ھمتِ التجا نہیں باقی


ھمتِ التجا نہیں باقی

ضبط کا حوصلہ نہیں باقی

اک تری دید چھن گئ مجھ سے

ورنہ دنیا میں کیا نہیں باقی

اپنے مشقِ ستم سے ہاتھ نہ کھیںچ

میں نہیں یا وفا نہیں باقی

ترے چشمِ عالم نواز کی خیر

دل میں کوئئ گلہ نہیں باقی

ہو چکا ختم عہدِ ہجر و وصال

زندگی میں مزا نہیں باقی

Advertisements
By sumerasblog Posted in poetry

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s