تم میرے پاس رہو


تم میرے پاس رہو

میرے قاتل، میرے دلدار، میرے پاس رہو

جس گھڑی رات چلے

آسمانوں کا لہو پی کر سیاہ رات چلے

مرہمِ مشک لئے نشترِ الماس چلے

بین کرتی ہوئی، ہنستی ہوئی، گاتی نکلے

درد کی کاسنی پازیب بجاتی نکلے

جس گھڑی سینوں میں ڈوبتے ہوئے دل

آستینوں میں نہاں ہاتھوں کی راہ تکنے نکلے

آس لئے

اور بچوں کے بلکنے کی طرح قلقلِ مئے

بہارِ ناآسودگی مچلے تو منائے نہ منے

جب کوئی بات بنائے نہ بنے

جب نہ کوئی بات چلے

جس گھڑی رات چلے

جس گھڑی ماتمی،سنسا ن، سیاہ رات چلے

پاس رہو

میرے قاتل، میرے دلدار، میرے پاس رہو

Advertisements
By sumerasblog Posted in poetry

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s