورٌ رَّحِيمٌO

’’جو لوگ اپنی بیویوں کے قریب نہ جانے کی قسم کھالیں، ان کے لیے چار مہینے کی مہلت ہے۔ پھر اگر وہ (اس مدت کے اندر) رجوع کر لیں (اور آپس میں میل ملاپ کرلیں) تو اللہ رحمت سے بخشنے والاہےo‘‘

Chocolates – I Always Like to eat!!!

Normally I do not like to eat more chocolates because they are rich in fructose – a fruit sugar. And I just hate more sweetness to take in. But the chocolates which i always like to eat are CHOCODATES. They have a very thin layer of chocolate, inside it a date then an almond – Just a great combination.
These are the Chocodates actually I always like to eat. It has very small layer of chocolate. They are the best combination of Chocolate, Dates and Almond.
They are available in different range dark, white and milk.

Chocodates

Chocodates

Sweet Chocolates - simply delicious arabian delights

Sweet Chocolates - simply delicious arabian delights

Chocodate is a layer of rich milk chocolate covering a velvety Arabian date, filled with a crisp golden roasted almond. A unique taste of the Orient.

Chocodate is a layer of rich milk chocolate covering a velvety Arabian date, filled with a crisp golden roasted almond. A unique taste of the Orient.

Chocodate for sharing

Chocodates for sharing

Chocodates for sharing

مایوسی دور کرنے کے لئے چند تجاویز

اس تحریر میں ہم نے مایوسی کے خاتمے کی جو تجاویز پیش کی ہیں، ان کو یہاں مختصراً بیان کیا جارہا ہے اور اس کے ساتھ کچھ نئی تجاویز بھی پیش کی جارہی ہیں۔ جو بھائی یا بہنیں مایوسی اور ڈپریشن کا شکارہوں، ان سے گذارش ہے کہ وہ تحریر کے اس حصے کو اپنے سامنے والی دیوار پر چسپاں کرلیں یا پھر اپنے پرس میں رکھ لیں اور جب بھی مایوسی حملہ آور ہو تو محض ان تجاویز کو ایک نظر دیکھ ہی لیںتو انہیں مایوسی سے نجات کا کوئی نہ کوئی طریقہ سمجھ میں آ ہی جائے گا۔

  • سب سے پہلے یہ طے کر لیجئے کہ آپ مایوسی اور ڈپریشن سے ہر قیمت پر نکلنا چاہتے ہیں اور اس کے لئے ہر قربانی دینے کے لئے تیار ہیں۔
  • اپنی خواہشات کا جائزہ لیجئے اور ان میں سے جو بھی غیر حقیقت پسندانہ خواہش ہو، اسے ذہن سے نکال دیجئے۔ اس کا ایک طریقہ یہ ہے کہ پرسکون ہو کر خود کو suggestion  دیجئے کہ یہ خواہش کتنی احمقانہ ہے۔ اپنی سوچ میں ایسی خواہشات کا خود ہی مذاق اڑائیے۔اس طرح ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر اک خواہش پہ دم نکلے    کو غلط ثابت کیجئے۔
  • اپنی خواہشات کی شدت کو کنٹرول کیجئے۔ اپنی شدت کی ایک controllable limit   مقرر کر لیجئے۔ جیسے ہی یہ محسوس ہو کہ کوئی خواہش شدت اختیار کرتی جارہی ہے اور اس حد سے گزرنے والی ہے ، فوراً الرٹ ہو جائیے اور اس شدت کو کم کرنے کے اقدامات کیجئے۔ اس کا طریقہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ اس خواہش کی معقولیت پر غور کیجئے اور اس کے پورا نہ ہو سکنے کے نقصانات کا اندازہ لگائیے۔ خواہش پورا نہ ہونے کی provision  ذہن میں رکھئے اور اس صورت میں متبادل لائحہ عمل پر غور کیجئے۔ اس طرح کی سوچ خواہش کی شدت کو خود بخود کم کردے گی۔ آپ بہت سی خواہشات کے بارے میں یہ محسوس کریں گے کہ اگر یہ پوری نہ بھی ہوئی تو کوئی خاص فرق نہیں پڑے گا۔ یہ بھی خیال رہے کہ خواہش کی شدت اتنی کم بھی نہ ہوجائے کہ آپ کی قوت عمل ہی جاتی رہے۔ خواہش کا ایک مناسب حد تک شدید ہونا ہی انسان کو عمل پر متحرک کرتا ہے۔
  • دوسروں سے زیادہ توقعات وابستہ مت کیجئے۔ یہ فرض کر لیجئے کہ دوسرا آپ کی کوئی مدد نہیں کرے گا۔ اس مفروضے کو ذہن میں رکھتے ہوئے دوسروں سے اپنی خواہش کا اظہار کیجئے۔ اگر اس نے تھوڑی سی مدد بھی کردی تو آپ کو ڈپریشن کی بجائے خوشی ملے گی۔ بڑی بڑی توقعات رکھنے سے انسان کو سوائے مایوسی کے کچھ حاصل نہیں ہوتا اور دوسرے نے کچھ قربانی دے کر آپ کے لئے جو کچھ کیا ہوتا ہے وہ بھی ضائع جاتا ہے۔
  • مایوسی پھیلانے والے افراد ، کہانیوں، ڈراموں، کتابوں ، خبروں ، نظموں اور نغموں سے مکمل طور پر اجتناب کیجئے اور ہمیشہ امنگ پیدا کرنے والے افراد اور ان کی تخلیقات ہی کو قابل اعتنا سمجھئے۔ اگر آپ مایوسی اور ڈپریشن کے مریض نہیں بھی ہیں ، تب بھی ایسی چیزوں سے بچئے۔ اس بات کا خیال بھی رکھئے کہ امنگ پیدا کرنے والے افراد اور چیزوں کے زیر اثر کہیں کسی سے بہت زیادہ توقعات بھی وابستہ نہ کرلیں ورنہ یہی مایوسی بعد میں زیادہ شدت سے حملہ آور ہوگی۔
  • گندگی پھیلانے والی مکھی ہمیشہ گندی چیزوں کا ہی انتخاب کرتی ہے۔ اس کی طرح ہمیشہ دوسروں کی خامیوں اور کمزوریوں پر نظر نہ رکھئے ۔ اس کے برعکس شہد کی مکھی ، جو پھولوں ہی پر بیٹھتی ہے کی طرح دوسروں کی خوبیوں اور اچھائیوں کو اپنی سوچ میں زیادہ جگہ دیجئے۔  ان دوسروں میں خاص طور پر وہ لوگ ہونے چاہئیں جو آپ کے زیادہ قریب ہیں۔
  • اپنی خواہش اور عمل میں تضاد کو دور کیجئے۔ اپنی ناکامیوں کا الزام دوسروں پر دھرنے کی بجائے اپنی کمزوریوں پر زیادہ سوچئے اور ان کو دور کرنے کی کوشش کیجئے۔ ہر معاملے میں دوسروں کی سازش تلاش کرنے سے اجتناب کیجئے اور بدگمانی سے بچئے۔ یہ طرز فکر آپ میں جینے کی امنگ اور مثبت طرز فکر پیدا کرے گا۔ اس ضمن میں سورۃ الحجرات کا بار بار مطالعہ بہت مفید ہے۔
  • اگر آپ بے روزگاری اور غربت کے مسائل کے حل کے لئے کوئی بڑا سیٹ اپ تشکیل دے سکتے ہوں تو ضرور کیجئے ورنہ اپنے رشتے داروں اور دوستوں کی حد تک کوئی چھوٹا موٹا گروپ بنا کر اپنے مسائل کو کم کرنے کی کوشش کیجئے۔ اس ضمن میں حکومت یا کسی بڑے ادارے کے اقدامات کا انتظار نہ کیجئے۔ اگر آپ ایسا کرنے میں کامیاب ہوگئے تو آپ کی مایوسی انشاء اللہ شکرکے احساس میں بدل جائے گی۔
  • خوشی کی چھوٹی چھوٹی باتوں پر خوش ہونا سیکھئے اور بڑے سے بڑے غم کا سامنا مردانہ وار کرنے کی عادت ڈالئے۔ اپنے حلقہ احباب میں زیادہ تر خوش مزاج لوگوں کی صحبت اختیار کیجئے اور سڑیل سے لوگوں سے پرہیز کیجئے۔
  • اگر کوئی چیز آپ کو مسلسل پریشان کر رہی ہواور اس مسئلے کو حل کرنا آپ کے بس میں نہ ہو تو اس سے دور ہونے کی کوشش کیجئے۔ مثلاً اگر آپ کے دوست آپ کو پریشان کر رہے ہوں تو ان سے چھٹکارا حاصل کیجئے۔ اگر آپ کی جاب آپ کے لئے مسائل کا باعث بنی ہو تو دوسری جاب کی تلاش جاری رکھئے۔ اگر آپ کے شہر میں آپ کے لئے زمین تنگ ہوگئی ہے تو کسی دوسرے شہر کا قصد کیجئے۔
  • اگر آپ کو کسی بہت بڑی مصیبت کا سامنا کرنا پڑے اور آپ کے لئے اس سے جسمانی فرار بھی ممکن نہ ہو تو ایک خاص حد تک ذہنی فرار بھی تکلیف کی شدت کو کم کر دیتا ہے۔ اس کو علم نفسیات کی اصطلاح میں بیدار خوابی (Day Dreaming)   کہا جاتا ہے۔ اس میں انسان خیالی پلاؤ پکاتا ہے اور خود کو خیال ہی خیال میں اپنی مرضی کے ماحول میں موجود پاتا ہے جہاں وہ اپنی ہر خواہش کی تکمیل کر رہا ہوتا ہے۔ جیل میں بہت سے قیدی اسی طریقے سے اپنی آزادی کی خواہش کو پورا کرتے ہیں۔ ماہرین نفسیات کے مطابق ہر شخص کسی نہ کسی حد تک بیدار خوابی کرتا ہے اور اس کے ذریعے اپنے مسائل کی شدت کو کم کرتا ہے۔ مثلاً موجودہ دور میں جو لوگ معاشرے کی خرابیوں پر بہت زیادہ جلتے کڑھتے ہیں، وہ خود کو کسی آئیڈیل معاشرے میں موجود پا کر اپنی مایوسی کے احساس کو کم کرسکتے ہیں۔ اسی طرز پر افلاطون نے یو ٹوپیا کا تصور ایجاد کیا۔ اس ضمن میں یہ احتیاط ضروری ہے کہ بیدار خوابی اگر بہت زیادہ شدت اختیار کر جائے تو یہ بہت سے نفسیاتی اور معاشرتی مسائل کا باعث بنتی ہے۔ شیخ چلی بھی اسی طرز کا ایک کردار تھا جو بہت زیادہ خیالی پلاؤ پکایا کرتا تھا۔ اس لئے یہ ضروری ہے کہ اس طریقے کو مناسب حد تک ہی استعمال کیا جائے۔
  • آپ کو جو بھی مصیبت پہنچی ہو، اس کے بارے میں یہ جان لیجئے کہ اپنی زندگی کا خاتمہ کرکے آپ کو کسی طرح بھی اس مصیبت سے نجات نہیں ملے گی بلکہ مشہور حدیث کے مطابق موت کے بعد وہی حالات خود کشی کرنے والے پر مسلط کئے جائیں گے اور وہ بار بار خود کو ہلاک کرکے اسی تکلیف سے گزرے گا۔ اس  سزا کی طوالت کا انحصار اس کے قصور کی نوعیت اور شدت پر ہوگا۔ ہمارے یہاں خود کشی کرنے والے صرف ایمان کی کمزوری کی وجہ سے ایساکرتے ہیں ورنہ حقیقت یہ ہے کہ جن مصیبتوں سے بچنے کے لئے وہ ایسا کرتے ہیں، اس سے بڑی مصیبتیں ان کی منتظر ہوتی ہیں۔ آپ نے ایسا بہت کم دیکھا ہو گا کہ مصائب سے تنگ آ کر کسی دین دار شخص نے خود کشی کی ہو کیونکہ اسے اس بات کا یقین ہوتا ہے کہ زندگی اللہ تعالیٰ کی بہت بڑی نعمت ہے۔ مصیبت کا کیا ہے، آج ہے کل ٹل جائے گی اور درحقیقت ایسا ہی ہوتا ہے۔
  • ان تمام طریقوں سے بڑھ کر سب سے زیادہ اہم رویہ جو ہمیں اختیار کرنا چاہئے وہ رسول اللہ  ﷺ کے اسوہ حسنہ کے مطابق اللہ تعالیٰ کی ذات پر کامل توکل اور قناعت ہے۔ توکل کا یہ معنی ہے کہ اللہ تعالیٰ کی رضا پر راضی رہا جائے۔ اس کا انتہائی معیار یہ ہے کہ انسان کسی بھی مصیبت پر دکھی نہ ہو بلکہ جو بھی اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہو ، اسے دل و جان سے قبول کرلے۔ ظاہر ہے عملاً اس معیار کو اپنانا ناممکن ہے۔ اس لئے انسان کو چاہئے کہ وہ اس کے جتنا بھی قریب ہو سکتا ہو، ہو جائے۔ قناعت کا معاملہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جتنا عطا کر دیا ہے ، اسی پر خوش رہا جائے۔ اس سے زیادہ کی کوشش اگر چہ انسان ضرورکرتا رہے لیکن جو بھی اسے مل جائے اسے اپنے رب کی اعلیٰ ترین نعمت سمجھتے ہوئے خوش رہے اور جو اسے نہیں ملا ، اس پر غمگین نہ ہو۔ وہ آدھے گلاس میں پانی دیکھ کر شکر کرے کہ آدھا گلاس پانی تو ہے، اس غم میں نہ گھلتا رہے کہ باقی آدھا خالی کیوں ہے؟ اگر ہم ہمیشہ دنیا میں اپنے سے اوپر والوں کو دیکھنے کی بجائے خود سے نیچے والوں کو ہی دیکھتے رہیں تو ہماری بہت سی پریشانیاں ختم ہو جائیں۔
  • گناہوں کی وجہ سے کبھی مایوس نہ ہوں بلکہ ہمیشہ اللہ کی رحمت سے امید رکھتے ہوئے اپنے گناہوں سے توبہ کیجئے اور آئیندہ یہ گناہ نہ کرنے کا عزم کیجئے۔

اگر آپ اس تحریر کو پڑھ کر کوئی فائدہ محسو س کریں تو مصنف کے لئے دعا کرنے کے ساتھ ساتھ اسے اپنے فیڈ بیک سے بھی مطلع فرمائیے تاکہ آپ کے تجربات کو شامل کرکے اس تحریر کو اور بہتر بنایا جاسکے۔ اگر کوئی تجویز آپ کو نامعقول محسوس ہو تو اس سے بھی ضرور آگاہ فرمائیے تاکہ کسی تک غلط بات پہنچانے سے بچا جاسکے۔ اگر ہوسکے تو اس تحریر کے مندرجات کو اپنے انداز میں ان بھائیوں اور بہنوں تک بھی پہنچائیے جو پڑھنا لکھنا نہیں جانتے تاکہ امید کا یہ پیغام زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچ سکے۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں ہر طرح مایوسیوں اور پریشانیوں سے بچا کر ہر مصیبت کا مردانہ وار مقابلہ کرنے کی ہمت اور توفیق عطا فرمائے اور ہم پر اپنی رحمتیں نازل کرتا رہے۔

شادی اور عورت

ہمارے معاشرے میں شادی کے بعد ایک لڑکی اپنے والدین کا گھر چھوڑ کر اپنے سسرال چلی جاتی ہے۔اس کے بعد عام طور پر پورے سسرال کے کام کاج کا بوجھ اس پر ڈال دیا جاتا ہے۔یہ خاتون اگر شادی کے بعد اپنے شوہر سے علیحدہ گھر کا مطالبہ کرے تو معاشرے میں خاتون کی اس بات کو معیوب بات سمجھا جاتا ہے۔

سلسلہ نسب پر فخر کرنے والا احمق ہے۔ ارسطو

سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اس خاتون کو کس اصول کے تحت اس کے والدین اور گھر والوں سے جدا کرکے پابندِ سسرال کیا جاتا ہے۔ کیا لڑکی کے والدین اپنی بیٹی کا سودا کرتے ہیں جس کے عوض وہ سسرال کے حوالے کردی جاتی ہے؟ کیا شوہر لڑکی کی قیمت ادا کرتا ہے کہ اسے لڑکی سے اپنی اور اپنے گھر والوں کی غلامانہ خدمت لینے کا حق حاصل ہوجاتا ہے؟گھر چھوڑنا اگر نیا خاندان بسانے کی قیمت ہے تو یہ قیمت صرف لڑکی کیوں ادا کرتی ہے؟ اصولی طور پر تو لڑکی اور لڑکے دونوں کو اپنا گھر چھوڑ کر ایک نیا گھر آباد کرنا چاہیے۔

    یہ وہ سوالات ہیں جو دورِ جدید میں تیزی کے ساتھ ذہنوں میںس پیدا ہورہے ہیں۔نکاح چونکہ ایک مذہبی رسم ہے اس لیے عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ ان باتوں کو مذہب کی تائید حاصل ہے۔یہ بات درست نہیں ہے۔ ہمارے یہاں نکاح کے نام پر جو کچھ ہوتا ہے وہ اکثر و بیشتر ہندی ثقافت کی عطا ہے نہ کہ اسلام کی تعلیم۔

    اسلام نکاح کے بارے میں بڑی فطری جگہ پر کھڑا ہے۔ وہ اسے ایک ایسا معاہدہ قرار دیتا ہے جس میں ایک مرد اور ایک عورت مل کر خاندان کا ادارہ قائم کرتے ہیں۔مرد اس ادارے کا انتظامی سربراہ ہوتا ہے، جبکہ عورت اس کی ماتحتی میں خاندان کا نظم و نسق چلانے کی ذمہ داری اس شرط کے ساتھ قبول کرتی ہے کہ اس کے معاش کی کل ذمہ داری مرد پر ہوگی۔ معاہدے کے دونوں فریقین کے خاندان والے اور والدین یکساں طور پر عزت، احترام، محبت، اور خدمت کے مستحق ہیں۔ اس سلسلے میں کوئی امتیاز برتنا دین کی ہدایت نہیں۔

زندگی کی ناکامیاں، رشتوں کی تلخیاں،  انسانوں کے رویے ہمیں مایوس کر دیتے ہیں۔ بسا اوقات یہ مایوسی انسان کے ذہن پر اس حد تک دباؤ پیدا کر دیتی ہے کہ انسان دنیا کی جدوجہد کے مقابلے میں اس دنیا سے فرار حاصل کرنا چاہتا ہے۔ اس حد تک پہنچنے سے پہلے اس تحریر کا مطالعہ کر لیجیے۔ ہوسکتا ہے کہ یہ تحریر آپ کے کام آ جائے۔ یہاں کلک کیجیے۔

اسلام میں نکاح کا تصور یہ نہیں کہ لڑکی کو اس کے والدین سے جدا کرکے اجنبیوں کے حوالے کردیا جائے۔وہ کسی خاندان سے اس کا کوئی فرد کم نہیں کرنا چاہتا بلکہ دونوں خاندانوں میں ایک ایک فرد کا مزید اضافہ کرنا چاہتا ہے۔ یعنی لڑکی، لڑکے کے والدین اور اقربا کو اپنے عزیز سمجھے اور لڑکا، لڑکی کے رشتہ داروں کو اپنے خاندان میں شمار کرنے لگے۔ دین کی تعلیمات انسانوں کو تقسیم نہیں، انہیں جمع کردیتی ہیں۔

    تاہم انسان چونکہ ایک معاشرے میں رہتے بستے ہیں اس لیے دین کسی معاشرے کے عرف کی بڑی رعایت کرتا ہے۔ یعنی معاشرتی روایات میں سے جو چیزیں اجتماعی مصلحتوں کی بنا پر رواج پا گئی ہوں انہیں قبول کرلیا جائے۔ ہمارا معاشرتی نظام میں مشترکہ خاندان اس کی ایک مثال ہے۔ ایک شادی شدہ نوجوان چونکہ ابتدائی دنوں میں خود کفیل نہیں ہوتا اس لیے وہ اپنی بیوی کو اپنے والدین کے گھر رکھنے پر مجبور ہوتا ہے۔دین کی نظر میں یہ بات قابل اعتراض نہیں ہے۔

    قابل اعتراض بات یہ ہے کہ حقوق صرف مرد، اس کے والدین اور اقربا کے سمجھے جائیں۔ یہ خیال کیا جائے کہ یہ خاتون بس اب اپنے گھر والوں کو بھول کر لڑکے کے والدین کی خدمت میں مشغول رہے۔ ہفتوں بلکہ مہینوں لڑکی کو اس کے گھر والوں سے ملنے سے روکا جائے صرف اس بنا پر کہ اس کی غیر موجودگی میں سسرال کے کام کاج کا بوجھ کون اٹھائے گا۔جبکہ دوسری طرف لڑکے کو بھولے سے بھی لڑکی کے والدین کی خدمت کا خیال نہ آئے۔ لڑکی کے گھر والوں سے وہ ہمیشہ ناز برداریاں کرنے کی توقع رکھے۔جہیز کا مال کھانے کے بعد بھی ہمہ وقت سسرال سے کچھ نہ کچھ لینے کے لیے وہ تیار رہے۔ بیوی کے گھر والوں سے اس کا تعلق انسیت و محبت کا نہیں بلکہ اجنبیت کا ہو۔

    اس رویہ کا یقیناً دین سے کوئی تعلق نہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مردوں کو صاف بتایا ہے کہ ان کی بیوی کے والدین ان کے والدین کی حیثیت رکھتے ہیں۔ان کی خدمت و احترام اسی طرح ان پر لازم ہے جس طرح لڑکی پر اس کے والدین کی خدمت و احترام فرض ہے۔ نکاح انسانوں کی خرید و فروخت کا نام نہیں۔یہ خدمت و محبت کے ایک دو طرفہ رشتے کا نام ہے۔مرد ہو یا عورت ہر فریق پر اس تعلق کو نبھانے کی ذمہ داری یکساں طور پر عائد ہوتی ہے۔

(مصنف: ریحان احمد یوسفی)

مجھے افغانستان اور وہاں کے لوگون سے نفرت ہے .

It is a failed state. Rampant corruption, almost no electricity, no government control, warlords, and Taliban extremism. If the kids are girls, they have almost no chance of an education without bombings, teacher killings, and acid attacks. Taliban Law is in effect in many parts of the country and there are shadow governors in most of the provinces. Taliban justice prevails, which is as severe as can be and involves stoning a woman for adultery or rape (to avoid being stoned the woman needs male witnesses otherwise rape is classified as adultery).

موت کی تمنا

اگر گناہوں کی کثرت ہو جائے ،فتنے امنڈنے لگیں اور مصیبت میں پڑنے کا خوف ہو تومومن اپنے دین کو بچانے اور فتنوں سے خلاصی پانے کیلئے موت کی تمنا کرسکتا

ہے جیساکہ

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ……( ایسے زمانہ میں ) زمین کا اندرونی حصہ تمہارے لئے زمین کے بیرونی حصہ سے بہتر ہے۔ ﴿ جامع ترمذی شریف ،حدیث نمبر:2435