اِنسان بدنصیب ، مقدّر کی بات ہے


اِنسان بدنصیب ، مقدّر کی بات ہے
گُل کو ملے صلیب، مقدّر کی بات ہے
اہلِ جنوں کے ہاتھ میں دونوں جہاں کی باگ
خطرے میں ہے غریب، مقدّر کی بات ہے
زخمِ بہار بن گئی پھولوں کی آرزُو
سارا چمن رقیب، مقدّر کی بات ہے
اہلِ چمن کو لکنتِ ماحول کھا گئی
ہر بے نوا خطیب ، مقدّر کی بات ہے
زخموں کو چھیڑتے ہیں بنامِ علاج نو
اس دَور کے طبیب، مقدّر کی بات ہے
تسکینِ جستجو ہے نہ اندازئہ قیام
منزل کے ہیں قریب، مقدّر کی بات ہے
صحرا کی دُھوپ بن گئی ساغرؔ کی تِشنگی
دشمن بنے حبیب مقدّر کی بات ہے

Advertisements
By sumerasblog Posted in Life

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s