بوسہ گال کی قیمت میری جاں ٹھہری ہے


بوسہ گال کی قیمت میری جاں ٹھہری ہے
چیز کتنی سی ہے اور کتنی گراں ٹھہری ہے
چھیڑ کر پھر مجھے مصروف نہ کر نالوں میں
دو گھڑی کے لئے صیّاد زباں ٹھہری ہے
آہِ پُر سوز کو دیکھ اے دلِ کمبخت نہ روک
آگ نکلی ہے لگا کر جہاں یہ ٹھہری ہے
صبح سے جنبشِ ابرو و مژدہ سے پیہم
نہ تیرے تیر رکے ہیں نہ کماں ٹھہری ہے
دم نکلنے کو ہے ایسے میں وہ آ جائیں قمرؔ
صرف دم بھر کے لیے روح رواں ٹھہری ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s