مقدمہ ۔ میر امن دہلوی


سبحان اللہ، کیا صانع ہے کہ جس نے ایک مٹھی خاک سے کیا کیا صورتیں اور مٹی کی مورتیں پیدا کیں باوجود رنگ کے ایک گورا اور ایک کالا۔ اور یہی ناک، کان، ہاتھ پاؤں سب کو دیئے ہیں۔ تس پر، رنگ بہ رنگ کی شکلیں جدا جدا بنائیں کہ ایک کی سج دھج سے دوسرے کا ڈیل ڈول ملتا نہیں۔ کروڑوں خلقت میں جس کو چاہیئے، پہچان لیجئے۔ آسمان اس کے دریائے وحدت کا ایک بلبلا ہے اور زمین پانی کا بتاشا، لیکن یہ تماشا ہے کہ سمندر ہزاروں لہریں مارتا ہے پر اس کا بال بیکا نہیں کرسکتا۔ جسکی یہ قدرت اور سکت ہو اسکی حمد و ثنا میں زبان انسان کی گویا گونگی ہے، کہیے تو کیا کہیے، بہتر یوں ہے کہ جس بات میں دم نہ مار سکے، چپکا ہو رہے۔

عرش سے لے کر فرش تک جس کا یہ سامان ہے
حمد اس کی اگر لکھا چاہوں تو کیا امکان ہے

جب پیمبر نے کہا ہو میں نے پہچانا نہیں
پھر جو کوئی دعوٰی کرے اس کا، بڑا نادان ہے

رات دن یہ مہر و مہ پھرتے ہیں صنعت دیکھتے
پر ہر اک واحد کی صورت دیدہء حیران ہے

جس کا ثانی اور مقابل ہے نہ ہووے گا کھبو
ایسے یکتا کو خدائی سب طرح شایان ہے

لیکن اتنا جانتا ہوں خالق و رزاق ہے وہ
ہر طرح سے مجھ پر اس کا لطف اور احسان ہے

اور درود اس کے دوست پر جس کی خاطر، زمین و آسمان کو پیدا کیا اور درجہ رسالت کا دیا۔

جسم پاک مصطفٰی، اللہ کا اک نور ہے
اس لئے پرچھائیں اس قد کہ نہ تھی، مشہور ہے

حوصلہ میرا کہاں اتنا، جو نعت اس کی کہوں
پر سخن گویوں کا یہ بھی قاعدہ دستور ہے

اور اس کی آل پر صلوٰۃ و سلام، جو ہیں بارہ امام

حمدِ حق اور نعتِ احمد کو یہاں کر انصرام
اب میں آغاز اس کو کرتا ہوں جو ہے منظور کام

یا الٰہی واسطے اپنے نبی کی آل کے
کر یہ میری گفتگو مقبول طبع خاص و عام

Advertisements

2 comments on “مقدمہ ۔ میر امن دہلوی

    • han han wahi wahi. dara asal, me jab parhti hun to kae jaga kuch ghalat hijjy likhi hoti ha lakin mera zehen us lafz ko sahi hi parhta ha. isliye past karty huay ya khud type karty huay me sahi nahi karti hun.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s